• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

عشرہ ذو الحجہ میں تہلیل، تحمید، تکبیر

انس

منتظم اعلیٰ
رکن انتظامیہ
شمولیت
مارچ 03، 2011
پیغامات
4,178
ری ایکشن اسکور
15,342
پوائنٹ
800
حدیث مبارکہ میں ہے:
ما من أيام أعظم عند الله ولا أحب إليه العمل فيهن من هذه الأيام العشر فأكثروا فيهن من التهليل والتكبير والتحميد ... مسند أحمد وقال أحمد شاكر: إسناده صحيح

کہ ’’اللہ تعالیٰ کے نزدیک کوئی عمل اتنا محبوب اور اور عظمت والا نہیں جتنا وہ عمل ہے جو ان دس دنوں (عشرہ ذو الحجہ) میں کیا ہے، پس تم ان میں کثرت سے تہلیل، تکبیر اور تحمید یعنی لا إله إلا الله والله أكبر ولله الحمد کا ورد کیا کرو۔‘‘

 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,537
پوائنٹ
791
مسند امام احمد بن حنبلؒ میں حدیث شریف ہے کہ :

عَنِ ابْنِ عُمَرَ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: " مَا مِنْ أَيَّامٍ أَعْظَمُ عِنْدَ اللهِ، وَلَا أَحَبُّ إِلَيْهِ مِنَ الْعَمَلِ فِيهِنَّ مِنْ هَذِهِ الْأَيَّامِ الْعَشْرِ،فَأَكْثِرُوا فِيهِنَّ مِنَ التَّهْلِيلِ، وَالتَّكْبِيرِ، وَالتَّحْمِيدِ " ) مسند امام احمدؒ (5446 )
قال الشیخ شعیب الارناؤط :حديث صحيح
ترجمہ :
سیدنا
عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ کے نزدیک کوئی عمل اتنا با عظمت اور محبوب نہیں، جتنا وہ عمل ہے جو (ذوالحجہ کے )ان دس دنوں میں کیا جائے۔ پس تم ان دنوں میں کثرت سے تہلیل (لا الہ الا اللہ) تکبیر (اللہ اکبر )اور تحمید (الحمد للہ )پڑھاکرو۔
ـــــــــــــــــــــ

وأخرجه البيهقي في "الشعب" (3750) من طريق عفان بن مسلم، بهذا الإسناد.
وأخرجه عبد بن حميد (807) عن عمرو بن عون، عن أبي عوانة، به.
وأخرجه الطحاوي في "شرح مشكل الآثار" (2971) ، والبيهقي في "الشعب" (3751) من طريق مسعود بن سعد، وأخرجه ابن أبي شيبة (ص 257 الجزء الذي نشره العمروي) عن محمد بن فضيل، كلاهما (مسعود ومحمد) عن يزيد بن أبي وأخرجه أبو عوانة في الصيام كما في "إتحاف المهرة

 
Last edited:

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,537
پوائنٹ
791
عن سعيد بن جبير، ‏‏‏‏‏‏عن ابن عباس، ‏‏‏‏‏‏عن النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏انه قال:‏‏‏‏ "ما العمل في ايام العشر افضل منها في هذه، ‏‏‏‏‏‏قالوا:‏‏‏‏ ولا الجهاد، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ ولا الجهاد، ‏‏‏‏‏‏إلا رجل خرج يخاطر بنفسه وماله فلم يرجع بشيء"(صحیح بخاری )
جناب سعید بن جبیر رحمہ اللہ نے، سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت کیا کہ وہ فرماتے ہیں : کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ان دنوں کے عمل سے زیادہ کسی دن کے عمل میں فضیلت نہیں۔ لوگوں نے پوچھا اور جہاد میں بھی نہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ہاں جہاد میں بھی نہیں سوا اس شخص کے جو اپنی جان و مال خطرہ میں ڈال کر نکلا اور واپس آیا تو ساتھ کچھ بھی نہ لایا (سب کچھ اللہ کی راہ میں قربان کر دیا)۔
صحیح بخاری 969
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور صحیح البخاری ہی میں ہے کہ :
وَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ وَاذْكُرُوا اللَّهَ فِي أَيَّامٍ مَعْلُومَاتٍ أَيَّامُ الْعَشْرِ وَالْأَيَّامُ الْمَعْدُودَاتُ أَيَّامُ التَّشْرِيقِ وَكَانَ ابْنُ عُمَرَ، وَأَبُو هُرَيْرَةَ يَخْرُجَانِ إِلَى السُّوقِ فِي أَيَّامِ الْعَشْرِ يُكَبِّرَانِ وَيُكَبِّرُ النَّاسُ بِتَكْبِيرِهِمَا وَكَبَّرَ مُحَمَّدُ بْنُ عَلِيٍّ خَلْفَ النَّافِلَةِ.
اور سیدنا عبداللہ ابن عباس رضی اللہ عنہما نے کہا کہ (سورۃ الحج کی اس آیت) ”اور اللہ تعالیٰ کا ذکر معلوم دنوں میں کرو“ میں ایام معلومات سے مراد ذی الحجہ کے دس دن ہیں اور «اأيام المعدودات» سے مراد ایام تشریق ہیں۔
اور سیدنا عبداللہ ابن عمر اور ابوہریرہ رضی اللہ عنہما ان دس دنوں میں بازار کی طرف نکل جاتے اور لوگ ان بزرگوں کی تکبیر (تکبیرات) سن کر تکبیر کہتے اور محمد بن باقر رحمہ اللہ نفل نمازوں کے بعد بھی تکبیر کہتے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
Top