• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کھانا کھاتے ہوئے سلام کا جواب دینا

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,537
پوائنٹ
791
کھانا کھاتے ہوئے سلام کا جواب دینا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
کھانے کھاتے وقت سلام کا جواب دینا مکروہ ہے؟ اور اس سلسلے میں ابن عمر﷜ کا اثر کس طرح وارد ہے؟
الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

رسول اللہ ﷺنے مسلمانوں کو سلام عام کرنے کا حکم دیاہے۔ فرمایا:
«أفشو السلام بينکم »(صحیح مسلم:کتاب الایمان باب بیان انه لا یدخل الجنة الا المؤمنون)

’’اپنے درمیان سلام کو عام کرو۔‘‘
دوسری حدیث میں:
«حق المسلم علی المسلم ست قيل ماهن يارسول الله صلی الله عليه وسلم قال إذالفيته فسلم عليه وإذا دعاک فأجبه وإذا استنصحک فانصح له وإذا عطس حمد الله فسمته وإذا مرض فعده وإذا مات فاتبعه۔»(صحيح مسلم:کتاب الجنائز باب الامر باتباع الجنائز 1169)

’’مسلمان کے دوسرےمسلمان پر چھ حقوق ہیں پوچھا گیا وہ کون سے ہیں اے اللہ کے رسولؐ !فرمایا:
جب تو اس سے ملے تو اس پر سلام بھیجو جب وہ دعوت دے تو قبول کرو جب نصیحت مانگے تو نصیحت کرو جب چھینک آئے تو صرف الحمدللہ کہے تو تم اس کا جواب او رجب وہ بیمار ہو تو عیادت کرو جب فوت ہوجائے و اس کا جنازہ پڑھو۔‘‘
مذکورہ بالا احادیث میں نبیﷺ نے کسی قید کے بغیر ایک مسلمان کو دوسرے مسلمان پر سلام بھیجنے کا حکم کیاہے بلکہ اسے اس پر اس کا حق گنوایا ہے۔
ان دونوں احادیث سے معلوم ہوتا ہ کہ مسلمان کی جہاں بھی ملاقات ہوتی ہے وہ اسے سلام کرے ہاں ان احادیث کے عموم کی تخصیص کے لیے اگر کوئی صحیح حدیث یا اثر وارد ہوگا تو وہ اس حالت کو مستثنیٰ کردے گا۔
مذکورہ بالا استفسار میں نبی سے بلا استثناء سلام کی حدیث کا مطالبہ کیا گیا تھا سو وہ پیش کردی گئی ہے اور دونوں احادیث بھی صحیح مسلم کے حوالہ سے ہیں۔ اب کھانا کھانا کے دوران جو لوگ سلام کہنے کے قائل ہیں ان کے ذمہ ایسی صحیح حدیث یا اثر ہے جو ان احادیث کے عمومی الفاظ کو خاص کرسکیں جس سے کھانا کھاتے ہوئے سلام نہ لینے کی تحقیق ہوئی ہو۔
باقی رہا ابن عمر کا اثر تو وہ بالتفصیل اس طرح سے ہے:
نافع عبداللہ بن عمر کے متعلق کہتے ہیں کہ:
ہم عبداللہ بن عمرؓ کے ہمراہ مدینہ طیبہ سے باہر تھے ۔ ساتھیوں نے کھانا تیار کیا اور دستر خوان پر لگایا ہم کھانے لگے تو وہاں ایک چرواہا گزرا اس نے سلام کیا۔ابن عمرؓ نے اسے بھی کھانے کی دعوت دی مگر اس نے کہا میرا روزہ ہے۔ (شعب الایمان:5291)
ابن عمرؓ کے اس اثر سے بھی پتہ چلتا ہ ےکہ صحابہ سلام کرنے میں کی قسم کی تخصیص اور استثناء نہیں کرتے تھے اور خاص طور پر کھانے کے دوران کا یہ اثر موجود ہے۔ بالفرض یہ اثر نہ بھی ہوتا تو شروع میں پیش کی گئیں احادیث کے مطابق ہر حالت میں سلام جائز تھا۔ إلا کہ اس پرکسی صحیح سند سے کوئی نص وارد نہ ہوجاتی۔
اب جو لوگ کھانا کھانے سلام کے قائل نہیں ان کے ذمہ دلیل پیش کرنا ہے کہ کھانا کھاتے ہوئے سلام نہ کرنے کی دلیل پیش کریں۔​
فتوی کمیٹی​

 
Top