1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

" Vatican exposed"

'زنا و فحاشی' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد المالكي, ‏ستمبر 27، 2017۔

  1. ‏ستمبر 27، 2017 #1
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    Pope Francis's top Vatican ally has just been charged with child sex abuse
    The Catholic priest sex abuse scandal has just made its way to the top of the Vatican.
    Pell would “return to Australia as soon as possible to clear his name.” Authorities have not yet released information about the alleged victims, but they are believed to have involved minors.

    Pell, one of the most powerful men in the Vatican, has been at the center of a media firestorm in recent years in his native Australia involving whether or not he, as archbishop of Melbourne, had been involved in covering up the abuses of others.

    Last year, before any accusations against him surfaced, Pell became involved in the wider scandal when he testified to an Australian commission on clerical child abuse. Speaking via video-link from Rome, he expressed regret for not having done more to protect victims of abuse. There, he came under fire for having inadequately responded to one case of confirmed abuse in his diocese, Ballarat, a district with one of the most checkered histories of sexual abuse, including a pedophile ring. (As archbishop of Sydney, Pell himself had been accused in 2002 of sexual misconduct involving an incident with a minor at a summer camp in 1961, but was cleared of all wrongdoing).


    Since late last year, renewed rumors have swirled of Pell’s own personal involvement in sexual abuse. Last year, investigators met with Pell in Rome to discuss a number of historical allegations. A collection of statements, including allegations that Pell had inappropriately touched children while swimming with them, was passed to prosecutors this February.

    And an Australian Senate motion called for Pell to return to give evidence to investigators (he later did so via video-link, citing ill-health). In May, a new book about Pell by journalist Louise Milligan came out, reporting allegations that Pell had himself abused a number of children on several occasions. Rumors have swarmed since then that charges were imminent, but they were only filed this morning.

    Pell is the most senior member of the Catholic Church to be involved in what has now been decades of scandal over systematic child abuse in the ‘60s, ’70s and early ‘80s, by Catholic clergy worldwide.

    The sex abuse scandal, which reached the public eye in the 1990s after a series of television documentaries, including 1994’s Suffer the Children, brought the issue to light in Ireland, has spread, with reports of widespread clerical abuse affecting thousands of children in dozens of countries, including the United States and Pell’s own Australia. One Australian study undertaken by a Royal Commission found that a full 7 percent of Australian priests were accused of child abuse between 1950 and 2009.

    Almost as damning as the allegations themselves have been the allegations of a Vatican cover-up. Several reports into the abuse have found that senior church officials rarely took action after allegations of abuse, systematically transferring accused offenders into different parishes, where they would continue to come into contact with children, rather than seeking legal recourse or punishment.


    Often, Vatican officials chose to see offenses in the religious category of sin — sexual misconduct caused by temptation, and to be addressed through prayer and repentance, with the focus on the abuser’s state of mind — rather than through the lens of crime or systematic abuse. As Thomas Reese puts it in the National Catholic Reporter, "It was thought that if the priest was moved away from ‘temptation’ to another parish, the problem would be solved. Instead, many priests found new children to victimize and abused again. In other words, the bishops responded pastorally to the priest but ignored the risk to children.”

    In practice, this led to a culture of enabling. In one of the most shocking revelations to come out of the Ireland cases, the Dublin archdiocese had in 1987 taken out an insurance policy to cover expected future compensation claims by victims.

    Ballarat, Australia, where Pell was an episcopal vicar for education between 1973 and 1984, was one of the worst hotbeds of abuse, with sexual abuse by both priests and nuns rife at St. Alipius Primary School, called “a pedophile’s paradise and a child’s nightmare” by Australian television.

    Pell’s accusations present a quandary for Pope Francis
    Many critical of both Pope John Paul II and Benedict XVI’s sluggish pace in addressing the issue were hopeful that Pope Francis would prove a far more fervent ally when it came to contending with the church’s legacy of sex abuse. And, in his initial years as pope, Francis seemed willing to address these concerns.

    In 2013, shortly after becoming pope, he announced the creation of a Vatican committee to fight sex abuse in the church, and in 2014 named eight people, including abuse survivor Marie Collins, to the committee. In April 2014, he also publicly apologized for the Vatican’s actions, breaking a trend of Vatican obfuscation as he said “It is personal, moral damage carried out by men of the Church." Francis insisted "the Church will not take one step backward" in dealing with this problem.” He also announced that any priest who had enabled abuse by moving an abuser to another parish should resign.


    But progress has been slow. The pope scrapped one of the main proposals of the Vatican’s committee — that bishops accused of covering up abuse be subject to a tribunal —after bishops objected. And earlier this year, Collins herself stepped down from the committee, citing the Vatican’s “shameful” resistance to redressing its wrongs. The final straw, she said, was the Vatican’s reluctance to comply with a recommendation that all correspondence from those identifying themselves as victims of abuse should receive a response.

    But the pope’s continued involvement with Cardinal Pellhas proved fodder for critics who say he is not doing enough to redress the Vatican’s wrongs.

    The arrest plunges into uncertainty another less-visible initiative toward reform in the Vatican: dealing with corruption in relation to the Vatican’s finances.

    The pope made Pell secretariat — essentially, the Vatican’s treasurer — in 2014, giving Pell a staggering amount of personal power as the pope also entrusted Pell with Vatican financial reform. As secretariat, Pell was tenacious to the point of abrasive in what he saw as rooting out corruption in the Vatican’s coffers, something critics saw as a sign of his desire to use his post to consolidate personal power. Since 2014, however, the pope seems to have cooled on Pell and has reduced the power of his office significantly. The murky nature of the Vatican’s finances, and the uncertain outcome of the reform scheme, render Pell’s position andhis relationship with the pope even more complicated.

    The pope and Pell have also seemingly fallen out over theological issues, with Pell — more vocally hardline on social issues than the pope — joining other cardinals in questioning the pope’s handling of a 2015 synod on the family, and verbally supporting those who sent formal doubts, or dubia, to the pope regarding potentially gay-friendly language in his 2016 encyclical Amoris Laetitia.

    At the same time, the pope refused to accept Pell’s mandatory resignation last year, after Pell’s first set of testimonies last year. (Cardinals must submit resignations on their 75th birthdays, which the pope is free to disregard.)

    But as scandal has hit Pell himself, the Pope has expressed unwillingness to condemn his onetime ally before the facts were ascertained. Last year, he told journalists asking about his continued support of Pell in light of the allegations: "We have to wait for justice and not first make a mediatic judgment — a judgment of gossip — because that won't help, he said. "Once justice has spoken, I will speak.”

    But if and when justice does speak, it’s unclear what the pope will say — or whether what he says will have any meaningful effect.
     
  2. ‏ستمبر 27، 2017 #2
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    لوطی قوم exposed.

    چرچ کے کوائر میں بچوں کے ساتھ زیادتی
    جرمنی سے تعلق رکھنے والے اور دنیا بھر میں مشہور ریگنز بُرگ شہر کے چرچ چلڈرن کوائر کے سینکڑوں بچوں کو برسوں تک جنسی استحصال کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ ایک تازہ رپورٹ میں ایسے اور بھی کئی انکشافات کیے گئے ہیں۔
    [​IMG]
    ایک آزاد اور غیر جانبدار خصوصی تفتیش کار الُرش ویبر نے اپنی ایک رپورٹ میں کئی دہائیوں تک جنسی زیادتیوں کے مجموعی طور پر ایسے 547 واقعات کا ذکر کیا ہے۔ ویبر اور ان کی ٹیم نے اپنی 4500 صفحات پر مشتمل رپورٹ میں ان انچاس مشتبہ ملزمان کے بارے میں چھان بین کے نتائج بھی شامل کیے ہیں، جو ان واقعات کے مبینہ مجرموں میں شامل تھے۔ یہ تفتیشی رپورٹ ریگنزبُرگ کے بشپ کے دفتر کے ایماء پر مکمل کی گئی۔

    [​IMG]
    ریگنزبرگر چرچ کوائر کا شمار دنیا کے قدیم ترین اور معروف ترین لڑکوں کے کوائر میں ہوتا ہے۔ اس میں موسیقی کی ایک تربیت گاہ، ایک پرائمری اسکول ، ایک بورڈنگ اور بچوں کی دن بھر دیکھ بھال کرنے والا ایک ادارہ بھی شامل ہے۔ آج کل یہاں پر 3200 کے قریب طلبہ ہیں، جن میں سے نصف بورڈنگ میں رہتے ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ تقریباً ایک ہزار سال قبل وولف گانگ نامی بشپ نے اسے قائم کیا تھا اور ان کا مقصد موسیقی پر توجہ دینا تھا۔

    D.w Germany
    thanks to the . جاری ہے
     
    • معلوماتی معلوماتی x 2
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  3. ‏ستمبر 27، 2017 #3
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,351
    موصول شکریہ جات:
    1,078
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    جناب عالی!
    اردو فورم ہے یہ.
     
    • متفق متفق x 1
    • غیرمتعلق غیرمتعلق x 1
    • لسٹ
  4. ‏ستمبر 27، 2017 #4
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    ماضي قریب ٢٠١٢ میں
    《the Guardians newspaper》

    کے سابقہ جرمن صحافی
    (Eric Addams investigative journalist)

    کی مرتب کردا رپورٹ جو کے یورپ سمیت چند ایک عرب ممالک کے اخبارات اور electronic media
    میں بھی شائع ہوی تھی

    جیسے کے -

    (The Guardians)

    (LA Times)

    (USA today)

    (The Washington Post)

    (Eram news)

    (Non stop news paper)

    (Khaleej Times)

    (The Indian Express)

    (The Telegraph (UK)

    (The Indiana times (USA)

    (Emirates today)

    (Sunday News UK)
    کو انگلستان کی حکومت نے
    جھوٹی خبر قرار دے اخبار پر پابندی لگا دی تھی.

    رپورٹ میں جو انکشافات سامنے آئے ہیں وہ نہایت خوفناک ہیں اور دل دہلا دینے والے ہیں
    رپورٹ کے ابتدائی صفحات پر ان
    (نوعمر teenager's) کا ذکر ہے
    جو (ذہنی یا جسمانی) طور پر معذور تهے کی تعداد سن 1967-تا-2000ء

    تک بارہ ہزار سات سو اسی 12780

    (معذور بچوں کی ہے جو Bishop archbishop fathers آرچ پیشپ پیشپ یا فادر کے ہاتھوں جنسی زیادتی کا نشانہ بننے)

    یہ تعداد تو صرف معذور بچوں کی ہے رپورٹ میں بتایا گیا ہے. جاری ہے


    "تحریر" محمد المالکی
     
  5. ‏ستمبر 27، 2017 #5
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    ویٹیکن سٹی، بچوں سے جنسی زیادتی کرنیوالے848پادری برطرف
    By: Samaa Web Desk



    [​IMG]
    اسٹاف رپورٹ
    ویٹیکن سٹی : ویٹیکن سٹی میں دس سال کے دوران بچوں سے جنسی زیادتی پر آٹھ سو اڑتالیس پادریوں کو برطرف کردیا گیا۔

    ویٹی کن کے اقوام متحدہ میں سفیر نے جنیوا میں انسداد تشدد کمیٹی کے روبرو بتایا کہ دوہزار چار سے دو ہزار تیرہ کے دوران تقریباً ساڑھے تین ہزار پادریوں پر بچوں سے زیادتی کے الزامات لگے۔ آٹھ سو اڑتالیس کو ہٹایا گیا، جب کہ سیکڑوں پادریوں کو مختلف سزائیں دی گئیں۔ سفیر نے اعتراف کیا کہ رومن کیتھولک چرچ ماضی میں پادریوں کی حرکتوں پر پردہ ڈالتا رہا، لیکن اب ایسا نہیں ہوگا۔



    بشکریہ. سماء نیوز

    جاری رہے گا میرا مشن ان لوطی قوم کو اكسبوزد کرنے کا ...
     
  6. ‏ستمبر 29، 2017 #6
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,764
    موصول شکریہ جات:
    8,333
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    فورم پر جانداروں کی تصویریں لگانا منع ہے ۔
     
  7. ‏ستمبر 29، 2017 #7
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    ان شاء الله
    آئندہ سے خیال رہے گا
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  8. ‏ستمبر 30، 2017 #8
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    یا اللہ ہمارے بچوں کی حفاظت فرما ان خبیث لوطی قوم سے جو آئے دن ان معصوم بچوں کو اپنی جنسی درندگی کے لئے استعمال کرتے ہیں -


    پولینڈ: بچوں سے جنسی زیادتیاں،


    کیتھولک چرچ کی معذرت

    یورپی ملک پولینڈ کے طاقتور کیتھولک چرچ نے کلیسائی اہلکاروں کی طرف سے بچوں سے جنسی زیادتی کے واقعات پر ایک بڑی تقریب میں کھل کر معافی مانگ لی۔ یہ معافی ایسے جرائم کی روک تھام کے موضوع پر ایک کانفرنس کے موقع پر مانگی گئی۔


    پولینڈ کے جنوبی شہر کراکاؤ میں منعقدہ ایک غیر معمولی تقریب میں اس معذرت کے موقع پر پولستانی کلیسا کے کئی اعلیٰ ترین اہلکار اور ماضی میں مذہبی شخصیات کے ہاتھوں جنسی زیادتیوں کا نشانہ بننے والے بہت سے افراد بھی موجود تھے۔ اس موقع پر تقریب کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے بشپ Piotr Libera نے کہا، ’’احساس جرم پر افسردگی اور شرمندگی کے ساتھ ہم خدا سے اور پادریوں کی زیادتیوں کا نشانہ بننے والے افراد سے معافی کی درخواست کرتے ہیں۔‘‘

    کراکاؤ سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق Jesuit پادری پرُوساک نے اس موقع پر نیوز ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ زیادہ تر کیتھولک مسیحی آبادی والے ملک پولینڈ میں کلیسائی رہنما ماضی میں مختلف پریس کانفرنسوں میں بچوں سے جنسی زیادتیوں کے واقعات پر معذرت کر چکے ہیں تاہم ایسی کسی سنجیدہ مذہبی تقریب میں اور اس طرح کلیسا کی طرف سے پہلے کبھی معافی نہیں مانگی گئی تھی۔

    پولینڈ میں کلیسائی شخصیات کی طرف سے بچوں سے جنسی زیادتیوں کے واقعات طویل عرصے تک ایک ممنوعہ موضوع رہے ہیں۔ اس حوالے سے باقاعدہ معافی جس تقریب میں مانگی گئی، وہ ایک ایسی دو روزہ کانفرنس کا حصہ تھی، جس کا مقصد کلیسائی شخصیات کی طرف سے جنسی زیادتیوں کے واقعات کی روک تھام تھا۔ اس کانفرنس میں ایسی زیادتیوں کا نشانہ بننے والے کئی متاثرین کے ساتھ ساتھ بیرون ملک سے متعدد ماہرین بھی شریک ہوئے۔

    پولستانی بشپس کانفرنس کے نوجوانوں سے متعلقہ امور کے کوآرڈینیٹر فادر ایڈم زاک نے اس موقع پر کہا کہ کلیسائی شخصیات کی طرف سے بچوں سے جنسی زیادتیوں کے واقعات پر معذرت اور ان کے تدارک کی کوششوں کے حوالے سے امریکا اور آئرلینڈ کے مقابلے میں پولینڈ ابھی ’اپنے راستے کے شروع میں‘ ہے۔

    پولینڈ کے چرچ میں بہت سرکردہ شخصیات کے حوالے سے گزشتہ مہینوں کے دوران کئی ایسے واقعات سامنے آئے تھے، جنہوں نے پولستانی قوم کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔ انہی میں سے ایک واقعہ آرچ بشپ جوزف ویسولوفسکی کی ذات سے متعلق تھا۔ ان پر الزام ہے کہ ڈومینیکن ریپبلک میں پاپائے روم کے مندوب کے طور پر فرائض کی انجام دہی کے دوران وہ لڑکوں کے ساتھ جنسی رابطوں کے مرتکب ہوئے تھے۔

    پولستانی کلیسا کی قیادت یہ فیصلہ کر چکی ہے کہ وہ ماضی میں ایسی زیادتیوں کا نشانہ بننے والے افراد کو مالی ازالے کے طور پر کوئی رقوم ادا نہیں کرے گی، چاہے اسے ایسی ادائیگیوں کے لیے سول مقدمات کا سامنا ہی کیوں نہ کرنا پڑے۔ اسی دوران لیکن پولش چرچ کے خلاف ایسا پہلا مقدمہ دائر بھی کیا جا چکا ہے۔

    یہ سول مقدمہ ایک ایسے 25 سالہ شخص نے دائر کیا ہے جسے کم عمری میں جنسی بدسلوکی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ Marcin K نامی اس شخص نے ازالے کے طور پر دو لاکھ زلوٹی یا قریب 65 ہزار امریکی ڈالر کے برابر ادائیگی کا مطالبہ کیا ہے۔ کلیسائی شخصیات کی طرف سے جنسی زیادتیوں کا نشانہ بننے والے متاثرین کی فاؤنڈیشن کے سربراہ ماریک لیسِنسکی کا کہنا ہے، ’’یہ اپنی نوعیت کا پہلا سول مقدمہ ہے۔ ایسے مزید کئی مقدمے دائر کیے جائیں گے۔‘‘
    All rights goes to a PF news under section 104 "ترجمہ محمد المالکی".

    جاری رہے گا میرا مشن ان لوطی قوم کو exposed کرنے کا ان شاء الله
     
  9. ‏اکتوبر 09، 2017 #9
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    امریکی فوج بھی اس لوطی نکلی..!



    all rights go to the order under section of 102/ 32

    ئن کارپوریشن میں بچوں سے زیادتی اور اسمگلنگ کی سرگرمیوں کاانکشاف خوداُسی کے ایک ملازم بین جانسٹن نے کیا
    افغانستان میں پارٹیوں اور تقریبات کے بعد لڑکوں اور کمسن لڑکیوں کو ہوٹل لے جاکر جنسی زیادتیوںکا نشانا بنایا جاتا تھا
    سین عدل طباطباعی
    امریکا میں اعلیٰ اور مقتدر شخصیات کے جنسی جرائم کی تفتیش کرنے والے ادارے میں ایک اعلیٰ فوجی جنرل کو کمسن بچوں سے جنسی زیادتی کے الزام میں گرفتار کرلیا گیاہے۔امریکی ذرائع کے مطابق ڈائین کارپورریشن کے سابق نائب صدر میجر جنرل جیمز گریزیوپلین کو 1983 سے1989 کے دوران متعدد بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے الزام میں گرفتار کیاگیاہے۔جنرل گریزیوپلین کی گرفتاری کوامریکا میں جنسی زیادتی میں ملوث اعلیٰ اور مقتدر شخصیات کے خلاف جاری تازہ ترین مہم کے دوران میں سب سے زیادہ بااثر شخص کی گرفتاری تصور کیاجارہاہے۔
    امریکی فوج کی جانب سے جنرل گریزیوپلن پر لگائے گئے الزامات کی تفصیلات ابھی تک جاری نہیں کی گئی ہیں کہ انھیں ان کے جنسی جرائم کے اتنے طویل عرصے کے بعد کس طرح گرفتار کیااور وہ کس انداز اور کس حیثیت میں ان جنسی جرائم میں ملوث ہوئے تھے۔ نیویارک کے اخبار ڈیلی نیوز نے امریکی جنرل گریزیوپلن کی گرفتاری کی خبر دیتے ہوئے لکھاہے کہ گریزیوپلن کاتعلق ریاست ورجینیا سے ہے انھوںنے امریکی فوجی اکیڈمی ویسٹ پوائنٹ نیویارک سے گریجویشن کیا اور 1972 میں آرمر افسر کی حیثیت سے فوج میں شامل ہوئے اور2005 میں فوج سے ریٹائر ہوگئے ،ریٹائرمنٹ کے وقت وہ پنٹا گون کے’’ جوائنٹ وار فائٹنگ کیپے بلیٹیز اسیسمنٹ ‘‘ یعنی مشترکہ جنگ کی صلاحیتوں کا تجزیہ کرنے اور اندازہ لگانے والے شعبے میں فورس ڈیولپمنٹ کے ڈائریکٹر کی حیثیت سے فرائض انجام دے رہے تھے۔
    گریز یوپلن کے لنک پیچ سے ظاہرہوتاہے کہ فوج سے ریٹائرمنٹ کے بعد انھوں نے فوجی ٹھیکیدار اداروں ڈائین کارپوریشن انٹرنیشنل اور مشن ریڈی نس ایل ایل سی میں بھی خدمات انجام دیں ۔ یہ ایک اتفاق ہی تھا کہ جب گریزیوپلن نے ڈائین کارپوریشن میں ملازمت اختیار کی تو اس وقت ان کے اس فیصلے پر بہت انگلیاں اٹھی تھیں کیونکہ اس دورمیں ڈائین کارپوریشن مختلف طرح کے اسکینڈلز کی لپیٹ میں تھا جس میں بچوں کے جنسی استحصال، جنسی زیادتی کے لئے بچوں کو دوسروں کے حوالے کرنا اورامریکا کے سابق صدر بل کلنٹن کے دورمیں جنسی مقاصد کے لیے استعمال کرنے کی خاطر بوسنیا سے بچوں کی اسمگلنگ کے الزامات شامل تھے۔
    ڈائن کارپوریشن میں بچوں سے زیادتی اور ان کی اسمگلنگ کے حوالے سے سرگرمیوں کاانکشاف کارپوریشن کے ایک سابق ملازم بین جانسٹن نے بوسنیا کے تنازع کے دوران کارپوریشن کے ملازمین کی جانب سے کارپوریشن میں حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کی اطلاعات باہر پہنچانے کے الزام میں برطرف کیے جانے کے بعد کارپوریشن کے خلاف دائر کیے گئے مقدمے کے دوران کیاتھا۔
    2002 میں جانسٹن نے اپنی رپورٹ بعنوان ‘‘ڈائین کارپوریشن کی بدعملیاں‘‘ میں لکھاتھا کہ ڈائین کارپوریشن اور سربیا مافیاکی جانب سے لائی جانے والی کوئی لڑکی جنسی زیادتی سے محفوظ نہیں رہی تھی۔اس دور میں ڈائین کارپوریشن کی قیادت مکمل طورپر مافیا کے زیر اثر تھی اور کارپوریشن کے ملازم کہتے تھے کہ اس اختتام ہفتہ ہم سربیا سے مزید تین لڑکیاں لے کر آئیں گے۔
    سالون کی ایک رپورٹ میں جانسٹن کے چشم دید واقعات کی مزید تفصیلات دی گئی ہیں، ان میں بتایاگیا ہے کہ جانسٹن نے بتایا کہ یہ سن 2000 کے اوائل کی بات ہے کہ ایک دن میں بوسنیا میں تزلہ کے قریب واقع امریکی فوجی اڈے پر تعینات اپنے ساتھ ہیلی کاپٹر میکنک کی باتیں سن کر پریشان ہوگیا ۔وہ کہہ رہاتھا کہ میں جو لڑکی لایاہوں اس کی عمر 12 سال سے ایک دن بھی زیادہ نہیں ہے، یہ سن کر میرے رونگٹے کھڑے ہوگئے کہ اس نے 12 سالہ بچی کو جنسی غلام بنالیاہے یہ سننے کے بعد میں نے فیصلہ کرلیا کہ اس کے خلاف مجھے کچھ کرنا چاہئے ،کیونکہ اب اس کاروبار میں کمسن بچوں کو گھسیٹا جارہاتھا ۔جانسٹن کا کہنا ہے کہ میری چلائی ہوئی مہم کے نتیجے میں بوسنیا میں تعینات ڈائین کارپوریشن کے کم از کم 13ملازمین کو لڑکیوں اور خواتین کی خریدوفروخت عصمت دری اوراس سے متعلق دوسرے غیر اخلاقی اور غیر قانونی کاموں میں ملوث ہونے کے الزام میں بوسنیا سے واپس امریکا بھیجاگیالیکن وافر ثبوت موجود ہونے کے باوجود ڈائین کارپوریشن کی جانب سے امریکا واپس بھیجے گئے کسی بھی ملازم کے خلاف مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے الزام میں کوئی مقدمہ نہیں چلایاگیا۔
    ڈائین کارپوریشن کے ملازمین کی جانب سے سرکاری سرپرستی میں بچوں کے ساتھ جنسی زیادتیوں کے الزامات کی گونج ایوان بالا تک پہنچ چکی تھی جس کا اندازہ اس طرح لگایاجاسکتاہے کہ 2006 میں محکمہ کے دفاعی بجٹ کی سماعت کے دوران جارجیا سے تعلق رکھنے والی خاتون رکن کانگریس سنتھیا مک کین نے اس کے وزیر دفاع ڈونلڈ رمسفیلڈ سے اس بارے میں سولات کیے تھے ۔
    وزیردفاع سے ان کاپہلا سوال یہ تھا کہ جناب اعلیٰ کیا خواتین اور کمسن لڑکیوں کی اسمگلنگ اور ان کے ساتھ جنسی زیادتی میں ملوث کمپنیوں کو انعامات سے نوازنا امریکی حکومت کی پالیسی ہے ۔ان سخت سوالات کے بعد ڈائین کارپوریشن کا اصل چہرہ کھل کر سامنے آیا لیکن حکومت متعدد ای میلز بھیجے جانے کے باوجود جو وکی لیکس اور چیرل ملز کے درمیان ای میلز کے تبادلے کے حوالے سے سامنے آنے والے انکشافات اور پھر وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کو بھیجی گئی ای میلز کے سامنے آنے کے باوجود اپنے ملازمین کی جانب سے جنسی زیادتیوںکی روک تھام کے لیے مناسب قانون سازی نہیں کرسکی جس کی وجہ سے ڈائین کارپوریشن بھی امریکی حکومت کے ساتھ پہلے کی طرح کاروبار میں مصروف ہے اور خوب منافع کمارہی ہے۔
    ان میں سے ایک ای میل میں واشنگٹن پوسٹ میں شائع ہونے والے ایک مضمون کاحوالہ دیاگیاتھا جس میں انکشاف کیاگیاتھا کہ ڈائین کارپوریشن نے کس طرح ’’ لیپ ڈانس‘‘ کیلئے ایک 15 سالہ لڑکے کی خدمات حاصل کیں اور لڑکے کو اپنے کپڑے مکمل طورپر اتارنے پر مجبور کرنے کے لیے ڈائین کارپوریشن کے ملازمین نے کس طرح اس پر ڈالر نچھاور کیے۔وکی لیکس نے جو انکشافات کیے ہیں اس میں یہ بھی شامل ہے کہ کس طرح صحافیوں کو یہ خبریں شائع کرنے سے روکنے کے لیے ایک بچے کی خدمات حاصل کی گئیں اور یہ تاثر دیاگیا کہ اس طرح کی خبروں کی اشاعت سے بہت سے جانوں کو خطرات لاحق ہوجائیں گے۔
    اگرچہ ہلیری کلنٹن اور ملز کے درمیان ای میلز کے تبادلے کے دوران کسی طرح کی جنسی زیادتی کاذکر نہیں ہے لیکن افغانستان میں روایتی ہم جنس پرستی کی اطلاعات میں عصمت دری، کمسن لڑکوں کے ساتھ جنسی زیادتی اور کمسن لڑکوں اور لڑکیوں کی باقاعدہ نیلامی کی خبروں پر بھی امریکی حکومت نے کوئی توجہ دینے کی زحمت گوارا نہیں کی۔اس حوالے سے سب سے زیادہ پریشان کن بات یہ ہے کہ پارٹیوں اور تقریبات کے بعد لڑکوں اور کمسن لڑکیوں کو ہوٹل لے جایاجاتاتھا اور وہاں ان کوجنسی زیادتیوںکا نشانابنایاجاتاتھا۔بی بی سی نے بھی افغانستان سے اس طرح کے واقعات کی رپورٹیں دی تھیں اور ان رپورٹوں میں کہاگیاتھا کہ اس قبیہہ فعل میں امریکا اور افغانستان کے انتہائی بااثر افراد اور افسران ملوث رہے ہیں۔
    ان تمام قابل نفرت اور مذمت سرگرمیوں کے باوجود ڈائین کارپوریشن کو بدستور امریکی ٹھیکے دئے جاتے رہے اور دسمبر 2016 میں امریکی بحریہ نے ڈائین کارپوریشن کوانسانی بنیادوں پر امداد کی فراہمی ، بنیادی شہری سہولتوں کی فراہمی ،ہنگامی ضرورت کیلئے فوج کیلئے چھوٹی موٹی تعمیرات اور امریکی فوجی مشقوں میں مدد کی فراہمی جیسے خدمات کی انجام دہی کیلئے94 ملین ڈالر مالیت کا ایک ٹھیکہ دینے کے ڈاکومنٹس پر دستخط کئے تھے۔ اس صورت حال پر ہمیں امریکی خاتون رکن کانگریس سنتھیا مک کن نے کی جانب سے امریکی وزیر دفاع رمسفیلڈسے کیا گیا وہ سوال یاد آتاہے کہ کیا جنسی جرائم میں ملوث کمپنیوں کو نوازنا امریکی حکومت کی پالیسی کاحصہ ہے ۔ اگر ایسانہیں ہے تو بھی ان کمپنیوں کو مسلسل ایسے ٹھیکے کیوں دیے جارہے ہیں

    جاری ہے
     
  10. ‏جنوری 06، 2018 #10
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    انشاءاللہ سلسلہ جاری ہے! اس گندی ، رذیل ، وخبیث قوم کو ایکسپوز کرنے کا۔
     

اس صفحے کو مشتہر کریں