• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تذکرہ علمائے اسلام عرب و عجم

شمولیت
اپریل 05، 2020
پیغامات
68
ری ایکشن اسکور
2
پوائنٹ
34
دل کی بات
حدیث رسولﷺ ‎دین اسلام کا دوسرا بڑا ماخذ ہے ۔ قرآن مجید کی طرح اس کی حفاظت کا ذمہ بھی اللّٰه تعالیٰ نے لے رکھا ہے ۔ حفاظتِ حدیث کے لیے اللّٰه تعالیٰ نے محدثین کرام رحمہم اللہ پیدا کیے۔ انھوں نے حدیث رسول کو پڑھا، سمجھا، اپنے سینے میں محفوظ کیا اور آگے امت تک پہنچایا ۔ صحیح دین انھی عظیم ہستیوں کے ذریعے سے ہم تک پہنچا ہے ۔ اس لیے یہ مبارک گروہ ہمارے شکریے کا خاص مستحق ہے ۔ ان سے محبت کرنا اور ان کی سیرت و کردار کو اپنانا محبت رسولﷺ‎ کا اہم تقاضا ہے ۔ اس تقاضے کی تکمیل تبھی ممکن ہے جب ہمیں ان عظیم لوگوں کا تعارف اور ان کی خدمات سے واقفیت ہوگی۔
اس مقصد کے لیے کئی اہلِ علم نے قلم اٹھایا ہے ۔ انھی میں سے ایک علم دوست شخصیت ملک سکندر حیات نسوآنہ ہیں ۔ انہوں نے حدیث رسول کے لیے خدمات انجام دینے والے عرب و عجم کے بعض قدیم و جدید علماء و محدثین کے تذکرہ پر مشتمل ایک خوبصورت کتاب بنام "تذکرہ علمائے اسلام عرب و عجم قدیم و جدید" ترتیب دی ہے ۔ اپنے موضوع پر یہ مفید کاوش ہے ۔ اس سے استفادہ آپ پر علم و معرفت کے دریچے وا کرنے کے ساتھ علم و اہل علم سے محبت کی آبیاری بھی کرےگا، إن شاءالله تعالی!
اللّٰه تعالیٰ اس کاوش کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے، اسے امت مسلمہ کے لیے نافع بنائے اور اس کے لکھاری کو تمام مسلمانوں کی طرف سے جزائے خیر عطا فرمائے، آمین!
دعاؤں کا متمنی۔
طارق جاوید عارفی۔
مدیر: دارالسلام ریسرچ سنٹر لاہور۔
22/5/2021
 
شمولیت
اپریل 05، 2020
پیغامات
68
ری ایکشن اسکور
2
پوائنٹ
34
تقریظ

شیخ ابراہیم ابن بشیر الحسینوی
حفظہ اللہ مدیر جامعہ امام احمد بن حنبلؒ قصور۔
ہمارے بزرگ محترم سکندر حیات صاحب نے بڑی محنت اور محبت سے منفرد انداز میں ایک تاریخ { تذکرہ علمائے اسلام قدیم و جدید عرب و عجم } مرتب کی ہے جو اس لائق ہے کہ اسے طبع کیا جائے تاکہ امت اس سے مستفید ہو سکے۔
یہ مبارک تاریخ مختصر مگر جامع ہے اور ہر بات باحوالہ کرنے کی کوشش کی گئی۔
میرا فقیر الی اللہ الغنی کا بھی تذکرہ انھوں نے کردیا ہے اللہ تعالیٰ مجھے ان کے گمان کے مطابق کردے ۔۔آمین
یہ ایک قابل تحسین عمل ہے ۔ فجزاللہ خیرا انا العبد۔

ابن بشیر الحسینوی

15/5/2021ء
 
شمولیت
اپریل 05، 2020
پیغامات
68
ری ایکشن اسکور
2
پوائنٹ
34
فہرست مضامین تذکرہ علمائے اسلام

عرب و عجم قدیم و جدید


:۔ پیش لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 12

1۔ امام أبو اسحاق إبراهيم بن موسىٰ الشاطبي۔ متوفی 790۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔17

2۔ محدث سراج الدین ابو حفص عمرابن ملقنؒ۔723 تا 804ھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔27

3۔ محدث شہاب الدین احمد قسطلانیؒ۔851 تا 923ھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 33

4۔ شیخ محمد رشید رضاؒ مصری۔1865 تا 1935ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 40

5۔ مؤرخ اسلام اکبر شاہ خان نجیب آبادؒی ۔ 1875 تا 1938ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 50

6۔ شیخ مؤرخ شکیب ارسلانؒ۔1869 تا 1946ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 56

7۔ شیخ مؤرخ محمد راغب الطباخ ؒ۔1877 تا 1951ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 68

8۔ جسٹس شیخ عبدالقادر عودہؒ: شہیدِ۔1906 تا 1954ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔77

9۔ شیخ داعی محمد حامد الفقيؒ۔1892 تا 1959ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 93

10۔ امام اسماء الرجال علامہ عبدالرحمان المعلمؒی۔1312 تا ‍1386ه‍ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 113

11۔ شیخ علامہ مُحِبّ الدِّين الخَطِيبؒ۔ 1886 تا 1969ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 121

12۔ پروفیسر علامہ محمد بن خلیل ہراسؒ۔ 1916 تا 1975ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 138

13۔ علامہ شیخ ڈاکٹر صُبحی صالحؒ شہید۔1926 تا 1986ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 148

14۔ ڈاکٹر علامہ محمد تقی الدین ہلالیؒ۔1893 تا 1987ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 159

15۔ پروفیسرڈاکٹرعبداللہ عزام ؒ شہید۔1931 تا 1989ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 176

16۔ علامہ پروفیسر عبد الرزاق عفيفيؒ الربيعي۔1905 تا 1994ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 186

17۔ ڈاکٹر علامہ سعيد رمضانؒ۔ 1926 تا 1995ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 200

18۔ شیخ عبدالقادر حبیب اللہ سندھیؒ 1936 تا 1999ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 219

19۔ مفتی اعظم شیخ عبدالعزیز بن عبداللہ بن بازؒ۔ 1330 تا 1420ھ۔۔.۔۔۔۔۔ 225

20۔ قاضی شیخ پروفیسر مناع خلیل قطحانؒ۔1925 تا 1999ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 259

21۔ شیخ محمد بن صالح ؒ العثیمین۔1347 تا 1421ھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 270

22۔ شیخ داعی مقبول بن ہادی الودعیؒ۔1937 تا 2001ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 299

23۔ شیخ مختار احمد سلفی ندویؒ۔1930 تا 2007ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 325

24۔ علامہ محمد رئس ندویؒ۔1937 تا 2009ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 339

25۔ پروفیسر عبدالجبار شاکرؒ۔1947 تا 2009ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 345

26۔ پروفیسر شیخ محمد جمیل زینوؒ۔ 1925 تا 2010ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 359

27۔ محدث العصر حافظ زبیر علی زئیؒ۔1957 تا 2013ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 371

28۔ پروفیسر شیخ محمد قطبؒ۔ 1919 تا 2014ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 401

29۔ اسلامی تراث کے ڈاکٹر فواد سزگینؒ۔ 1924 تا 2018ء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 411

30۔ ڈاکٹر علامہ يوسف القرضاوی۔1926ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 422

31۔ ڈاکٹر پروفیسر عبداللہ بن عبدالمحسن الترکی۔ 1940ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 444

32۔ پروفیسر ڈاکٹر بشار عواد معروف۔ 1940ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 461

33۔ پروفیسر شیخ عبدالمجید زندانی۔ 1942ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 479

34۔ ڈاکٹر ابو امینہ بلال فلپس۔1947ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 492

35۔ ڈاکٹر علی بن عبدالرحمن حذیفی1947ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 499

36۔ پروفیسر شیخ عبداللہ ناصر رحمانی۔ 1955ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 510

37۔ ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس۔1962ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 518

38۔ ڈاکٹر ذاکر عبدالکریم نائیک۔ 1965ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 530

39۔ ڈاکٹر سعود الشریم ۔ 1966ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔541

40۔ ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاھوری۔ 1979ءتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 550

41۔ شیخ ابراہیم ابن بشیر حسینوی۔1983ء تا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔559
 
Top