1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اہل ایمان و اہل توحید میں کفر و ارتداد اور شرک کے متعلق دو قسم رائے پائی جاتی ہیں۔

'الولا والبرا' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد آصف مغل, ‏اگست 13، 2013۔

  1. ‏اگست 13، 2013 #1
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    ایک رائے یہ ہے کہ جو شخص کلمہ پڑھنے کے باوجود ایسے اعمال کرتا ہے جو کفر و شرک ہیں تو ایسے موقعے پر صرف اور صرف ان اعمال کی برائی ہی بیان کی جائے گی۔ انہیں کفر و شرک ہی کہا اور مانا جائے گا۔ دل میں شدید نفرت رکھی جائے گی البتہ ان کاموں کا فاعل حضرات کو کافر و مشرک وغیرہ نہ کہا جائے۔

    اس مصلحت کی وجہ یہ ہے کہ ایسے اعمال کرنے والا جب نصیحت کرنے والے کے منہ سے فوراً ''فتوی'' سنے گا تو کبھی بھی راہِ راست پر نہیں آئے گا۔ وغیرہ وغیرہ۔

    حالانکہ اس قبیل کے عوام و علماء بھی یہ کہتے اور سمجھتے ہیں کہ کافر و مشرک بھلائی اور دین اسلام کی طرف پلٹ سکتا ہے۔ اپنے غلط عقیدے اور بداعمالیوں کو چھوڑ سکتا ہے
    لیکن
    بدعتی کبھی بھی بھلائی اور دین اسلام کی طرف نہیں پلٹ سکتا کیونکہ جو کچھ وہ عمل کر رہا ہے وہ اُسے بھلائی اور دین اسلام ہی سمجھ کر رہا ہوتا ہے۔ اسے برائی سمجھے گا تو چھوڑے گا۔ جب وہ اسے برائی سمجھ ہی نہیں رہا تو چھوڑے گا کیسے؟

    اس کے برعکس دوسرا گروہ ہے جو توحید و سنت کے خلاف اعمال کرنے والے لوگوں کو کافر و مشرک اور بدعتی ہی کہتا ہے اور تمام مصلحتوں کو بالائے طاق رکھتاہے۔ تاکہ حق کا حق ہونا ثابت ہو جائے اور باطل کا باطل ہونا بھی واضح ہو جائے۔ یہ گروہ کبھی بھی دوستی اور دشمنی کے اسلامی معیار پر مصلحت پسندی کا شکار نہیں ہوتا۔ اور توحید و سنت کے علاوہ کسی بھی درمیانی راہ پر چلنے کا عادی نہیں بنتا۔

    اللہ تعالی نے مسلمانوں کو ایک بڑی آزمائش میں پرکھا تاکہ حق کا حق ہونا بھی واضح ہو جائے اور کفر کا کفر ہونا بھی۔ اور ان دونوں کے درمیانی راہ (نفاق) چھٹ کر الگ تھلگ نظر آئے۔ چنانچہ ارشادِ باری تعالی ہے:

    وَاِذْ يَعِدُكُمُ اللہُ اِحْدَى الطَّاۗىِٕفَتَيْنِ اَنَّہَا لَكُمْ وَتَوَدُّوْنَ اَنَّ غَيْرَ ذَاتِ الشَّوْكَۃِ تَكُوْنُ لَكُمْ وَيُرِيْدُ اللہُ اَنْ يُّحِقَّ الْحَقَّ بِكَلِمٰتِہٖ وَيَقْطَعَ دَابِرَ الْكٰفِرِيْنَ لِيُحِقَّ الْحَقَّ وَيُبْطِلَ الْبَاطِلَ وَلَوْ كَرِہَ الْمُجْرِمُوْنَ (سورۃ الانفال:7:8)
    اور (وہ وقت یاد کرو) جب اللہ نے تم سے (کفارِ مکہ کے) دو گروہوں میں سے ایک پر غلبہ و فتح کا وعدہ فرمایا تھا کہ وہ یقیناً تمہارے لئے ہے اور تم یہ چاہتے تھے کہ غیر مسلح (کمزور گروہ) تمہارے ہاتھ آجائے اور اللہ یہ چاہتا تھا کہ اپنے کلام سے حق کو حق ثابت فرما دے اور (دشمنوں کے بڑے مسلح لشکر پر مسلمانوں کی فتح یابی کی صورت میں) کافروں کی (قوت اور شان و شوکت کی) جڑ کاٹ دے۔
    تاکہ (معرکۂ بدر اس عظیم کامیابی کے ذریعے) حق کو حق ثابت کر دے اور باطل کو باطل کر دے اگرچہ مجرم لوگ (معرکۂ حق و باطل کی اس نتیجہ خیزی کو) ناپسند ہی کرتے رہیں۔

    وَيُحِقُّ اللہُ الْحَقَّ بِكَلِمٰتِہٖ وَلَوْ كَرِہَ الْمُجْرِمُوْنَ (سورۃ یونس:82)
    اور اللہ اپنے کلمات سے حق کا حق ہونا ثابت فرما دیتا ہے اگرچہ مجرم لوگ اسے ناپسند ہی کرتے رہیں۔
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  2. ‏اگست 13، 2013 #2
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    فائدہ:
    آیت کے اندازِ بیان سے پتہ چلتا ہے کہ
    حق کا حق ہونا دنیا میں پہلے ثابت کرنا پڑتا ہے
    اور
    اللہ کی مدد سے
    کفار و مشرکین کی جڑ بعد میں کٹتی ہے۔
    غور فرمائیں:
    وَيُرِيْدُ اللہُ اَنْ يُّحِقَّ الْحَقَّ بِكَلِمٰتِہٖ وَيَقْطَعَ دَابِرَ الْكٰفِرِيْنَ
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں