• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

جرح وتعدیل کا ابتدائی قائدہ سوالاً جواباً

عبد الرشید

رکن ادارہ محدث
شمولیت
مارچ 02، 2011
پیغامات
5,335
ری ایکشن اسکور
9,948
پوائنٹ
667
جرح وتعدیل کا ابتدائی قائدہ سوالاً جواباً
رواۃِ حدیث کے حالات ا ن کے رہن سہن ،ان کا نام نسب،اساتذہ وتلامذہ،عدالت وصداقت اوران کے درجات کا پتہ چلانے کے علم کو ’’علم جرح وتعدیل ‘‘ اور ’’علم اسماء رجال ‘‘کہتے ہیں علم اسماء رجال میں راویانِ حدیث کے عام حالات پر گفتگو کی جاتی ہے اور علم جرح وتعدیل میں رواۃ ِحدیث کی عدالت وثقاہت اور ان کے مراتب پر بحث کی جاتی ہے یہ دونوں علم ایک دوسرے کےلیے لازم ملزوم ہیں جرح سے مراد روایانِ حدیث کے وہ عیوب بیان کرنا ہے جن کی وجہ سےان کی عدالت ساقط ہوجاتی ہےاوران کی روایت کردہ حدیث ردّکرجاتی ہے۔ تعدیل سےمراد روائ حدیث کے عادل ہونے کے بارے میں بتلانا اور حکم لگانا کہ وہ عادل یاضابط ہے اس موضوع پر ائمہ حدیث اوراصولِ حدیث کے ماہرین نے کئی کتب تصنیف کی ہیں لیکن یہ کتب زیادہ تر عربی زبان میں ہیں۔ زیر نظر کتابچہ ’’ جرح وتعدیل کا ابتدائی قائدہ سوالاً جواباً‘‘ فاضل نوجوان مولانا محمد ابراہیم بن بشیر الحسینوی ﷾ ( فاضل جامعہ لاہور الاسلامیہ ،مرکز التربیۃ الاسلامیہ ،فیصل آباد ،رئیس ابن حنبل اوپن یونیورسٹی،مدیر دار ابن بشیر للنشر واالتوزیع) کے دوران کلاس جرح وتعدیل کےمتعلق طلبا کےسوالات کےجوابات کی کتابی صورت ہے۔موصوف کے ہونہار دوشاگردوں نے اپنے شیخ محترم ابن بشیر حسینوی کے جرح وتعدیل کے متعلق تدریسی افادات کو افادۂ عام کےلیے مرتب کردیا ہے ۔یہ کتابچہ مدارس دینیہ میں زیر تعلیم درجہ رابعہ کے طلباء وطالبات کے لیے جرح وتعدیل کے نصاب کےطور پر نصاب میں شامل کیے جانے کے لائق ہے۔مولانا ابن بشیر حسینوی صاحب نےکم عمری میں ہی علوم حدیث میں مہارت حاصل کر تھی اور تحقیق وتصنیف کا ذوق رکھتے تھے یہی وجہ اب وہ دسیوں کتب کے مصنف ،محقق،مترجم کے علاوہ ناشر بھی ہیں ۔بالخصوص علوم حدیث کے موضوع پر متعدد کتب کے مصنف ہیں۔اللہ تعالیٰ ان کی تحقیقی وتصنیفی ،تدریسی ودعوتی جہود کو شرف ِقبولیت سے نوازے اور اس میں مزید خیر وبرکت فرمائے ۔آمین(م۔ا)

 
Top