• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

شیخ عبدالحق بنارسی شیعہ تھے؟

شمولیت
دسمبر 10، 2013
پیغامات
389
ری ایکشن اسکور
142
پوائنٹ
91
تو کیا ہم یہ کہنے میں حق بجانب ہیں کہ مولوی عبید اللہ میں ’’ سکھ مذہب کی کچھ باقیات ضرور تھیں ؟
حضرت مولانہ عبیداللہ سندہی رحمہ اللہ اور شوکانی کے معاملے میں فرق ہے حضرت مولانہ بچپن میں مسلمان ہوئے جب ان کی عمر محض 14 سال تھی وہ بھی سندھ میں تو اس عمر میں ان کو سکھ مذہب کا کیا معلوم ہوگا ۔ لیکن شوکانی نے تو باقائدہ زیدیہ مذہب کی فقہ و حدیث کی تعلیم حاصل کی تھی۔۔

یہی وجہ تھی کہ وہ یزید کو لعنت کرنے سے گریز نہیں کرتے اور سیدنا معاویہ رضہ کی کسی بھی فضلیت کے قائل نہیں۔۔

وہ نیل الاوطار جلد 7 202 پر لکھتے ہیں
خمير السكير الهاتك لحرم الشريعة المطهرة يزيد بن معاوية لعنهم الله
یزید بن معاویہ اس پر اللہ کی لعنت ہو اس نے شراب خؤری کی اور شریعت المطہرہ کا مذاق اڑایا۔۔۔

اگر یہ سلفی تھے تو دیکھیں کیسے بلند دعوی سے ضعیف روایات کو بنیاد بنا کر قرون اولی کے ایک متفقہ خلیفہ پر شراب خوری کا الزام لگا رہے ہیں

اس کے علاوہ جناب معاویہ رضی اللہ عنہ کی فضلیت کے قائل نہیں تھے ان کی فضلیت میں موجود تمام روایات کو من گھڑت کہتے تھے (ان کی کتاب فوائد المجموئہ 147)
یعنی ظاہر ہے جو آدمی معاویہ رضہ کے بارے میں ایسا رویہ رکھے گا تو اس میں شیعت کا باقی ہونا تو کم سے کم ثابت ہوتا ہے۔۔
 
شمولیت
دسمبر 10، 2013
پیغامات
389
ری ایکشن اسکور
142
پوائنٹ
91
حضرت مولانہ عبیداللہ سندہی رحمہ اللہ اور شوکانی کے معاملے میں فرق ہے حضرت مولانہ بچپن میں مسلمان ہوئے جب ان کی عمر محض 14 سال تھی وہ بھی سندھ میں تو اس عمر میں ان کو سکھ مذہب کا کیا معلوم ہوگا ۔ لیکن شوکانی نے تو باقائدہ زیدیہ مذہب کی فقہ و حدیث کی تعلیم حاصل کی تھی۔۔

یہی وجہ تھی کہ وہ یزید کو لعنت کرنے سے گریز نہیں کرتے اور سیدنا معاویہ رضہ کی کسی بھی فضلیت کے قائل نہیں۔۔

وہ نیل الاوطار جلد 7 202 پر لکھتے ہیں
خمير السكير الهاتك لحرم الشريعة المطهرة يزيد بن معاوية لعنهم الله
یزید بن معاویہ اس پر اللہ کی لعنت ہو اس نے شراب خؤری کی اور شریعت المطہرہ کا مذاق اڑایا۔۔۔

اگر یہ سلفی تھے تو دیکھیں کیسے بلند دعوی سے ضعیف روایات کو بنیاد بنا کر قرون اولی کے ایک متفقہ خلیفہ پر شراب خوری کا الزام لگا رہے ہیں

اس کے علاوہ جناب معاویہ رضی اللہ عنہ کی فضلیت کے قائل نہیں تھے ان کی فضلیت میں موجود تمام روایات کو من گھڑت کہتے تھے (ان کی کتاب فوائد المجموئہ 147)
یعنی ظاہر ہے جو آدمی معاویہ رضہ کے بارے میں ایسا رویہ رکھے گا تو اس میں شیعت کا باقی ہونا تو کم سے کم ثابت ہوتا ہے۔۔
 
شمولیت
دسمبر 10، 2013
پیغامات
389
ری ایکشن اسکور
142
پوائنٹ
91
حضرت مولانہ عبیداللہ سندہی رحمہ اللہ اور شوکانی کے معاملے میں فرق ہے حضرت مولانہ بچپن میں مسلمان ہوئے جب ان کی عمر محض 14 سال تھی وہ بھی سندھ میں تو اس عمر میں ان کو سکھ مذہب کا کیا معلوم ہوگا ۔ لیکن شوکانی نے تو باقائدہ زیدیہ مذہب کی فقہ و حدیث کی تعلیم حاصل کی تھی۔۔

یہی وجہ تھی کہ وہ یزید کو لعنت کرنے سے گریز نہیں کرتے اور سیدنا معاویہ رضہ کی کسی بھی فضلیت کے قائل نہیں۔۔

وہ نیل الاوطار جلد 7 202 پر لکھتے ہیں
خمير السكير الهاتك لحرم الشريعة المطهرة يزيد بن معاوية لعنهم الله
یزید بن معاویہ اس پر اللہ کی لعنت ہو اس نے شراب خؤری کی اور شریعت المطہرہ کا مذاق اڑایا۔۔۔

اگر یہ سلفی تھے تو دیکھیں کیسے بلند دعوی سے ضعیف روایات کو بنیاد بنا کر قرون اولی کے ایک متفقہ خلیفہ پر شراب خوری کا الزام لگا رہے ہیں

اس کے علاوہ جناب معاویہ رضی اللہ عنہ کی فضلیت کے قائل نہیں تھے ان کی فضلیت میں موجود تمام روایات کو من گھڑت کہتے تھے (ان کی کتاب فوائد المجموئہ 147)
یعنی ظاہر ہے جو آدمی معاویہ رضہ کے بارے میں ایسا رویہ رکھے گا تو اس میں شیعت کا باقی ہونا تو کم سے کم ثابت ہوتا ہے۔۔
 
شمولیت
دسمبر 01، 2013
پیغامات
63
ری ایکشن اسکور
36
پوائنٹ
43
کیا یہ رسالہ نیٹ پر موجود ہے؟ اگر نہیں ہے تو آپ یہ مکمل مضمون کے سکین بمع رسالہ کے ٹائٹل کے ساتھ اپلوڈ کر دیں بہت مہربانی ہو گی۔
 
شمولیت
اپریل 18، 2020
پیغامات
34
ری ایکشن اسکور
2
پوائنٹ
29
حضرت مولانہ عبیداللہ سندہی رحمہ اللہ اور شوکانی کے معاملے میں فرق ہے حضرت مولانہ بچپن میں مسلمان ہوئے جب ان کی عمر محض 14 سال تھی وہ بھی سندھ میں تو اس عمر میں ان کو سکھ مذہب کا کیا معلوم ہوگا ۔ لیکن شوکانی نے تو باقائدہ زیدیہ مذہب کی فقہ و حدیث کی تعلیم حاصل کی تھی۔۔

یہی وجہ تھی کہ وہ یزید کو لعنت کرنے سے گریز نہیں کرتے اور سیدنا معاویہ رضہ کی کسی بھی فضلیت کے قائل نہیں۔۔

وہ نیل الاوطار جلد 7 202 پر لکھتے ہیں
خمير السكير الهاتك لحرم الشريعة المطهرة يزيد بن معاوية لعنهم الله
یزید بن معاویہ اس پر اللہ کی لعنت ہو اس نے شراب خؤری کی اور شریعت المطہرہ کا مذاق اڑایا۔۔۔

اگر یہ سلفی تھے تو دیکھیں کیسے بلند دعوی سے ضعیف روایات کو بنیاد بنا کر قرون اولی کے ایک متفقہ خلیفہ پر شراب خوری کا الزام لگا رہے ہیں

اس کے علاوہ جناب معاویہ رضی اللہ عنہ کی فضلیت کے قائل نہیں تھے ان کی فضلیت میں موجود تمام روایات کو من گھڑت کہتے تھے (ان کی کتاب فوائد المجموئہ 147)
یعنی ظاہر ہے جو آدمی معاویہ رضہ کے بارے میں ایسا رویہ رکھے گا تو اس میں شیعت کا باقی ہونا تو کم سے کم ثابت ہوتا ہے۔۔
یزید کوئی متفقہ خلیفہ نہیں تھا۔ اس کے دور میں حسین رضی اللہ عنہ کا اور ان کے ساتھیوں کا بے رحمانہ قتل ہوا۔ اس کے مکہ کی بے حرمتی کی اور مدینہ میں فساد مچایا۔ اللہ کی لعنت ہو اس شخص پر جس نے مدینہ والوں کو تکلیف پہنچائی یا مدینہ میں کوئی بدعت جاری کی۔
 
Top