• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

پاپ پنیہ دوؤ ایک سامان

وقار عظیم

مبتدی
شمولیت
اگست 11، 2013
پیغامات
41
ری ایکشن اسکور
27
پوائنٹ
28
سکھمت کارمک فلسفے میں یقین نہیں رکھتا۔ انیہ دھرمو کا کہنا ہے که پربھو کو اچھے قرم پسند ہیں اور برے کرمو والوں کے ساتھ پرمیشور بہت برا کرتا ہے۔ لیکن سکھ دھرم کے انوسار انسان خود کچھ کر ہی نہیں سکتا۔ انسان صرف سوچنے تک سیمت ہے کرتا وہی ہے جو "حکم" میں ہے، چاہے وہ کسی غریب کو دان دے رہا ہو چاہے وہ کسی کو جان سے مار رہا ہو۔ یہی بات بابا نانک میں گرنتھ کے شروع میں ہی درڈ کروا دی تھی : ہکمے اندر سب ہے باہر حکم نہ کوئے جو ہتا ہے حکم میں ہی ہوتا ہے۔ حکم سے باہر کچھ نہیں ہوتا۔ اسی لئے گرمت میں پاپ پنیہ کو نہیں من جاتا۔ اگر انسان کوئی کریا کرتا ہے تو وہ انتر آتما کے ساتھ آواز ملا کر کرے۔ یہی کرن ہے کی گرمت قرم کانڈ کے وردھ ہے۔ گرو نانک دیو نے اپنے سمیہ کے بھارتیہ سماج میں ویاپت کپرتھاؤں، اندھوشواسوں، جرجر روڈھیوں اور پاکھنڈوں کو دور کرتے ہوئے جن سادھارن کو دھرم کے ٹھیکیداروں، پنڈوں، پیروں آدی کے چنگل سے مکت کرنے کی کوشش کی۔
 
Top