• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

ﺻﺪﻗﮧ ﻓﻄﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﺪﯼ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﻌﺾ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﺎ ﺟﺎﺋﺰﮦ‏

شمولیت
اپریل 27، 2020
پیغامات
202
ری ایکشن اسکور
44
پوائنٹ
41
ﺻﺪﻗﮧ ﻓﻄﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﺪﯼ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﻌﺾ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﺎ ﺟﺎﺋﺰﮦ‏
(ﺣﺼﮧ ﺍﻭﻝ‏)

تحریر: ﺍﺑﻮ ﺍﻟﻤﺤﺒﻮﺏ ﺳﯿﺪ ﺍﻧﻮﺭ ﺷﺎﮦ ﺭﺍﺷﺪﯼ

ﺑﺴﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﺍﻟﺮﺣﯿﻢ


ﮐﺎﻓﯽ ﺩﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﻧﻘﺪ ﺍﺯ ﯾﺮ ﺑﺤﺚ ﮨﮯ، ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺧﯿﺎﻝ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺻﺪﻗﮧ ﻓﻄﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﺪﯼ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﻌﺾ ﺩﻻﺋﻞ ﺫﮐﺮ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺟﺎﺋﺰﮦ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﻣﻨﺼﻒ ﻣﺰﺍﺝ ﺍﮨﻞ ﻋﻠﻢ ﺳﮯ ﮔﺬﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺍﺱ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮐﺎ ﺑﻐﻮﺭ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ﮐﺮﯾﮟ، ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﺳﮯ ﺳﻮﭼﯿﮟ ﮐﮧ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﻧﻘﺪ ﮐﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺩﮦ ﯾﮧ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﯿﮟ، ﺟﻦ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺍﺟﻨﺎﺱ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻧﻘﺪﯼ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﮐﯽ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﺍﻭﺭ ﺗﺸﮩﯿﺮ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺳﮯ ﻧﯿﺖ ﺧﺎﻟﺺ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

‏[ 1 ‏] - ﺣﺪﯾﺚ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﺑﻨﺖ ﺍﺑﯽ ﺑﮑﺮ۔

ﺍﻣﺎﻡ ﻃﺤﺎﻭﯼ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ :

" ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻓﻬﺪ ﻭﻋﻠﻲ ﺑﻦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﻗﺎﻻ ﺛﻨﺎ ﺍﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻣﺮﻳﻢ ﻗﺎﻝ ﺃﺧﺒﺮﻧﻲ ﻳﺤﻴﻰ ﺑﻦ ﺃﻳﻮﺏ ﺃﻥ ﻫﺸﺎﻡ ﺑﻦ ﻋﺮﻭﺓ ﺣﺪﺛﻪ ﻋﻦ ﺃﺑﻴﻪ ﺃﻥ ﺃﺳﻤﺎﺀ ﺑﻨﺖ ﺃﺑﻲ ﺑﻜﺮ ﺃﺧﺒﺮﺗﻪ ﺃﻧﻬﺎ ﻛﺎﻧﺖ ﺗﺨﺮﺝ ﻋﻠﻰ ﻋﻬﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻋﻦ ﺃﻫﻠﻬﺎ ﺍﻟﺤﺮ ﻣﻨﻬﻢ ﻭﺍﻟﻤﻤﻠﻮﻙ ﻣﺪﻳﻦ ﻣﻦ ﺣﻨﻄﺔ ﺃﻭ ﺻﺎﻋﺎ ﻣﻦ ﺗﻤﺮ ﺑﺎﻟﻤﺪ ﺃﻭ ﺑﺎﻟﺼﺎﻉ ﺍﻟﺬﻱ ﻳﻘﺘﺎﺗﻮﻥ ﺑﻪ."

‏( ﺷﺮﺡ ﻣﺸﮑﻞ ﺍﻵﺛﺎﺭ ﻟﻠﻄﺤﺎﻭﯼ‏)

ﺍﻭﻻ
: ﺟﺎﻥ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻋﻤﻞ ﺻﺮﻑ ﺳﯿﺪﺗﻨﺎ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺧﺎﺹ ﮨﮯ، ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺑﻌﺾ ﺍﮨﻞ ﻋﻠﻢ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﺼﺮ ﮨﯿﮟ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺩﻟﯿﻞ ﺩﯼ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ : ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ ۔۔۔ " ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﮯ، ﻟﮩﺬﺍ ﺍﺱ ﺟﻤﻊ ﮐﮯ ﺻﯿﻐﮧ ﻣﯿﮟ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﻋﺮﺽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﻮﻧﮑﮧ " ﮐﺎﻧﺖ ﺗﺆﺩﯼ " ﺍﻭﺭ "ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ " ﮐﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﺎ ﻣﺨﺮﺝ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﮨﮯ، ﻟﮩﺬﺍ ﺍﺻﻮﻝ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﮐﯽ ﺭﻭﺳﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﮩﻠﮯ ﺟﻤﻊ ﻭﺗﻄﺒﯿﻖ ﮐﺎ ﺁﭘﺸﻦ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯﮔﺎ، ﺍﻭﺭ ﺟﻤﻊ ﻭﺗﻄﺒﯿﻖ ﯾﻮﮞ ﮨﻮﮔﯽ ﮐﮧ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﮐﮯ "ﮐﺎﻧﺖ ﺗﺆﺩﯼ" ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺑﺤﯿﺜﯿﺖ ﺳﺮﭘﺮﺳﺖ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺯﮐﺎۃ ﺍﻟﻔﻄﺮ ﻧﮑﺎﻟﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ﺍﻭﺭ " ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ" ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯﺍﭘﻨﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﯾﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺩﻟﯿﻞ ﺧﻮﺩ ﺍﺳﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﮐﻮﺭ ﮨﮯ، ﭼﺎﻧﭽﮧ ﻭﮦ ﻓﺮﻣﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ " ﺃﻧﻬﺎ ﻛﺎﻧﺖ ﺗﺨﺮﺝ ﻋﻠﻰ ﻋﻬﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻋﻦ ﺃﻫﻠﻬﺎ ﺍﻟﺤﺮ ﻣﻨﻬﻢ ﻭﺍﻟﻤﻤﻠﻮﻙ" ٫" ﻭﮦ ﺩﻭﺭ ﻧﺒﻮﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ‏( ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺁﺯﺍﺩ ﺍﻭﺭ ﻏﻼﻡ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ‏) ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺯﮐﺎﺕ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ."

ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ ﻣﺼﺮ ﮨﻮﺍ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ "ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ" ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮕﺮ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﭨﮑﺮﺍﺅ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺨﺮﺝ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﯾﻖ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ، ﺁﺯﺍﺩ ﺍﻭﺭ ﻏﻼﻡ ﮐﯽ ﺗﺼﺮﯾﺢ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ، ﺟﺒﮑﮧ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻃﺮﯾﻖ ﻣﯿﮟ ، ﻭﮦ ﺩﯾﮕﺮ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺫﮐﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔

ﯾﺎﺩ ﺭﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮐﻮ ﺑﻄﻮﺭ ﺯﯾﺎﺩﺕ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﮧ ﺳﮑﺘﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺟﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻧﯽ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﯽ ﺻﺮﺍﺣﺖ ﺁﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﻮ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔

ﺑﮩﺮﮐﯿﻒ ! ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﺎ ﻣﺨﺮﺝ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﮩﺞ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﺟﻤﻊ ﻭﺗﻄﺒﯿﻖ ﮨﮯ، ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﯾﻖ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻃﺮﯾﻖ ﭘﺮ ﻣﺤﻤﻮﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ

ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﻥ ﺍﮨﻞ ﻋﻠﻢ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻋﺮﺽ ﮨﮯ ﮐﮧ "ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ" ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻭﺍﻻ ﻃﺮﯾﻖ ﺳﻨﺪﺍ ﺿﻌﯿﻒ ﮨﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺍﺑﻦ ﻟﮩﯿﻌﮧ ﺭﺍﻭﯼ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﺨﺘﻠﻂ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺜﯿﺮ ﺍﻟﺘﺪﻟﯿﺲ ﺳﮯ ﻣﺘﺼﻒ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﺎ، ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻋﻦ ﺳﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﻟﮩﺬﺍ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔

ﺍﻣﺎﻡ ﻃﺤﺎﻭﯼ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ :

ﺛﻨﺎ ﺃﺳﺪ ﻭﺣﺪﺛﻨﺎ ﻓﻬﺪ ﻗﺎﻝ ﺛﻨﺎ ﺍﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻣﺮﻳﻢ ﻗﺎﻝ ﺛﻨﺎ ﺃﺳﺪ ﻗﺎﻝ ﺛﻨﺎ ﺍﺑﻦ ﻟﻬﻴﻌﺔ ﻭﻗﺎﻝ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﻣﺮﻳﻢ ﺃﻧﺎ ﺍﺑﻦ ﻟﻬﻴﻌﺔ ﻋﻦ ﺃﺑﻲ ﺍﻷﺳﻮﺩ ﻋﻦ ﻓﺎﻃﻤﺔ ﺑﻨﺖ ﺍﻟﻤﻨﺬﺭ ﻋﻦ ﺃﺳﻤﺎﺀ ﺑﻨﺖ ﺃﺑﻲ ﺑﻜﺮ ﺭﺿﻲ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻨﻬﻤﺎ ﻗﺎﻟﺖ ﻛﻨﺎ ﻧﺆﺩﻱ ﺯﻛﺎﺓ ﺍﻟﻔﻄﺮ ﻋﻠﻰ ﻋﻬﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻣﺪﻳﻦ ﻣﻦ ﻗﻤﺢ ‏

( ﺷﺮﺡ ﻣﺸﮑﻞ ﺍﻵﺛﺎﺭ ‏)


ﻟﮩﺬﺍ ﺟﺐ ﯾﮧ ﻃﺮﯾﻖ ﺣﺎﻣﻞ ﺿﻌﻒ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺟﺒﮑﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻧﺰﺩﯾﮏ "ﮐﺎﻧﺖ ﺗﺆﺩﯼ" ﺍﻭﺭ "ﮐﻨﺎﻧﺆﺩﯼ" ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺗﻄﺒﯿﻖ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ، ﻟﮩﺬﺍ ﺍﺱ ﻃﺮﯾﻖ ﮐﻮ ﺭﺩ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺗﻄﺒﯿﻖ ﺩﯼ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ، ﻭﺍﻟﻠﮧ ﺍﻋﻠﻢ۔

ﺛﺎﻧﯿﺎ : ﺍﺱ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﺍﮨﻞ ﻋﻠﻢ ﻓﻄﺮﺍﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﻤﺖ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﺪﻻﻝ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﻧﮯ ﮔﻨﺪﻡ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﻤﺖ ﮐﺎ ﻟﺤﺎﻅ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ ، ﺟﺐ ﮨﯽ ﺗﻮ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔

ﻋﺮﺽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺳﮯ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﻗﯿﻤﺘﺎ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ﺑﻠﮑﮧ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮔﻨﺪﻡ ﮐﯽ ﺟﻨﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﺩﯾﺎ، ﺟﺴﮯ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﺑﺮﻗﺮﺍﺭ رﮐﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻣﻘﺮﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ، ﺑﺲ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﺑﻠﮑﮧ ﯾﻮﮞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺗﺮﻣﯿﻢ۔ ﺻﺮﻑ ﮔﻨﺪﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺧﺎﺹ ﮨﮯ، ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺲ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﻟﮩﺬﺍ ﺍﺱ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﮯ ﻇﺎﮨﺮﯼ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﺳﮯ ﮨﭩﺎﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ۔

ﺍﮔﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﯾﮧ ﺩﻭﺳﺖ ﮔﻨﺪﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﺳﮯ ﻗﯿﻤﺖ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﮐﺸﯿﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﺟﻨﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺍﺧﺬ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﮐﮧ ﮔﻨﺪﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﻓﻄﺮﺍﻧﮧ ﺩﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺍﺟﻨﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﻣﺎﻧﻊ ﮨﮯ؟ ﯾﻌﻨﯽ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﺟﻨﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﻧﺼﻒ ﺻﺎﻉ ﺩﯾﮟ ﯾﺎ ﺻﺎﻉ، ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻃﺮﺡ ﮨﯽ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ، ﺍﯾﺴﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﯾﮧ ﺍﮨﻞ ﻋﻠﻢ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺗﻮ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﺷﺮﻋﯿﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺻﻠﯽ ﮨﯿﺌﺖ ﮨﯽ ﮐﮭﻮ ﺑﯿﭩﮭﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺟﺒﮑﮧ ﮨﻢ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮧ حکم ﺍﻣﺮ ﺗﻌﺒﺪﯼ ﮨﮯ، ﺷﺮﯾﻌﺖ ﻧﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﺣﮑﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﻣﯿﻢ ﮐﯽ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﺗﮏ ﮨﯽ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺭﮨﻨﮯ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﻭﺭﻧﮧ ﺑﺼﻮﺭﺕ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﮯ ﻭﺳﻌﺖ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮨﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﻭﺳﻌﺘﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﮯﮔﺎ۔

ﺗﻨﺒﯿﮧ : ﺣﺪﯾﺚ ﺍﺳﻤﺎﺀ ﻭﺍﻗﻌﺘﺎ ﺣﮑﻤﺎ ﻣﺮﻓﻮﻉ ﮨﮯ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺳﮯ ﺣﮑﻤﺎ ﻏﯿﺮ ﻣﺮﻓﻮﻉ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﻏﻠﻄﯽ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺍ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﺏ ﻋﻠﯽ ﺍﻻﻋﻼﻥ ﺭﺟﻮﻉ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ۔ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ ۔

۔۔۔۔ ‏(ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ ‏)
 
شمولیت
اپریل 27، 2020
پیغامات
202
ری ایکشن اسکور
44
پوائنٹ
41
بسم اللہ الرحمن الرحیم

(صدقہ فطر میں قائلین نقد کے بعض دلائل کا جائزہ)
(حصہ دوئم)

تحریر : ابوالمحبوب سید انور شاہ راشدی

[2]-حدیث "اغنوھم عن طواف ھذاالیوم" کی حیثیت۔

امام بیہقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں : [3230] أخبرنا أَبُو زَكَرِيَّا يَحْيَى بْنُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى، ثنا أَبُو الْعَبَّاسِ مُحَمَّدُ بْنُ يَعْقُوبَ، ثنا بَحْرُ بْنُ نَصْرٍ، قَالَ: قُرِئَ عَلَى ابْنِ وَهْبٍ: أَخْبَرَكَ مُحَمَّدُ بْنُ سَعِيدٍ، عَنْ أَبِي مَعْشَرٍ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ أَنَّهُ قَالَ: فَإِذَا انْصَرَفَ رَسُولُ اللَّهِ - صلى الله عليه وسلم - مِنَ الصَّلَاةِ قَسَمَهُ بَيْنَهُمْ وَقَالَ: "أَغْنُوهُمْ عَنْ طَوَافِ هَذَا الْيَوْمِ"۔
(الخلافيات بين الإمامين الشافعي وأبي حنيفة وأصحابه للبيهقي: 4/323)

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نماز عید سے فارغ ہونے کے بعد ان (یعنی مساکین) میں فطرانہ تقسیم کرتے ،اور فرماتے :ان مساکین کو آج کے دن پھرنے(یعنی لوگوں سے مانگنے )سے بے پرواہ کردو".


اس روایت سے قائلین نقد فطرانے میں نقدی دینے پر استدلال کرتے ہیں، امام بیہقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:

"قَالُوا: فَالْقَصْدُ مِنْ ذَلِكَ أَنْ يُغْنِيَهُمْ، وَذَلِكَ حَاصِلٌ بِدَفْعِ قِيمَةِ مَا وَجَبَ عَلَيْهِ".
یہ لوگ کہتے ہیں کہ مقصد مساکین کو غنا
حاصل ہوجائے، اور یہ قیمت سے حاصل ہوتا ہے".


اولا : یہ روایت ہی ضعیف ہے، کیونکہ اس میں ابو معشر نجیح مشہور ضعیف راوی ہے، اس لیے اس روایت کو کئی ایک محدثین نے ضعیف قرار دیا ہے،
مثلا:
امام ابن حزم، امام بیہقی، امام نووی، ابن الملقن، ابن حجر، وغیرہ۔

امام بیہقی الخلافیات میں اس روایت کو نقل کرنے کے بعد فرماتے ہیں :

قُلْنَا: هَذَا الْخَبَرُ غَيْرُ ثَابِتٍ، وَرَاوِيهِ أَبُو مَعْشَرٍ نَجِيحٌ السِّنْدِيُّ، وَهُوَ مِمَّنِ اخْتَلَطَ فِي آخِرِ عُمُرِهِ، وَبَقِيَ فِي ذَلِكَ سِنِينَ حَتَّى كَثُرَتِ الْمَنَاكِيرُ فِي رِوَايَتِهِ، وَتَعَذَّرَ تَمْيِيزُهُ، فَبَطَلَ الِاحْتِجَاجُ بِهِ".

یعنی یہ روایت ابو معشر راوی کی وجہ سے غیر ثابت ہے، آخر عمر میں مختلط ہوگیا تھا، اور اس کے اختلاط کا یہ دورانیہ ایک عرصہ رہا، یہاں تک کہ اس کی روایات میں مناکیر زیادہ ہونے لگیں، جس کی وجہ سے ان کی تمیز ممکن نہ رہی، اس لیے وہ قابل احتجاج نہیں۔

السنن الکبری میں فرماتے ہیں :
"أبو معشر هذا نجيح السندى المدينى , غيره أوثق منه ".

ثانیا : اوپر الخلافیات اور اسی طرح ابن زنجویہ کی روایت میں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ الفاظ نماز عید کے بعد فرمائے ہیں،


ابن زنجویہ کے الفاظ اس طرح ہیں :

" كنا نؤمر أن نخرجها قبل أن نخرج إلى الصلاة , ثم يقسمه رسول الله صلى الله عليه وسلم بين المساكين إذا انصرف".

بتایاجائے کہ صدقۃ الفطر عید نماز سے قبل ہوتا ہے یا بعد؟

ثالثاً: السنن الکبری للبیہقی کے مطابق آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے "اغنوھم" کے الفاظ کا تعلق اجناس سے ہی ہے، نقدی سے نہیں، چنانچہ امام بیہقی عبداللہ ابن عمر سے یہی روایت نقل کرتے ہوئے فرماتے ہیں:

"أمرَنا رسولُ اللَّهِ صلَّى اللَّهُ عليهِ وسلَّمَ أن نُخْرِجَ زَكاةَ الفِطرِ عَن كلِّ صغيرٍ وَكَبيرٍ وحرٍّ ومَملوكٍ صاعًا من تمرٍ أو شعيرٍ قالَ : وَكانَ يُؤتَى إليهِم بالزَّبيبِ والأقِطِ فيقبلونَهُ منهم وَكُنَّا نؤمَرُ أن نُخْرِجَهُ قبلَ أن نخرجَ إلى الصَّلاةِ فأمرَهُم رسولُ اللَّهِ صلَّى اللَّهُ عليهِ وسلَّمَ أن يُقسِّموهُ بينَهُم ، ويقولُ : أغنوهم عَن طوافِ هذا اليومِ".

خوب غور فرمائیں !راوی نے اجناس کے متعلق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا حکم بیان کرنے کے بعد آپ کے "اغنوھم" کے الفاظ نقل کیے ہیں، جن کا مقصد صحابہ کو اجناس سے فطرانہ کے ذریعے مساکین کو غنا دینے کی ترغیب دینا ہے، لہذا جب روایت نے غنا کی خود ہی حیثیت متعین کردی ہے تو پھر کسی دوسرے کی توجیہ کیونکر قابل التفات ہوسکتی ہے؟

ثالثاً : اس روایت کے دو شاہد اور بھی ہیں :

پہلا : حافظ ابن حجر تلخیص الحبیر میں فرماتے ہیں :

ا" قال ابن سعد فى " الطبقات ": حدثنا محمد بن عمر حدثنا عبد الله بن عبد الرحمن الجمحى عن الزهرى عن عروة عن عائشة , وعن عبد الله بن عمر عن نافع عن ابن عمر وعن عبد العزيز بن محمد عن ربيح بن عبد الرحمن بن أبى سعيد عن أبيه عن جده , قالوا: " فرض صوم رمضان
بعدما حولت الكعبة بشهر على رأس ثمانية عشر شهرا من الهجرة , وأمر فى هذه السنة بزكاة الفطر , وذلك قبل أن تفرض الزكاة فى الأموال , وأن تخرج عن الصغير والكبير , والذكر والأنثى , والحر والعبد , صاعا من تمر أو صاعا من شعير أو صاعا من زبيب , أو مدين من بر , وأمر بإخراجها قبل الغدو إلى الصلاة , وقال: أغنوهم ـ يعنى المساكين ـ عن طواف هذا اليوم ".

(تلخیص الحبیر)


اس روایت میں محمد بن عمر واقدی متہم بالکذب راوی ہے، لہذا اس کوئی اعتبار نہیں نیز اس روایت میں بھی اجناس کے ساتھ ہی غنا کا ذکر ہوا ہے، لہذا یہ بھی نقدی پر دال نہیں۔

دوسرا : علامہ البانی فرماتے ہیں :

ووجدت للحديث طريقا ثالثة عن نافع ,رواه أبو القاسم الشريف الحسينى فى " الفوائد المنتخبة " (13/147/2) عن القاسم بن عبد الله عن يحيى بن سعيد وعبيد الله بن عمر عن نافع به بلفظ: " أمر رسول الله صلى الله عليه وسلم بإخراج صدقة الفطر قبل الصلاة. وقال: أغنوهم عن السؤال ".
وهذا سند ساقط , لأن القاسم بن عبد الله وهو العمرى المدنى قال الحافظ: " متروك رواه أحمد بالكذب ".

(إرواء الغليل (3/332-334)


یہ روایت بھی ساقط ہے، کیونکہ اس میں قاسم بن عبداللہ العمری متروک راوی ہے، بہرکیف ! یہ روایت اپنے دونوں شواہد کے ساتھ ضعیف اور ناقابل اعتبار ہے، پہلی روایت ابو معشر کی وجہ سے ضعیف ہے، باقی دونوں روایات سخت ضعیف ہیں، لہذا ان کا ہونا نہ ہونا برابر ہے۔ ویسے بھی پہلی دونوں روایات میں میں اغناء کو اجناس کے ساتھ ہی ذکر کیا گیا ہے، لہذا غنا کی تعیین اسی روایت سے ہی ہوجاتی ہے۔

رابعا : دور نبوی میں اجناس سے فطرانہ ادا ہوتا تھا، اگر اس دور میں اجناس سے غنا ممکن ہے تو اب یہ کیوں ناممکن ہو گیا ہے، نیز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں صدقہ فطر کے ساتھ ساتھ نماز عید کے بعد عام صدقہ کرنا بھی ثابت ہے، جیساکہ صحیح بخاری میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا نماز عید کے بعد عورتوں کو صدقے کی ترغیب دینے پر ان عورتوں نے زیورات اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے حوالے کردیے تھے، تاکہ مساکین ان سے فائدہ اٹھا سکیں۔ لہذا فطرانے کے علاوہ بھی مساکین کی مدد کرکے انہیں فائدہ پہنچایا جا سکتا ہے۔

فائدہ : صحیح بخاری کی اس حدیث میں ہے کہ :

"ابن جریج نے عطاء سے اس صدقہ کے بارے میں پوچھاکہ کیا وہ صدقہ فطر تھا؟ تو انہوں نے کہا کہ نہیں۔ بلکہ عام صدقہ تھا".اس پر پر بحث کرتے ہوئے ابن حجر فرماتے ہیں کہ

"ودل ھذاالسؤال علی ان ابن جریج فھم من قولہ (الصدقۃ) انھاصدقۃ الفطربقرینۃ کونھایوم الفطر،واخذ من قولہ :"وبلال باسط ثوبہ".لانہ یشعر بان الذی یلقی فیہ شئ یحتاج الی ضم ،فھولائق بصدقۃ الفطر المقدرۃ بالکیل،لکن بین کہ عطاء آنھا کانت صدقۃ تطوع، وانھا کانت ممالاتجزئ فی صدقۃ الفطر من خاتم ونحوہ".


یعنی ابن جریج کا یہ سوال اس بات پر دلالت کر رہا ہے کہ اس نے ان کے "صدقہ" والے الفاظ سے صدقۃ الفطر سمجھا، اور ان کے اس فہم کی بنیاد ان الفاظ :"وبلال باسط ثوبہ" پر ہے، کیونکہ جو چیز اس چادر میں ڈالی جائے گی وہ سمیٹنے کی محتاج ہوگ ، لہااوہ صدقۃ الفطرکے لائق ہے جو ناپ کے ساتھ ناپا گیا ہو۔ لیکن عطاء نے ان کے لیے واضح کیا کہ یہ نفلی صدقہ تھا، اور صدقہ فطر انگوٹھی وغیرہ سے جائز نہیں".

[فتح الباری،کتاب العیدین،باب موعظۃ الامام النساء یوم العید :2/602]

دیکھیں! یہاں بقول ابن حجر عطاء نے مالیت کو صدقہ فطر کے لیے درست نہیں سمجھا، اس لیے اس کی وضاحت کر دی۔

(جاری ہے)
 
Top