• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حضرت عمرؓ سے منسوب ایک روایت،ایک کرامت۔۔کیا کہتے ہیں علماء کرام اس بارے میں

شمولیت
مئی 17، 2015
پیغامات
153
ری ایکشن اسکور
23
پوائنٹ
60
میں نے شیخ صاحب کی ویڈیو بھی اوپر اپ لوڈکی ہے اس میں انہوں نے محمد بن عجلان کی وضاحت کر دی ہے کہ ان کا سماع ثابت ہے اس لئے اس سند کی وجہ سے یہ روایت ٹھیک ہے۔محترم طاہر رفیق صاحب نے اسی راوی کے سماع کی تصریح نہ ہونے کی وجہ سے اس سند کو ضعیف کہا ہے۔اب سماع کی تصریح کے بعد تو واقعی یہ روایت ٹھیک ہو جاتی ہے،مگر میں نے ایک ویب سائٹ کا جو حوالہ دیا ہے اس میں بھی جہاں تک میں سمجھا ہوں اس راوی کو ضعیف قرار دیا ہے۔آپ بھائیوں سے درخواست ہے کہ سکین کے ترجمے کر دیجئے اور اوپر دیئے فتویٰ کے بھی تاکہ وضاحت سے سمجھ آسکے۔
 

خضر حیات

علمی نگران
رکن انتظامیہ
شمولیت
اپریل 14، 2011
پیغامات
8,771
ری ایکشن اسکور
8,488
پوائنٹ
964
جی محمد بن عجلان صدوق راوی ہے ، نافع سے اس کی روایت میں تدلیس کا خدشہ بھی ہو تو انہوں نے صراحت کردی ہے کہ یہ روایت انہوں نے ایاس بن معاویہ بن قرۃ ( جو کہ ثقہ راوی ہیں ) سے بھی سماعت کی ہے ۔ ملاحظہ فرمائیں لالکائی کی شرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة (7/ 1409) :
2537 - أنا الْحَسَنُ بْنُ عُثْمَانَ قَالَ: أنا أَحْمَدُ بْنُ جَعْفَرِ بْنِ حَمْدَانَ، قَالَ: نا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أَحْمَدَ، قَالَ: نا أَبُو عَمْرٍو الْحَارِثُ بْنُ [ص:1410] مِسْكِينٍ الْمِصْرِيُّ، قَالَ: أنا ابْنُ وَهْبٍ، عَنْ يَحْيَى بْنِ أَيُّوبَ، عَنِ ابْنِ عَجْلَانَ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ "، أَنَّ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ بَعَثَ جَيْشًا أَمَّرَ عَلَيْهِمْ رَجُلًا يُدْعَى سَارِيَةَ. قَالَ: فَبَيْنَا عُمَرُ يَخْطُبُ النَّاسَ يَوْمًا، قَالَ: فَجَعَلَ يَصِيحُ، وَهُوَ عَلَى الْمِنْبَرِ: «يَا سَارِيَ الْجَبَلَ، يَا سَارِيَ الْجَبَلَ» . قَالَ: فَقَدِمَ رَسُولُ الْجَيْشِ فَسَأَلَهُ، فَقَالَ: " يَا أَمِيرَ الْمُؤْمِنِينَ، لَقِينَا عَدُوَّنَا فَهَزَمْنَاهُمْ، فَإِذَا بِصَائِحٍ يَصِيحُ: «يَا سَارِيَ الْجَبَلَ، يَا سَارِيَ الْجَبَلَ» ، فَأَسْنَدْنَا ظُهُورَنَا بِالْجَبَلِ، فَهَزَمَهُمُ اللَّهُ ". فَقِيلَ لِعُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ: «إِنَّكَ كُنْتَ تَصِيحُ بِذَلِكَ» قَالَ ابْنُ عَجْلَانَ: وَحَدَّثَنِي إِيَاسُ بْنُ مُعَاوِيَةَ بْنِ قُرَّةَ بِذَلِكَ
لہذا جن اہل علم نے اس روایت کو حسن قرار دیا ہے ، ان کی بات درست محسوس ہوتی ہے ، علامہ زرکشی فرماتے ہیں :
وَقد افرد الْحَافِظ قطب الدّين عبد الْكَرِيم الْحلَبِي لهَذَا الحَدِيث جُزْءا ووثق رجال هَذِه الطَّرِيق
حافظ قطب الدین حلبی مستقل رسالہ تصنیف کیا ہے ، جس میں اس واقعہ کے سارے طرق جمع کیے ہیں ، اور اس طریق کے تمام رجال کو ثقہ قرار دیا ہے ۔
(التذكرة في الأحاديث المشتهرة = اللآلئ المنثورة في الأحاديث المشهورة (ص: 166)
علامہ سیوطی فرماتے ہیں :
وألف القطب الحلبي في صحته جزءاً.
قطب الحلبی نے مستقل رسالے میں اس کی صحت کو ثابت کیا ہے ۔
الدرر المنتثرة في الأحاديث المشتهرة (ص: 211)
شیخ البانی رحمہ اللہ نے (تحقيق الآيات البينات في عدم سماع الأموات (ص: 112) میں اس کی سند کو ’’ جید حسن ‘‘ کہا ہے ، جبکہ سلسلہ صحیحہ میں اس پر طویل گفتگو کی ہے ، اور اس بات کی طرف توجہ دلائی ہے کہ یہ واقعہ صرف ابن عجلان کی سند سے صحیح ہے ، لہذا دیگر اسانید میں جو اضافے ہیں ، اور جن سے اہل بدعت لوگ اپنے بدعی نظریات کے ثبوت کی دلیل لیتے ہیں ، بالکل درست نہیں ، شیخ کا مکمل کلام پیش خدمت ہے :
1110 - " يا سارية الجبل، يا سارية الجبل ".
رواه أبو بكر بن خلاد في " الفوائد " (1 / 215 / 2) : حدثنا محمد بن عثمان بن أبي شيبة حدثنا أحمد بن يونس حدثنا أيوب بن خوط عن عبد الرحمن السراج عن نافعأن عمر بعث سرية فاستعمل عليهم رجلا يقال له سارية، فبينما عمر يخطب يوم الجمعة فقال: فذكره. فوجدوا سارية قد أغار إلى الجبل في تلك الساعة يوم الجمعة وبينهما مسيرة شهر.قلت: وأيوب بن خوط متروك كما في " التقريب ". لكن رواه أبو عبد الرحمن السلمي في " الأربعين الصوفية " (3 / 2) والبيهقي في " دلائل النبوة " (2 /181 / 1 - مخطوطة حلب) من طرق عن ابن وهب أخبرني يحيى بن أيوب عن ابن عجلان عننافع به نحوه. ومن هذا الوجه رواه ابن عساكر (7 / 6 / 1) و (13 / 63 / 2)والضياء في " المنتقى من مسموعاته بمرو " (28 - 29) إلا أنهما قالا: عن نافع عن ابن عمر أن عمر ... وزادا في آخره وكذا البيهقي: " قال ابن عجلان:وحدثني إياس بن قرة بنحو ذلك "، وقال الضياء: " قال الحاكم (يعني أبا عبدالله) : هذا غريب الإسناد والمتن لا أحفظ له إسنادا غير هذا ".وذكره ابن كثير في " البداية " (7 / 131) فقال: " وقال عبد الله بن وهب.... " مثل رواية " الضياء " ولفظه: فجعل ينادي: يا سارية الجبل، يا ساريةالجبل ثلاثا. ثم قدم رسول الجيش، فسأله عمر، فقال: يا أمير المؤمنين هزمنا، فبينما نحن كذلك إذ سمعنا مناديا: يا سارية الجبل ثلاثا، فأسندنا ظهورنابالجبل فهزمهم الله. قال: فقيل لعمر: إنك كنت تصيح بذلك. ثم قال ابن كثير:" وهذا إسناد جيد حسن ". وهو كما قال، ثم ذكر له طرقا أخرى وقال: " فهذه طرق يشد بعضها بعضا ".
قلت: وفي هذا نظر، فإن أكثر الطرق المشار إليها مدارها على سيفبن عمروالواقدي وهما كذابان، ومدار إحداها على مالك عن نافع به نحوه. قال ابنكثير: " في صحته من حديث مالك نظر ". ورواه ابن الأثير في " أسد الغابة "(5 / 65) عن فرات بن السائب عن ميمون بن مهران عن ابن عمر عن أبيه أنه كان يخطب يوم الجمعة على منبر رسول الله صلى الله عليه وسلم فعرض له في خطبته أنهقال: يا سارية بن حصن الجبل الجبل، من استرعى الذئب ظلم فتلفت الناس بعضهمإلى بعض فقال علي: صدق والله ليخرجن مما قال، فلما فرغ من صلاته قال له علي: ما شيء سنح لك في خطبتك؟ قال: وما هو؟ قال: قولك: يا سارية الجبل الجبل، من استرعى الذئب ظلم، قال: وهل كان ذلك مني؟ قال: نعم وجميع أهل المسجدقد سمعوه، قال إنه وقع في خلدي أن المشركين هزموا إخواننا فركبوا أكتافهم،وأنهم يمرون بجبل، فإن عدلوا إليه قاتلوا من وجدوا وقد ظفروا وإن جازواهلكوا، فخرج مني ما تزعم أنك سمعته. قال: فجاء البشير بالفتح بعد شهر فذكرأنه سمع في ذلك اليوم في تلك الساعة حين جاوزوا الجبل صوتا يشبه صوت عمر يقول:يا سارية بن حصن الجبل الجبل، قال: فعدلنا إليه ففتح الله علينا.
قلت: وهذا سند واه جدا، فرات بن السائب، قال البخاري: " منكر الحديث ".وقال الدارقطني وغيره: " متروك "، وقال أحمد " قريب من محمد بن زيادالطحان، يتهم بما يتهم به ذاك ".
فتبين مما تقدم أنه لا يصح شيء من هذه الطرق إلا طريق ابن عجلان وليس فيه إلامناداة عمر " يا سارية الجبل " وسماع الجيش لندائه وانتصاره بسببه.ومما لا شك فيه أن النداء المذكور إنما كان إلهاما من الله تعالى لعمر وليس ذلك بغريب عنه، فأنه " محدث " كما ثبت عن النبي صلى الله عليه وسلم ولكن ليس فيه أن عمر كشف له حال الجيش، وأنه رآهم رأي العين، فاستدلال بعض المتصوفةبذلك على ما يزعمونه من الكشف للأولياء وعلى إمكان اطلاعهم على ما في القلوبمن أبطل الباطل، كيف لا وذلك من صفات رب العالمين المنفرد بعلم الغيبوالاطلاع على ما في الصدور. وليت شعري كيف يزعم هؤلاء ذلك الزعم الباطلوالله عز وجل يقول في كتابه: * (عالم الغيب، فلا يظهر على غيبه أحدا إلا منارتضى من رسول) *. فهل يعتقدون أن أولئك الأولياء رسل من رسل الله حتى يصح أنيقال إنهم يطلعون على الغيب بإطلاع الله إياهم!! سبحانك هذا بهتان عظيم.على أنه لو صح تسمية ما وقع لعمر رضي الله عنه كشفا، فهو من الأمور الخارقةللعادة التي قد تقع من الكافر أيضا، فليس مجرد صدور مثله بالذي يدل على إيمانالذي صدر منه فضلا على أنه يدل على ولايته ولذلك يقول العلماء إن الخارقللعادة إن صدر من مسلم فهو كرامة وإلا فهو استدراج، ويضربون على هذا مثلالخوارق التي تقع على يد الدجال الأكبر في آخر الزمان كقوله للسماء: أمطري،فتمطر وللأرض: أنبتي نباتك فتنبت، وغير ذلك مما جاءت به الأحاديث الصحيحة.ومن الأمثلة الحديثة على ذلك ما قرأته اليوم من عدد " أغسطس " من السنةالسادسة من مجلة " المختار " تحت عنوان: " هذا العالم المملوء بالألغاز وراءالحواس الخمس " ص 23 قصة " فتاة شابة ذهبت إلى جنوب أفريقيا للزواج من خطيبها،وبعد معارك مريرة معه فسخت خطبتها بعد ثلاثة أسابيع، وأخذت الفتاة تذرعغرفتها في اضطراب، وهي تصيح في أعماقها بلا انقطاع: " أواه يا أماه ... ماذاأفعل؟ " ولكنها قررت ألا تزعج أمها بذكر ما حدث لها؟ وبعد أربعة أسابيعتلقت منها رسالة جاء فيها: " ماذا حدث؟ لقد كنت أهبط السلم عندما سمعتكتصيحين قائلة: " أواه يا أماه ... ماذا أفعل؟ ". وكان تاريخ الرسالة متفقامع تاريخ اليوم الذي كانت تصيح فيه من أعماقها ". وفي المقال المشار إليهأمثلة أخرى مما يدخل تحت ما يسمونه اليوم بـ " التخاطر " و " الاستشفاف "ويعرف باسم " البصيرة الثانية " اكتفينا بالذي أوردناه لأنها أقرب الأمثالمشابهة لقصة عمر رضي الله عنه، التي طالما سمعت من ينكرها من المسلمين لظنهأنها مما لا يعقل! أو أنها تتضمن نسبة العلم بالغيب إلى عمر، بينما نجد غيرهؤلاء ممن أشرنا إليهم من المتصوفة يستغلونها لإثبات إمكاناطلاع الأولياء علىالغيب، والكل مخطئ. فالقصة صحيحة ثابتة وهي كرامة أكرم الله بها عمر، حيثأنقذ به جيش المسلمين من الأسر أو الفتك به ولكن ليس فيها ما زعمه المتصوفة منالاطلاع على الغيب، وإنما هو من باب الإلهام (في عرف الشرع) أو (التخاطر)في عرف العصر الحاضر الذي ليس معصوما، فقد يصيب كما في هذه الحادثة وقد يخطئكما هو الغالب على البشر، ولذلك كان لابد لكل ولي من التقيد بالشرع في كل مايصدر منه من قول أو فعل خشية الوقوع في المخالفة، فيخرج بذلك عن الولاية التيوصفها الله تعالى بوصف جامع شامل فقال: * (ألا إن أولياء الله لا خوف عليهمولا هم يحزنون. الذين آمنوا وكانوا يتقون) *. ولقد أحسن من قال:إذا رأيت شخصا قد يطير وفوق ماء البحر قد يسيرولم يقف على حدود الشرع فإنه مستدرج وبدعي

سلسلة الأحاديث الصحيحة وشيء من فقهها وفوائدها (3/ 101۔104)
 
Last edited:
شمولیت
مئی 17، 2015
پیغامات
153
ری ایکشن اسکور
23
پوائنٹ
60
@خضر حیات بھائی جزاک اللہ خیرا۔۔۔مجھے بھی یہ صحیح لگتی تھی مگر چونکہ دوسری طرف کے دلائل بھی موجود ہیں تو وضاحت سے سمجھنا ضروری تھا۔اللہ آپ کے اور ہم سب مسلمان بھائیوں کے علم و عمل میں اضافہ فرمائے۔آمین
 
شمولیت
نومبر 27، 2014
پیغامات
221
ری ایکشن اسکور
63
پوائنٹ
49
روایت کے بارے میں خضر بھائی نے وضاحت کر دی ہے ۔
میں جن صاحب نے اعتراضات کئے ہیں جو کاشف بھائی نے نقل کئے ہیں ۔ ان کی کچھ باتوں پر تبصرہ کرنا چاہتا ہوں ۔
جہاں تک قران کا تعلق ہے اس کا اعجاز یہ ہے کہ اس میں قیامت تک کوئی تبدیلی ممکن نہیں۔۔۔
جہاں تک احادیث کا سوال ہے تو احادیث کی جو کتابیں مستند سمجھی جاتی ہیں اور جن کے بارے آج تک کوئی یہ اعتراض نہیں کر سکا کہ ان میں کسی ضعیف راوی سے احادیث روایت کی گئیں ہیں۔ جیسے مسلم، بخاری وغیرہ ۔
بھائی نے ادھر یہ بات کی ہے ۔اور آگے بخاری و مسلم کے ایک راوی کے بارے میں لکھا ہے ۔​
ابن عجلان کا شاگرد یحی بن ایوب المصری بھی جو اس روایت کا ایک فرد ہے سخت ضعیف راوی ہے۔
اس روایت کی علتیں : پہلی غور طلب بات یہ ہے کہ نبی پاک کی وفات کے 400 سال بعد تک یہ واقعہ صحاح ستہ سمیت حدیث کی کسی قابل ذکر کتاب میں نہیں ملتا۔
اس واقعہ کو پانچویں صدی میں بیہقی نے اپنی کتاب دلایل النبوت میں اور پھر ابن مردویہ کے ذکر کیا۔
منکرین حدیث یا متجددین کی کتب میں اکثر یہ جملے پڑھنے کو مل جاتے ہیں ۔ حسن ظن رکھتے ہوئے بھائی کو ناواقفیت کی وجہ سے معزور سمجھتے ہیں ۔
صحاح ستہ کے ہمعصر امام احمد ؒ کی کتاب فضائل الصحابہؓ کے زوائد میں ان کے بیٹے نے نقل کی ہے ۔
راوی کے مطابق یہ واقعہ خطبہ جمعہ کے دوران پیش آیا۔ اور کتنی عجیب بات ہے کہ سوائے عبداللہ بن عمر کے کسی اور صحابی یہ تابعی نے اسے کہیں بھی روایت نہیں کیا۔ کتنے صحابہ اور تابعین اس خطبہ کے دوران وہاں موجود ہوں گے۔
کیا اس فارمولے کے تحت اکثر کتب حدیث کی پہلی حدیث ۔انما الاعمال بالنیات۔۔جو حضرت عمرؓ نے ممبر پر سنی ۔۔لیکن کسی اور صحابیؓ سے صحیح سند سے مروی نہیں۔ ۔بھی نشانہ پہ آجاتی ہے کہ نہیں ۔۔؟

اس خاکسار نے محدثین کی تحقیق اس حدیث کے بارے میں نقل کر دی ہیں تاکہ میرے تمام مسلمان بھائی اس روایت کی حقیقت تک پہنج جائیں۔
محدثین کی تحقیق اس حدیث کے بارے میں ہرگز نقل نہیں کی ۔۔اس روایت پر تو جرح ہی دور جدید میں شروع ہوئی ہے ۔اگر کسی محدث نے اس روایت پر جرح کی ہے تو نقل کریں ۔
راویوں پہ جرح نقل کی ہے بھائی نے ۔
میرے بھائی محدثین کو علم تھا اس بات کا ۔غالباََ اسی لئے اس روایت پہ صحیح کا حکم نہیں بلکہ حسن کا حکم لگایا گیا ہے ۔
حافظ ابن کثیر ؒ نے البدایۃ میں حسن فرمایا۔
حافظ ابن حجرؒ نے اصابۃ میں حسن کہا۔
حافظ سخاویؒ نے تخریج اربعین السلمیۃ میں اور مقاصد میں حسن کہا ۔
ملا علی قاریؒ نے حسن کہا۔مرقاۃ میں۔
شیخ الاسلام ابن تیمیہؒ نے ۵ یا ۶ جگہوں پہ منہاج السنۃ اور فتاوٰی میں استدلال کیا اسی روایت سے
ابن قیمؒ نے مدارج میں استدلال کیا ۔
حافظ خطابیؒ نے بخاری کی حدیث جس میں حضرت عمرؓ کو محَدث فرمایا گیا ہے کی شرح میں اسی حدیث کو پیش کیا۔
بلکہ امام ابو حنیفہؒ نے شیعہ سے مناظرے میں اس روایت کو پیش کیا جیسا کہ حافظ ابن تیمیہ ؒ اور ابن کثیرؒ نے نقل کیا ۔
ابن جوزی ؒ جیسے متشدد محدث نے سیرت عمرؓ اور المنتظم میں بغیر تنقید نقل کیا ۔
اور حوالے میرے شمار سے باہر ہیں ۔
اور اس روایت پر جرح کا مجھے علم نہیں ہو سکا
 
شمولیت
جون 05، 2018
پیغامات
315
ری ایکشن اسکور
16
پوائنٹ
79
.

یا ساریۃ الجبل والی روایات کی تحقیق
علامہ زبیر علی زئی

~~~~~~~~~~~~ ؛

سوال
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا یا ساریۃ الجبل والی روایت صحیح ہے؟ اگر صحیح ہے تو مفہوم واضح کریں اور اگر ضعیف ہے تو وجہ ضعف بیان کردیں۔ جزاکم اللہ خیرا


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

و علیکم السلام و رحمة الله و برکاته !

الحمد لله، و الصلاة و السلام علىٰ رسول الله،
أما بعد !

اس سلسلے میں راقم الحروف کا ایک تفصیلی مضمون ’’ہفت روزہ الاعتصام لاہور‘‘ ( ج ۴۳ شمارہ ۴۵ ، ۸ نومبر ۱۹۹۱ ء ) میں شائع ہوا تھا جس کا خلاصہ یہ تھا کہ یا ساریۃ الجبل والا قصہ بلحاظ سند صحیح ثابت نہیں ہے ۔ اس کی سندوں کی بحث مختصراً درج ذیل ہے:

(۱) ابن عجلان عن نافع عن ابن عمر۔ الخ ( دلائل النبوۃ للبیہقی ۶ ؍ ۳۷۰ )

اس کی سند ابن عجلان کی تدلیس کی وجہ سے ضعیف ہے ۔

محمد بن عجلان مدلس ہیں ۔ ( طبقات المدلسین بتحقیقی ۹۸ ؍ ۳ ص۶۰ ) اور عن سے روایت کر رہے ہیں ۔ اصولِ حدیث میں یہ مقر ہے کہ غیر صحیحین میں مدلس کا عنعنہ صحت حدیث کے لیے قادح ہے ۔ یعنی مدلس راوی کی عن والی روایت ضعیف ہوتی ہے ۔ ( دیکھئے مقدمہ ابن الصلاح ص۹۹ )

(۲) ایاس بن معاویہ بن قرۃ کی مرسل روایت ( دلائل النبوۃ للبیہقی ۶ ؍ ۳۷۰ )

مرسل روایت جمہور محققین کے نزدیک مردود ہوتی ہے۔ ( دیکھئے الفیۃ العراقی: ۱۲۳ ص ۲۸ )

(۳) ایوب بن خوط عن عبدالرحمان السراج عن نافی، الخ [ الفوائد لابی بکر بن خلاد ( ۱ ؍ ۲۱۵ ؍ ۲ قلمی ) بحوالہ السلسلۃ الصحیحۃ ( ۳ ؍ ۱۰۱ ح ۱۱۱ ۰ ) ] اس کا راوی ایوب بن خوط متروک ہے ۔ [ التقریب : ۶۱۲ ]

(۴) فرات بن السائب عن میمون بن مہران عن ابن عمر، الخ ( اسد الغابہ : ۲ ؍ ۲۴۴ ) فرات بن السائب متروک و سخت مجروح ہے ۔ [ دیکھئے میزان الاعتدال ۳ ؍ ۳۴۱ و کتب المجروحین ]

(۵) الواقدی عن شیوخہ ( البدایہ و النہایہ ۷ ؍ ۱۳۵ ، الاصابۃ ۲ ؍ ۳ )

واقدی مشہور کذاب اور متروک راوی ہے۔ (دیکھئے تہذیب التہذیب ۹ ؍ ۳۲۳ ۔ ۳۲۶ )

(۶) سیف بن عمر عن شیوخہ ( البدایہ و النہایہ ۷ ؍ ۱۳۴ )

سیف مشہور متروک الحدیث اور زندیق ہے ۔ (تہذیب التہذیب ۴ ؍ ۲۵۹ ، ۲۶۰ )

(۷) ہشام بن محمد بن مخلد بن مطر عن ابی توبۃ عن محمد بن مھاجر عن ابی بلج علی بن عبداللہ الخ ( السنۃ للالکائی ۷ ؍ ۱۳۰ ، ۱۳۱ )

اس میں ہشام اور ابوبلج کے حالات نا معلوم ہیں یعنی دونوں مجہول ہیں ۔

(۸) لالکائی عن مالک عن نافع عن ابن عمر [ البدایہ و النہایہ ۷ ؍ ۱۳۵ ، و کرامات اللالکائی : ۷۳ دوسرا نسخہ : ۶۷ ]

اس کے راوی عمرو بن الازہر کے بارے میں امام دارقطنی نے فرمایا : کذاب ( الضعفاء و المتروکون : ۳۹۵ ) ابن حبان نے اسے حدیثیں گھڑنے والا قرار دیا ۔ دیکھئے المجروحین ( ۲ ؍ ۷۸ ) لہٰذا یہ سند موضوع ہے۔ خود حافظ ابن کثیر نے کہا : ’’ و فی صحته من حدیث مالک نظر ‘‘ اور اس کی صحت میں نظر ہے ۔ ( البدایہ ۷ ؍ ۱۳۵ )

اس قصے کی دیگر سندیں بھی مردود ہیں لہٰذا یہ کہنا کہ یہ ایک دوسرے کی تقویت کرتی ہیں غلط ہے ۔

اس تحقیق کا خلاصہ یہ ہے کہ مذکورہ واقعہ اپنی تمام سندوں کے ساتھ ضعیف و ناقابل اعتماد ہے ۔ لہٰذا اسے کسی متاخر امام یا عالم کا صحیح قرار دینا اصول حدیث کی رو سے غلط ہے ۔ جو لوگ اسے صحیح سمجھتے ہیں انھیں چاہیے کہ اصول حدیث کی روشنی میں اس واقعہ کا صحیح ہونا ثابت کریں ۔

ھذا ما عندي و الله أعلم بالصواب
علامہ زبیر علی زئی

فتاویٰ علمیہ ( توضیح الاحکام )
ج 2 ، ص 433

.
 
شمولیت
جون 05، 2018
پیغامات
315
ری ایکشن اسکور
16
پوائنٹ
79
روایت یا ساریۃ الجبل صحیح یا ضعیف

شیخ ابو خزیمہ محمد حسین الظاہری


Riwayat Ya Saria Aljabal Sahi Hy Ya Zaeef ?

Sh. Abu Khuzaima Mohammed Husain Alzahiri


.
 
Top