• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بغیر حساب کے جنت میں جانیوالے خوش نصیب لوگوں کی کثیر تعداد

شمولیت
جنوری 27، 2015
پیغامات
380
ری ایکشن اسکور
133
پوائنٹ
94
ستر ہزارلوگ.jpg

حدثنا هشام بن عمار ،‏‏‏‏ حدثنا إسماعيل بن عياش ،‏‏‏‏ حدثنا محمد بن زياد الالهاني ،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ سمعت ابا امامة الباهلي ،‏‏‏‏ يقول:‏‏‏‏ سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم،‏‏‏‏ يقول:‏‏‏‏ "وعدني ربي سبحانه ان يدخل الجنة من امتي سبعين الفا،‏‏‏‏ لا حساب عليهم ولا عذاب،‏‏‏‏ مع كل الف سبعون الفا وثلاث حثيات من حثيات ربي عز وجل".
ابوامامہ باہلی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”میرے رب (سبحانہ و تعالیٰ) نے مجھ سے وعدہ کیا ہے کہ وہ میری امت میں سے ستر ہزار لوگوں کو جنت میں داخل کرے گا، نہ ان کا حساب ہو گا، اور نہ ان پر کوئی عذاب، ہر ہزار کے ساتھ ستر ہزار ہوں گے، اور ان کے سوا میرے رب عزوجل کی مٹھیوں میں سے تین مٹھیوں کے برابر بھی ہوں گے“۔
سنن ابن ماجه،كتاب الزهد،بَابُ: صِفَةِ أُمَّةِ مُحَمَّدٍ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،حدیث نمبر: 4286
تخریج دارالدعوہ: «سنن الترمذی/صفة القیامة ۱۲ (۲۴۳۷)، (تحفة الأشراف: ۴۹۲۴)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۵/۲۶۸) (صحیح) قال الشيخ الألباني: صحيح
 
شمولیت
اکتوبر 24، 2016
پیغامات
216
ری ایکشن اسکور
20
پوائنٹ
35
بسم الله الرحمن الرحیم
سب طرح کی تعریفیں الله رب العالمین کے لئے ہیں اما بعد !
حدثنا مسدد، ‏‏‏‏‏‏حدثنا حصين بن نمير، ‏‏‏‏‏‏عن حصين بن عبد الرحمن، ‏‏‏‏‏‏عن سعيد بن جبير، ‏‏‏‏‏‏عن ابن عباس رضي الله عنهما، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ خرج علينا النبي صلى الله عليه وسلم يوما، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ "عرضت علي الامم فجعل يمر النبي معه الرجل، ‏‏‏‏‏‏والنبي معه الرجلان، ‏‏‏‏‏‏والنبي معه الرهط، ‏‏‏‏‏‏والنبي ليس معه احد، ‏‏‏‏‏‏ورايت سوادا كثيرا سد الافق، ‏‏‏‏‏‏فرجوت ان تكون امتي، ‏‏‏‏‏‏فقيل هذا موسى وقومه، ‏‏‏‏‏‏ثم قيل لي:‏‏‏‏ انظر، ‏‏‏‏‏‏فرايت سوادا كثيرا سد الافق، ‏‏‏‏‏‏فقيل لي انظر هكذا وهكذا، ‏‏‏‏‏‏فرايت سوادا كثيرا سد الافق، ‏‏‏‏‏‏فقيل هؤلاء امتك ومع هؤلاء سبعون الفا يدخلون الجنة بغير حساب"، ‏‏‏‏‏‏فتفرق الناس ولم يبين لهم، ‏‏‏‏‏‏فتذاكر اصحاب النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقالوا:‏‏‏‏ اما نحن فولدنا في الشرك ولكنا آمنا بالله ورسوله ولكن هؤلاء هم ابناؤنا فبلغ النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ "هم الذين لا يتطيرون، ‏‏‏‏‏‏ولا يسترقون، ‏‏‏‏‏‏ولا يكتوون، ‏‏‏‏‏‏وعلى ربهم يتوكلون"، ‏‏‏‏‏‏فقام عكاشة بن محصن، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ امنهم انا يا رسول الله؟، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ نعم، ‏‏‏‏‏‏فقام آخر، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ امنهم انا، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ سبقك بها عكاشة.

ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا، کہا ہم سے حصین بن نمیر نے بیان کیا، ان سے حصین بن عبدالرحمٰن نے، ان سے سعید بن جبیر نے اور ان سے ابن عباس رضی اللہ عنہما نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک دن ہمارے پاس باہر تشریف لائے اور فرمایا کہ (خواب میں) مجھ پر تمام امتیں پیش کی گئیں۔ بعض نبی گزرتے اور ان کے ساتھ (ان کی اتباع کرنے والا) صرف ایک ہوتا۔ بعض گزرتے اور ان کے ساتھ دو ہوتے بعض کے ساتھ پوری جماعت ہوتی اور بعض کے ساتھ کوئی بھی نہ ہوتا پھر میں نے ایک بڑی جماعت دیکھی جس سے آسمان کا کنارہ ڈھک گیا تھا میں سمجھا کہ یہ میری ہی امت ہو گی لیکن مجھ سے کہا گیا کہ یہ موسیٰ علیہ السلام اور ان کی امت کے لوگ ہیں پھر مجھ سے کہا کہ دیکھو میں نے ایک بہت بڑی جماعت دیکھی جس نے آسمانوں کا کنارہ ڈھانپ لیا ہے۔ پھر مجھ سے کہا گیا کہ ادھر دیکھو، ادھر دیکھو، میں نے دیکھا کہ بہت سی جماعتیں ہیں جو تمام افق پر محیط تھیں۔ کہا گیا کہ یہ آپ کہ امت ہے اور اس میں سے ستر ہزار وہ لوگ ہوں گے جو بے حساب جنت میں داخل کئے جائیں گے پھر صحابہ مختلف جگہوں میں اٹھ کر چلے گئے اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی وضاحت نہیں کی کہ یہ ستر ہزار کون لوگ ہوں گے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے آپس میں اس کے متعلق مذاکرہ کیا اور کہا کہ ہماری پیدائش تو شرک میں ہوئی تھی البتہ بعد میں ہم اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لے آئے لیکن یہ ستر ہزار ہمارے بیٹے ہوں گے جو پیدائش ہی سے مسلمان ہیں۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ بات پہنچی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یہ ستر ہزار وہ لوگ ہوں گے جو بدفالی نہیں کرتے، نہ منتر سے جھاڑ پھونک کراتے ہیں اور نہ داغ لگاتے ہیں بلکہ اپنے رب پر بھروسہ کرتے ہیں۔ یہ سن کر عکاشہ بن محصن رضی اللہ عنہ نے عرض کیا: یا رسول اللہ! کیا میں بھی ان میں سے ہوں؟ فرمایا کہ ہاں۔ ایک دوسرے صاحب سعد بن عبادہ رضی اللہ عنہ نے کھڑے ہو کر عرض کیا میں بھی ان میں سے ہوں؟ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ عکاشہ تم سے بازی لے گئے کہ تم سے پہلے عکاشہ کے لیے جو ہونا تھا ہو چکا۔
(صحیح بخاری كتاب الطب بَابُ مَنْ لَمْ يَرْقِ)
والحمد للہ رب العالمین
 
Top