1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔۔
  2. محدث ٹیم منہج سلف پر لکھی گئی کتبِ فتاویٰ کو یونیکوڈائز کروانے کا خیال رکھتی ہے، اور الحمدللہ اس پر کام شروع بھی کرایا جا چکا ہے۔ اور پھر ان تمام کتب فتاویٰ کو محدث فتویٰ سائٹ پہ اپلوڈ بھی کردیا جائے گا۔ اس صدقہ جاریہ میں محدث ٹیم کے ساتھ تعاون کیجیے! ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔ ۔

کیا محمّد رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے الله کو دیکھا تھا ؟

'ایمانیات' میں موضوعات آغاز کردہ از راشد محمود, ‏فروری 18، 2017۔

  1. ‏فروری 18، 2017 #1
    راشد محمود

    راشد محمود مبتدی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 24، 2016
    پیغامات:
    180
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    بسم الله الرحمن الرحیم
    سب طرح کی تعریفیں الله رب العالمین کے لئے ہیں جس نے بالکل واضح شریعت نازل فرمائی !
    امابعد !
    قارئین ! ایک حدیث کی تشریح دوسری جگہ موجود ہوتی ہے اسی طرح ایک آیت کی تشریح بھی دوسری جگہ موجود ہوتی ہے اگر کہیں مجمل حدیث ہو تو غلط فہمی کا امکان تو ضرور ہے لیکن اس کا ازالہ دوسری حدیث سے ہو سکتا ہے ۔جو آگے پیچھے موجود ہوتی ہیں مگر اس کے لئے تحقیق کی ضرورت ہوتی ہے ۔​
    غلط فہمی : -

    حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ حَدَّثَنَا أَبِي ح و حَدَّثَنِي حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ حَدَّثَنَا عَفَّانُ بْنُ مُسْلِمٍ حَدَّثَنَا هَمَّامٌ کِلَاهُمَا عَنْ قَتَادَةَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ شَقِيقٍ قَالَ قُلْتُ لِأَبِي ذَرٍّ لَوْ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَسَأَلْتُهُ فَقَالَ عَنْ أَيِّ شَيْئٍ کُنْتَ تَسْأَلُهُ قَالَ کُنْتُ أَسْأَلُهُ هَلْ رَأَيْتَ رَبَّکَ قَالَ أَبُو ذَرٍّ قَدْ سَأَلْتُ فَقَالَ رَأَيْتُ نُورًا

    محمد بن بشار، معاذ بن ہشام، حجاج، بن شاعر، عفان بن مسلم، قتادہ، عبداللہ بن شقیق، ابوذر (رض) کہتے ہیں کہ میں نے حضرت ابوذر (رض) سے کہا کہ تم کس بات کے بارے میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے پوچھ رہے ہو انہوں نے کہا کہ میں نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے پوچھا ہے کہ کیا آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے اپنے رب کو دیکھا ہے تو آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا کہ میں نے ایک نور دیکھا ہے۔
    (صحیح مسلم )

    اب ابوذر کی ہی اگلی روایت دیکھیے :-
    حَدَّثَنَا أَبُو بَکْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا وَکِيعٌ عَنْ يَزِيدَ بْنِ إِبْرَاهِيمَ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ شَقِيقٍ عَنْ أَبِي ذَرٍّ قَالَ سَأَلْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ هَلْ رَأَيْتَ رَبَّکَ قَالَ نُورٌ أَنَّی أَرَاهُ

    ابوبکر بن ابی شیبہ، وکیع، یزید بن ابراہیم، قتادہ، عبداللہ بن شقیق، حضرت ابوذر (رض) فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے پوچھا کہ کیا آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے اپنے رب کو دیکھا ہے آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا وہ تو نور ہے میں اس کو کیسے دیکھ سکتا ہوں۔
    (صحیح مسلم)

    یعنی ایک حدیث میں دیکھنے کی نفی اور دوسری میں اثبات !
    ازالہ : -


    قارئین ! بات حقیقت یہ ہے کہ یہ ایک ہی حدیث ہے جس کو کم علمی کی وجہ سے دو حدیثیں سمجھ لیتے ہیں لوگ !
    حدیث زیر بحث کو قتادہ سے روایت کرنے والے محدثین نے اس کو مختصر ذکر کیا ہے اس اختصار ہی کی وجہ سے لوگوں کو غلط فہمی ہو جاتی ہے - امام مسلم نے اس غلطی کو دور کرنے کے لئے فوراً قتادہ کے دوسرے شاگردوں کی سندیں نقل کر دیں اور یہ بتا دیا کہ پہلے صاحب کی روایت میں یہ نقص ہے ، جس کو دور کر لیا جائے ۔ حدیث کے جس حصہ کو وہ صاحب چھوڑ گئے ہیں ، دوسرے اصحاب نے اسے بیان کیا ہے اور وہ حصہ امام مسلم نے آگے بیان کیا ہے گویا اس طرح حدیث کا متن محفوظ ہو گیا ۔ اب ذیل میں دونوں سندوں کے متن درج ذیل ہیں ، مقابلہ کیجیے کہ تضاد کہاں ہے ؟
    سند اول : ۔ ابوذر پوچھتے ہیں کہ آپ نے الله کو دیکھا تھا ، آپ فرماتے ہیں " نُورٌ أَنَّی أَرَاهُ وہ تو نور ہے میں اس کو کیسے دیکھ سکتا ہوں۔ "
    سند ثانی و ثالث : - ان اسناد میں وہ الفاظ جو پہلی سند میں رہ گئے ہیں ، مذکور ہیں یعنی آپ نے یہ بھی فرمایا تھا "رَأَيْتُ نُورًا میں نے ایک نور دیکھا ہے۔ "
    ان کو ملا کر حدیث کا متن اس طرح ہوا " نُورٌ أَنَّی أَرَاهُ رَأَيْتُ نُورًا وہ تو نور ہے میں اس کو کیسے دیکھ سکتا ہوں۔ میں نے ایک نور دیکھا ہے۔"
    امام احمد کی مسند میں یہ دونوں ٹکڑے ایک ہی متن میں بیان ہوۓ ہیں - الفاظ یہ ہیں : ۔
    قَدْ رَأَيْتُهُ نُورًا أَنَّى أَرَاهُ

    میں نے ایک نور دیکھا ہے، میں اسے کیسے دیکھ سکتا ہوں ؟
    (مسند احمد)

    امام مسلم کی دانائی کی داد دینی چاہیے کہ پہلے تو انہوں نے مختصر حدیث کو مکمل کیا ، پھر مزید غلط فہمی کو دور کرنے کے لئے فوراً اس روشنی(نور ) کی تشریح میں جس کو آپ نے دیکھا تھا ایک اور حدیث نقل کر دی جس کے الفاظ یہ ہیں :۔
    حِجَابُهُ النُّورُ

    الله کا حجاب بھی نور ہے ۔
    (صحیح مسلم )

    گویا الله کے رسول صلی الله علیہ وسلم نے جو روشنی دیکھی تھی وہ حجابات کی روشنی تھی نہ کہ الله تعالیٰ کے ذاتی نور کی روشنی ۔
    لہذا تضاد کی کوئی صورت باقی نہ رہی ۔

    احادیث کی روایت میں بسا اوقات کچھ مسائل پیدا ہو جاتے ہیں جس کے باعث روایتوں میں تضاد نظر آتا ہے۔ کبھی یہ تضاد محض راویوں کی غلط فہمی کے باعث پیدا ہوتا ہے اور کبھی ایک حدیث دوسری سے منسوخ ہوا کرتی ہے۔
    بعض اوقات روایتوں میں ایک بات جزوی طور پر بیان کی گئی ہوتی ہے جس کی وجہ سے بظاہر احادیث میں اختلاف محسوس ہوتا ہے۔ اگر اس موضوع سے متعلق تمام روایتوں کو اکٹھا کیا جائے تو پھر پوری بات درست طور پر سمجھ میں آ جاتی ہے۔
    بسا اوقات احادیث میں کوئی حقیقی تضاد نہیں ہوتا۔ یہ محض بات کو صحیح طور پر نہ سمجھنے کے باعث محسوس ہوتا ہے۔ احادیث کا مطالعہ اگر دقت نظر سے کیا جائے تو یہ تضاد دور ہو جاتا ہے۔
    الله تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں حق بات کو پڑھنے ، سمجھنے ، اسے دل سے قبول کرنے اور اس پر عمل کرنے کی توفیق عطاء فرمائے !
    آمین یا رب العالمین
    والحمد للہ رب العالمین
     
    • علمی علمی x 3
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  2. ‏فروری 19، 2017 #2
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    محترم
    جب آخرت میں ایک عام مسلمان بھی اللہ کا دیدار کر سکے گا تو نبی آخری الزماں جو کائنات کی افضل ترین شخصیت ہیں وہ کیا دنیاوی زندگی میں اللہ کا دیدار نہیں کر سکتے ۔ جب ایک حدیث رویت باری کی ہے تو اس کی تاویل کی کیا ضرورت ہے۔
     
  3. ‏فروری 19، 2017 #3
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    یہ اٹکل ہے، قرآن و حدیث کی دلیل نہیں! جنتی عالم آخرت میں اللہ کا دیدار کریں گے، یہ خبر ہے عالم آخرت کی! اس پر قیاس نہیں کیا جاسکتا!
    کل کو کوئی منچلا یہ اتکل لڑائے کہ ابلیس زندہ ہے جبکہ اس کی پیدائش آدم علیہ السلام سے بھی پہلے کی ہے، اور اسے موت نہیں آئی ، تو آدم علیہ السلام اور دیگر انبیاء علیہ السلام کو موت کیسے آسکتی ہے، جبکہ وہ تو افضل ہیں!
    ہم یہی کہیں گے کہ یہ قیاس شرعی نہیں بلکہ اٹکل پچھو ہیں، جو قرآن وحدیث کی خبر کے متضاد ہیں!
    ایسی کوئی صحیح حدیث نہیں کہ جس میں آنکھوں سے رویت باری تعالیٰ کا اثبات ہو، اور نہ کسی تاویل کی حاجت ہے!
     
    • متفق متفق x 2
    • پسند پسند x 1
    • زبردست زبردست x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  4. ‏فروری 19، 2017 #4
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ و بر کاتہ

    محترم
    پھر دونوں احادیث میں تطبیق کیسے ہوگی ۔
    جب اس حدیث میں کلی نفی ہے دیکھنے کی۔
    پھر آخرت میں کیا ایسی چیز ہوگی کہ تمام حجابا ت ختم ہوجائیں گے۔ انسانی حواس تو وہی ہوں گے۔
     
  5. ‏فروری 19، 2017 #5
    مظاہر امیر

    مظاہر امیر مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 15، 2016
    پیغامات:
    1,054
    موصول شکریہ جات:
    295
    تمغے کے پوائنٹ:
    157

    @nasim ام المؤمنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کا فتویٰ بھی ملاحظہ فرمائیں:

    حدثنيزهير بن حرب، حدثناإسماعيل بن إبراهيم، عن داود، عنالشعبي، عنمسروق، قال:‏‏‏‏ كنت متكئا عند عائشة
    ، فقالت:‏‏‏‏ يا ابا عائشة، ‏‏‏‏‏‏ثلاث من تكلم بواحدة منهن، ‏‏‏‏‏‏فقد اعظم على الله الفرية، ‏‏‏‏‏‏قلت:‏‏‏‏ ما هن؟ قالت:‏‏‏‏ من زعم ان محمدا صلى الله عليه وسلم راى ربه، ‏‏‏‏‏‏فقد اعظم على الله الفرية، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ وكنت متكئا فجلست، ‏‏‏‏‏‏فقلت:‏‏‏‏ يا ام المؤمنين، ‏‏‏‏‏‏انظريني ولا تعجليني، ‏‏‏‏‏‏الم يقل الله عز وجل:‏‏‏‏ ولقد رآه بالافق المبين سورة التكوير آية 23، ‏‏‏‏‏‏ولقد رآه نزلة اخرى سورة النجم آية 13، ‏‏‏‏‏‏فقالت:‏‏‏‏ انا اول هذه الامة، ‏‏‏‏‏‏سال عن ذلك رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ " إنما هو جبريل، ‏‏‏‏‏‏لم اره على صورته التي خلق عليها، ‏‏‏‏‏‏غير هاتين المرتين، ‏‏‏‏‏‏رايته منهبطا من السماء، ‏‏‏‏‏‏سادا عظم خلقه ما بين السماء إلى الارض "، ‏‏‏‏‏‏فقالت:‏‏‏‏ اولم تسمع ان الله يقول:‏‏‏‏ لا تدركه الابصار وهو يدرك الابصار وهو اللطيف الخبير سورة الانعام آية 103؟ اولم تسمع ان الله يقول:‏‏‏‏ وما كان لبشر ان يكلمه الله إلا وحيا او من وراء حجاب او يرسل رسولا فيوحي بإذنه ما يشاء إنه علي حكيم سورة الشورى آية 51؟ قالت:‏‏‏‏ ومن زعم، ‏‏‏‏‏‏ان رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏كتم شيئا من كتاب الله، ‏‏‏‏‏‏فقد اعظم على الله الفرية، ‏‏‏‏‏‏والله يقول:‏‏‏‏ يايها الرسول بلغ ما انزل إليك من ربك وإن لم تفعل فما بلغت رسالته سورة المائدة آية 67، ‏‏‏‏‏‏قالت:‏‏‏‏ ومن زعم، ‏‏‏‏‏‏انه يخبر بما يكون في غد، ‏‏‏‏‏‏فقد اعظم على الله الفرية، ‏‏‏‏‏‏والله يقول:‏‏‏‏ قل لا يعلم من في السموات والارض الغيب إلا الله سورة النمل آية 65،

    ‏‏‏‏
    صحیح مسلم --- ایمان کے احکام و مسائل --- باب : اس باب میں یہ بیان ہے کہ «وَلَقَدْ رَآهُ نَزْلَةً أُخْرَى» سے کیا مراد ہے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حق تعالیٰ جل جلالہ کو معراج کی رات میں دیکھا تھا یا نہیں ۔ [صحیح مسلم]
    حدیث نمبر : 439 --- مسروق سے روایت ہے ، میں تکیہ لگائے ہوئے تھا سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس ۔ انہوں نے کہا: اے ابوعائشہ (یہ کنیت ہے مسروق کی) کہ تین باتیں ہیں جو کوئی ان کا قائل ہو اس نے بڑا جھوٹ باندھا اللہ پر ۔ میں نے کہا: وہ تین باتیں کون سی ہیں ؟ انہوں نے کہا: (ایک یہ ہے ) جو کوئی سمجھے کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے رب کو دیکھا ، اس نے بڑا جھوٹ باندھا اللہ پر ۔ مسروق نے کہا: میں تکیہ لگائے تھا یہ سن کر میں بیٹھ گیا اور میں نے کہا: اے ام المؤمنین ! ذرا مجھے بات کرنے دیں اور جلدی مت کریں ، کیا اللہ تعالیٰ نے نہیں فرمایا : «وَلَقَدْ رَآہُ بِالْأُفُقِ الْمُبِينِ ٭ وَلَقَدْ رَآہُ نَزْلَۃً أُخْرَى» سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ نے کہا: اس امت میں سب سے پہلے میں نے ان آیتوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا: ۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ”مراد ان آیتوں میں جبریل علیہ السلام ہیں ۔ میں نے ان کو ان کی اصلی صورت پر نہیں دیکھا ۔ سوائے دو بار کے جن کا ذکر ان آیتوں میں ہے میں نے دیکھا ، ان کو وہ اتر رہے تھے آسمان سے اور ان کے تن و توش کی بڑائی نے آسمان سے زمین تک روک دیا تھا ۔ “ پھر سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ نے کہا: کیا تو نے نہیں سنا اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں : «لَا تُدْرِكُہُ الْأَبْصَارُ وَہُوَ يُدْرِكُ الْأَبْصَارَ وَہُوَ اللَّطِيفُ الْخَبِيرُ» کیا تو نے نہیں سنا اللہ تعالیٰ فرماتا ہے : «وَمَا كَانَ لِبَشَرٍ أَنْ يُكَلِّمَهُ اللَّهُ إِلَّا وَحْيًا أَوْ مِنْ وَرَاءِ حِجَابٍ أَوْ يُرْسِلَ رَسُولًا فَيُوحِيَ بِإِذْنِهِ مَا يَشَاءُ إِنَّهُ عَلِيٌّ حَكِيمٌ» تک (دوسری یہ ہے ) کہ جو کوئی خیال کرے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اللہ کی کتاب میں سے کچھ چھپا لیا تو اس نے بڑا جھوٹ باندھا اللہ پر ۔ اللہ فرماتا ہے «يَا أَيُّهَا الرَّسُولُ بَلِّغْ مَا أُنْزِلَ إِلَيْكَ مِنْ رَبِّكَ وَإِنْ لَمْ تَفْعَلْ فَمَا بَلَّغْتَ رِسَالَتَهُ» یعنی ”اے پیغام پہنچانے والے ! پہنچا دے جو اترا تجھ پر تیرے رب کے پاس سے اور جو ایسا نہ کرے تو تو نے پیغام نہیں پہنچایا“ (تیسری یہ ہے ) جو کوئی کہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کل ہونے والی بات جانتے تھے (یعنی آئندہ کا حال) تو اس نے بڑا جھوٹ باندھا اللہ پر ... اللہ خود فرماتا ہے : «قُلْ لَا يَعْلَمُ مَنْ فِي السَّمَوَاتِ وَالْأَرْضِ الْغَيْبَ إِلَّا اللَّہُ» ” (اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم ! ) آسمانوں اور زمین میں کوئی غیب کی بات نہیں جانتا سوائے اللہ کے “ ۔
     
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  6. ‏فروری 19، 2017 #6
    T.K.H

    T.K.H مشہور رکن
    جگہ:
    یہی دنیا اور بھلا کہاں سے ؟
    شمولیت:
    ‏مارچ 05، 2013
    پیغامات:
    888
    موصول شکریہ جات:
    287
    تمغے کے پوائنٹ:
    123

  7. ‏فروری 21، 2017 #7
    راشد محمود

    راشد محمود مبتدی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 24، 2016
    پیغامات:
    180
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    بسم الله الرحمن الرحیم
    سب طرح کی تعریفیں الله رب العالمین کے لئے ہیں جس نے بالکل واضح شریعت نازل فرمائی !
    امابعد !

    غلط فہمی : -


    ازالہ : -

    نہیں کر سکتے
    ۔الله کے رسول الله علیہ وسلم نے فرمایا :-
    تعلموا انه لن يرى احد منكم ربه عز وجل، ‏‏‏‏‏‏حتى يموت

    تم یہ جان رکھو کہ کوئی آدمی اپنے رب کو مرنے سے پہلے نہیں دیکھ سکتا

    (صحیح مسلم كِتَاب الْفِتَنِ وَأَشْرَاطِ السَّاعَةِ باب ذِكْرِ ابْنِ صَيَّادٍ: و سنن ترمزی كتاب الفتن عن رسول الله صلى الله عليه وسلم باب مَا جَاءَ فِي عَلاَمَةِ الدَّجَّالِ)

    اچھا یہ بتائیے کہ :

    موسیٰ علیہ السلام نے کرنا چاہا تھا تو کیا ہوا تھا ؟؟؟
    غلط فہمی : -


    ازالہ : -

    جناب اسی بات کا ازالہ زیر مشاہدہ تحریر میں کیا گیا تھا لیکن آپ نے اس کو سمجھنے کی بجائے وہی بات کہہ دی ۔

    ہم نے ازالہ کا آغاز ہی یہ کہہ کر شروع کیا تھا کہ :

    بہرحال آپ مکمل تحریر کو بار بار پڑھیے ، یہاں تک کہ حق بات آپ کو سمجھ میں آ جائے ! الا ما شاء الله

    سوال : -



    جواب : -

    آپ کو جواب دو احادیث نبوی سے دیا جائے گا ملاحظہ کیجیے : -
    پہلی : -

    الله کے رسول الله علیہ وسلم نے فرمایا :-

    تعلموا انه لن يرى احد منكم ربه عز وجل، ‏‏‏‏‏‏حتى يموت

    تم یہ جان رکھو کہ کوئی آدمی اپنے رب کو مرنے سے پہلے نہیں دیکھ سکتا

    (صحیح مسلم كِتَاب الْفِتَنِ وَأَشْرَاطِ السَّاعَةِ باب ذِكْرِ ابْنِ صَيَّادٍ: و سنن ترمزی كتاب الفتن عن رسول الله صلى الله عليه وسلم باب مَا جَاءَ فِي عَلاَمَةِ الدَّجَّالِ)

    دوسری : -

    حدثني محمد بن عبد العزيز، ‏‏‏‏‏‏حدثنا ابو عمر حفص بن ميسرة، ‏‏‏‏‏‏عن زيد بن اسلم، ‏‏‏‏‏‏عن عطاء بن يسار، ‏‏‏‏‏‏عن ابي سعيد الخدري رضي الله عنه، ‏‏‏‏‏‏النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قالوا:‏‏‏‏ يا رسول الله، ‏‏‏‏‏‏هل نرى ربنا يوم القيامة؟ قال النبي صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ "نعم، ‏‏‏‏‏‏هل تضارون في رؤية الشمس بالظهيرة، ‏‏‏‏‏‏ضوء ليس فيها سحاب؟"قالوا:‏‏‏‏ لا، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ "وهل تضارون في رؤية القمر ليلة البدر، ‏‏‏‏‏‏ضوء ليس فيها سحاب؟"قالوا:‏‏‏‏ لا، ‏‏‏‏‏‏قال النبي صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ "ما تضارون في رؤية الله عز وجل يوم القيامة، ‏‏‏‏‏‏إلا كما تضارون في رؤية احدهما ---- الخ

    مجھ سے محمد بن عبدالعزیز نے بیان کیا، کہا ہم سے ابوعمر حفص بن میسرہ نے بیان کیا، ان سے زید بن اسلم نے، ان سے عطاء بن یسار نے اور ان سے ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ کچھ صحابہ رضی اللہ عنہم نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا: یا رسول اللہ! کیا قیامت کے دن ہم اپنے رب کو دیکھ سکیں گے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ہاں، کیا سورج کو دوپہر کے وقت دیکھنے میں تمہیں کوئی دشواری ہوتی ہے، جبکہ اس پر بادل بھی نہ ہو؟ صحابہ رضی اللہ عنہم نے عرض کیا کہ نہیں۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اور کیا چودھویں رات کے چاند کو دیکھنے میں تمہیں کچھ دشواری پیش آتی ہے، جبکہ اس پر بادل نہ ہو؟ صحابہ رضی اللہ عنہم نے عرض کیا کہ نہیں۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ بس اسی طرح تم بلا کسی دقت اور رکاوٹ کے اللہ تعالیٰ کو دیکھو گے۔۔۔۔الخ
    (صحیح بخاری كتاب التفسير بَابُ: {إِنَّ اللَّهَ لاَ يَظْلِمُ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ} يَعْنِي زِنَةَ ذَرَّةٍ و صحیح مسلم )


    الله تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں حق بات کو پڑھنے ، سمجھنے ، اسے دل سے قبول کرنے اور اس پر عمل کرنے کی توفیق عطاء فرمائے !
    آمین یا رب العالمین
    والحمد للہ رب العالمین
     
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  8. ‏فروری 21، 2017 #8
    T.K.H

    T.K.H مشہور رکن
    جگہ:
    یہی دنیا اور بھلا کہاں سے ؟
    شمولیت:
    ‏مارچ 05، 2013
    پیغامات:
    888
    موصول شکریہ جات:
    287
    تمغے کے پوائنٹ:
    123

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ !
    آخرت کی زندگی دنیاوی زندگی سے یکسر مختلف ہو گی۔ وہاں انسان کی دیکھنے ، سننے اور بولنے کی صلاحیت بڑھ جا ئے گی جس سے یہ بات آپ سے آپ مبرہن ہو جاتی ہے کہ مؤمن بندوں کے لیے اللہ تعالٰی کو آخرت میں دیکھنا بعید از امکان نہیں۔ کیونکہ جو ذات دنیاوی زندگی میں ان انسانی صلاحیتوں کو محدود کر سکتی ہے تو کیا وہ انسان کے مر کر جی اُٹھنے کے بعد ان صلاحیتوں میں اضافہ نہیں کر سکتا ؟
     
  9. ‏فروری 24، 2017 #9
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    اس ذات کیلئے تو کچھ بھی ناممکن نہیں ہے ۔
    لیکن کیا یہاں آپ قیاس کر رہے ہیں کہ ایسا ہوگا ؟یا اس کا بھی کوئی ثبوت ملتا ہے کہ صلاحیتوں میں اضافہ ہوجائیگا۔
     
  10. ‏فروری 24، 2017 #10
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    یہ قیاس نہیں!
    بلکہ قران میں وارد خبر پر اعتراض کے باطل ہونے پر منطقی دلیل ہے!
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں