• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

نکاح دیندار اور پاک عورت سے کرنا چاہیے!

شمولیت
اکتوبر 24، 2016
پیغامات
216
ری ایکشن اسکور
20
پوائنٹ
35
بسم الله الرحمن الرحیم​
سب تعریفیں الله رب العالمین کے لئے ہیں اما بعد !
نکاح دیندار اور پاک عورت سے کرنا چاہیے ۔


الله تعالیٰ فرماتا ہے :۔
اَلْيَوْمَ اُحِلَّ لَكُمُ الطَّيِّبٰتُ ۭ وَطَعَامُ الَّذِيْنَ اُوْتُوا الْكِتٰبَ حِلٌّ لَّكُمْ ۠ وَطَعَامُكُمْ حِلٌّ لَّهُمْ ۡ وَالْمُحْصَنٰتُ مِنَ الْمُؤْمِنٰتِ

آج تمہارے لیے پاک چیزیں حلال کردی گئیں اور ان لوگوں کا کھانا تمہارے لیے حلال ہے جنہیں کتاب دی گئی اور تمہارا
کھانا ان کے لیے حلال ہے اور مومنات میں سے پاک دامن عورتیں(تمہارے لئے حلال ہیں )
(المائدہ -5)

رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا :۔
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ حَدَّثَنَا يَحْيَی عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ قَالَ حَدَّثَنِي سَعِيدُ بْنُ أَبِي سَعِيدٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ تُنْکَحُ الْمَرْأَةُ لِأَرْبَعٍ لِمَالِهَا وَلِحَسَبِهَا وَجَمَالِهَا وَلِدِينِهَا فَاظْفَرْ بِذَاتِ الدِّينِ تَرِبَتْ يَدَاکَ
مسدد، یحیی، عبیداللہ، سعید، حضرت ابوہریرہ (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا نکاح کے لئے عورت کی چار باتیں دیکھی جاتی ہیں، مال، نسب، خوبصورتی، دین، تو تیرے دونوں ہاتھ خاک آلود ہوں تجھے دیندار کو حاصل کرنا چاہئے
(صحیح بخاری كتاب النكاح بَابُ الأَكْفَاءِ فِي الدِّينِ:)

اس لئے تمام مسلمین کو چاہیے کہ اگر وہ فلاح چاہتے ہیں تو وہ دینداری کی وجہ سے عورت سے نکاح کریں نہ کہ کسیوجہ سے ۔
الله تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں حق بات کو پڑھنے ، سمجھنے ، اسے دل سے قبول کرنے اور اس پر عمل کرنے کی توفیق عطاء فرمائے !
آمین یا رب العالمین
والحمدللہ رب العالمین
 

عدیل سلفی

مشہور رکن
شمولیت
اپریل 21، 2014
پیغامات
1,675
ری ایکشن اسکور
448
پوائنٹ
197
رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا :۔
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ حَدَّثَنَا يَحْيَی عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ قَالَ حَدَّثَنِي سَعِيدُ بْنُ أَبِي سَعِيدٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ تُنْکَحُ الْمَرْأَةُ لِأَرْبَعٍ لِمَالِهَا وَلِحَسَبِهَا وَجَمَالِهَا وَلِدِينِهَا فَاظْفَرْ بِذَاتِ الدِّينِ تَرِبَتْ يَدَاکَ
مسدد، یحیی، عبیداللہ، سعید، حضرت ابوہریرہ (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا نکاح کے لئے عورت کی چار باتیں دیکھی جاتی ہیں، مال، نسب، خوبصورتی، دین، تو تیرے دونوں ہاتھ خاک آلود ہوں تجھے دیندار کو حاصل کرنا چاہئے
(صحیح بخاری كتاب النكاح بَابُ الأَكْفَاءِ فِي الدِّينِ:)
جناب محترم اس کتاب پر تو اجماع امت ہے اور آپ تو اجماع کے منکر ہو ؟
صحيح البخاري أصح الكتاب بعد القرآن بإجماع الأمة
 
شمولیت
اکتوبر 24، 2016
پیغامات
216
ری ایکشن اسکور
20
پوائنٹ
35
بسم الله الرحمن الرحیم
امابعد !
غلط فہمی : -

جناب محترم اس کتاب پر تو اجماع امت ہے اور آپ تو اجماع کے منکر ہو ؟
صحيح البخاري أصح الكتاب بعد القرآن بإجماع الأمة
ازالہ : -

جناب ! پہلی بات تو یہ ہے کہ موضوع تبدیل نہ کیجیے ۔
دوسری بات یہ ہے کہ آپ کو علم حاصل کرنے کی ضرورت ہے خواہ آپ پر یہ بات ناگوار ہی گزرے !
تیسری بات یہ ہے کہ اس کتاب پر امت کا اجماع نہیں ہے ،،، اسی امّت کے کلمہ گو اس کی احادیث کو قبول نہیں کرتے بلکہ انکار کرتے ہیں ،،،
اور آخری بات یہ عرض کرنا چاہیں گے کہ آپ اس کی اسناد کو ضعیف ثابت کر کے دکھا دیں ،،،
الله تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں حق بات کو پڑھنے ، سمجھنے ، اسے دل سے قبول کرنے اور اس پر عمل کرنے کی توفیق عطاء فرمائے !
آمین یا رب العالمین
والحمد للہ رب العالمین
 

عدیل سلفی

مشہور رکن
شمولیت
اپریل 21، 2014
پیغامات
1,675
ری ایکشن اسکور
448
پوائنٹ
197
جناب ! پہلی بات تو یہ ہے کہ موضوع تبدیل نہ کیجیے ۔
دوسری بات یہ ہے کہ آپ کو علم حاصل کرنے کی ضرورت ہے خواہ آپ پر یہ بات ناگوار ہی گزرے !
تیسری بات یہ ہے کہ اس کتاب پر امت کا اجماع نہیں ہے ،،، اسی امّت کے کلمہ گو اس کی احادیث کو قبول نہیں کرتے بلکہ انکار کرتے ہیں ،،،

آپ کے اپنے اصول آپ کے ہی سامنے پیش کئے تو آپ جواب دینے سے قاصر رہے

اسناد قوی ہے یا ضعیف یہ اقوال الرجال کے ذریعہ سے ہی معلوم ہوتی ہے

اقوال الرجال یہاں قبول کیسے کر لئے اور دوسری طرف قبول ہی نہیں کئے؟

اور لطیفہ پر لطیفہ آپ کے لئے تو اقوال الرجال حجت ہی نہیں؟


آخر وجہ کیا ہے کون سے اصول ہیں کونسے فارمولے ہیں ذرا بتادیں قارئین کو
 
Top