• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حب دنیا

شمولیت
اکتوبر 16، 2011
پیغامات
106
ری ایکشن اسکور
493
پوائنٹ
65
اسلام علیکم ! دنیا کی زندگی کے بارے قرآن میں آتا ہے :- "و ما ھذا الحیوۃ الدنیا الا لھو و لعب و ان الدار الاخرۃ لھی الحیوان لو کانوا یعلمون : سورۃ العنکبوت :٦٤
ترجمہ :- اور یہ دنیا کی زندگی تو کھیل تماشا ہے ۔آخرت کی زندگی ہی اصل زندگی ہے ۔کاش وہ اس حقیقت کو جانتے ۔
ایک اور مقام پر ارشاد باری تعالی ہے :"" یا ایھاالناس ان وعد اللہ حق فلا تغرنکم الحیوۃ الدنیا ولا یغرنکم باللہ الغرور : سورۃ فاطر : ٥
ترجمہ :- اے لو گو ! بے شک اللہ کا وعدہ قیامت برحق ہے ،لہذا دنیا کی زندگی تمہیں دھوکے میں نہ ڈالے اور نہ وہ بڑا دھوکے باز تمہیں اللہ کے بارے میں دھوکا دینے پائے ۔
فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے : " آخرت کے مقابلے میں دنیا کی مثال ایسے ہے جیسے تم سے کوئی شخص اپنی انگلی سمندر میں ڈبوئے تو پھر دیکھو کہ وہ کتنا پانی اپنے ساتھ لا تی ہے ۔"" صحیح مسلم : کتاب الجنہ و صفتہ نعیمہا ،باب فنا الدنیا
حب دنیا کا نقصان :
ارشاد باری تعالی ہے :"" اعلموا أنما الحياة الدنيا لعب ولهو وزينة وتفاخر بينكم وتكاثر في الأموال والأولاد كمثل غيث أعجب الكفار نباته ثم يهيج فتراه مصفرا ثم يكون حطاما وفي الآخرة عذاب شديد ومغفرة من الله ورضوان وما الحياة الدنيا إلا متاع الغرور "" سورۃ الحدید : ٢٠
ترجمہ : جان رکھو کہ دنیا کی زندگی محض کھیل اور تماشا اور زینت اور تمہارے آپس میں فخر اور مال و اولاد کی ایک دوسرے سے زیادہ طلب ہے ۔( اسکی مثال ایسی ہے ) جیسے بارش کہ ( اس سے کھیتی اگتی اور ) کسانوں کو کھیتی بھلی لگتی ہے ۔پھر وہ خوب زور پر آتی ہے ۔پھر ( اسے دیکھنے والے ) تو اس کو دیکھتا ہے کہ یہ ( پک کر ) زرد پڑ جاتی ہے پھر چورا چور ہوتی ہے ۔اور آخرت میں کافروں کے لیے ) عذاب شدید اور ( مومنوں کے لیے ) خدا کی طرف سے بخشش اور خوشنودی ہے اور دنیا کی زندگی تو متاع فریب ہے ۔
دنیا کی زندگی پر مطمئن :
ارشاد باری تعالی ہے : "" إِنَّ الَّذِينَ لا يَرْجُونَ لِقَاءنَا وَرَضُوا بِالْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَاطْمَأَنُّوا بِهَا وَالَّذِينَ هُمْ عَنْ آيَاتِنَا غَافِلُونَ(7)أُوْلَئِكَ مَأْوَاهُمْ النَّارُ بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ : سورۃ یونس : ٧،٨
ترجمہ :- جن لوگوں کو ہم سے ملنے کی توقع نہیں اور دینا کی زندگی سے خوش اور اس پر مطمئن ہو بیٹھے اور ہماری نشانیوں سے غافل ہو رہے ہیں " ان کا ٹھکانا ان ( اعمال ) کے سبب جو وہ کرتے ہیں دوزخ ہے ۔"
دنیا کی اہمیت :
ایک حدیث میں آتا ہے ،"" نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ایک مری ہوئی بکری کے پاس سے گزرے جسے کوئی باہر پھینک گیا تھا اور اسے دیکھ کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اللہ کی قسم ! اللہ کے نزدیک دنیا کی اتنی بھی اہمیت نہیں جتنی اس مری ہوئی بکری کی اس کے مالک کے نزدیک ۔"" جامع ترمذی ، ابواب الزہد ،باب ما جاء فی ھو ان الدنیا علی اللہ عز و جل
صحیح مسلم کی روایت ہے :"" الدنیا سجن المئومن و جنۃ الکافر "" صحیح مسلم ، کتاب الزہد ،باب الدنیا ،سجن المئومن
ترجمہ : دنیا مومن کے لیے قید خانہ ہے اور کافر کے لیے جنت ۔
حب دنیا کا علاج کیا ہے ؟؟ اس حوالہ سے شیئر کریں ۔
 
شمولیت
اکتوبر 16، 2011
پیغامات
106
ری ایکشن اسکور
493
پوائنٹ
65
عَنْ أَبِي مُوسَى الأَشْعَرِيِّ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : " مَنْ أَحَبَّ دُنْيَاهُ أَضَرَّ بِآخِرَتِهِ ، وَمَنْ أَحَبَّ آخِرَتَهُ أَضَرَّ بِدُنْيَاهُ ، فَآثِرُوا مَا يَبْقَى عَلَى مَا يَفْنَى " .
ترجمہ:- "جو دنیا سے محبت کرتا ہے وہ آخرت کو نقصان پہنچاتا ہے اور جو آخرت سے محبت کرتا ہے وہ دنیا کو نقصان پہنچاتا ہے پس تم باقی رہنے والی آخرت کو فنا ہوجانے والی دنیاپر ترجیح دو۔""
 
شمولیت
اکتوبر 16، 2011
پیغامات
106
ری ایکشن اسکور
493
پوائنٹ
65
دنیا سے محبت اور موت سے نفرت :
""عن ثوبان قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم يوشك الأمم أن تداعى عليكم كما تداعى الأكلة إلى قصعتها فقال قائل ومن قلة نحن يومئذ قال بل أنتم يومئذ كثير ولكنكم غثاء كغثاء السيل ولينزعن الله من صدور عدوكم المهابة منكم وليقذفن الله في قلوبكم الوهن فقال قائل يا رسول الله وما الوهن قال حب الدنيا وكراهية الموت ""
حضرت ثوبان رضی اللہ تعلٰی عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا "عنقریب (کافر) امتیں تمہارے اوپر چڑھ دوڑنے کے لئے ایک دوسرے کو اس طرح بلائیں گی جس طرح کھانے والے ایک دوسرے کو دستر خوان کی طرف بلاتے ہیں۔" ایک آدمی نے عرض کیا"شائید اس وقت ہم تعداد میں کم ہونگے؟﴿ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا﴾ نہیں ! بلکہ تم کثرت میں ہوگے لیکن تمہاری حیثیت پانی کے اوپر بہنے والی جھاگ کی مانند ہوگی اللہ تعالیٰ تمہارے دشمن کے دلوں سے تمہارا رعب ختم کر دیں گے اور تمہارے دلوں میں وھن پیدا فرمادیں گے﴿ ایک آدمی نے عرض کیا ﴾ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وھن کا کیا مطلب ہے؟﴿ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا﴾دنیا کی محبت اور موت سے نفرت"۔ ( ابو داود)
 

شاکر

تکنیکی ناظم
رکن انتظامیہ
شمولیت
جنوری 08، 2011
پیغامات
6,595
ری ایکشن اسکور
21,402
پوائنٹ
891
جزاک اللہ خیرا موسیٰ بھائی جان۔۔۔
ازراہ کرم آپ اپنے مراسلہ جات میں عربی عبارات کو منتخب کر کے ایڈیٹر میں موجود عربی کا بٹن دبا دیا کریں، اس سے عربی عبارات کو پڑھنا بھی آسان ہو جاتا ہے اور پوسٹ بھی خوبصورت لگتی ہے۔
 

محمد ارسلان

خاص رکن
شمولیت
مارچ 09، 2011
پیغامات
17,865
ری ایکشن اسکور
41,088
پوائنٹ
1,155
اسلام علیکم !
دنیا کی زندگی کے بارے قرآن میں آتا ہے :-
"و ما ھذا الحیوۃ الدنیا الا لھو و لعب و ان الدار الاخرۃ لھی الحیوان لو کانوا یعلمون : سورۃ العنکبوت :٦٤
ترجمہ :- اور یہ دنیا کی زندگی تو کھیل تماشا ہے ۔آخرت کی زندگی ہی اصل زندگی ہے ۔کاش وہ اس حقیقت کو جانتے ۔
ایک اور مقام پر ارشاد باری تعالی ہے :
یا ایھاالناس ان وعد اللہ حق فلا تغرنکم الحیوۃ الدنیا ولا یغرنکم باللہ الغرور : سورۃ فاطر : ٥
ترجمہ :- اے لو گو ! بے شک اللہ کا وعدہ قیامت برحق ہے ،لہذا دنیا کی زندگی تمہیں دھوکے میں نہ ڈالے اور نہ وہ بڑا دھوکے باز تمہیں اللہ کے بارے میں دھوکا دینے پائے ۔
فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے :
" آخرت کے مقابلے میں دنیا کی مثال ایسے ہے جیسے تم سے کوئی شخص اپنی انگلی سمندر میں ڈبوئے تو پھر دیکھو کہ وہ کتنا پانی اپنے ساتھ لا تی ہے ۔""صحیح مسلم : کتاب الجنہ و صفتہ نعیمہا،باب فنا الدنیا
حب دنیا کا نقصان :
ارشاد باری تعالی ہے :
"" اعلموا أنما الحياة الدنيا لعب ولهو وزينة وتفاخر بينكم وتكاثر في الأموال والأولاد كمثل غيث أعجب الكفار نباته ثم يهيج فتراه مصفرا ثم يكون حطاما وفي الآخرة عذاب شديد ومغفرة من الله ورضوان وما الحياة الدنيا إلا متاع الغرور "" سورۃ الحدید : ٢٠
ترجمہ : جان رکھو کہ دنیا کی زندگی محض کھیل اور تماشا اور زینت اور تمہارے آپس میں فخر اور مال و اولاد کی ایک دوسرے سے زیادہ طلب ہے ۔( اسکی مثال ایسی ہے ) جیسے بارش کہ ( اس سے کھیتی اگتی اور ) کسانوں کو کھیتی بھلی لگتی ہے ۔پھر وہ خوب زور پر آتی ہے ۔پھر ( اسے دیکھنے والے ) تو اس کو دیکھتا ہے کہ یہ ( پک کر ) زرد پڑ جاتی ہے پھر چورا چور ہوتی ہے ۔اور آخرت میں کافروں کے لیے ) عذاب شدید اور ( مومنوں کے لیے ) خدا کی طرف سے بخشش اور خوشنودی ہے اور دنیا کی زندگی تو متاع فریب ہے ۔
دنیا کی زندگی پر مطمئن :
ارشاد باری تعالی ہے :
"" إِنَّ الَّذِينَ لا يَرْجُونَ لِقَاءنَا وَرَضُوا بِالْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَاطْمَأَنُّوا بِهَا وَالَّذِينَ هُمْ عَنْ آيَاتِنَا غَافِلُونَ(7)أُوْلَئِكَ مَأْوَاهُمْ النَّارُ بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ : سورۃ یونس : ٧،٨
ترجمہ :- جن لوگوں کو ہم سے ملنے کی توقع نہیں اور دینا کی زندگی سے خوش اور اس پر مطمئن ہو بیٹھے اور ہماری نشانیوں سے غافل ہو رہے ہیں " ان کا ٹھکانا ان ( اعمال ) کے سبب جو وہ کرتے ہیں دوزخ ہے ۔"
دنیا کی اہمیت :
ایک حدیث میں آتا ہے ،
"" نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ایک مری ہوئی بکری کے پاس سے گزرے جسے کوئی باہر پھینک گیا تھا اور اسے دیکھ کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اللہ کی قسم ! اللہ کے نزدیک دنیا کی اتنی بھی اہمیت نہیں جتنی اس مری ہوئی بکری کی اس کے مالک کے نزدیک ۔"" جامع ترمذی ، ابواب الزہد ،باب ما جاء فی ھو ان الدنیا علی اللہ عز و جل
صحیح مسلم کی روایت ہے :
"" الدنیا سجن المئومن و جنۃ الکافر "" صحیح مسلم ، کتاب الزہد ،باب الدنیا ،سجن المئومن
ترجمہ : دنیا مومن کے لیے قید خانہ ہے اور کافر کے لیے جنت ۔
حب دنیا کا علاج کیا ہے ؟؟ اس حوالہ سے شیئر کریں ۔
 

محمد ارسلان

خاص رکن
شمولیت
مارچ 09، 2011
پیغامات
17,865
ری ایکشن اسکور
41,088
پوائنٹ
1,155
عَنْ أَبِي مُوسَى الأَشْعَرِيِّ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : " مَنْ أَحَبَّ دُنْيَاهُ أَضَرَّ بِآخِرَتِهِ ، وَمَنْ أَحَبَّ آخِرَتَهُ أَضَرَّ بِدُنْيَاهُ ، فَآثِرُوا مَا يَبْقَى عَلَى مَا يَفْنَى " .
ترجمہ:- "جو دنیا سے محبت کرتا ہے وہ آخرت کو نقصان پہنچاتا ہے اور جو آخرت سے محبت کرتا ہے وہ دنیا کو نقصان پہنچاتا ہے پس تم باقی رہنے والی آخرت کو فنا ہوجانے والی دنیاپر ترجیح دو۔""
 

محمد ارسلان

خاص رکن
شمولیت
مارچ 09، 2011
پیغامات
17,865
ری ایکشن اسکور
41,088
پوائنٹ
1,155
دنیا سے محبت اور موت سے نفرت :
""عن ثوبان قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم يوشك الأمم أن تداعى عليكم كما تداعى الأكلة إلى قصعتها فقال قائل ومن قلة نحن يومئذ قال بل أنتم يومئذ كثير ولكنكم غثاء كغثاء السيل ولينزعن الله من صدور عدوكم المهابة منكم وليقذفن الله في قلوبكم الوهن فقال قائل يا رسول الله وما الوهن قال حب الدنيا وكراهية الموت ""
حضرت ثوبان رضی اللہ تعلٰی عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا "عنقریب (کافر) امتیں تمہارے اوپر چڑھ دوڑنے کے لئے ایک دوسرے کو اس طرح بلائیں گی جس طرح کھانے والے ایک دوسرے کو دستر خوان کی طرف بلاتے ہیں۔" ایک آدمی نے عرض کیا"شائید اس وقت ہم تعداد میں کم ہونگے؟﴿ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا﴾ نہیں ! بلکہ تم کثرت میں ہوگے لیکن تمہاری حیثیت پانی کے اوپر بہنے والی جھاگ کی مانند ہوگی اللہ تعالیٰ تمہارے دشمن کے دلوں سے تمہارا رعب ختم کر دیں گے اور تمہارے دلوں میں وھن پیدا فرمادیں گے﴿ ایک آدمی نے عرض کیا ﴾ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وھن کا کیا مطلب ہے؟﴿ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا﴾دنیا کی محبت اور موت سے نفرت"۔ ( ابو داود)
 

محمد ارسلان

خاص رکن
شمولیت
مارچ 09، 2011
پیغامات
17,865
ری ایکشن اسکور
41,088
پوائنٹ
1,155
جزاک اللہ خیرا محمد موسی بھائی

محمد موسی بھائی میں نے فارمیٹنگ کر دی ہے،نیکسٹ ٹائم آپ بھی فارمیٹنگ کر دیا کریں۔ان شاءاللہ
عَنْ أَبِي مُوسَى الأَشْعَرِيِّ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : " مَنْ أَحَبَّ دُنْيَاهُ أَضَرَّ بِآخِرَتِهِ ، وَمَنْ أَحَبَّ آخِرَتَهُ أَضَرَّ بِدُنْيَاهُ ، فَآثِرُوا مَا يَبْقَى عَلَى مَا يَفْنَى " .
ترجمہ:- "جو دنیا سے محبت کرتا ہے وہ آخرت کو نقصان پہنچاتا ہے اور جو آخرت سے محبت کرتا ہے وہ دنیا کو نقصان پہنچاتا ہے پس تم باقی رہنے والی آخرت کو فنا ہوجانے والی دنیاپر ترجیح دو۔""



اور اس حدیث مبارکہ کا حوالہ بھی لکھیں۔
 
شمولیت
اکتوبر 16، 2011
پیغامات
106
ری ایکشن اسکور
493
پوائنٹ
65
جزاک اللہ خیرا ،محمد ارسلان بھائی حدیث کا حوالہ یہ ہے: -حدثنا أبو سلمة الخزاعي قال أخبرنا عبد العزيز بن محمد عن عمرو بن أبي عمرو عن المطلب عن أبي موسى الأشعري قال( قال رسول الله صلى الله عليه وسلم من أحب دنياه أضر بآخرته ومن أحب آخرته أضر بدنياه فآثروا ما يبقى على ما يفنى)"مسند أحمد - أول مسند الكوفيين- حديث أبي موسى الأشعري رضي الله تعالى عنه:" 19199"
 
Top