1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

ہم مساجد میں بم دھماکے نہیں کرتے ؟؟؟؟

'خوارج' میں موضوعات آغاز کردہ از ابو بصیر, ‏اگست 10، 2013۔

  1. ‏ستمبر 05، 2013 #21
    متلاشی

    متلاشی رکن
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2012
    پیغامات:
    336
    موصول شکریہ جات:
    373
    تمغے کے پوائنٹ:
    92

    لال مسجد اور جامع حفصہ کے ذمہ داروں کو تو پوری دنیا ہی جانتی ہے جن کے کرتوتوں کی وجہ سے ان کا الحاق وفاق المدارس نے بھی منسوخ کردیا تھا۔ تو تمام عالم اسلام کے علماء کی اجتماعی سوچ کو رد کر کے امیرالمومنین بنے کے شوق میں مسجد کو بطور ڈھال استعمال کیا جا رہا تھا۔ اور یہی کام ٹی ٹی پی بھی کرتی ہے۔
    باقی جو حوالے ہیں وہ غیر متعلق ہیں کیونکہ اُن میں کسی مسجد کو نشانہ نہیں بنایا گیا غیر ارادی طور پر مساجد نشانے پر آئی۔ جیسے اگر کوئی دشمن ملک پر ایٹم بم استعمال کرے تو اس میں اس دشمن ملک میں موجود مساجد بھی تباہ ہوسکتی ہیں لیکن کیونکہ حملے میں مساجد وغیرہ تباہ کرنا مقصد نہیں ہوتا بلکہ غیر ارادی طور پر مساجد نشانے پر آجاتی ہیں۔ اس لئے کوئی قباہت ہیں۔ اسی طرح آپ کے حوالوں کا حال ہے۔ بصورتِ تسلیم صحت۔
    لیکن خوارجی ہشت گردوں نے باقاعدہ مساجد میں نماز پڑھنے والوں کے قتل کے لئے اور مسجد کو مسجد ضرار سے تشبہ دیے کر حملہ کیا ہے۔ جس کی شریعت میں اجازت نہیں جیسا کہ ابوزینب صاحب کے متفقہ علماء سے ثبوت پیش کردیا گیا ہے۔ جن کے فتاوے ابوزینب صاحب کے خوارجی فورم پر بھی موجود ہیں۔
     
  2. ‏ستمبر 05، 2013 #22
    القول السدید

    القول السدید رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 30، 2012
    پیغامات:
    348
    موصول شکریہ جات:
    950
    تمغے کے پوائنٹ:
    91

    ماشاء اللہ ابو زینب۔۔
    مجھے علم تھا کہ اس کوکھ سے علم نہیں بلکہ جہالت ہی نمودار ہوگی۔جو کہ ہورہی ہے۔
    میرے محترم!آپ بندر کی اچھل کود جتنا مرضی کر لو۔لیکن جب تک دلیل نہیں دو گے تب تک میں دوسری بات کرنے والا نہیں ہوں۔
    میرے سوال نہایت ہی سادہ اور اہم ہیں۔لیکن آپ اس سے کنارہ کشی کیوں کر رہے ہیں؟
    پہلا سوال:پولیس والوں کو تو تم مرتد کہتے ہو،ان کو مارنے کے لیے عام عوام کو کی جان کیوں لیتے ہو؟اس کی دلیل؟(یاد رہے:نہ ہی لشکرطیبہ کا فعل آپ کے لیے دلیل بن سکتا ہے اور نہ ہی آرمی کا فعل،آپ لو شریعت کے نفاذ کا نعرہ بلند کرتے ہوتو اپنے فعل کی دلیل بھی شریعت سے ہی پیش کرو،ہاں اگر آپ یہ تسلیم کر لو کہ یہ جنگ شریعت کے نفاذ کی نہیں بلکہ بدلے اور انتقام کی جنگ ہے،جس میں شریعت کا کوئی پاس نہیں رکھا جارہا،تب تو میں آپ کے اس فعل پر خاموش رہنے کے بارے سوچ سکتا ہوں ورنہ نہیں)
    دوسرا سوال:
    جن مساجد میں شرک ہو رہا ہے،وہ شیعوں کی ہوں،بریلوی یا پھر دیوبندیوں کی ہوں ان کو دھماکے سے اڑانا جائز ہے؟دلیل۔۔۔۔؟؟
    تیسرا سوال:
    مساجد جس کی بھی ہوں،ان کے اندر رہنے والے جس قدر بھی مشرک ہوں،لیکن ان میں موجود قرآن کریم کے نسخوں اور مقدس کتابوں کو جان بوجھ کر نذر آتش کرنا،بارود سے اڑانا،اور ان کے چیتھڑے اڑانا۔کون سی شریعت سے اس کا جواز ملتا ہے؟
    (یاد رہے:جوکچھ پاک آرمی کرتی ہے وہ آپ کے لیے دلیل نہیں ہے۔مثلا:پاک آرمی اگر زنا کرے تو کیا بدلے میں تم بھی زنا کرو گے؟پاک آرمی شراب پئے تم بھی وہی کام کرو گے؟)
    میری ایڈمن سے بھی گزارش ہے کہ وہ فضول بحث اور بلاوجہ طعن و تشنیع کی فضا کی بجائے دلائل پر مبنی گفتگو کرنے والوں کو ہی اس فورم میں جگہ دے۔تاکہ فورم کا مقصد(علمی مواد کی ترسیل اور اظہار خیال ) بھی پورا ہو۔
    جزاک اللہ خیرا
     
  3. ‏ستمبر 05، 2013 #23
    ابوزینب

    ابوزینب رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 25، 2013
    پیغامات:
    445
    موصول شکریہ جات:
    282
    تمغے کے پوائنٹ:
    65

    الحمد للہ ہم نے نہایت ہی وضاحت اور دلائل کے ساتھ آپ کے پوسٹ میں اٹھائے گئے اعتراضات کے جواباب تحریر کئے۔یہ توآپ کے پوسٹ میں جو زبان استعمال کی جارہی ہے یہ اس بات کا بین اور واضح ثبو ت ہے کہ آپ دلائل کے ساتھ اخلاقیات سے بھی عاری ہوچکے ہیں۔ ہم نے اسی فورم آپ کے پوسٹوں کا مطالعہ کیا ہے ۔شاید مخالفین کے ساتھ اس طرح بداخلاقی سے پیش آنا آپ کے والد کی غلط تربیت کانتیجہ ہے۔یہ کہہ کر فرارحاصل کرنا کہ جب تک دلیل نہیں دوگے تب تک میں دوسری بات کرنے والا نہیں ہوں۔ تو آپ کی طرح یہ جملہ ادا کرکے ہرشخص اپنے آپ کو جواب دینے سے مبراء کرسکتا ہے۔یہ تو ہمارے پوسٹ پڑھنے والوں کو اندازہ ہوجائے گا کہ ہم نے جہالت سے کام لیا ہے یا علمی طور پر تمہارے باطل افکار کو ملیا میٹ کرکے رکھ دیا ہے۔آپ کی اس پوسٹ کو پڑھ کر ہی میں نے اندازہ لگالیا ہے کہ آپ دلائل سے مکمل طور پر مفلس اور علمی معلومات سے آپ بالکل کنگال ہوچکے ہیں۔جب ہی تو بجائے جواب دینے کے دشنام طرازی کو آپ نے اختیار کیا ہے۔اخلاق واقدار سے عاری اس پوسٹ میں آپ بالکل مفلس نظر آرہے ہیں۔ لیکن ہم آپ کے متعلق ہرگز یوں نہ کہیں گے کہ مینڈک کی طرح ٹرٹرانے سے لوگوں کو مرعوب نہیں کیا جاسکتا۔اگر لوگوں کو مرعوب کرنا ہے تو علم پیش کیجئے دلائل پیش کرنے سے جان مت چھڑائیے۔
    آپ کے سوال کاجواب ہم کئی مرتبہ اپنے پوسٹوں میں دے چکے ہیں۔جو کہ متلاشی کے ضمن میں ہے۔کیونکہ ہم سمجھتے ہیں کہ القول السدید ،متلاشی ،ابوبصیر،علی ولی ۔ایک ہی خندق میں ہیں اور وہ خندق ہے مجاہدین کی دشمنی اور صلیبیوں اور طاغوتی حکمرانوں اور مرتد ایجنسیوں کے اہلکاروں اور ناپاک فوج کو اپنے ارجائی ہتھیاروں کے ذریعے سے مدد کرناان کی حمایت کرنا اور مجاہدین اسلام کو مطعون کرنا ،عوام الناس میں حق کو باطل قراردینا اور باطل کو حق قراردینا ،مسلمانوں پر ان کے دین میں التباس پیدا کرنا ، الولاء والبراء جو کہ اسلامی عقیدے کی ایک ہم ترین کڑی ہے۔اس کا رخ مجاہدین سے موڑ کر ناپاک فوج مرتد ایجنسیوں کے اہلکاروں اور طاغوتی صلیبی حکمرانوں کی طرف کرنا ،اور مجاہدین کے خلاف عوام الناس میں نفرت اور دشمنی پیدا کرنا ، اور اس ضمن میں جھوٹے پروپیگنڈے ،جھوٹے افکار وخیالات ،شیطانی اوہامات، باطل نظریات ،قرآن وسنت کے مخالف افکار ، عقیدہ اہل السنۃ والجماعۃ کے افکار ونظریات کی جگہ بشرالمریسی او رجہم بن صفوان کے باطل خیالات کو فروغ دینا ،یہ جماعۃ الدعوۃ بمعہ انجینئر حافظ محمد سعید کے آپ لوگوں کا اہم ترین مشغلہ بن چکا ہے۔اور اس سلسلے میں بغیر کسی شرم وحیاء کا پاس کئے نہایت ڈھٹائی اور فریب کاری کے ساتھ مجاہدین پر اپنے بہتان اور الزام تراشی کے تیروں سے ان کی شخصیت کو داغدار اور مجروح کرنے کی کوشش کرنا جماعۃ الدعوۃ اور اس کے امیر انجینئر حافظ محمد سعید اور ان کے مقلدین کا وطیرہ بن چکا ہے۔موصوف کا پہلا سوال ہی ان کے اس غلاظت میں لتھڑے ہوئے ذہن کی عکاسی کررہا ہے۔یقیناً اس ملک کی ایجنسیاں اور پولیس کے افراد صلیبی جنگ کا حصہ ہیں اور اس ناٹو کا لشکر ہیں۔جو کہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ حالتِ جنگ میں ہیں۔اس میں کسی بھی قسم کے ابہام کا شائبہ تک نہیں ہے۔کیونکہ طاغوتی حکمرانوں نے واضح طور اپنے عزائم کو بیان کیا ہے کہ وہ مجاہدین کے خلاف دہشت گردی کی اس صلیبی جن میں جس کا امام وقت کا فرعون طواغیت کا سردار امریکہ ہے ۔اس کے یہ طاغوتی حکمران اور ان کی افواج اور ان کی ایجنسیاں صف اول کی اتحادی ہیں۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ جس طرح امریکہ مجاہدین کا دشمن ہے اسی طرح اس ملک کے طاغوتی حکمران ان کی فوج اور ان کی ایجنسیاں اور ان کی پولیس بھی بعینہ مجاہدین کی دشمن ہیں۔چنانچہ یہی وجہ ہے ان لوگوں نے افغانستان میں قائم امارت اسلامی کے خلاف امریکہ کے کہنے پر اعلان جنگ کردیا۔او رناٹو لشکر کے ساتھ اس ملک کے حکمران اور ان کی فوج اور ان کی ایجنسیاں مجاہدین پر حملہ آور ہوگئیں۔چنانچہ یہ جنگ جب سے شروع کی گئی ہے تو آج تک جاری وساری ہے۔لہٰذا مجاہدین نے اس ملک کے طاغوتی حکمرانوں اور فوج اور اس کی خفیہ ایجنسیوں اور پولیس کو اس صلیبی جنگ میں اپنا ہداف قرار دے رکھا ہے۔طاغوتی ایجنسیاں اور ان کے لشکر ہر وقت مجاہدین کے خلاف گھات لگائے رکھتے ہیں۔چنانچہ مجاہدین نے بھی ان کو اپنے نشانہ پر لے رکھاہے۔لہٰذا مجاہدین کے اہداف طاغوتی حکمران ، ان کی افواج ، ان کی خفیہ ایجنسیاں، ان کی پولیس ، ان کی معاونت کرنے والے لشکرہیں جنہیں مجاہدین اپنا نشانہ بناتے ہیں۔ مجاہدین کے ترجمانوں اور ان کی نشریات اور ان کی تحریرات میں جابجا اس بات کو شدت کے ساتھ بیان کیا گیا ہےکہ مجاہدین کا ہدف عام مسلمان نہیں ہیں ۔اس سلسلے میں ہم مجاہدین کے آئمہ کی تحریر سے آپ کو مطلع کرنا ضروری سمجھتے ہیں کہ بار بار ایک سوال کرکے جان چھڑانے کامسئلہ ہمیشہ کے لئے ختم کردیا جائے۔
    پس یہ بات اچھی طرح سمجھ لو کہ مجاہدین کا ہدف مسلمان ہرگز نہیں ہیں۔باربار طوطے کی طرح ایک رٹ لگانا کہ مجاہدین عام مسلمانوں نشانہ کیوں بناتے ہیں صحیح نہیں ہے۔صاحب اور صاحب بصیرت افراد اس پر توجہ کریں۔کہ فسادی لوگ حقائق سے انحراف کرکے کس طرح لوگوں کو التباس میں ڈال رہے ہیں۔جبکہ یہ بات ثابت ہوچکی ہے کہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنانے میں بلیک واٹر ، سی آئی ،اے ،ایف بی آئی ،اور اس ملک کی ایجنسیاں شامل ہیں۔بلیک واٹر اور ان ایجنسیوں کو پاکستان میں کون لایا ؟ کس نے ان کو ویزہ فراہم کیا؟کون ان کو سپورٹ کرتا ہے؟ابھی پاکستانی عوام ریمنڈ ڈیوس کا واقعہ بھولے نہیں ہیں جس نے پاکستانی مسلمانوں کی جان لی تھی کس نے اس ملعون کو رہائی دلائی ؟ اس ملک کے طواغیت اور ان کی افواج اور ان کی ایجنسیوں نے !لہٰذا بار بار یہ کہنا کہ مجاہدین عام مسلمانوں کو نشانہ بناتے ہیں سوائے بہتان بازی کے کچھ بھی نہیں ہے۔مجاہدین کے امام شیخ عطیۃ اللہ رحمہ اللہ ان بہتان بازوں کے جواب میں فرماتے ہیں:
    القول السدید بالآخر آپ نے یہاں تسلیم کرلیا کہ آپ کی جماعۃ الدعوۃ کی ذیلی تنظیم جس کا نام لشکر طیبہ ہے وہ عام افراد پر حملہ کرتی ہے ان کو موت کے گھاٹ اتارتی ہے۔بچوں اور عورتوں کو قتل کرتی ہے۔بازاروں میں دھماکے کرتی ہے۔جیسا کہ ہم نے اپنے پوسٹ ان تمام باتوں کا تصویری ثبوت پیش کیا تھا۔اور دوسرا ثبوت ہم نے موصوف کی پسندیدہ فوج جو کہ ناپاک آرمی ہے اس کا پیش کیا تھا کہ اس فوج نے مسلمانوں کی مساجد کو بمباری کرکے تباہ کیا اور مدارس کو ان میں جوقرآن وحدیث سے متعلق کتابیں موجود تھیں ان کو جمع کرکے ڈائنامائٹ کے ذریعے اڑادیا۔اس خبر کو بھی موصوف نے تسلیم کرلیا کہ فوج نے ایسا کیا ہے۔صرف اتنا تبصرہ اس پر موصوف نے کیا کہ لشکر طیبہ اور آرمی کا فعل آپ کے لئے دلیل نہیں بن سکتا ۔ لہٰذا موصوف نے صاف طور پر لشکر طیبہ کے عام لوگوں کو دھماکے کرکے ہلاک کرنے اورپاکستانی فوج کے مساجد اور مدارس اور قرآن وحدیث کی کتابوں کو ڈائنامائٹ کے ذریعے سے اڑانے کے فعل کو تسلیم کیا۔ہم موصوف کو یقین دلاتے ہیں کہ مجاہدین نہ ہی لشکر طیبہ کے کسی فعل کے ذمہ دار ہیں اور نہ ہی ان کے کسی فعل سے وہ دلیل پکڑتے ہیں۔مجاہدین کا ہدف تو عام لوگ ہے ہی نہیں لہٰذا لشکر طیبہ کے فعل سے دلیل پکڑنے کا یہاں مجاہدین کے پاس کوئی جواز ہی نہیں ہے اور نہ ہی مجاہدین نے کبھی ایسا دعویٰ کیا کہ چونکہ لشکر طیبہ بھی عام افراد کو دھماکوں کے ذریعے ہلاک کرتی ہے اس لئے ہم بھی اس عمل کی پیروی کریں گے۔لشکر طیبہ اپنے فعل کی خود ذمہ دار مجاہدین اس کے اس فعل سے کوسوں دور ہیں۔اسی مجاہدین ناپاک آرمی کے اس کفریہ فعل سے بھی کوسوں دور ہیں اور ان کے افعال سے بری ہیں ۔ مجاہدین نے کبھی بھی یہ اعلان نہیں کیا کہ چونکہ پاکستان کی فوج نے سوات اور وزیرستان میں مجاہدین اور عام مسلمانوں کو بمباری کرکے شہید کیا ہے تو ہم بھی عام مسلمانوں کو نشانہ بنائیں گے ۔ مجاہدین نے ایسے تمام افعال سے براءت کی ہے کہ وہ اللہ نخواستہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنائیں۔بلکہ مجاہدین نے واضح طور پر اعلان کیا کہ ہمارا نشانہ اس ملک کے طاغوتی حکمران اور ان کی افواج اور ان کی خفیہ ایجنسیاں اور ان کے تشکیل کردہ امن لشکر ہیں ۔عام عوام ہر گز نہیں ہیں۔لہٰذا جو مکروہ فعل آپ کی جماعۃ الدعوۃ اور اس کالشکر طیبہ کرتا ہے اس کے متعلق آپ کا کیا فتویٰ ہے۔ آپ کیا کہتے ہو ان کے ان افعال کے بارے میں کہ انہوں نے عام عوام اور پبلک مقامات کو نشانہ بنایا ۔ ہے کوئی جواب آپ کے پاس؟؟؟؟
    اب اسے القول السدید کی بے خبری کہیں یا موصوف کی جہالت کہیں۔مجاہدین نے جس مسجد میں پولیس والوں نشانہ بنایا تھا اس میں ہدف پولیس تھی نہ کہ مسجد ،لہٰذا لوگوں میں یہ التباس ڈالنا کہ مجاہدین نے مسجد کو نشانہ بنایا تھا سوائے جہالت کے کچھ بھی نہیں ہے۔حالانکہ یہ کام تو موصوف کی پسندیدہ فوج اور ان کی پولیس کرتی ہے۔فوج نے کتنی ہی مساجد کو بمباری اور ڈائنامیٹ کے ذریعے تباہ کیا یہ کچھ علم ہے آپ کو ۔لال مسجد اور جامعہ حفصہ میں پولیس والوں نے اور آپ کی فوج نے کیا کیا یہ تو ساری دنیا نے دیکھاہے۔کہ جان بوجھ کر مسجد کو نشانہ بنایا گیا اس میں قرآن مجید کو دھماکوں سے اڑایا گیا ۔ قرآن مجید کی بے حرمتی کی گئی اسلام آباد کے کوڑے خانوں میں قرآن مجید کو پھینکا گیا۔یہ سب مناظر پاکستان کے عوام اور ساری دنیا نے دیکھے ہیں۔جس کی گواہی جماعۃ الدعوۃ کے رسالہ نے بھی دی ہے۔یہ گواہی تو آپ کے گھر کی گواہی ہے ۔ لال مسجد والے باغی تھے توکیا اس مسجد میں پایا جانے والا قرآن بھی باغی تھا؟جو تمہاری ناپاک فوج نے اس کی شدید بے حرمتی کی اس کوکوڑے دانوں کی نذر کیا جس کے اوراق اسلام آباد کی سڑکوں اور کوڑے خانوں میں شہید کئے گئے ۔ کتب احادیث نے کیا بغاوت کی تھی جو تمہاری ناپاک فوج نے ان کو دھماکوں کی نذر کردیا ۔سنو القول السدید نام تو تم نے اپنا یہ رکھا ہوا کہ لیکن تمہاری باتیں تمہارے نام کے مطابق نہیں ہیں۔میں تمہیں بتاتاہوں کہ تمہاری ناپاک فوج نے قرآن مجید سے بغض وعداوت کیوں کی؟کیوں کہ قرآن مجید ایک مسلمان کو توحید کا پہلادرس ہی یہ دیتا ہے کہ فمن یکفر بالطاغوت ویؤمن باللّٰہ۔کہ جو طاغوت کا کفر کرے اور اللہ پر ایمان لائے۔تو وہ مومن ہوگا۔اور ظاہر ہے تمہاری اس ناپاک فوج کو کفر بالطاغوت کے اس نعرے سے نفرت ہے۔کیونکہ یہ ناپاک فوج طاغوت کا لشکر ہے، کیونکہ تمہاری یہ فوج فرعون کے خیموں کی میخیں ٹھوکتی ہے۔کیوں تم نے بھی تو فرعون کے خیموں کی سوات میں میخیں تو ضرور ٹھونکی ہوں گی جب ناٹو کے فوجی سوات کے زلزلے میں آئے تھے ،تو تمہاری جماعۃ الدعوۃ نے ان کے خیموں کی پہرہ داری کی تھی یاد ہے کچھ؟سنو جواب !جب مجاہدین اس ملک کے حاکم ہوں گے تو ہر مسجد سے صدائے توحید بلند ہوگی ۔اور اسی کو مسجد کہاجائے گا۔ابوعامر الفاسق نے بھی تو مسجد بنائی تھی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی تو اس مسجد کو ڈھادیا تھا۔
    اس کا جواب اوپر قدرے تفصیل کے ساتھ دیا جاچکا ہے تاہم پھر بھی عرض ہے کہ مجاہدین ان افعال سے بری ہیں آپ ان پر اس قسم کی تہمت نہ لگائیں ۔ایسا کام تو آپ کی ناپاک فوج کرتی ہے اور اب تک کررہی ہے۔اگر ناپاک آرمی کا کوئی فرد زناکرے گا تومجاہدین ان شاء اللہ اس کو رجم کریں گے۔ناپاک آرمی جو فرد بھی شراب پئے گا مجاہدین اس پر حد جاری کریں گے ان شاء اللہ۔ویسے بھی آپ یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ آرمی کی بیرکوں میں اور ان کے کلبوں میں کیا کیا ہوتا ہے۔جب ہی تو آپ نے یہ مثال پیش کی ہے۔کیونکہ ایسا آرمی کے بیرکوں اور ان کے کلبوں میں ہوتا رہا ہے۔مجاہدین تو مساجد میں رہنے والے اللہ کے ولی متقی مسلمانوں کے دوست ہیں۔آپ کواندازہ ہے کہ آپ کے پوسٹ کا کیا جواب آئے گا۔اسی لئے آپ نے ابھی سے ایڈمن ایڈمن کی دہائی دینی شروع کردی ہے۔بالکل بے کار ہے یہ دہائی ۔اب کچھ نہیں ہوسکتا ۔آپ کی یہ بحث اب صرف اسی فورم پر نہیں بلکہ سوشل میڈیا کی زینت بننے جارہی ہے۔آپ کے پوسٹ تو ہمارے لئے کسی نعمت سے کم نہیں ہیں ۔ کیونکہ پچھلے مناظروں میں آپ اور آپ کی ٹیم مجاہدین کے حامیوں سے شکست کھا کر فرار حاصل کرچکی تھی ۔اب آپ دوبارہ سے اپنے پوسٹوں سمیت سوشل میڈیا کی شینت بننے جارہے ہیں۔بالفرض محال محدث فورم کی انتظامیہ نے مجھ پر پابندی بھی لگادی تو میں پھر بھی آپ کے جوابات سوشل میڈیا کے مختلف فورمز کے ذریعے دیتا رہوں گا۔ میں آپ کو چیلنج کرتا ہوں کہ ایسے فورم پر آئیں جہاں پر ثبوت پیش کرنے میں کسی قسم کی پابندی کا سامنا نہ ہو۔
     
  4. ‏ستمبر 05، 2013 #24
    ابوزینب

    ابوزینب رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 25، 2013
    پیغامات:
    445
    موصول شکریہ جات:
    282
    تمغے کے پوائنٹ:
    65

    الحمد للہ ہم نے نہایت ہی وضاحت اور دلائل کے ساتھ آپ کے پوسٹ میں اٹھائے گئے اعتراضات کے جواباب تحریر کئے۔یہ توآپ کے پوسٹ میں جو زبان استعمال کی جارہی ہے یہ اس بات کا بین اور واضح ثبو ت ہے کہ آپ دلائل کے ساتھ اخلاقیات سے بھی عاری ہوچکے ہیں۔ ہم نے اسی فورم پر آپ کے پوسٹوں کا مطالعہ کیا ہے ۔شاید مخالفین کے ساتھ اس طرح بداخلاقی سے پیش آنا آپ کے والد کی غلط تربیت کانتیجہ ہے۔یہ کہہ کر فرارحاصل کرنا کہ جب تک دلیل نہیں دوگے تب تک میں دوسری بات کرنے والا نہیں ہوں۔ تو آپ کی طرح یہ جملہ ادا کرکے ہرشخص اپنے آپ کو جواب دینے سے مبراء کرسکتا ہے۔یہ تو ہمارے پوسٹ پڑھنے والوں کو اندازہ ہوجائے گا کہ ہم نے جہالت سے کام لیا ہے یا علمی طور پر تمہارے باطل افکار کو ملیا میٹ کرکے رکھ دیا ہے۔آپ کی اس پوسٹ کو پڑھ کر ہی میں نے اندازہ لگالیا ہے کہ آپ دلائل سے مکمل طور پر مفلس اور علمی معلومات سے آپ بالکل کنگال ہوچکے ہیں۔جب ہی تو بجائے جواب دینے کے دشنام طرازی کو آپ نے اختیار کیا ہے۔اخلاق واقدار سے عاری اس پوسٹ میں آپ بالکل مفلس نظر آرہے ہیں۔ لیکن ہم آپ کے متعلق ہرگز یوں نہ کہیں گے کہ مینڈک کی طرح ٹرٹرانے سے لوگوں کو مرعوب نہیں کیا جاسکتا۔اگر لوگوں کو مرعوب کرنا ہے تو علم پیش کیجئے دلائل پیش کرنے سے جان مت چھڑائیے۔
    آپ کے سوال کاجواب ہم کئی مرتبہ اپنے پوسٹوں میں دے چکے ہیں۔جو کہ متلاشی کے ضمن میں ہے۔کیونکہ ہم سمجھتے ہیں کہ القول السدید ،متلاشی ،ابوبصیر،علی ولی ۔ایک ہی خندق میں ہیں اور وہ خندق ہے مجاہدین کی دشمنی اور صلیبیوں اور طاغوتی حکمرانوں اور مرتد ایجنسیوں کے اہلکاروں اور ناپاک فوج کو اپنے ارجائی ہتھیاروں کے ذریعے سے مدد کرناان کی حمایت کرنا اور مجاہدین اسلام کو مطعون کرنا ،عوام الناس میں حق کو باطل قراردینا اور باطل کو حق قراردینا ،مسلمانوں پر ان کے دین میں التباس پیدا کرنا ، الولاء والبراء جو کہ اسلامی عقیدے کی ایک ہم ترین کڑی ہے۔اس کا رخ مجاہدین سے موڑ کر ناپاک فوج مرتد ایجنسیوں کے اہلکاروں اور طاغوتی صلیبی حکمرانوں کی طرف کرنا ،اور مجاہدین کے خلاف عوام الناس میں نفرت اور دشمنی پیدا کرنا ، اور اس ضمن میں جھوٹے پروپیگنڈے ،جھوٹے افکار وخیالات ،شیطانی اوہامات، باطل نظریات ،قرآن وسنت کے مخالف افکار ، عقیدہ اہل السنۃ والجماعۃ کے افکار ونظریات کی جگہ بشرالمریسی او رجہم بن صفوان کے باطل خیالات کو فروغ دینا ،یہ جماعۃ الدعوۃ بمعہ انجینئر حافظ محمد سعید کے آپ لوگوں کا اہم ترین مشغلہ بن چکا ہے۔اور اس سلسلے میں بغیر کسی شرم وحیاء کا پاس کئے نہایت ڈھٹائی اور فریب کاری کے ساتھ مجاہدین پر اپنے بہتان اور الزام تراشی کے تیروں سے ان کی شخصیت کو داغدار اور مجروح کرنے کی کوشش کرنا جماعۃ الدعوۃ اور اس کے امیر انجینئر حافظ محمد سعید اور ان کے مقلدین کا وطیرہ بن چکا ہے۔موصوف کا پہلا سوال ہی ان کے اس غلاظت میں لتھڑے ہوئے ذہن کی عکاسی کررہا ہے۔یقیناً اس ملک کی ایجنسیاں اور پولیس کے افراد صلیبی جنگ کا حصہ ہیں اور اس ناٹو کا لشکر ہیں۔جو کہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ حالتِ جنگ میں ہیں۔اس میں کسی بھی قسم کے ابہام کا شائبہ تک نہیں ہے۔کیونکہ طاغوتی حکمرانوں نے واضح طور اپنے عزائم کو بیان کیا ہے کہ وہ مجاہدین کے خلاف دہشت گردی کی اس صلیبی جنگ میں جس کا امام وقت کا فرعون طواغیت کا سردار امریکہ ہے ۔اس کے یہ طاغوتی حکمران اور ان کی افواج اور ان کی ایجنسیاں صف اول کی اتحادی ہیں۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ جس طرح امریکہ مجاہدین کا دشمن ہے اسی طرح اس ملک کے طاغوتی حکمران ان کی فوج اور ان کی ایجنسیاں اور ان کی پولیس بھی بعینہ مجاہدین کی دشمن ہیں۔چنانچہ یہی وجہ ہے ان لوگوں نے افغانستان میں قائم امارت اسلامی کے خلاف امریکہ کے کہنے پر اعلان جنگ کردیا۔او رناٹو لشکر کے ساتھ اس ملک کے حکمران اور ان کی فوج اور ان کی ایجنسیاں مجاہدین پر حملہ آور ہوگئیں۔چنانچہ یہ جنگ جب سے شروع کی گئی ہے تو آج تک جاری وساری ہے۔لہٰذا مجاہدین نے اس ملک کے طاغوتی حکمرانوں اور فوج اور اس کی خفیہ ایجنسیوں اور پولیس کو اس صلیبی جنگ میں اپنا ہدف قرار دے رکھا ہے۔طاغوتی ایجنسیاں اور ان کے لشکر ہر وقت مجاہدین کے خلاف گھات لگائے رکھتے ہیں۔چنانچہ مجاہدین نے بھی ان کو اپنے نشانہ پر لے رکھاہے۔لہٰذا مجاہدین کے اہداف طاغوتی حکمران ، ان کی افواج ، ان کی خفیہ ایجنسیاں، ان کی پولیس ، ان کی معاونت کرنے والے لشکرہیں جنہیں مجاہدین اپنا نشانہ بناتے ہیں۔ مجاہدین کے ترجمانوں اور ان کی نشریات اور ان کی تحریرات میں جابجا اس بات کو شدت کے ساتھ بیان کیا گیا ہےکہ مجاہدین کا ہدف عام مسلمان نہیں ہیں ۔اس سلسلے میں ہم مجاہدین کے آئمہ کی تحریر سے آپ کو مطلع کرنا ضروری سمجھتے ہیں کہ بار بار ایک سوال کرکے جان چھڑانے کامسئلہ ہمیشہ کے لئے ختم کردیا جائے۔
    پس یہ بات اچھی طرح سمجھ لو کہ مجاہدین کا ہدف مسلمان ہرگز نہیں ہیں۔باربار طوطے کی طرح ایک رٹ لگانا کہ مجاہدین عام مسلمانوں نشانہ کیوں بناتے ہیں صحیح نہیں ہے۔صاحب علم اور صاحب بصیرت افراد اس پر توجہ کریں۔کہ فسادی لوگ حقائق سے انحراف کرکے کس طرح لوگوں کو التباس میں ڈال رہے ہیں۔جبکہ یہ بات ثابت ہوچکی ہے کہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنانے میں بلیک واٹر ، سی آئی ،اے ،ایف بی آئی ،اور اس ملک کی ایجنسیاں شامل ہیں۔بلیک واٹر اور ان ایجنسیوں کو پاکستان میں کون لایا ؟ کس نے ان کو ویزہ فراہم کیا؟کون ان کو سپورٹ کرتا ہے؟ابھی پاکستانی عوام ریمنڈ ڈیوس کا واقعہ بھولے نہیں ہیں جس نے پاکستانی مسلمانوں کی جان لی تھی کس نے اس ملعون کو رہائی دلائی ؟ اس ملک کے طواغیت اور ان کی افواج اور ان کی ایجنسیوں نے !لہٰذا بار بار یہ کہنا کہ مجاہدین عام مسلمانوں کو نشانہ بناتے ہیں سوائے بہتان بازی کے کچھ بھی نہیں ہے۔مجاہدین کے امام شیخ عطیۃ اللہ رحمہ اللہ ان بہتان بازوں کے جواب میں فرماتے ہیں:
    القول السدید بالآخر آپ نے یہاں تسلیم کرلیا کہ آپ کی جماعۃ الدعوۃ کی ذیلی تنظیم جس کا نام لشکر طیبہ ہے وہ عام افراد پر حملہ کرتی ہے ان کو موت کے گھاٹ اتارتی ہے۔بچوں اور عورتوں کو قتل کرتی ہے۔بازاروں میں دھماکے کرتی ہے۔جیسا کہ ہم نے اپنے پوسٹ ان تمام باتوں کا تصویری ثبوت پیش کیا تھا۔اور دوسرا ثبوت ہم نے موصوف کی پسندیدہ فوج جو کہ ناپاک آرمی ہے اس کا پیش کیا تھا کہ اس فوج نے مسلمانوں کی مساجد کو بمباری کرکے تباہ کیا اور مدارس کو ان میں جوقرآن وحدیث سے متعلق کتابیں موجود تھیں ان کو جمع کرکے ڈائنامائٹ کے ذریعے اڑادیا۔اس خبر کو بھی موصوف نے تسلیم کرلیا کہ فوج نے ایسا کیا ہے۔صرف اتنا تبصرہ اس پر موصوف نے کیا کہ لشکر طیبہ اور آرمی کا فعل آپ کے لئے دلیل نہیں بن سکتا ۔ لہٰذا موصوف نے صاف طور پر لشکر طیبہ کے عام لوگوں کو دھماکے کرکے ہلاک کرنے اورپاکستانی فوج کے مساجد اور مدارس اور قرآن وحدیث کی کتابوں کو ڈائنامائٹ کے ذریعے سے اڑانے کے فعل کو تسلیم کیا۔ہم موصوف کو یقین دلاتے ہیں کہ مجاہدین نہ ہی لشکر طیبہ کے کسی فعل کے ذمہ دار ہیں اور نہ ہی ان کے کسی فعل سے وہ دلیل پکڑتے ہیں۔مجاہدین کا ہدف تو عام لوگ ہے ہی نہیں لہٰذا لشکر طیبہ کے فعل سے دلیل پکڑنے کا یہاں مجاہدین کے پاس کوئی جواز ہی نہیں ہے اور نہ ہی مجاہدین نے کبھی ایسا دعویٰ کیا کہ چونکہ لشکر طیبہ بھی عام افراد کو دھماکوں کے ذریعے ہلاک کرتی ہے اس لئے ہم بھی اس عمل کی پیروی کریں گے۔لشکر طیبہ اپنے فعل کی خود ذمہ دار ہے مجاہدین اس کے اس فعل سے کوسوں دور ہیں۔اسی طرح مجاہدین ناپاک آرمی کے اس کفریہ فعل سے بھی کوسوں دور ہیں اور ان کے افعال سے بری ہیں ۔ مجاہدین نے کبھی بھی یہ اعلان نہیں کیا کہ چونکہ پاکستان کی فوج نے سوات اور وزیرستان میں مجاہدین اور عام مسلمانوں کو بمباری کرکے شہید کیا ہے تو ہم بھی عام مسلمانوں کو نشانہ بنائیں گے ۔ مجاہدین نے ایسے تمام افعال سے براءت کی ہے کہ وہ اللہ نخواستہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنائیں۔بلکہ مجاہدین نے واضح طور پر اعلان کیا کہ ہمارا نشانہ اس ملک کے طاغوتی حکمران اور ان کی افواج اور ان کی خفیہ ایجنسیاں اور ان کے تشکیل کردہ امن لشکر ہیں ۔عام عوام ہر گز نہیں ہیں۔لہٰذا جو مکروہ فعل آپ کی جماعۃ الدعوۃ اور اس کالشکر طیبہ کرتا ہے اس کے متعلق آپ کا کیا فتویٰ ہے۔ آپ کیا کہتے ہو ان کے ان افعال کے بارے میں کہ انہوں نے عام عوام اور پبلک مقامات کو نشانہ بنایا ۔ ہے کوئی جواب آپ کے پاس؟؟؟؟
    اب اسے القول السدید کی بے خبری کہیں یا موصوف کی جہالت کہیں۔مجاہدین نے جس مسجد میں پولیس والوں نشانہ بنایا تھا اس میں ہدف پولیس تھی نہ کہ مسجد ،لہٰذا لوگوں میں یہ التباس ڈالنا کہ مجاہدین نے مسجد کو نشانہ بنایا تھا سوائے جہالت کے کچھ بھی نہیں ہے۔حالانکہ یہ کام تو موصوف کی پسندیدہ فوج اور ان کی پولیس کرتی ہے۔فوج نے کتنی ہی مساجد کو بمباری اور ڈائنامیٹ کے ذریعے تباہ کیا یہ کچھ علم ہے آپ کو ۔لال مسجد اور جامعہ حفصہ میں پولیس والوں نے اور آپ کی فوج نے کیا کیا یہ تو ساری دنیا نے دیکھاہے۔کہ جان بوجھ کر مسجد کو نشانہ بنایا گیا اس میں قرآن مجید کو دھماکوں سے اڑایا گیا ۔ قرآن مجید کی بے حرمتی کی گئی اسلام آباد کے کوڑے خانوں میں قرآن مجید کو پھینکا گیا۔یہ سب مناظر پاکستان کے عوام اور ساری دنیا نے دیکھے ہیں۔جس کی گواہی جماعۃ الدعوۃ کے رسالہ نے بھی دی ہے۔یہ گواہی تو آپ کے گھر کی گواہی ہے ۔ لال مسجد والے باغی تھے توکیا اس مسجد میں پایا جانے والا قرآن بھی باغی تھا؟جو تمہاری ناپاک فوج نے اس کی شدید بے حرمتی کی اس کوکوڑے دانوں کی نذر کیا جس کے اوراق اسلام آباد کی سڑکوں اور کوڑے خانوں میں شہید کئے گئے ۔ کتب احادیث نے کیا بغاوت کی تھی جو تمہاری ناپاک فوج نے ان کو دھماکوں کی نذر کردیا ۔سنو القول السدید نام تو تم نے اپنا یہ رکھا ہوا کہ لیکن تمہاری باتیں تمہارے نام کے مطابق نہیں ہیں۔میں تمہیں بتاتاہوں کہ تمہاری ناپاک فوج نے قرآن مجید سے بغض وعداوت کیوں کی؟کیوں کہ قرآن مجید ایک مسلمان کو توحید کا پہلادرس ہی یہ دیتا ہے کہ فمن یکفر بالطاغوت ویؤمن باللّٰہ۔کہ جو طاغوت کا کفر کرے اور اللہ پر ایمان لائے۔تو وہ مومن ہوگا۔اور ظاہر ہے تمہاری اس ناپاک فوج کو کفر بالطاغوت کے اس نعرے سے نفرت ہے۔کیونکہ یہ ناپاک فوج طاغوت کا لشکر ہے، کیونکہ تمہاری یہ فوج فرعون کے خیموں کی میخیں ٹھوکتی ہے۔کیوں تم نے بھی تو فرعون کے خیموں کی سوات میں میخیں تو ضرور ٹھونکی ہوں گی جب ناٹو کے فوجی سوات کے زلزلے میں آئے تھے ،تو تمہاری جماعۃ الدعوۃ نے ان کے خیموں کی پہرہ داری کی تھی یاد ہے کچھ؟سنو جواب !جب مجاہدین اس ملک کے حاکم ہوں گے تو ہر مسجد سے صدائے توحید بلند ہوگی ۔اور اسی کو مسجد کہاجائے گا۔ابوعامر الفاسق نے بھی تو مسجد بنائی تھی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی تو اس مسجد کو ڈھادیا تھا۔
    اس کا جواب اوپر قدرے تفصیل کے ساتھ دیا جاچکا ہے تاہم پھر بھی عرض ہے کہ مجاہدین ان افعال سے بری ہیں آپ ان پر اس قسم کی تہمت نہ لگائیں ۔ایسا کام تو آپ کی ناپاک فوج کرتی ہے اور اب تک کررہی ہے۔اگر ناپاک آرمی کا کوئی فرد زناکرے گا تومجاہدین ان شاء اللہ اس کو رجم کریں گے۔ناپاک آرمی کا جو فرد بھی شراب پئے گا مجاہدین اس پر حد جاری کریں گے ان شاء اللہ۔ویسے بھی آپ یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ آرمی کی بیرکوں میں اور ان کے کلبوں میں کیا کیا ہوتا ہے۔جب ہی تو آپ نے یہ مثال پیش کی ہے۔کیونکہ ایسا آرمی کے بیرکوں اور ان کے کلبوں میں ہوتا رہا ہے۔مجاہدین تو مساجد میں رہنے والے اللہ کے ولی متقی مسلمانوں کے دوست ہیں۔آپ کواندازہ ہے کہ آپ کے پوسٹ کا کیا جواب آئے گا۔اسی لئے آپ نے ابھی سے ایڈمن ایڈمن کی دہائی دینی شروع کردی ہے۔بالکل بے کار ہے یہ دہائی ۔اب کچھ نہیں ہوسکتا ۔آپ کی یہ بحث اب صرف اسی فورم پر نہیں بلکہ سوشل میڈیا کی زینت بننے جارہی ہے۔آپ کے پوسٹ تو ہمارے لئے کسی نعمت سے کم نہیں ہیں ۔ کیونکہ پچھلے مناظروں میں آپ اور آپ کی ٹیم مجاہدین کے حامیوں سے شکست کھا کر فرار حاصل کرچکی تھی ۔اب آپ دوبارہ سے اپنے پوسٹوں سمیت سوشل میڈیا کی زینت بننے جارہے ہیں۔بالفرض محال محدث فورم کی انتظامیہ نے مجھ پر پابندی بھی لگادی تو میں پھر بھی آپ کے جوابات سوشل میڈیا کے مختلف فورمز کے ذریعے دیتا رہوں گا۔ میں آپ کو چیلنج کرتا ہوں کہ ایسے فورم پر آئیں جہاں پر ثبوت پیش کرنے میں کسی قسم کی پابندی کا سامنا نہ ہو۔
     
  5. ‏ستمبر 05، 2013 #25
    اسحاق

    اسحاق مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 25، 2013
    پیغامات:
    894
    موصول شکریہ جات:
    2,074
    تمغے کے پوائنٹ:
    196

    ۔
    اللہ ان مجاہدین کو سلامت رکھے جو مساجد اور مسلمانوں کے محافظ ہیں. اور ہمیں بھی اللہ اپنے مقبول بندوں میں شامل کرے. آمین
    تسی تے پا جی ، ان کی بات کرتے ہو جو نمازیوں سے بھری مساجد کو شہید کرتے ہیں. تہانوں اللہ کولوں ڈر نہی لگدا؟
     
  6. ‏ستمبر 06، 2013 #26
    متلاشی

    متلاشی رکن
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2012
    پیغامات:
    336
    موصول شکریہ جات:
    373
    تمغے کے پوائنٹ:
    92

    القول السید صاحب یہ آپ کی کسی بھی سوال کا جواب نہیں دے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ ہی دے سکتا ہے
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • غیرمتفق غیرمتفق x 1
    • لسٹ
  7. ‏ستمبر 06، 2013 #27
    متلاشی

    متلاشی رکن
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2012
    پیغامات:
    336
    موصول شکریہ جات:
    373
    تمغے کے پوائنٹ:
    92

    یہ ابوزینب صاحب کی کانی دجالی آنکھ کی کرشمہ سازی ہے جس میں اس خوارجی النسل شخص کو خوارجی اور مجاہد کا فرق نظر نہیں آتا
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • ناپسند ناپسند x 1
    • لسٹ
  8. ‏ستمبر 07، 2013 #28
    القول السدید

    القول السدید رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 30، 2012
    پیغامات:
    348
    موصول شکریہ جات:
    950
    تمغے کے پوائنٹ:
    91

    ابو زینب بھائی مجھے تہذیب سکھلانے کا کام آپ کو کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔کیونکہ ابھی آگے چل کر بہت سے مقامات ایسے آئیں گے جہاں میں آپ کو یاد کرواؤں گا کہ تہذیب کی حدوں کا پھلانگنا کسے کہتے ہیں۔۔۔
    بہرحال!!!
    یہ پہلو تو آپ نے اپنی جان چھڑانے کے لیے شروع کیا ہے،ورنہ میں نے تو آپ کی شان میں کوئی ایسی گستاخی نہیں کی جس پر آپ کو پریشانی ہو رہی ہے۔
    خیر۔۔۔!!!ہم موضوع کی طرف آتے ہیں۔
    ًًًًمحترم بھائی ۔۔۔میں نے جو آپ سے سوال پوچھے ہیں،اور آپ نے اس کے جواب میں جو مکھیاں ماری ہیں،اس کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔کیونکہ آپ نے سوال کا جواب دینے کے سوا سب کچھ لکھا ہے۔جو کہ بے سود ہے۔
    سوال1:
    پولیس کی مسجد میں پولیس کے علاوہ باقی لوگ جو دھماکے کا شکار ہوئے،ان کے قتل کا کیا جواز ہے؟
    آپ نے سوال کا جواب دینے کی بجائے پھر وہی بندر کی بھاگ دوڑ کی ہے،لیکن میرا سوال ہنوز جواب طلب ہے۔
    کیونکہ:آپ نے خود تسلیم کیا تھا کہ یہ حملہ ہم یعنی ٹی ٹی پی نے کروایا تھا،جو کہ جائزتھا،جبکہ آپ کی خبروں سے یہ خبر ملتی ہے کہ اسی حملے میں پولیس کے علاوہ بھی لوگ مارے گئے،مگر بار بار پوچھنے کے باوجود بھی آپ ان عام لوگوں کے قتل کا جواز پیش نہیں کر پارہے۔لہذا میں دوبارہ گزارش کروں گا کہ آپ میرے سوال کو دوبارہ پڑھیں اور ٹھنڈے دماغ جی ہاں دماغ سے سوچیں،کہ میں نے کیا پوچھا ہے۔
    ''آپ نے عام لوگوں کے مرنے کی بھی وضاحت کی ہے،جس کا میں جواز طلب کررہا ہوں،لہذا اپنے آقاؤں کی ڈرامائی خبروں کی بجائے دلیل پیش کریں۔یا تو آپ کا یہ دھماکہ کرنا غلط ہے(کیونکہ اس میں بےگناہ لوگ مرے ہیں)یا پھر آپ کا دعوی غلط ہے۔امید ہے اب کچھ پلے پڑا ہوگا۔
    سوال2:
    کیا مسجد میں شرک کرنے کی وجہ سے مسجد مسجد نہیں رہتی؟اگر ہاں تو پھر شعیوں کے ساتھ ساتھ بریلویوں،دیوبندیوں کی مسجدیں مسجدیں ہی نہیں،ان کے جیسے مرضی دھماکوں سے اڑاؤ،جو مرضی کرو،یہ مسجدوں میں دھماکے کرنے کے زمرے میں نہیں آتا۔

    کمال کی دلیل گھڑی ہے جی آپنے۔۔ماشاء اللہ۔۔۔تیرے فہم پر قربان جاؤں۔۔۔اور اس فہم کو سنبھال کر رکھ۔عوام کے سامنے لائے گا تو نظر لگ جائے گی۔
    اناللہ وانا الیہ راجعون
    قارئین کرام!!کیا جہالت کا کوئی اور نام ہوتا ہے؟ہرگز نہیں۔اسی کو ہی جہالت کہتے ہیں،ابو زینب اس قدر ضرورت سے زیادہ فہم و فراست رکھتا ہے کہ ایک بندہ جس کو مسجد میں بھیجا جارہا ہے کہ بہت سے لوگ مسجد میں کھڑے ہیں ان پر ایسا دھماکہ کرو کہ نہ مسجد بچے اور نہی ہی وہ لوگ۔(کیونکہ یہ بات یقینی ہے کہ دھماکے سے جہاں لوگ مریں گے وہیں مسجد بھی شہید ہوگی)اور یہ عقل مند صاحب کہہ رہے ہیں کہ ٹارگٹ پولیس تھی نہ کہ مسجد۔او میرے زیرو میٹر عقل والے بھائی!جب بلاسٹ مسجد میں کرو گے تو بتاو نشانہ دونوں چیزیں ہوئیں یا پھر صرف پولیس ہی؟
    اگر نشانہ صرف پولیس ہی ہے تو پھر اس کو مسجد سے نکلنے کا انتظار کیا جاتا۔بلکل ایسے جیسے حرم میں خون بہانے کی ممانعت ہے،اگر کوئی مجرم حرم میں موجود بھی ہو اس کو حرم سے نکلنے تک کا انتظار کیا جاتا ہے۔لیکن آپ کی دلیل پڑھ کر تو ہنسی ہی چھوٹ رہی ہے۔
    دوسری بات:اسے کہتے ہیں " اپنے ہی دام میں صیاد آگیا!!!"
    ابھی آپ کہہ رہےتھے کہ چونکہ یہ مسجد شعیوں کی تھی اس لیے یہ مسجد ہی نہیں ہے،ان کو تو گرانے کا حکم ہے،لیکن جب آپ کا منہ بند ہوا تو فورا یو ٹرن لیا اور اگلی ہی پوسٹ میں کہنے لگے کہ نہیں جی نہیں ہمارا ٹارگٹ مسجد نہیں تھی بلکہ مسجد میں موجود پولیس والے تھے،واہ جی واہ۔کمال کر دی آپ نے تو۔اتنی جلدی تو میں کپڑے نہیں بدلتا جتنی جلدی آپ اپنی بات بدل جاتے ہیں۔
    اب فیصلہ آپ کے ہاتھ میں ہے۔میں آپ کے لیے اس سوال کو مزید آسان کردیتا ہوں۔
    کیا شعیوں کے عبادت خانے گرانہ جائز ہے(کیونکہ وہاں شرک ہوتا ہے،اور یہ مسجدیں نہیں بلکہ شرک کے اڈے ہیں،جن کو گرانہ لازم ہے:بقول ابو زینب)اگر جائز ہیں تو پھر اس حملے میں مسجد یعنی شعیوں کی عبادت گاہ آپ کے نشانے پر کیوں نہیں تھی؟صرف پولیس والے ہی کیوں؟
    یاد دہانی:میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ پاک آرمی کا یا کسی بھی دوسری تیسری جماعت کا فعل آپ کےلیے دلیل نہیں بن سکتا،آپ مجھے اپنے عمل کی دلیل صرف اور صرف قرآن و سنت سے ہی پیش کریں۔یا آپ جس کے مقلد ہیں اس کے عمل کی دلیل پیش کریں۔
    سوال3:
    مسجد میں موجود قرآن اور دوسری مقدس کتابوں کے نسخے بارود سے اڑانے کی دلیل کیا ہے؟وہ نسخے چاہے شعیوں کی مسجد میں ہوں یا حنفیوں کی مسجد میں۔

    میرے بھائی مجاہدین اس فعل سے واقعی ہی بری ہیں،لیکن میں یہاں بات مجاہدین کی نہیں کررہا بلکہ ٹی ٹی پی کے درندوں کی کر رہا ہوں،کیونکہ آپ نے تسلیم کیا ہے کہ انہوں نے مسجد میں دھماکہ کیا جس سے نمازیوں سمیت مسجد بھی تباہ ہوگئی،اور اس میں موجود دینی کتب بھی۔۔۔۔اس کام کی ذمہ داری آپ نے قبول کی ہے۔لہذا مجھے جہاں باقی دلائل مطلوب ہیں وہیں قرآن اور دوسری مقدس کتب کو دھماکے سے اڑانے کی دلیل بھی ۔
    یاد دہانی:اپنے فعل کے لیے آرمی یا کسی اور کے فعل کو دلیل تب بنانا جب آپ اس کے فعل کو جائز سمجھتے ہوں۔ورنہ دلیل صرف اور صرف شریعت سے ہی دی گئی قابل قبول ہوگی۔
     
  9. ‏ستمبر 07، 2013 #29
    ابوزینب

    ابوزینب رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 25، 2013
    پیغامات:
    445
    موصول شکریہ جات:
    282
    تمغے کے پوائنٹ:
    65

    یہ تو انٹرنیٹ استعمال کرنے والے اور ان فورم پر آنے والے آپ کے متعلق اچھی طرح جانتے ہیں کہ آپ میں اخلاق کے کتنے پہلو پائے جاتے ہیں ۔ آپ کا ماضی آپ کے حال پر شاہد ہے۔کیونکہ اگر آپ بداخلاقی نہیں کریں گے تو آپ کو دلائل کا جواب دینا پڑے گا ۔ اور دلائل کے جوابات آپ کے پاس ہے ہی نہیں لہٰذا آپ عامیانہ قسم کے گھٹیا جملے ہی اپنی پوسٹ میں استعمال کرسکتے ہیں۔کیونکہ اس قسم کی حرکتیں کرنا جماعۃ الدعوۃ کے خوارج نما تکفیری مرجئوں کے اخلاق کا حصہ ہیں۔کیونکہ مریدکے میں فریق مخالف کے ساتھ ان کو اسی قسم کی بدااخلاقی سکھائی جاتی ہے۔ایک دلائل سے عاری شخص اور کیا کرسکتاہے سوائے بداخلاقی کے جملے کسنے کے۔
    آپ کے تمام سوالات کے جوابات بڑی تفصیل کے ساتھ میری پوسٹ میں موجود ہیں۔اب اگر آپ کی عقل کام نہیں کرتی تو اس میں میرا کیا قصور ہے؟لہٰذا بار بار ان سوالات کودہرا کر آپ دھوکہ نہیں دے سکتے ۔
    [/quote]
     
  10. ‏ستمبر 07، 2013 #30
    متلاشی

    متلاشی رکن
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2012
    پیغامات:
    336
    موصول شکریہ جات:
    373
    تمغے کے پوائنٹ:
    92

    اس کا کام ہی یہی ہے۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں