• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مرض وفات النبی صلی الله علیہ وسلم کا واقعہ / یعنی واقعہ قرطاس

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
صحیح مسلم کی روایت کے الفاظ ہیں

ان رسول الله صلی الله علیہ وسلم یھجر

جس میں اس کو سوالیہ نہیں بلکہ خبر کے طور پر بیان کیا گیا ہے
ابن مقلں کی استفہام انکاری والی رائے مسلم کی اس حدیث سے رد ہو جاتی ہے
کبھی کتاب کی صورت اصلی حالت میں صحیح مسلم پڑھی ہو تو علم ہو کہ صحیح مسلم میں ’‘ خبر ’‘ کے صیغے والی عبد اللہ بن عباس کی مختصر روایت سے پہلے
عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کی مکمل روایت نقل کی گئی ہے ،اور اتنی بات جاننے کیلئے معمولی علم بھی کار آمد ہے کہ مفصل اور مکمل بات کو مختصر کے مقابل
کیا مقام اور حیثیت حاصل ہے ۔
صحیح مسلم کی مکمل روایت میں ’’استفہام انکاری ‘‘ ہی ہے:
قال ابن عباس: يوم الخميس، وما يوم الخميس ثم بكى حتى بل دمعه الحصى، فقلت: يا ابن عباس، وما يوم الخميس؟ قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه، فقال: «ائتوني أكتب لكم كتابا لا تضلوا بعدي»، فتنازعوا وما ينبغي عند نبي تنازع، وقالوا: ما شأنه أهجر؟ استفهموه، قال: " دعوني فالذي أنا فيه خير، أوصيكم بثلاث: أخرجوا المشركين من جزيرة العرب، وأجيزوا الوفد بنحو ما كنت أجيزهم "، قال: وسكت، عن الثالثة، أو قالها فأنسيتها، ‘‘
 
Last edited:

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
سفیان بن عیینہ بھی اس لفظ کو ہذیان کہہ رہے ہیں
میں صدقے اس فہم کے !
سفیان ؒ اسکو ۔۔ہذیان ۔۔نہیں کہہ رہے ،وہ تو صرف یہ بتا رہے ہیں ۔۔أهجر ۔۔میں (ھجر ) سے مراد (هذى )ہے ،اور جملہ ہے ’’أهذى ‘‘ اور یہی بات ہم پہلے بھی بتا چکے
ہیں ،
کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
لیکن نبی اکر م و اعظم ﷺ کے گستاخ ۔۔۔گستاخی کی ہذیان گوئی پر اڑے بیٹھے ہیں ۔۔
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
(اس دن ) رسول اللہ ﷺ کی تکلیف بڑھ گئی ،تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے ،،( یہ حکم سن کر )موجود لوگ اختلاف کرنے لگے ،(کوئی لکھوانے کی بات کرتا ،تو کوئی نہ لکھوانے کی )
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،
تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )
استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،
فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے
‘‘
بات صاف ہے کہ
أهجر۔۔ کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،
اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )
اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
یعنی جو آدمی بہکی بہکی باتیں کر رہا ہو ،اس سے کسی بات کی وضاحت اور استفہام چہ معنی ؟
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
کبھی کتاب کی صورت اصلی حالت میں صحیح مسلم پڑھی ہو تو علم ہو کہ صحیح مسلم میں ’‘ خبر ’‘ کے صیغے والی عبد اللہ بن عباس کی مختصر روایت سے پہلے
عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کی مکمل روایت نقل کی گئی ہے ،اور اتنی بات جاننے کیلئے معمولی علم بھی کار آمد ہے کہ مفصل اور مکمل بات کو مختصر کے مقابل
کیا مقام اور حیثیت حاصل ہے ۔
صحیح مسلم کی مکمل روایت میں ’’استفہام انکاری ‘‘ ہی ہے:
قال ابن عباس: يوم الخميس، وما يوم الخميس ثم بكى حتى بل دمعه الحصى، فقلت: يا ابن عباس، وما يوم الخميس؟ قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه، فقال: «ائتوني أكتب لكم كتابا لا تضلوا بعدي»، فتنازعوا وما ينبغي عند نبي تنازع، وقالوا: ما شأنه أهجر؟ استفهموه، قال: " دعوني فالذي أنا فيه خير، أوصيكم بثلاث: أخرجوا المشركين من جزيرة العرب، وأجيزوا الوفد بنحو ما كنت أجيزهم "، قال: وسكت، عن الثالثة، أو قالها فأنسيتها، ‘‘
میں صدقے اس فہم کے !
سفیان ؒ اسکو ۔۔ہذیان ۔۔نہیں کہہ رہے ،وہ تو صرف یہ بتا رہے ہیں ۔۔أهجر ۔۔میں (ھجر ) سے مراد (هذى )ہے ،اور جملہ ہے ’’أهذى ‘‘ اور یہی بات ہم پہلے بھی بتا چکے
ہیں ،

لیکن نبی اکر م و اعظم ﷺ کے گستاخ ۔۔۔گستاخی کی ہذیان گوئی پر اڑے بیٹھے ہیں ۔۔
(اس دن ) رسول اللہ ﷺ کی تکلیف بڑھ گئی ،تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے ،،( یہ حکم سن کر )موجود لوگ اختلاف کرنے لگے ،(کوئی لکھوانے کی بات کرتا ،تو کوئی نہ لکھوانے کی )
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،
تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )
استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،
فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے
‘‘
بات صاف ہے کہ
أهجر۔۔ کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،
اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )
اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
یعنی جو آدمی بہکی بہکی باتیں کر رہا ہو ،اس سے کسی بات کی وضاحت اور استفہام چہ معنی ؟

صحیح مسلم کی حدیث ہے

حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، أَخْبَرَنَا وَكِيعٌ، عَنْ مَالِكِ بْنِ مِغْوَلٍ، عَنْ طَلْحَةَ بْنِ مُصَرِّفٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، أَنَّهُ قَالَ: يَوْمُ الْخَمِيسِ، وَمَا يَوْمُ الْخَمِيسِ ثُمَّ جَعَلَ تَسِيلُ دُمُوعُهُ، حَتَّى رَأَيْتُ عَلَى خَدَّيْهِ كَأَنَّهَا نِظَامُ اللُّؤْلُؤِ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «ائْتُونِي بِالْكَتِفِ وَالدَّوَاةِ – أَوِ اللَّوْحِ وَالدَّوَاةِ – أَكْتُبْ لَكُمْ كِتَابًا لَنْ تَضِلُّوا بَعْدَهُ أَبَدًا»، فَقَالُوا: إِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَهْجُرُ


یہ سعید بن جبیر کی ابن عبّاس سے سنی ہوئی روایت ہے اور اس میں اس کو خبر کے طور پر کہا گیا ہے کہ اہل بیت نے کہا بے شک نبی صلی الله علیہ وسلم سے ھجر ادا ہوا

اس کے بعد استفہام انکاری والی بات کی کوئی اہمیت نہیں رہتی کیونکہ ابن عباس خود اس کی تشریح کر چکے ہیں

کہا گیا ہے

سفیان ؒ اسکو ۔۔ہذیان ۔۔نہیں کہہ رہے ،وہ تو صرف یہ بتا رہے ہیں ۔۔أهجر ۔۔میں (ھجر ) سے مراد (هذى )ہے ،اور جملہ ہے ’’أهذى ‘‘ اور یہی بات ہم پہلے بھی بتا چکے

حالانکہ سفیان کہتے ہیں

قال سفيان: يعني هذى


هذى اب ’’أهذى ‘‘ کیسے ہو گیا؟ اور پچھلے اقتباس میں یہ کہاں تھا؟

جو منظر کشی کی گئی ہے اس میں نبی صلی الله علیہ وسلم کے الفاظ کا ترجمہ غلط کیا گیا ہے
لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں

حالانکہ یہ ترجمہ غلط ہے اور اس کے بعد پوری روایت کا مفھوم بدل جاتا ہے

اگر یہ مان لیا جائے کہ نبی صلی الله علیہ وسلم نے حقیقت حال کے بر خلاف خود کچھ لکھنے کا نہیں کہا تو پھر سوال اٹھتا ہے کہ اہل بیت کو اختلاف کیوں ہوا؟ کس بات پر ہوا؟ نبی صلی الله علیہ وسلم کو لکھنے کیوں نہیں دیا گیا اور عمر رضی الله عنہ کا یہ کہنا کہ نبی صلی الله علیہ وسلم پر بیماری کا غلبہ ہے سب اس طرف اشارہ کرتے ہیں کہ وہاں زبردستی نبی صلی الله علیہ وسلم کے باوجود اصرار پر عمر رضی الله تعالی عنہ نے اپنی بات چلائی

اب اس غلط سلط ترجمہ کو دوبارہ دیکھیں

سیدنا عبد اللہ بن عباس ؓ نے فرمایا : جمعرات کا دن ،کیا تھا جمعرات کا دن ؟

پھر عبد اللہ یہ کہہ کر رو دئیے ،اور اتنا روئے کہ اپنے آنسووں سے زمین پر کنکریاں بھی بھگو دیں ،،

سعید کہتے ہیں ہم نے پوچھا :کیا (ہوا ) تھا جمعرات کے دن ؟

کہنے لگے :(اس دن ) رسول اللہ ﷺ کی تکلیف بڑھ گئی ،تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے ،،( یہ حکم سن کر )موجود لوگ اختلاف کرنے لگے ،(کوئی لکھوانے کی بات کرتا ،تو کوئی نہ لکھوانے کی )
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،

تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )

استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،

فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے ،

تو آپ نے فرمایا :مجھے چھوڑ دو ،تم جس طرف مجھے لانا چاہتے ہو،میں اس سے بہتر میں (مشغول ) ہوں،

یعنی نبی صلی الله علیہ وسلم ایک حکم دے رہے ہیں اور اس میں صحابہ ٹال مٹول سے کام لے رہے ہیں اور اپس میں جھگڑ رہے ہیں پھر وہ جا کر جب ان سے پوچھتے ہیں جبکہ ان کو پتا ہے کہ نبی نے پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے تو معاملہ سلجھنے کے بجائے اور الجھ جاتا ہے اگر سب سمجھ داری سے فرمایا اور اس کو جا کر ان سے پوچھا تو پھر نبی صلی الله علیہ وسلم کا یہ کہنا کہ مجھے چھوڑ دو ،تم جس طرف مجھے لانا چاہتے ہو،میں اس سے بہتر میں (مشغول ) ہوں کا کیا مطلب ہے

یہ سب اس لئے ہوا کہ روایت کے ترجمہ میں نبی صلی الله علیہ وسلم کے الفاظ کا درست ترجمہ نہیں کیا گیا
دوم ھجر کا بھی صحیح ترجمہ نہیں کیا گیا اور اس کو زبر دستی دوسری طرف موڑا گیا جبکہ صحیح مسلم میں اس کی شرح ہو چکی ہے
سوم سفیان بن عیینہ کے الفاظ کا بھی ترجمہ نہیں کیا گیا

صحیح بخاری میں ہے

فاختلف أهل البيت واختصموا، فمنهم من يقول قربوا يكتب لكم كتابا لا تضلوا بعده، ومنهم من يقول غير ذلك،


پس اہل بیت کا اختلاف اور جھگڑا ہوا، ان میں سے بعض نے کہا ان کے پاس کر دو کہ لکھ دیں تحریر، جس کے بعد گمراہ نہ ہوں اور بعض نے اس کے خلاف کہا


ایک سادہ سے حکم پر اس قدر جھگڑا کیوں ہوا؟

جھگڑا اس لئے ہوا کہ بعض نے اس کیفیت کو بحران کہا اور کہا کہ کچھ لکھوانے کی ضرورت نہیں – عمر رضی الله عنہ نے کہا ہمارے لئے قرآن کافی ہے – بعض نے اس کے باوجود کہا کہ قلم و دوات پاس کرو جو بھی لکھنا چاہیں لکھ دیں
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
میں اب بھی اپنے لکھے پر قائم ہوں ۔
آپ کسی عالم کو سامنے لاو ،جو لغت اسلام سے واقف ہو ،پھر بات کرتے ہیں ؛
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،
تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )
استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،
فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے‘‘
بات صاف ہے کہ
أهجر۔۔ کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،
اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )
اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
یعنی جو آدمی بہکی بہکی باتیں کر رہا ہو ،اس سے کسی بات کی وضاحت اور استفہام چہ معنی ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس تحریر میں موجود سوال ابھی تشنہ جواب ہیں
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
فاختلف أهل البيت واختصموا، فمنهم من يقول قربوا يكتب لكم كتابا لا تضلوا بعده، ومنهم من يقول غير ذلك،

پس اہل بیت کا اختلاف اور جھگڑا ہوا، ان میں سے بعض نے کہا ان کے پاس کر دو کہ لکھ دیں تحریر، جس کے بعد گمراہ نہ ہوں اور بعض نے اس کے خلاف کہا

ایک سادہ سے حکم پر اس قدر جھگڑا کیوں ہوا؟
جھگڑا اس لئے ہوا کہ بعض نے اس کیفیت کو بحران کہا اور کہا کہ کچھ لکھوانے کی ضرورت نہیں –
صحابہ کرام ؓ نے اس کیفیت کی نفی کی ہے ۔۔۔
بار بار بحران کی رٹ لگانا ایمانی دیوالیہ پن کی علامت ہے ۔
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
اگر کسی جاہل کو سمجھ نہ آئے تو اس میں مترجم کا کیا قصور ؟
توضیحی الفاظ بریکٹ میں دینا تو دیانتداری پر شاہد ہیں ۔۔۔۔
اگر پیارے نبی ﷺ گھر میں موجود لوگوں سے مخاطب نہ تھے تو کس سے خطاب تھا ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتا نہیں عربی کے اسباق کس نے اپ کو پڑھائے تھے لیکن اپ کی سادگی ہے یا پر کاری ہے

نبی صلی الله علیہ وسلم کے الفاظ کا ترجمہ کرنے کے بجاے اپ مخاطب کی طرف قاری کو کیوں لے جا رہے ہیں

أَكْتُبْ لَكُمْ كِتَابًا

کا آپ کا ترجمہ غلط ہے
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
کبھی کتاب کی صورت اصلی حالت میں صحیح مسلم پڑھی ہو تو علم ہو کہ صحیح مسلم میں ’‘ خبر ’‘ کے صیغے والی عبد اللہ بن عباس کی مختصر روایت سے پہلے
عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کی مکمل روایت نقل کی گئی ہے ،اور اتنی بات جاننے کیلئے معمولی علم بھی کار آمد ہے کہ مفصل اور مکمل بات کو مختصر کے مقابل
کیا مقام اور حیثیت حاصل ہے ۔
صحیح مسلم کی مکمل روایت میں ’’استفہام انکاری ‘‘ ہی ہے:
قال ابن عباس: يوم الخميس، وما يوم الخميس ثم بكى حتى بل دمعه الحصى، فقلت: يا ابن عباس، وما يوم الخميس؟ قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه، فقال: «ائتوني أكتب لكم كتابا لا تضلوا بعدي»، فتنازعوا وما ينبغي عند نبي تنازع، وقالوا: ما شأنه أهجر؟ استفهموه، قال: " دعوني فالذي أنا فيه خير، أوصيكم بثلاث: أخرجوا المشركين من جزيرة العرب، وأجيزوا الوفد بنحو ما كنت أجيزهم "، قال: وسكت، عن الثالثة، أو قالها فأنسيتها، ‘‘

مختصر و مطوول کی بحث تو بعد میں ہو گی جب ابن عبّاس رضی الله عنہ نے خود ہی استفہام کو خبر کر دیا تو اس کا مطلب ہو گا کہ بعض نے صحابہ نے اس کو استفہام پر لیا اور بعض نے خبر کے طور پر اس کو اس طرح رد نہیں کیا جا سکتا

سفیان بن عیینہ کے الفاظ کا ابھی تک کوئی ترجمہ نہیں کیا گیا

اگر مشرکین کی حسب سابق وہاں موجودگی سے اہل اسلام کی گمراہی کا تعلق بھی سمجھ میں نہ آئے تو ثابت ہوگا کہ لکھنوء کا لٹریچر اپنے زہریلے اثرات سے
چھوٹے سے ذہن کو جکڑ چکا

مسلمان تو پھر بھی گمراہ ہوئے عرب مسلمانوں میں سے شیعہ خوارج نکلے اور مسلمان غیر عرب علاقوں شام فارس میں جا کر آباد ہوئے صرف جزیرہ عرب سے مشرک کو نکلنے سے کیا گمراہ ہونے سے لوگ بچ گئے

لہذا یہ وہ حکم نہیں جس کے بعد کوئی گمراہ نہ ہوتا

عبد الرحمان بن عدیس جو صحابی ہے بیعت رضوان میں شریک ہے لیکن قاتلین عثمان غنی میں سے ہے
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
جب ابن عبّاس رضی الله عنہ نے خود ہی استفہام کو خبر کر دیا تو اس کا مطلب ہو گا کہ بعض نے صحابہ نے اس کو استفہام پر لیا اور بعض نے خبر کے طور پر
جہالت کی حد ہے !
سیدنا ابن عباس نے کہاں ۔۔استفہام کو خبر کردیا ؟
اللہ کے بندے دونوں روایتوں کی سند دیکھو ،پتا چل جائے گا کہ استفہام ۔۔کو ۔۔خبر۔۔کس نے بنایا
 
Top