• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بنتِ حوا کی حیا کا جنازہ

شمولیت
فروری 23، 2017
پیغامات
16
ری ایکشن اسکور
3
پوائنٹ
32
سنا ہے کہ سچ کو بات کرنے کی تمیز نہیں ، جھوٹ بہت میٹھا بولتا ہے۔
لیکن افسوس کہ!
بِک سکی نہ بازارِ مصلِحت میں کبھی میری صداقت میرے اَناَ کی طرح
اگرچے مجھے قلم اُٹھانے کا موقع شاز و نادر ہی ملا لیکن میری کوشش یہی رہی کہ قلم کی نوک سے کچھ ایسے لالا ئو گوھر اُگلے جائیں جس سے میرے نوجوان کے دل میں پلتے ہوئے ناخالص جذبات کے دھارے کا رُخ اِسلام کی طرف اسطرح موڑا جائے کہ ایک بیٹی کی عصمت کو اپنے خون سے زیادہ قیمتی جاننے والے عرب و عجم کے ریگزاروں میں پلنے والے اُن اُمیین کی داستانیں میرے نوجوانوں کے دِل میں اسطرح پیوست ہو جائیں کہ میرا نوجوان فاطمہ کی بیٹی کا سر ننگا دیکھے تو اُسکا لہو مغربی تہذیب پر کھول اُٹھے اور ایک بار پھر مسلمانوں کی غیرت کو صاحبِ تمثیل کتابوں کے اُوراق میں خندہ زن کر دیں۔
ذرا سوچئیے گا ضرور میرے دوستو!
کہ ہم چینی ، گڑ یا گوشت کے چند کلو کسی کاغذ یا کسی تھیلی میں بند کر کے لاتے ہیں ۔کہ کہیں اس پر مکھیاں نہ بیٹھ جائیں مگر کیا بنتِ حوا کی عصمت گوشت کے چند سیر سے بھی ارضاں ہے ۔جسے بن ڈھکے بازار کی زینت بنا دیتے ہو!
بس اتنا کہوں گا
کہ چھو نہ سکتی تھی کبھی جسکو فرشتوں کی نظر
آج وہ بنتِ حوا رونقِ بازار نظر آتی ہے۔۔۔
از۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صلاح الدین
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,433
پوائنٹ
791
سنا ہے کہ سچ کو بات کرنے کی تمیز نہیں ، جھوٹ بہت میٹھا بولتا ہے۔
لیکن افسوس کہ!
بِک سکی نہ بازارِ مصلِحت میں کبھی میری صداقت میرے اَناَ کی طرح
اگرچے مجھے قلم اُٹھانے کا موقع شاز و نادر ہی ملا لیکن میری کوشش یہی رہی کہ قلم کی نوک سے کچھ ایسے لالا ئو گوھر اُگلے جائیں جس سے میرے نوجوان کے دل میں پلتے ہوئے ناخالص جذبات کے دھارے کا رُخ اِسلام کی طرف اسطرح موڑا جائے کہ ایک بیٹی کی عصمت کو اپنے خون سے زیادہ قیمتی جاننے والے عرب و عجم کے ریگزاروں میں پلنے والے اُن اُمیین کی داستانیں میرے نوجوانوں کے دِل میں اسطرح پیوست ہو جائیں کہ میرا نوجوان فاطمہ کی بیٹی کا سر ننگا دیکھے تو اُسکا لہو مغربی تہذیب پر کھول اُٹھے اور ایک بار پھر مسلمانوں کی غیرت کو صاحبِ تمثیل کتابوں کے اُوراق میں خندہ زن کر دیں۔
ذرا سوچئیے گا ضرور میرے دوستو!
کہ ہم چینی ، گڑ یا گوشت کے چند کلو کسی کاغذ یا کسی تھیلی میں بند کر کے لاتے ہیں ۔کہ کہیں اس پر مکھیاں نہ بیٹھ جائیں مگر کیا بنتِ حوا کی عصمت گوشت کے چند سیر سے بھی ارضاں ہے ۔جسے بن ڈھکے بازار کی زینت بنا دیتے ہو!
بس اتنا کہوں گا
کہ چھو نہ سکتی تھی کبھی جسکو فرشتوں کی نظر
آج وہ بنتِ حوا رونقِ بازار نظر آتی ہے۔۔۔
از۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صلاح الدین
 
شمولیت
فروری 16، 2018
پیغامات
5
ری ایکشن اسکور
1
پوائنٹ
18
جزاك الله خيرا شيخ محترم یہ ایک تلخ حقیقت ہے جو آپ نے لکھی ہے اللہ رب العزت سے دعا کرتا ہوں کہ اللہ رب العالمین ہم سب کو ان باتوں پر عمل کرنے کی توفیق بخشے آمین
 
Top