• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اہل حدیث مناظر طالب الرحمن شاہ حفظہ اللہ سابقہ شیعہ یا سابقہ حنفی

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
اہل حدیث مناظر طالب الرحمن شاہ حفظہ اللہ

سابقہ شیعہ یا سابقہ حنفی​

باطل پرست حضرات جب اہل حدیث کے خلاف پیش کرنے اور اپنی عوام کو دکھانے کے لئے کچھ نہیں پاتے ، تو بے بنیاد اور مضحکہ خیز الزامات پر اتر آتے ہیں۔ زیر نظر مسئلہ بھی آل تقلید کی اسی بے بسی اور دلائل سے تہی دامن ہونے پرمنہ بولتا ثبوت ہے۔آل تقلید کی جانب سے اہل حدیث کے خلاف بہت سے الزامات کے ساتھ ایک الزام یہ بھی لگایا جاتا ہے کہ جماعت اہل حدیث کے مایہ ناز اور قابل فخر مناظر طالب الرحمن شاہ حفظہ اللہ سابقہ شیعہ تھے۔دیوبندی اور بریلوی دونوں اس مسئلہ کو بڑی شدومد کے ساتھ پیش کرتے ہیں۔بیچارے نام نہاد حنفی ،دیوبندی اور بریلوی جماعت حقہ کے خلاف دلائل کی کمی کو ایسے بودے اور لایعنی الزامات کے ذریعے پوری کرنے کی ناکام کوشش کرتے ہیں جو سرے سے الزامات ہی نہیں بنتے۔اس سے معلوم ہوتا ہے کہ انکا سینہ بغض اہل حدیث سے کتنابھرا ہوا ہے کہ اہل حدیث جماعت کو بدنام کرنے کے لئے انواع و اقسام کے جھوٹ بولتے اور ہر قسم کے اوچھے اور ناجائز ہتھکنڈوں سے کام لیتے ہیں۔اہل حدیث سے بغض رکھنے اور انکے خلاف جھوٹے الزامات کی بارش سے اہل حدیث کا تو کچھ نہیں بگڑتا لیکن تقلیدیوں کی نامہ اعمال کی سیاہی میں ضرور اضافہ ہوجاتا ہے۔

اگر کوئی شخص اپنے سابقہ حالات سے تائیب ہوجائے تو کیا اسکے باوجود بھی اس کا ماضی اسکے لئے باعث طعن ہوتا ہے؟ ابوحنیفہ مجوسی النسل تھے انکے خاندان میں سب سے پہلے انکے دادا اسلام لائے تو اگر ہم مقلدوں کی طرح ان کے ماضی کا حوالہ دیتے ہوئے ابوحنیفہ کے نام کے ساتھ سابقہ مجوسی النسل لکھیں تو کیسا ہے؟ مقلدوں کو تو یہ عمل ناگوار نہیں ہونا چاہیے کہ خود انکااپنا طرز عمل بھی یہی ہے۔ لیکن کیا کریں کہ ہمیں یہ گوارا نہیں ہے کہ یہ گھٹیا لوگوں کی حرکت ہے جو مقلدوں ہی کو زیبا دیتی ہے۔

تقلیدیوں کے اس گھٹیا پن پر اترآنے کی وجہ یہ ہے کہ آئے روزبریلویوں اور دیوبندیوں کی اچھی خاصی تعداد مسلک حقہ یعنی اہل حدیث مسلک کو اختیار کر لیتی ہے جس میں الحمداللہ انکے علماء بھی شامل ہوتے ہیں۔یہ بات بریلویوں اور دیوبندیوں کے لئے بہت ہی تکلیف کا باعث بنتی ہے اور باوجود اپنی پوری کوشش کے جب یہ لوگ اہل حدیث مسلک قبول کرنے والوں کو انکے سابقہ مذہب میں واپس لانے میں ناکام ہوجاتے ہیں توجماعت اہل حدیث اور علمائے اہل حدیث کے خلاف اسی طرح کے الٹے سیدھے پروپیگنڈے کرنے لگتے ہیں۔ اسکے لئے جن اہل حدیث علماء کو ہدف تنقید بنایا جاتا ہے ان میں سرفہرست پروفیسر طالب الرحمن شاہ حفظہ اللہ ہیں کیونکہ انہوں نے اپنے مناظروں ، تحریروں اور تقریروں کے ذریعے ان پٹے والوں (مقلدوں)کا ناطقہ جو بند کیا ہوا ہے۔کبھی طالب الرحمن شاہ صاحب کے بارے میں یہ بہتان طراز مقلدین کہتے ہیں کہ یہ شخص پہلے قادیانی تھا پھر اہل حدیث ہوا، کبھی انکا ماضی شیعہ مسلک سے جوڑنے کی کوشش کرتے ہیں یا پھر ان پر یہ الزام بھی لگاتے ہیں کہ انہوں نے پیسوں کی لالچ میں وہابی مسلک اختیار کیا ہے۔ موخر الذکر الزام آخری حربے کے طور پر اپنی خفت مٹانے کے لئے مقلدین اپنے ہر اس عالم پر لگاتے جس نے تقلیدی مذہب چھوڑ کر تحقیقی مذہب اہل حدیث اختیار کیا ہو۔جب دیوبندی طالب الرحمن شاہ کے متعلق یہ لکھتے یا دعویٰ کرتے ہیں کہ انکا تعلق شیعہ خاندان سے ہے تو ان سے دلیل کا مطالبہ کیا جاتا ہے ۔ لیکن وہ دلیل کیا دینگے کہ جھوٹ کی کوئی دلیل نہیں ہوتی اسی طرح بریلوی حضرات بھی کوئی دلیل پیش نہیں کرسکتے کہ حنفی مذہب کی طرف منسوب یہ دونوں فرقے ہی ا س سلسلے میں اپنے علماء کی نقول پر اندھا اعتماد کرتے ہوئے الزامات کو آگے بڑھاتے رہتے ہیں تحقیق تو انکے مذہب میں ایک مقلد کے لئے حرام ہے اس لئے سنی سنائی باتوں کو بغیر تحقیق کے آگے بڑھانے کے علاوہ یہ اندھی تقلید کے مارے مقلد اور کر بھی کیا سکتے ہیں؟

دیوبندی و بریلوی حضرات طالب الرحمن شاہ حفظ اللہ کے سابقہ شیعہ ہونے کا دعویٰ صرف اس بنیاد پر کرتے ہیں کہ انکے نام کے آخرمیں زید ی کا اضافہ تھا۔ لیکن کیا کسی کے شیعہ ہونے کی یہی معتبر دلیل ہے کہ اسکے نام کے ساتھ کسی ایسے لفظ کا سابقہ یا لاحقہ لگا ہے جو اسکے شیعہ ہونے کی طرف اشارہ کرتا ہے؟ راقم الحروف ذاتی طور پر بہت سے ایسے افراد کو جانتا ہے جن کے نام شیعوں جیسے ہیں لیکن وہ خود سنی ہیں جیسے سید خالد رضا اور رضوان رضا خان وغیرہ ان میں سے بالترتیب پہلا شخص دیوبندی اور دوسرا بریلوی ہے۔معلوم ہوا کہ یہ کوئی وزنی دلیل نہیں بلکہ ڈوبتے کو تنکے کا سہارا ہے۔

یہ جان لینا بھی بہت ضروری ہے کہ آخر آل تقلید کو طالب الرحمن شاہ صاحب پرشیعہ ہونے کا الزام لگانے کی اصل وجہ یا مجبوری کیا ہے؟ اس کی اصل وجہ یہ ہے کہ وہ پہلے حنفی مذہب کے پیروکار تھے پھر انہیں اللہ تعالیٰ نے ہدایت نصیب فرمائی تو انہوں نے اہل حدیث مسلک اختیار کر لیا ۔اب ظاہر ہے کہ جب حنفی عوام کو یہ پتا چلے گا کہ یہ اہل حدیث عالم پہلے حنفی تھا تو وہ یقیناًحنفی علماء سے اس کا سبب دریافت کرینگے کہ انہوں نے حنفی مذہب کیوں ترک کیا اور حنفی مذہب میں ایسی کیا خرابی ہے جس نے انہیں اپنا مذہب بدلنے پر مجبور کیا؟ اب چاہے حنفی عوام اپنے علماء سے اس قسم کے استفسارات نہ بھی کریں لیکن اپنے مذہب کی حقانیت پرانکا یقین ضرور متزلزل ہوجاتا ہے۔اس بات کو تقلیدی علماء بھی بخوبی جانتے ہیں اس لئے عوام کے ایسے ہی سوالات سے بچنے اور انھیں مطمئن کرنے کی خاطر یہ پروپیگنڈہ کرتے ہیں کہ طالب الرحمن شاہ پہلے شیعہ تھے ۔ اور جن علماء کے بارے میں مقلدین کی یہ تلبیس کارگر نہ ہو اور انکاسابق میں حنفی ہونا اظہر من الشمس ہو تو انکے بارے میں کہا جاتا ہے کہ انہوں نے پیسے کی لالچ میں اہل حدیث مذہب اختیار کیا ہے۔ہم تقلیدیو ں کے جھوٹے پروپیگنڈے کو باطل ثابت کرنے کے لئے طالب الرحمن شاہ صاحب کے ایک انٹرویو کا اقتباس پیش کررہے ہیں جس میں انہوں نے خود اعتراف کیا ہے کہ ان کا تعلق حنفی خاندان سے تھااور ان کے خاندان میں دیوبندی اور بریلوی دونوں ہی مسالک پر عمل ہوتا تھا۔اوراسی مسلک کو ترک کرکے طالب الرحمن شاہ صاحب اہل حدیث ہوئے ہیں۔چناچہ ایک سوال کے جواب میں خود فرماتے ہیں: ہمارا تعلق سید گھرانے سے ہے ۔انڈیا میں ہم انبالہ سے شفٹ ہوکر ڈسٹرکٹ ملتان جو اب ڈسٹرکٹ خانیوال بن چکا ہے اس کے ایک قصبہ سرائے سدھو میں آئے.....کیونکہ ہمارا تعلق سید گھرانے سے تھا ، بریلوی اور دیوبندی دونوں ہی ہمارے گھرانے میں مسلک چلا کرتے تھے ۔بعض چیزیں بریلویوں کی مانی جاتیں تھیں اور بعض دیوبندیوں کی ۔(ہم اہلحدیث کیوں ہوئے ؟ صفحہ 595, 596)

کسی کے نجی یا ذاتی مسئلہ کی کوئی دوسراخصوصاًمخالف شخص وضاحت کرے تو ناقابل قبول ہوتی ہے ۔ اپنی ذات سے متعلق ہر شخص کی خود اپنی وضاحت ہی قابل قبول ہوتی ہے الاّ یہ کہ اسے مضبوط دلائل سے جھوٹا ثابت کردیا جائے۔چونکہ یہ معاملہ طالب الرحمن شاہ صاحب کا ذاتی ہے کہ وہ اہل حدیث ہونے سے پہلے کس مسلک سے تعلق رکھتے تھے ۔اس لئے انکا اپنا بیان ہی اس مسئلہ میں حرف آخر ہے اور بریلوی اور دیوبندی ان پر الزام لگانے میں جھوٹے ہیں۔
 

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ!

میں نے اول اول یہ اعتراض دیوبندی کتب اور دیوبندی فورم پر پڑھا تھا کہ طالب الرحمن شاہ صاحب پہلے شیعہ مسلک سے تعلق رکھتے تھے لیکن جب میں بریلوی فورم پر آیا تو یہاں بھی اسی اعتراض کو بار بار دہرایا گیا۔ دیوبندیوں اور بریلویوں کا یہ خاص حربہ ہے کہ اگر انہیں کسی اعتراض کا تسلی بخش جواب مل بھی جائے تو پھر بھی جہاں اور جب موقع ملتا ہے یہ اپنے پرانے اور گھسے پٹے اعتراضات دوہرانا شروع کردیتے ہیں پھر ہر مرتبہ نئے سرے سے انہیں جواب دینا پڑتا ہے۔ اس مسئلہ کا حل میں نے یہ سوچا کہ کیوں نہ انکے جماعت اہل حدیث پر بار بار کئے جانے والے اعتراضات کا مکمل مضامین کی شکل میں جواب دینے کا سلسلہ شروع کیا جائے پھر بار بار جواب دینے کے بجائے ہر اعتراض کے جواب میں مطلوبہ مضمون کو پیش کیا جاسکتا ہے۔ اس سلسلے پر کام شروع کرتے ہوئے یہ پہلا مضمون میں نے لکھا تھا جسے بریلویوں کے فورم اسلامی محفل پر پیش کیا تھا۔ دیکھئے: اہلحدیث مناظر طالب الرحمن شاہ سابقہ شیعہ یا سابقہ حنفی

اب اسی مضمون کو تھوڑی سی ترمیم اور اضافہ کے ساتھ دوبارہ پیش کررہا ہوں۔اتنے معقول جواب کے بعد بھی بریلویوں کی ہٹ دھرمی اپنی جگہ قائم رہی اور وہ مسلسل اعتراض کرتے رہے۔ بریلویوں سے ہونے والی کچھ بحث پیش خدمت ہے۔ مکمل تفصیل آپ یہاں ملاحظہ فرما سکتے ہیں۔
 

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
ہدایت کی پیروی کرنے والے پر سلام!

محترم سالار صاحب یہ بات میں نے پہلے ہی کہہ دی تھی کہ آپ اپنے دعویٰ پر کوئی ثبوت پیش کرنے سے قاصر رہوگے۔آپ کا یہ فرمانا کہ آپ اس مناظرہ میں موجود تھے جہاں یہ کہا گیا کہ طالب الرحمن شاہ حفظہ اللہ شیعہ سے اہل حدیث ہوئے ، کسی لطیفہ سے کم نہیں۔اگر آپ میں تھوڑی سی بھی عقل ہوتی تو آپ کو معلوم ہوتا کہ الزام لگانے والے کا اپنا بیان دلیل نہیں ہوتا ۔ بلکہ الزام لگانے والے کو اپنا دعویٰ ثابت کرنے کے لئے خارجی دلائل پیش کرنے پڑتے ہیں۔میں نے طالب الرحمن شاہ صاحب کو سابقہ حنفی ثابت کیا ہے ۔کیا میں نے اس کے لئے آپ کی طرح محض دعویٰ کیا؟ کیا طالب الرحمن شاہ صاحب کے بارے میں میرے بلا دلیل دعوے کو کہ وہ پہلے شیعہ نہیں بلکہ حنفی تھے،آپ قبول کرتے؟ ہرگز نہیں۔ بلکہ آپ مجھ سے دلیل کا مطالبہ کرتے۔اس لئے میں نے دعویٰ کے ساتھ دلیل پیش کرکے آپکا منہ بند کردیا۔ اگر آپ اپنے جھوٹے دعویٰ کو سچا سمجھتے ہیں تو برائے مہربانی کوئی خارجی دلیل پیش کریں۔مثلاً طالب الرحمن شاہ صاحب کی کوئی تحریریا کسی معتبر اہل حدیث عالم کی کوئی گواہی یا پھر کوئی مناظرہ جس میں خود طالب الرحمن شاہ صاحب نے اپنے شیعہ ہونے کا ذکر کیا ہو۔ورنہ مسلسل جھوٹ بول کر حنفی مذہب کو مزید داغدار نہ کریں۔پہلے ہی حنفیوں نے حنفی مذہب کا چہرہ اتنا گندہ کردیا ہے کہ کوئی شریف حنفی جب فقہ حنفی کے آئینہ میں اپنا چہرہ دیکھتا ہے تو شرما جاتا ہے۔
 

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
سواد اعظم صاحب سے بھی گزارش ہے کہ بجائے اپنا ذاتی بیان پیش کرنے کے کوئی خارجی دلیل پیش کریں یا پھر طالب الرحمن شاہ صاحب کی تحریر یا پھر کوئی ویڈیو ۔ محض آپکے خالی خولی بیان کی علمی میدان میں ٹکے کی بھی حیثیت نہیں۔
 

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
بریلوی حضرات کی موٹی عقلوں میں اتنی موٹی بات نہیں آرہی کہ اگر میں دعویٰ کردوں کہ سالار صاحب اور سیف الاسلام صاحب یہودی ہیں یا پھر کوئی دیوبندی کچھ عرصہ کے لئے بریلوی ہوجائے اور پھر اپنے مسلک میں واپس لوٹ جائے اور اس عرصہ میں بیان دے کہ الیاس قادری صاحب مذہباًہندو ہیں مسلمان نہیں تو کیا بریلوی اس بات کو تسلیم کرلینگے؟ بغیر الیاس قادری سے دریافت کئے یا سالار رضا اور سیف الاسلام کا موقف جانے بغیر؟ اگر الیاس قادری صاحب نے اپنا ہندو ہونا تسلیم کرلیا اور سالار رضا اور سیف الاسلام نے اپنا یہودی ہونا تسلیم کرلیاتو یہ الزام نہیں رہے گا بلکہ حقیقت بن جائے گا اوراس پر مہر تصدیق ثبت ہوجائے گی ۔لیکن اگر ان صاحبان نے اس الزام کی تردید کردی تو کیا بریلوی اور کیا بریلوی، کوئی بھی اس الزام کو تسلیم کرنے پر تیار نہیں ہوگا۔اگر کوئی صاحب عقل میری اس گفتگو پر غور کرے تو اس سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ کسی شخص کے انفرادی اور ذاتی مسئلہ میں اس شخص کا اپنا ذاتی بیان ہی حرف آخر ہوتا ہے۔

اگر کوئی شخص اپنے متعلق کئے جانے والے بے دلیل دعویٰ کی تصدیق کردے تو اس دعویٰ کو تسلیم کر لیا جاتا ہے لیکن اگر وہ تردید کردے تو اس بے دلیل دعویٰ کی کوئی حیثیت نہیں رہتی ۔طالب الرحمن شاہ صاحب اہل حدیث ہونے سے قبل کس مسلک پر تھے یہ انکا خالص ذاتی مسئلہ ہے اور اس بارے میں ان کا اپنا بیان ہی قابل قبول ہوگا ۔مسلک اہل حدیث قبول کرنے سے پہلے شیخ حنفی خاندان سے تعلق رکھتے تھے اس کا میں تحریری ثبوت پیش کرچکا ہوں اسکے علاوہ موحد بھائی نے ان کا ویڈیو بھی پیش کردیا ہے کہ وہ پہلے بریلوی تھے۔

اب تو مسئلہ بالکل بے غبار ہوگیا ہے ،اب چاہے بنا ثبوت بریلوی اپنے کتنے ہی جھوٹے بیانات پیش کریں کہ وہ اس مناظرے میں موجود تھے جہاں طالب الرحمن شاہ صاحب نے اپنے شیعہ ہونے کااقرار کیاتھا یا پھردجال صادق کوہاٹی دیوبندی صاحب کا بے ثبوت ویڈیو بیان پیش کریں،کوئی فائدہ نہیں ہے۔اگر تھوڑی سی بھی غیرت باقی ہے تو اپنے دعویٰ کے ثبوت میں کسی معتبر اہل حدیث عالم کی شہادت پیش کرو یا پھر خود طالب الرحمن شاہ صاحب کی تحریر یا ویڈیو جس میں انہوں نے اعتراف کیا ہو کہ وہ اہل حدیث ہونے سے پہلے شیعہ تھے۔ اسکے برعکس صادق کوہاٹی کا بیان جو کبھی دیوبندی سے اہل حدیث ہونے کا اعلان کرتا ہو پھر اہل حدیث سے دیوبندی مذہب میں لوٹ جاتا ہو اور پھر دوبارہ اہل حدیث بن جاتا ہو۔ایسے ناقابل اعتبار شخص کا بیان وہ بھی ایک معتبر اہل حدیث عالم طالب الرحمن شاہ صاحب کے خلاف آخر کیسے قابل قبول ہوسکتا ہے؟؟؟ نہ تو صادق کوہاٹی اپنے الزام پر کوئی ثبوت پیش کرتا ہے صرف زبانی دعویٰ کرتا ہے اور نہ ہی یہ شخص ثقہ ہے بلکہ اس جھوٹا اور کذاب ہونا منظر عام پر آچکا ہے۔اب ایسے دجالوں کے جھوٹے بیانات بطور ثبوت و شہادت پیش کرنا بریلوی اور دیوبندی جیسے دغابازوں کا ہی کام ہوسکتا ہے۔
 

شاہد نذیر

سینئر رکن
شمولیت
فروری 17، 2011
پیغامات
1,953
ری ایکشن اسکور
6,242
پوائنٹ
412
سالار رضا صاحب اس تھریڈ کا ٹاپک یہ ہے کہ طالب الرحمن شاہ صاحب پہلے حنفی تھے یا شیعہ؟ جبکہ آپ شاید یہ سمجھ رہے ہیں کہ اس تھریڈ کا ٹاپک یہ ہے کہ صادق کوہاٹی صاحب اہل حدیث ہیں یا حنفی؟ آپ مسلسل اسی پر بحث کئے جارہے ہیں۔میرے بھائی ہوش کے ناخن لو اور تھریڈ کو دوبارہ پڑھو اور دیکھو کہ طالب الرحمن شاہ صاحب کا پہلے حنفی ہونا میں انہی کے بیان سے ثابت کرچکا ہوں اور موحد بھائی نے ان کی ویڈیو بھی لگادی ہے جس میں وہ اہل حدیث ہونے سے پہلے اپنے حنفی بریلوی ہونے کا اقرار کررہے ہیں ۔اب اگر آل بریلویہ کو اس پر اعتراض ہے تو اسکے خلاف طالب الرحمن شاہ صاحب کا ہی کوئی اعترافی بیان پیش کریں۔

جہاں تک کوہاٹی صاحب کی بات ہے ۔اگر بالفرض وہ اہل حدیث بھی ہوتا تب بھی طالب الرحمن شاہ صاحب کی ذاتیات کے بارے میں اسکا کوئی بیان قابل قبول نہ ہوتااس لئے کہ یہ طالب الرحمن حفظہ اللہ کا ذاتی مسئلہ ہے صادق کوہاٹی کا نہیں۔ویڈیو میں طالب الرحمن شاہ صاحب بریلوی مناظر اور انکے ساتھیوں کے سامنے یہ اقرار کررہے ہیں کہ وہ پہلے بریلوی تھے ۔اگر یہ بات جھوٹ ہوتی جیسا کہ یہاں چند جاہل بریلوی اسکا ڈھنڈورا پیٹ رہے ہیں تو بریلوی مناظر یقیناًاس بات کو رد کرکے طالب الرحمن شاہ صاحب کو کہتا کہ نہیں، آپ تو پہلے شیعہ تھے۔بریلوی مناظر اور انکے ساتھیوں کا طالب الرحمن صاحب کے اس بیان پر کوئی اعتراض نہ کرنا اور اسے خاموشی سے سن لینا ہی اس بات کا ثبوت ہے کہ یہ سچ ہے۔بریلوی مناظر کی خاموشی طالب الرحمن صاحب کے دعویٰ پر رضامندی کا اظہار ہے۔ورنہ سالار صاحب کو یہ اعتراف کرنا پڑے گا کہ بریلوی مناظر خطاء کاراور مجرم ہے جس کے سامنے ایک غلط اور جھوٹا دعویٰ کیا گیا لیکن اس نے اس پر کوئی اعتراض نہیں کیا۔
 
Top