• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

ﻓﻄﺮﮦ ﻣﯿﮟ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﺎ خیال

شمولیت
اپریل 27، 2020
پیغامات
202
ری ایکشن اسکور
44
پوائنٹ
41
ﻓﻄﺮﮦ ﻣﯿﮟ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﺎ خیال

تحریر: ﺍﺑﻮ ﺍﺣﻤﺪ ﮐﻠﯿﻢ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﯾﻮﺳﻒ
ﺟﺎﻣﻌﮧ ﺍﺳﻼﻣﯿﮧ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻣﻨﻮﺭﮦ


ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﻧﻘﺪﯼ ﺩﯾﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﯿﺪ ﮐﮯ ﺩﻥ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﻦ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﺎ ﮐﭙﮍﺍ، ﺟﻮﺗﺎ، ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮨﯿﮟ، ﺍﺏ ﻓﻘﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻧﺌﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﻧﺌﮯ ﺟﻮﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮ ﻋﯿﺪ ﻣﻨﺎ ﺳﮑﮯ، ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﻓﻘﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﻮ ﻣﺪ ﻧﻈﺮ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﻮﺗﺎ، ﮐﭙﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻓﻄﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﺎﻻ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﺩﻭﺍ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺑﻌﺾ ﻣﺮﯾﺾ ﻓﻘﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﻋﻼﺝ ﮐﺮﺍﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﻓﻄﺮﮦ ﺩﻭﺍ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻧﮑﺎﻻ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﭼﺸﻤﮯ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﮨﮯ، ﺑﻌﺾ ﻓﻘﯿﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﻧﻈﺮ ﮐﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﭼﺸﻤﮯ ﮐﯽ ﺷﺪﯾﺪ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ، ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﻓﻄﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﭼﺸﻤﮧ ﻧﮑﺎﻻ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟؟

ﺍﮔﺮ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﺴﺎﺏ ﺳﮯ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺑﻨﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺌﮯ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺭﭦ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺍﻭﺭ ﺿﺮﻭﺭﺕ !!

ﮐﯿﺎ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺍﻭﺭ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﻧﮯ ﺻﺮﻑ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﻓﻄﺮﮦ ﮨﯽ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟؟

ﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟

ﮐﯿﺎ ﺯﮐﺎۃ ﮐﺎ ﻣﺎﻝ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺻﺮﻑ ﻧﮩﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ؟۔

ﻧﻘﺪﯼ ﻓﻄﺮﮦ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﮯ :

ﺍﯾﮏ ﻓﻘﯿﺮ 28 ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺳﺨﺖ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﭘﮍ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﭘﯿﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﻋﻼﺝ ﮐﺮﻭﺍﺳﮑﮯ، ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﺎ ﻓﻄﺮﮦ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﺎﻻ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟ ﯾﺎﺩ ﺭﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﻏﺮﯾﺐ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﺍﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ، ﻧﯿﺰ ﻧﻘﺪﯼ ﻓﻄﺮﮦ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻠﯿﻦ ﺯﮐﻮۃ ﮐﯽ ﻋﺎﻡ ﺩﻟﯿﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﺘﺪﻻﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﺯﮐﻮﮦ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﻓﻄﺮﮦ ﺑﮭﯽ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﯾﺎ ﺭﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﮨﻮﮔﺎ؟

ﺧﻼﺻﮧ ﮐﻼﻡ ﯾﮧ ﮐﮧ ﻧﺒﯽ ﮐﯽ ﮔﻔﺘﺎﺭ ﻭ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﭘﺮ ﻣﭩﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﮨﻞ ﺣﺪﯾﺜﻮﮞ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﻧﺒﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮨﯽ ﭘﯿﺎﺭﯼ ﮨﮯ، ﻧﺒﯽ ﮐﯽ ﻓﻘﮧ ﮨﯽ ﭘﯿﺎﺭﯼ ﮨﮯ۔

ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﭼﺸﻢ ﻓﻠﮏ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺍﺱ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﺮﺑﺎﻥ ﻧﺒﯽ ﻧﮯ ﺟﺐ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻓﻄﺮﮦ ﺻﺮﻑ ﺍﺟﻨﺎﺱ ﻃﻌﺎﻡ ﮨﯽ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺭﻗﻢ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﭘﺮ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﻧﺒﯽ ﮐﯽ ﻣﺨﺎﻟﻔﺖ ﺳﮯ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﯾﮟ؟

ﻧﻮﭦ : ﻧﺒﯽ ﮐﯽ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﺍﻗﻮﺍﻝ ﺭﺟﺎﻝ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﺷﯿﻮﮦ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﮨﻞ ﺣﺪﯾﺚ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ.
 
Top