1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کیا ڈاکٹر فرحت ہاشمی صاحبہ سے علم حاصل کرسکتے ہیں؟؟

'متفرقات' میں موضوعات آغاز کردہ از ام حسان, ‏جون 03، 2015۔

  1. ‏دسمبر 11، 2016 #61
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    518
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    قابل صد احترام خضر حیات صاحب حفظکم اللہ تعالی اگر قابل اعتماد اہل حدیث عالم کا فتوی دوسرے قابل اعتماد اہل حدیث عالم کی خلاف آجاے تو کیا ہوگا ؟؟؟؟ موجودہ دورہ کی علماء کی فتووں کو اگر مان لیا جاے تو کوئی مسلمان بھی نہیں رھیگا اور منھج سلف پر بھی نہیں رہیگا
     
  2. ‏دسمبر 11، 2016 #62
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    518
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    مسلمانوں کی اکثر فرقوں کی علماء بشمول علماء اہل حدیث نے ڈاکٹر فرحت ہاشمی صاحبہ کی علمی کام کی تایید کی ہے اور کچھ علماء اہل حدیث کی صاحبزادیاں الہدی سے باقاعدہ تعلیم بھی حاصل کرچکی ہیں باقی فرقوں کی علماء کی صاحبزادیاں اور معزز خواتین بھی الحمدللہ الہدی سے تعلیم حاصل کرتی ہیں الھدی کسی فرقے ، مسلک ، منہج ، اور مشرب کی طرف نہیں بلکہ اللہ سبحانہ وتعالی کی طرف قرآن مجید کی طرف اور صحیح احادیث کی طرف بلاتفریق تمام انسانوں کو دعوت دیتی ہیں شرکت وبدعت سے سختی سے اجتناب کیا جاتا ہے اللہ سبحانہ وتعالی نے اس ادارے سے ہزاروں لاکھوں خواتین اور بچیوں کی اصلاح کی ہے اللہ تعالی ڈاکٹر صاحبہ کی کوششوں کو قبول فرماے اللہ تعالی ہم سب کو صراط مستقیم پر چلنے کی توفیق عطاء فرماے آمین یارب العالمین
     
  3. ‏دسمبر 11، 2016 #63
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    آجکل کے طالبعلموں کا یہ حال ہے کہ جب تک آپ ان کے شیوخ کی ہاں میں ہاں ملاتے رہیں آپ ہمارے ساتھ ہیں اور ایک بھی بات میں غلطی سے بھی اختلاف کر لیا تو سمجھ لو کہ آپ کی ساری کاوشیں برباد ہیں اور آپ کو جہنم کی ٹکٹ مل چکی ہے۔ حالانکہ اللہ نے ہر کسی کو ایک جیسا فہم نہیں دیا، اگر ہر کسی کو ایک ہی فہم پر جواب دہ ٹھہرانا ہوتا تو اللہ سبحانہ وتعالیٰ مجتہد کو غلطی پر بھی جزا نہ دیتا۔
    ایک طرف اللہ کی ذات ہے جو بندے کی بڑی سے بڑی کوتاہیوں کو معاف کرنے میں دیر نہیں کرتی اور اگر کوئی اللہ کی محبت میں جذباتی ہر کر کفریہ کلمہ بھی کہہ دے تو اللہ بُرا نہیں مانتا اور ایک طرف ہمارے آجکل کہ یہ مولوی اور مُلّے ہیں جو اللہ کے نام پر لوگوں پر دین کو مشکل سے مشکل تر کرنے میں مصروف ہیں، اور یہ سمجھتے ہیں کہ میں نے جو کہہ دیا بس اسی پر عمل ہونا چاہیے دوسرا کسی کو اختلاف کا کوئی حق نہیں ہے!
    ایک طرف ہمارے نبی ﷺ ہیں جو یہودی کو مسجد میں پیشاپ کرنے پر بھی اس سے نرمی سے پیش آتے ہیں، اور ایک صحابی کا نماز میں کلام کرنے پر اسے اتنے پیار سے سمجھاتے ہیں، اور دوسری طرف یہ دین کے ٹھیکیدار ہیں جو ذرا سا بھی اختلاف کرنے پر اگلے کا گریبان پکڑ لیتے ہیں!
    اختلاف ہر دور سے چلتا آ رہا ہے لیکن ان علماء اور آجکل کے مولویوں میں زمین آسمان کا فرق ہے۔ اس دور کے علماء نے شدید اختلافات ہونے کے باوجود بھی ادب واخلاق کا دامن کبھی چھوٹنے نہیں دیا۔ اور آجکل کے دور میں ایک عالم دوسرے عالم کی تحقیق پر اپنے دلائل کی روشنی میں سوال بھی اٹھا لے تو ایک دوسرے کو کذاب، جھوٹا ناجانے کیا کیا القابات سے نواز دیتے ہیں۔ اور اسی لئے یہ عادتیں اب ان شیوخ کے چیلوں میں بھی کوٹ کوٹ کر بھر چکی ہیں۔
    افسوس کہ ان لوگوں نے اپنے من پسند شیخ سے آگے کچھ پڑھا ہی نہیں، اگر اپنے ہی نبی اور سلف کی سیرت پڑھ لیتے تو اتنے بےوقوف نہ ہوتے۔
    امیر المؤمنین فی الحدیث امام سفیان الثوری رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
    ذا رأيت الرجل يعمل العمل الذي قد اختلف فيه، وأنت ترى غيره، فلا تَنْهَه
    "جب تم کسی شخص کو ایسا عمل کرتے دیکھو جس میں اختلاف ہے، اور تم اس کے علاوہ کوئی رائے رکھتے ہو، تو اس سے دست بردار مت ہونا"
    (حلیۃ الاولیاء: ج 6 ص 368 واسنادہ صحیح)
     
    • پسند پسند x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏دسمبر 12، 2016 #64
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    518
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    سر جی اسی رونے کو تو ہم روتے ہیں کہ کوئی انسان حق کا کام کریں ان کی کوشش کی وجہ سے اللہ سبحانہ وتعالی معاشرے میں تبدیلی رونما فرماے ہزاروں خواتین ان کی دعوت کی نتیجے میں نمازی بن جاے پردہ دار بن جاے قرآن پڑھنے والے بن جاے اسی انسان کو صرف اسی وجہ سے تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے کہ انہوں نے ہمارا نام کیوں نہیں رکھا ہمارے شیوخ جو نام استعمال کرتے ہیں اس نام کو کیوں استعمال نہیں کیا ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟ یہ ظلم اور زیادتی اور فرقہ پرستی نہیں ہے تو اور کیا ہے ؟؟
     
  5. ‏دسمبر 12، 2016 #65
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,763
    موصول شکریہ جات:
    8,333
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    علماء کے مابین اس طرح اختلاف ہو جاتا ہے ۔ جہاں معاصرانہ چشمک محسوس ہو ، وہاں دونوں بزرگوں کے ایک دوسرے کے خلاف غیر درست فتاوی پر توجہ نہیں دینی چاہیے ۔
    شاید آپ کو غلط فہمی ہوئی ہے یا پھر علماء سے صحیح طرح واقفیت نہیں ، دین پر عمل کرنے کے لیے عوام انہیں علماء سے رہنمائی لے رہی ہے ، کسی کو الہام یا وحی تو نہیں ہورہی کہ علماء سے ہٹ کر وہ اس کے ذریعے دین پر عمل پیرا ہے ۔
     
  6. ‏دسمبر 12، 2016 #66
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,763
    موصول شکریہ جات:
    8,333
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    تو اسے (اس عمل سے ) منع نہ کرو ۔
     
  7. ‏دسمبر 12، 2016 #67
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,350
    موصول شکریہ جات:
    1,078
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    اسکے علاوہ ایک ٹرینڈ اور چلا ہے. آج کل شاگرد حضرات اپنے علماء کو غلط باتیں بتا کر گمراہ کرتے ہیں. جسکی وجہ سے کئی مشہور ہستیاں غلط باتیں کہ دیتی ہیں (بات ہی انکو غلط بتائی جاتی ہے لہذا وہ بتاتے تو صحیح ہیں اہنے حساب سے لیکن وہ بات غلط ہوتی ہے. شاید سمجھا نہیں پایا)

    مزید اکثر یہ دیکھنے میں آیا ہے کہ اکثر لوگ سیاق وسباق سے ہٹا کر علماء کی باتوں کو پیش کرتے ہیں
     
    • متفق متفق x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  8. ‏دسمبر 12، 2016 #68
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,350
    موصول شکریہ جات:
    1,078
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    شاید دکتور مرتضی بن بخش صاحب کا فتوی ہے؟ (واضح رہے کہ یہ ایک غیر مصدقہ بات ہے لہذا پہلے اسکی ہی تصدیق ہونی چاہئے)
     
  9. ‏دسمبر 12، 2016 #69
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    518
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    جو لوگ اللہ سبحانہ وتعالی کی دین کی اشاعت کے لیے کا م کررہے ہیں ان کی کوششوں کو سراہنا چاہیے
     
  10. ‏دسمبر 12، 2016 #70
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    مرتضی صاحب کی بھی الگ ہی ایک کہانی ہے۔ یہ شخص تعصب وتقلید میں کسی پر بھی جھوٹ باندھنے سے گریز نہیں کرتا۔ میرا بھی ان سے سامنا ہو چکا ہے۔
    شیخ عبید الجابری صاحب کے ایک تزکیے کی بنیاد پر لوگوں کو فتوے دیتے پھڑتے ہیں یہ حالانکہ انہوں نے عقیدے کی ایک دو کتب کے سوا کچھ نہیں رٹا ہے!
     
    • معلوماتی معلوماتی x 2
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں