• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

«لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» اور «وَنُصِرْتُ وَنُصِرْتُ» روایت کی تحقیق

Abdul Mussavir

مبتدی
شمولیت
ستمبر 22، 2017
پیغامات
30
ری ایکشن اسکور
4
پوائنٹ
25
السلام علیکم شیوخ و طلبا اس روایت کی تحقیق بتائیں؛

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ التُّسْتَرِيُّ، ثنا يَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ نَضْلَةَ الْمَدِينِيُّ، ثنا عَمِّي مُحَمَّدُ بْنُ نَضْلَةَ، عَنْ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، قَالَ: حَدَّثَتْنِي مَيْمُونَةُ بِنْتُ الْحَارِثِ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَاتَ عِنْدَهَا فِي لَيْلَتِهَا، ثُمَّ قَامَ يَتَوَضَّأُ لِلصَّلَاةِ فَسَمِعَتْهُ يَقُولُ فِي مُتَوَضَّئِهِ: «لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» ، ثَلَاثًا، «وَنُصِرْتُ وَنُصِرْتُ» ، ثَلَاثًا، قَالَتْ: فَلَمَّا خَرَجَ قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللهِ بِأَبِي أَنْتَ سَمِعْتُكَ تَقُولُ فِي مُتَوَضَّئِكَ «لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» ، ثَلَاثًا، «وَنُصِرْتُ نُصِرْتُ» ، ثَلَاثًا، كَأَنَّكَ تُكَلِّمُ إِنْسَانًا فَهَلْ [ص:434] كَانَ مَعَكَ أَحَدٌ؟ قَالَ: «هَذَا رَاجِزُ بَنِي كَعْبٍ يَسْتَصْرِخُنُي، وَيَزْعُمُ أَنَّ قُرَيْشًا أَعَانَتْ عَلَيْهِمْ بَنِي بَكْرٍ» ، ثُمَّ خَرَجَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَمَرَ عَائِشَةَ أَنْ تُجَهِّزَهُ وَلَا تُعْلِمُ أَحَدًا، قَالَتْ: فَدَخَلَ عَلَيْهَا أَبُوهَا فَقَالَ: يَا بُنَيَّةُ مَا هَذَا الْجِهَازُ؟ قَالَتْ: وَاللهِ مَا أَدْرِي، قَالَ: مَا هَذَا بِزَمَانِ غَزْوِ بَنِي الْأَصْفَرِ فَأَيْنَ يُرِيدُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ؟ قَالَتْ: لَا عِلْمَ لِي، قَالَتْ: فَأَقَمْنَا ثَلَاثًا، ثُمَّ صَلَّى الصُّبْحَ بِالنَّاسِ فَسَمِعْتُ الرَّاجِزَ يَنْشُدُهُ:
[البحر الرجز]
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ حدیث المعجم الکبیر 23-434کی ہے؛
 
Last edited by a moderator:

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,471
پوائنٹ
791
السلام علیکم شیوخ و طلبا اس روایت کی تحقیق بتائیں؛

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ التُّسْتَرِيُّ، ثنا يَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ نَضْلَةَ الْمَدِينِيُّ، ثنا عَمِّي مُحَمَّدُ بْنُ نَضْلَةَ، عَنْ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، قَالَ: حَدَّثَتْنِي مَيْمُونَةُ بِنْتُ الْحَارِثِ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَاتَ عِنْدَهَا فِي لَيْلَتِهَا، ثُمَّ قَامَ يَتَوَضَّأُ لِلصَّلَاةِ فَسَمِعَتْهُ يَقُولُ فِي مُتَوَضَّئِهِ: «لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» ، ثَلَاثًا، «وَنُصِرْتُ وَنُصِرْتُ»
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ
یہ حدیث امام طبرانیؒ کی "المعجم الکبیر 23-433" اور المعجم الصغیر 968 " میں مروی ہے ،
اسناد کے لحاظ سے یہ روایت ضعیف ہے ،کیونکہ :
اس کاایک راوی یحیی بن سلیمان بن نضلہ ضعیف ہے ،امام ہیثمی ؒ فرماتے ہیں:
قال الهيثمي " وفيه يحيى بن سليمان بن نضلة وهو ضعيف "(مجمع الزوائد - 164 / 6)
امام ابن عدیؒ فرماتے ہیں :
يَحْيى بن سليمان بن نضلة المديني.
حَدَّثَنَا أحمد بن مُحَمد بن سَعِيد، قَالَ: سَمِعْتُ عَبد الرَّحْمَنِ بْنَ خِرَاشٍ يقول يَحْيى بن سليمان بن نضلة لا يسوى فلسا.
(الکامل فی ضعفاء الرجال )​
یعنی يحيى بن سليمان بن نضلة " روایت حدیث میں ایک کوڑی کا بھی نہیں "
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Abdul Mussavir

مبتدی
شمولیت
ستمبر 22، 2017
پیغامات
30
ری ایکشن اسکور
4
پوائنٹ
25
Jazakallah khaira shaikh
شیخ اسکی سند میں ایک راوی محمد بین نضلہ ہے کیا اُنکا ترجمہ میل سکتا ہے؟
 

عامر عدنان

مشہور رکن
شمولیت
جون 22، 2015
پیغامات
916
ری ایکشن اسکور
254
پوائنٹ
142
اس کاایک راوی یحیی بن سلیمان بن نضلہ ضعیف ہے
السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ
شیخ محترم اس متعلق وضاحت کر دیں ۔
جزاک اللہ خیراً

PicsArt_09-20-03.14.19.jpg

[ مجلہ السنہ شمارہ 43،44،45 ص 140]
 

عامر عدنان

مشہور رکن
شمولیت
جون 22، 2015
پیغامات
916
ری ایکشن اسکور
254
پوائنٹ
142
حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ التُّسْتَرِيُّ، ثنا يَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ نَضْلَةَ الْمَدِينِيُّ، ثنا عَمِّي مُحَمَّدُ بْنُ نَضْلَةَ، عَنْ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، قَالَ: حَدَّثَتْنِي مَيْمُونَةُ بِنْتُ الْحَارِثِ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَاتَ عِنْدَهَا فِي لَيْلَتِهَا، ثُمَّ قَامَ يَتَوَضَّأُ لِلصَّلَاةِ فَسَمِعَتْهُ يَقُولُ فِي مُتَوَضَّئِهِ: «لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» ، ثَلَاثًا، «وَنُصِرْتُ وَنُصِرْتُ» ، ثَلَاثًا، قَالَتْ: فَلَمَّا خَرَجَ قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللهِ بِأَبِي أَنْتَ سَمِعْتُكَ تَقُولُ فِي مُتَوَضَّئِكَ «لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ» ، ثَلَاثًا، «وَنُصِرْتُ نُصِرْتُ» ، ثَلَاثًا، كَأَنَّكَ تُكَلِّمُ إِنْسَانًا فَهَلْ [ص:434] كَانَ مَعَكَ أَحَدٌ؟ قَالَ: «هَذَا رَاجِزُ بَنِي كَعْبٍ يَسْتَصْرِخُنُي، وَيَزْعُمُ أَنَّ قُرَيْشًا أَعَانَتْ عَلَيْهِمْ بَنِي بَكْرٍ» ، ثُمَّ خَرَجَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَمَرَ عَائِشَةَ أَنْ تُجَهِّزَهُ وَلَا تُعْلِمُ أَحَدًا، قَالَتْ: فَدَخَلَ عَلَيْهَا أَبُوهَا فَقَالَ: يَا بُنَيَّةُ مَا هَذَا الْجِهَازُ؟ قَالَتْ: وَاللهِ مَا أَدْرِي، قَالَ: مَا هَذَا بِزَمَانِ غَزْوِ بَنِي الْأَصْفَرِ فَأَيْنَ يُرِيدُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ؟ قَالَتْ: لَا عِلْمَ لِي، قَالَتْ: فَأَقَمْنَا ثَلَاثًا، ثُمَّ صَلَّى الصُّبْحَ بِالنَّاسِ فَسَمِعْتُ الرَّاجِزَ يَنْشُدُهُ:
[البحر الرجز]
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ حدیث المعجم الکبیر 23-434کی ہے؛
جب اس حدیث کا ضعف واضح ہو جاتا ہے تو بریلوی حضرات ایک دوسری روایت پیش کرتے ہیں اس متعلق ، جس میں محمد بن نضلہ نہیں ہیں، اور یہ باور کرانے کی کوشش کرتے ہیں کہ دیکھو یہ روایت میں محمد بن نضلہ نہیں ہے لہذا یہ روایت صحیح ہے ، وہ روایت یہ ہے ۔

http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?indexstartno=0&hflag=&pid=667371&bk_no=4092&startno=19

رقم الحديث: 19
(حديث مرفوع) حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ صَاعِدٍ , قثنايَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ نَضْلَةَ , عَنْ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ , عَنْأَبِيهِ , عَنْ جَدِّهِ , عَنْ مَيْمُوَنَةَ بِنْتِ الْحَارِثِ , زَوْجِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , بَاتَ عِنْدَهَا فِي لَيْلَتِهَا ثُمَّ قَامَ فَتَوَضَّأَ لِلصَّلاةِ فَسَمِعَتْهُ , يَقُولُ : " لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ ثَلاثًا , أَوْ نُصِرْتَ نُصِرْتَ ثَلاثًا . قَالَ : فَلَمَّا خَرَجَ مِنْ مُتَوَضَّئِهِ , قُلْتُ : يَا رَسُولَ اللَّهِ بِأَبِي أَنْتَ وَأُمِّي سَمِعْتُكَ تُكَلِّمُ إِنْسَانًا فَهْلَ كَانَ مَعَكَ أَحَدٌ ؟ قَالَ : " هَذَا رَاجِزُ بَنِي كَعْبٍ يَسْتَصْرِخُنِي وَيَزْعُمُ أَنَّ قُرَيْشًا أَعَانَتْ عَلَيْهِمْ بَنِي بَكْرٍ " . قَالَتْ : ثُمَّ خَرَجَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , فَأَمَرَ عَائِشَةَ أَنْ تُجَهِّزَهُ وَلا تُعْلِم بِهِ أَحَدًا , قَالَتْ : فَدَخَلَ عَلَيْهَا أَبُوهَا أَبُو بَكْرٍ , فَقَالَ : يَا بُنَيَّةُ مَا هَذَا الْجِهَازُ ؟ قَالَتْ : مَا أَدْرِي , وَقَالَ : مَا هَذَا زَمَانُ غَزْوِ بَنِي الأَصْفَرِ فَأَيْنَ يُرِيدُ ؟ قَالَتْ : لا عِلْمَ لِي , قَالَتْ : فَأَقَمْنَا ثَلاثًا ، ثُمَّ صَلَّى بِالنَّاسِ الصُّبْحَ فَسَمِعْتُ الرَّاجِزَ يُنْشِدُ : رَبِّ إِنِّي نَاشِدٌ مُحَمَّدَا حِلْفَ أَبِينَا وَأَبِيهِ الأَتْلَدَا إِنَّا وَلَدْنَاكَ فَكُنْتَ وَلَدَا ثَمَّتْ أَسْلَمْنَا وَلَمْ تَنْزِعْ أَبَدَا إِنَّ قُرَيْشًا أَخْلَفُوكَ الْمَوْعِدَا وَنَقَضُوا مِيثَاقَكَ الْمُؤَكَّدَا وَزَعَمُوا أَنْ لَسْتَ تَدْعُو أَحَدَا فَانْصُرْ هَدَاكَ اللَّهُ نَصْرًا أَيَّدَا وَادْعُ عِبَادَ اللَّهِ يَأْتُوا مَدَدَا فِيهِمْ رَسُولُ اللَّهِ قَدْ تَجَرَّدَا أَبْيَضُ كَالْبَدْرِ يُنْمِي صَعْدَا إِنْ سِيمَ خَسْفًا وَجْهُهُ تَرَبَّدَا فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " نُصِرْتَ نُصِرْتَ ثَلاثًا ، أَوْ لَبَّيْكَ لَبَّيْكَ ثَلاثًا " . فَخَرَجَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَلَمَّا كَانَ بِالرَّوْحَاءِ نَظَرَ إِلَى سَحَابٍ مُنْصَبٌّ , فَقَالَ : " إِنَّ هَذَا السَّحَابَ لَيَنْصَبُّ بِنَصْرِ بَنِي كَعْبٍ " . فَقَامَ إِلَيْهِ رَجُلٌ مِنْ بَنِي عَدِيِّ بْنِ عَمْرٍو إِخْوَةِ بَنِي كَعْبِ بْنِ عَمْرٍو , فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللَّهِ وَنَصْرُ بَنِي عَدِيٍّ , فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " تَرِبَ نَحْرُكَ وَهَلْ عَدِيٌّ إِلا كَعْبٌ وَكَعْبٌ إِلا عَدِيٌّ ؟ " فَاسْتُشْهِدَ ذَلِكَ الرَّجُلُ فِي ذَلِكَ السَّفَرِ , ثُمَّ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " اللَّهُمَّ عَمِّ عَلَيْهِمْ خَبَرَنَا حَتَّى نَأْخُذَهُمْ بَغْتَةً " . ثُمَّ خَرَجَ حَتَّى نَزَلَ بِمَرٍّ ، وَكَانَ أَبُو سُفْيَانَ ، وَحَكِيمُ بْنُ حِزَامٍ وَبَدِيلُ بْنُ وَرْقَاءَ خَرَجُوا تِلْكَ اللَّيْلَةَ حَتَّى أَشْرَفُوا عَلَى مَرٍّ فَنَظَرَ أَبُو سُفْيَانَ إِلَى النِّيرَانَ , فَقَالَ : يَا بُدَيْلُ لَقَدْ أَمْسَتْ نِيرَانُ بَنِي كَعْبٍ آهِلَةً , قَالَ : حَاشَتْهَا إِلَيْكَ الْحَرْبُ ، ثُمَّ هَبَطُوا فَأَخَذَتْهُمْ مُزَيْنَةُ تِلْكَ اللَّيْلَةَ ، وَكَانَتْ عَلَيْهِمُ الْحِرَاسَةُ ، فَسَأَلُوهُمْ أَنْ يَذْهَبُوا بِهِمْ إِلَى الْعَبَّاسِ بْنِ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ فَذَهَبُوا بِهِمْ ، فَسَأَلَهُ أَبُو سُفْيَانَ أَنْ يَسْتَأْمِنَ لَهُمْ فَخَرَجَ بِهِمْ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَسَأَلَهُ أَنْ يُؤَمِّنَ لَهُ مَنْ أَمَّنَ , فَقَالَ : قَدْ أَمَّنْتُ مَنْ أَمَّنْتَ مَا خَلا أَبَا سُفْيَانَ ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللَّهِ لا تَحْجُرْ عَلَيَّ , فَقَالَ : " مَنْ أَمَّنْتَ فَهُوَ آمِنٌ " . فَذَهَبَ الْعَبَّاسُ بِهِمْ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، ثُمَّ خَرَجَ بِهِمْ ، فَقَالَ أَبُو سُفْيَانَ : إِنَّا نُرِيدُ أَنْ نَذْهَبَ , فَقَالَ : أَسْفِرُوا , فَقَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَتَوَضَّأُ ، فَابْتَدَرَ الْمُسْلِمُونَ وَضُوءَهُ يَنْضَحُونَهُ فِي وُجُوهِهِمْ ، فَقَالَ أَبُو سُفْيَانَ : يَا أَبَا الْفَضْلِ لَقَدْ أَصْبَحَ مُلْكُ ابْنِ أَخِيكَ عَظِيمًا , فَقَالَ : إِنَّهُ لَيْسَ بِمُلْكٍ وَلَكِنَّهَا النُّبُوَّةُ فِي ذَلِكَ يَرْغَبُونَ " . [العاشر من الفوائد من حديث المخلص]

اسکین
received_2155543708058780.jpeg


عرض ہے یہ مجھے ناسخ کی غلطی یا پھر نسخہ کی اغلاط میں سے لگ رہی ہے کیونکہ اس مطبوع کتاب کی نقل سافٹ ویئر کی تحریری نسخہ سے کی گئی ہے اگر ایسا نہیں یہ سب ٹھیک ہے تو پھر یہ سند منقطع ہیں کیونکہیحیی بن سلیمان بن نضلہ کے چچا محمد بن نضلہ تھے یہ انھی کے واسطے سے محمد بن جعفر سے روایت بیان کرتے تھے یحیی بن سلیمان یہ دوسرے طبقہ کے راوی ہے اور جعفر بن محمد چھٹے طبقے کہ رواة میں سے ہیں اور دیگر سندوں میں ان دونوں کے مابین ایک راوی ہوا کرتا ہے جبکہ یہا ایسا نہیں۔

آپ دیکھئے ان تمام سندوں میں یحیی بن سلیمان بن نضلہ اور جعفر بن محمد کے مابین ایک واسطہ ہے اور وہ واسطہ محمد بن نضلہ ( یہ یحیی کا چچا) ہے اور روایت بھی وہی ہے اس کی مثال ملاحظہ ہو۔

پہلی مثال
حدثنا محمد بن عبد الله القرمطي من ولد عامر بن ربيعة ببغداد , حدثنا يحيى بن سليمان بن نضلة الخزاعي، حدثنا عمي محمد بن نضلة ، عن جده علي بن الحسين[ معجم الصغير الطبراني ج 2 ص 167 ]

دوسری مثال
حدثنا سعيد بن عبد الرحمن التستري، ثنا يحيى بن سليمان بن نضلة المديني، ثنا عمي محمد بن نضلة، عن جعفر بن محمد، عن أبيه،[معجم الکبیر للطبرانی ج 23 ص 433]

تیسری مثال
امام ابن حجر رحمہ اللہ نے امام ابو طاہر رحمہ اللہ کی کتاب سے نقل کیا ، حدثنا يحيى بن سليمان بن نضلة، حدثني ، عمي محمد عن جعفر بن محمد، عن أبيه.[الاصابة في تميز الصحابة ج 4 ص 522]

ان تمام دلائل سے معلوم ہوتا ہے کی اس سند میں انقطاع ہے اور پھر اگر بالفرض یہ بھی تسلیم کرلیا جائے کی وہ سند متصل بھی ہے پھر بھی یہ روایت مردود ٹھیرتی ہے کیونکہ یحیی کے کئی شاگردوں نے اس روایت کو اس واسطہ کے ساتھ ہی نقل کیا ہے یعنی ایک جماعت نے اسے اسی طرح روایت کیا ہے یعنی جماعت کی مخالفت کی بنیاد پر بھی روایت مردود ٹھیرے گی اگر اس بات کو تسلیم کرلیا جائے کی اتصال یہاں ہے تب۔

تحریر : محبوب انصاری طالب علم ممبئی
 
Top