1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تدبر قرآن ... کیوں اور کیسے؟

'تدبر قرآن' میں موضوعات آغاز کردہ از عمر اثری, ‏جون 09، 2017۔

  1. ‏جون 09، 2017 #1
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,351
    موصول شکریہ جات:
    1,078
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    تدبر قرآن ... کیوں اور کیسے؟


    تحریر : إبراهيم بن عبد الرحمن التركي

    ترجمانی : شاہد سنابلی

    قرآن پوری انسانیت کا ہادی و رہبر اور زندگی کا نور و دستور ہے، انسانی ضروریات کی ساری تفصیلات کو اللہ تعالٰی نے قرآن کے اندر وضاحت کے ساتھ یا اشارے و کنائے میں بیان کر دیا ہے خواہ کسی کو اس کا علم ہو یا نہ ہو.
    اسی لئے صحابہ کرام اور تابعین قرآن کو پڑھنے یاد کرنے اس کی آیات کو سمجھنے، غور و فکر کرنے اور ان پر عمل کرنے کا خاص اہتمام کرتے تھے، یہی حال اور یہی معمول دیگر تمام سلف صالحین کا تھا. بعد کے زمانے میں جس قدر امت کے اندر کمزوری آتی گئی قرآن کے ساتھ اس خاص تعلق و اہتمام سے لوگ دور ہوتے چلے گئے اور اکثر مسلمان قرآن کو بلا سمجھے صرف تلاوت کرنے اور تجوید کے ساتھ یاد کرنے کی طرف توجہ دینے لگے جس کے نتیجے میں لوگوں نے قرآن پر عمل کرنا ترک کر دیا یا عملی زندگی میں کمی اور کوتاہی در آئی حالانكہ اللہ تعالى نے قرآن کو نازل فرمایا اور ہمیں اس میں غور و فکر کا حکم دیا اور خود اس کی حفاظت کی ذمے داری لی لیکن ہم قرآن کو صرف حفظ کرنے میں مصروف ہو گئے اور اس ميں غور و تدبر کرنا چهوڑ دیا. (حول التربية والتعليم د/عبد الكريم بكار ص 226)
    واضح رہے یہاں یہ پیغام دینا مقصود نہيں ہے کہ قرآن کو حفظ کرنے اسے تجوید کے ساتھ پڑھنے اور تلاوت کرنے کو ترک کر دیا جائے، بلاشبہ یہ بہت بڑے اجر و ثواب کا کام ہے، بلکہ یہاں یہ پیغام دینا مقصود ہے کہ ایک طرف حفظ و تجوید کی رعایت کرتے ہوئے غور و فکر کے ساتھ تلاوت کی جائے اور دوسری طرف اسے عملی زندگی میں نافذ کیا جائے جیسا کہ سلف صالحین کا طریقہ کار تھا.
    اسی لئے ذیل کے سطور میں قرآن و سنت کے نصوص اور سلف صالحین کی سیرت کی روشنی میں کچھ چیزیں ذکر کی جا رہی ہیں جن سے قرآن میں غور و تدبر کی اہمیت کا اندازہ ہوگا.

    تدبر کا مفہوم:
    1- معانی و مطالب تک رسائی کے لئے طویل غور و خوض اور فہم و ادراک کے لئے مکمل ترکیز.
    2- تمام نواحی پر مشتمل ایسی تفکیر جو الفاظ کے عمیق و دور رس معانی تک پہونچائے. (قواعد التدبر الأمثل للميداني ص 10)

    قرآنی آیات کی روشنی میں غور و تدبر کا مقام
    1- ارشاد باری تعالٰی ہے :
    كِتَابٌ أَنزَلْنَاهُ إِلَيْكَ مُبَارَكٌ لِّيَدَّبَّرُوا آيَاتِهِ وَلِيَتَذَكَّرَ أُولُو الْأَلْبَابِ (ص - الآية 29)
    یہ بابرکت کتاب ہے جسے ہم نے آپ کی طرف اس لئے نازل فرمایا ہے کہ لوگ اس کی آیتوں پر غور و فکر کریں اور عقلمند اس سے نصیحت حاصل کریں۔
    وجہ استدلال: اس آیت کریمہ میں اللہ تعالی نے قرآن مجید کے اتارنے کا اصل مقصد یہ بتایا کہ اس میں غور و تدبر کیا جائے اور اس سے عبرت و نصیحت حاصل کی جائے نہ کہ صرف زبانی تلاوت. اگرچہ تلاوت کا بھی بڑا اجر و ثواب ہے.
    حسن بصری رحمہ اللہ فرماتے ہیں : اللہ کی قسم! قرآن میں غور و فکر اسے نہیں کہتے کہ اس کے حروف کو تو یاد کیا جائے مگر اس کے حدود کو پامال کیا جائے، یہاں تک کہ بعض لوگ بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ میں نے پورا قرآن ختم کر لیا جبکہ ان کے اخلاق و کردار میں قرآن کا کوئی اثر دکھائی نہيں دیتا. (تفسیر ابن کثیر 7/64)

    2- ارشاد باری تعالٰی ہے :
    اَفَلَا یَتَدَبَّرُوۡنَ الۡقُرۡاٰنَ ؕ .... (سورة النساء 82 )
    کیا یہ لوگ قرآن میں غور نہیں کرتے؟
    ابن کثیر رحمہ فرماتے ہیں : اس آیت ميں اللہ تعالى نے اپنے بندوں کو قرآن میں غور و فکر کرنے اور اسے سمجھنے کا حکم دیا ہے اور اس کے الفاظ و معانی کو نہ سمجھنے اور اس سے اعراض کرنے سے منع فرمایا ہے، آیت کریمہ کے اس حکم سے صاف واضح ہے کہ قرآن میں غور و تدبر واجب ہے. (تفسیر ابن کثیر 3/364)
    3- آیت کریمہ ہے : الَّذِينَ آتَيْنَاهُمُ الْكِتَابَ يَتْلُونَهُ حَقَّ تِلَاوَتِهِ أُولَٰئِكَ يُؤْمِنُونَ بِهِ ۗ وَمَن يَكْفُرْ بِهِ فَأُولَٰئِكَ هُمُ الْخَاسِرُونَ (البقرة - الآية 121)
    جن لوگوں کو ہم نے کتاب دی ہے ، وہ اسے اس طرح پڑھتے ہیں جیسا کہ پڑھنے کا حق ہے ۔ وہ اس پر سچے دل سے ایمان لاتے ہیں ۔ اور جو اس کے ساتھ کفر کا رویہ اختیار کریں ، وہی اصل میں نقصان اٹھانے والے ہیں۔

    ابن کثیر رحمہ اللہ نے ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت نقل کی ہے کہ وه فرماتے ہیں : قسم اس ذات کی جس کے ہاتهہ میں میری جان ہے قرآن کی کما حقہ تلاوت یہ ہے کہ بنده قرآن کی حلال کردہ چیزوں کو حلال اور حرام کرده چیزوں کو حرام سمجھے اور اس کو ویسے ہی پڑھے جیسے اللہ تعالى نے اسے اتارا ہے. (تفسیر ابن کثیر 1/403)
    امام شوکانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں : یہاں تلاوت کرنے کا مطلب اس پر عمل کرنا ہے(فتح القدير 1/135)
    اور بغیر سمجھے قرآن پر عمل کرنا ممکن نہیں.

    3- ارشاد ربانى ہے : وَ مِنۡهُمۡ اُمِّیُّوۡنَ لَا یَعۡلَمُوۡنَ الۡکِتٰبَ اِلَّاۤ اَمَانِیَّ وَ اِنۡ هُمۡ اِلَّا یَظُنُّوۡنَ ( سورة البقرة 78)

    ان میں سے بعض ان پڑھ ایسے بھی ہیں جو کتاب کے صرف ظاہری الفاظ کو ہی جانتے ہیں صرف گمان اور اٹکل ہی پر ہیں ۔
    امام شوکانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں : ایک قول کے مطابق یہاں "امانی" کا مطلب تلاوت ہے یعنی انہیں کتاب کی صرف زبانی تلاوت معلوم ہے وه کتاب کو سمجھنا اور اس ميں غور و فکر کر کے پڑھنا نہيں جانتے. (فتح القدير 1 / 156)
    ابن قيم رحمہ اللہ فرماتے ہیں : یہاں اللہ تعالى نے اپنی کتاب کو بدلنے والوں کی اور ایسے ان پڑھ لوگوں کی مذمت کی ہے جو صرف لفظی تلاوت کے سوا اور کچھ نہیں جانتے. (بدائع التفسير 1/300)
    5- آیت کریمہ ہے : وَ قَالَ الرَّسُوۡلُ یٰرَبِّ اِنَّ قَوۡمِی اتَّخَذُوۡا هذَا الۡقُرۡاٰنَ مَهجُوۡرًا (سورة الفرقان 30)

    اور رسول کہیں گے کہ اے میرے پروردگار! بیشک میری امت نے اس قرآن کو چھوڑ رکھا تھا ۔
    ابن کثیر رحمہ فرماتے ہیں : قرآن میں غور و تدبر نہ کرنا اور اس کو سمجھ کر نہ پڑھنا بھی گویا قرآن کو ترک کرنا اور اسے بالائے طاق رکھنا ہے. (تفسیر ابن کثیر 6/108)
    ابن قيم رحمہ اللہ نے قرآن کو چھوڑے رکھنے کی کئی اقسام بیان کی ہیں چنانچہ فرماتے ہیں : چوتھی قسم یہ ہے کہ بنده قرآن میں غور و فکر کرنا اور اسے سمجھ کر پڑھنا چهوڑ دے اور قرآن کے ذریعے اللہ تعالى کا کیا مطالبہ ہے اسے جاننے کی کوشش نہ کرے. (بدائع التفسير 2/292)

    *تدبر قرآن کی اہمیت و فضیلت احادیث مبارکہ کی روشنی میں*

    1- عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : .... وَمَا اجْتَمَعَ قَوْمٌ فِي بَيْتٍ مِنْ بُيُوتِ اللَّهِ يَتْلُونَ كِتَابَ اللَّهِ وَيَتَدَارَسُونَهُ بَيْنَهُمْ إِلَّا نَزَلَتْ عَلَيْهِمْ السَّكِينَةُ وَغَشِيَتْهُمْ الرَّحْمَةُ وَحَفَّتْهُمْ الْمَلَائِكَةُ وَذَكَرَهُمْ اللَّهُ فِيمَنْ عِنْدَهُ )
    جو لوگ اللہ کے گھر میں بیٹھ کر قرآن کی تلاوت کرتے ہیں اور اسے سمجھ کر پڑھنے پڑھانے اور مذاکرہ کرنے کا اہتمام کرتے ہیں تو ایسے لوگوں پر اللہ کی طرف سے سکون و اطمینان کا نزول ہوتا ہے، رحمت الہی انہیں ڈھانپ لیتی ہے، فرشتے انهیں اپنے گھیرے میں لے لیتے ہیں اور اللہ تعالیٰ اپنے پاس موجود فرشتوں کے درمیان ان کا ذکر خیر فرماتے ہیں.
    (صحیح مسلم حدیث نمبر 2699)
    یہاں اس حدیث میں قابل غور بات یہ ہے کہ مذکورہ فضیلتیں یعنی سکون و اطمینان کا نزول، رحمت الہی کا ڈھانپنا اور فرشتوں کے درمیان ذکر خیر یہ سب اس تلاوت کے بدلے میں ہے جس تلاوت میں سمجھنا اور غور و فکر کرنا شامل ہو. مگر آج کل ہماری صورتحال یہ ہے کہ ہم حدیث کے صرف ایک ٹکڑے پر عمل کرتے ہیں یعنی تلاوت، جبکہ سمجھ کر پڑهنے پڑھانے اور غور و تدبر کرنے کو بعض لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ اس سے حفظ قرآن میں زیادہ وقت لگے گا اور تلاوت کی مقدار میں کمی آئے گی لہذا اس کی کوئی ضرورت نہيں.
    2- حذیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے: صليت مع النبي صلى الله عليه وسلم ذات ليلة . فافتتح البقرة . فقلت : يركع عند المائة . ثم مضى . فقلت : يصلي بها في ركعة . فمضى . فقلت : يركع بها . ثم افتتح النساء فقرأها . ثم افتتح آل عمران فقرأها . يقرأ مترسلا . إذا مر بآية فيها تسبيح سبح . وإذا مر بسؤال سأل . وإذا مر بتعوذ تعوذ .
    حذیفہ رضی اللہ عنہ کی ایک لمبی روایت ہے جس میں وه آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی نماز اور قرأت کا آنکهوں دیکھا حال بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں : آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایک رات نماز ادا كى تو دیکھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ٹَھَہر ٹَھَہر کَر پڑھ رہے تھے، جب تسبیح کی آیت سے گزرتے تو سبحان الله کہتے، دعاء کی آیت پڑھتے تو دعاء مانگتے اور جب پناہ مانگنے والی آیت ہوتی تو پناہ مانگتے.
    (صحیح مسلم حدیث نمبر 772)
    پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے اس واقعے سے تدبر قرآن کا ایک عملی نمونہ ملتا ہے.
    3- ابو ذر رضى اللہ عنہ کی روایت :
    قَامَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِآيَةٍ حَتَّى أَصْبَحَ يُرَدِّدُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْآيَةُ إِنْ تُعَذِّبْهُمْ فَإِنَّهُمْ عِبَادُكَ وَإِنْ تَغْفِرْ لَهُمْ فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ سورة المائدة آية 118.

    ابوذر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تہجد کی نماز میں کھڑے ہوئے، اور ایک آیت کو صبح تک دہراتے رہے، اور وہ آیت یہ تھی: «إن تعذبهم فإنهم عبادك وإن تغفر لهم فإنك أنت العزيز الحكيم» اگر تو ان کو عذاب دے تو وہ تیرے بندے ہیں، اور اگر تو ان کو بخش دے، تو تو عزیز ( غالب ) ، اور حکیم ( حکمت والا ) ہے ( سورة المائدة: 118 ) ۔
    (سنن ابن ماجہ حديث نمبر 1350)

    یہ پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہیں جو غور و تدبر کے ساتھ پڑھنے کو کثرت تلاوت پر ترجیح دیتے تھے یہاں تک کہ بسا اوقات ایک آیت پڑھتے ہوئے پوری رات گزار دیتے تھے.
    4- ابن مسعود رضی اللہ عنہ کا بیان ہے :ہم لوگ دس آیتیں سیکھتے تھے پھر آگے اس وقت تک نہیں بڑھتے تھے جب تک ان دس آیات کے معانی سمجھ نہ لیتے اور ان پر عمل کرنا نہ سیکھ لیتے . ( رواه الطبري في تفسيره 1/80)
    صحابہ کرام کو قرآن کی تعلیم دینے کے سلسلے ميں رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم کا یہی طریقہ کار تھا یعنی علم سیکھنا سمجھنا پھر اس پر عمل کرنا یہ تینوں ایک دوسرے کے ساتھ لازم ملزوم تھے چنانچہ پہلے سبق کو سمجھے اور اس پر عمل کئے بغیر آگے دوسرا سبق نہیں ملتا تھا.

    5- ایک بار جب عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے تین رات سے کم میں قرآن ختم کرنے کی اجازت مانگی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرماتے ہوئے کہا : جو شخص قرآن کو تین رات سے کم میں ختم کرے وہ قرآن کو نہیں سمجھ سکتا. (سنن أبي داود حديث نمبر 1390)
    اس سے معلوم ہوا کہ تلاوت قرآن کا اصل مقصد اسے سمجھنا اور اس کی آیات میں غور و فکر کرنا ہے نہ کہ اسے صرف لفظی تلاوت کرنا.
    6- مؤطا امام مالک میں انس بن مالک رضی اللہ عنہ کی روایت ہے : آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے لوگوں کو جہری نماز پڑھائی، دوران نماز کوئی ایک آیت چهوٹ گئی نماز کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص سے دریافت کیا : کیا نماز ميں مجھ سے کوئی آیت چهوٹ گئی ہے؟ اس نے جواب دیا : مجھے نہیں معلوم، اسی طرح دو تین اور لوگوں سے پوچھا سب نے جواب دیا ہمیں نہیں معلوم، پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : کیا بات ہے لوگوں کے سامنے قرآن کی تلاوت کی جاتی ہے مگر انهیں اتنا نہیں معلوم ہوتا کہ کیا پڑھا گیا اور کیا چهوٹ گیا، بنی اسرائیل کے دلوں سے اللہ کی عظمت و کبریائی اسی وجہ سے جاتی رہی کیونکہ ان کے بدن حاضر ہوتے تھے مگر دل و دماغ غائب ہوتے تھے اور اللہ کو وہی عمل مقبول اور پسند ہے جس میں بدن کے ساتھ دل بھی حاضر ہو.
    (یہ روایت ضعیف ہے دیکھئے سلسلة الأحاديث الضعيفة حديث نمبر 5050)

    *سلف صالحین اور تدبر قرآن*

    1- ابن عمر رضی اللہ عنہما بیان فرماتے ہیں : عمر رضی اللہ عنہ نے سورہ بقرہ باره سال میں سیکھا جب اسے مکمل سیکھ کر فارغ ہوئے تو ایک اونٹ ذبح کیا. (نزهة الفضلاء تهذيب سير أعلام النبلاء 1/35)
    صرف ایک سورت کو سیکھنے میں اتنی لمبی مدت اس لئے لگی کیونکہ انهوں نے اسے غور و تدبر کے ساتھ پڑھا اور سیکھا تھا.

    2- ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ عمر رضی اللہ عنہ کے پاس ایک آدمی حاضر ہوا تو عمر رضی اللہ عنہ اس سے لوگوں کے احوال دریافت کرنے لگے انهوں نے کہا : اے امیر المومنین! ان میں سے بعض لوگوں نے اتنا اتنا قرآن پڑھ لیا ہے، ابن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں : میں نے کہا : اللہ کی قسم مجھے پسند نہیں کہ لوگ قرآن پڑھنے میں اس قدر جلد بازی سے کام لیں ، میری یہ بات سن کر عمر رضی اللہ عنہ نے مجھے ڈانٹا اور کہا خاموش ہو جاؤ، میں رنجیدہ خاطر ہو کر گھر واپس لوٹنے لگا تو عمر رضی اللہ عنہ آئے اور پوچھنے لگے : ابھی اس شخص کی کون سی بات تمہیں ناگوار گزری ہے؟ میں نے کہا : اگر یہ لوگ قرآن پڑھنے میں اس قدر جلد بازی کریں گے تو اس کے معانی و مفاہیم کو صحیح طریقے سے نہیں سمجھ سکیں گے جس کے نتیجے میں باہم اختلاف ہوگا اور اس اختلاف کے نتیجے میں آپس میں لڑائی جھگڑے کریں گے ، چنانچہ عمر رضی اللہ عنہ کہنے لگے : اے ابن عباس تم نے سچ کہا یقینا میں اس بات کو لوگوں سے چھپاتا تھا مگر تم نے حقیقت بیان کر دیا. ( نزهة الفضلاء تهذيب سير أعلام النبلاء 1/278)

    یقینا بعد میں وہی کچھ ہوا جس کا اندیشہ عمر اور ابن عباس رضی اللہ عنہما نے ظاہر کیا تھا چنانچہ خوارج کا ظہور ہوا جو قرآن کو پڑھتے ہیں مگر یہ قرآن ان کے حلق سے نیچے نہیں اترتا.

    3- ابن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں : اس امت کے شروع کے دور میں ایک فاضل صحابی رسول کو صرف بعض سورتیں یاد ہوتی تهیں مگر انهیں قرآن پر عمل کرنے کی توفیق ملی ہوئی تھی جب کہ بعد کے دور کے لوگوں کا حال یہ ہے کہ یہ سب قرآن کو پڑھتے ہیں یہاں تک کہ بچے اور اندھے بھی مگر انهیں قرآن پر عمل کرنے کی توفیق نہیں ملتی .
    اسی مفہوم کو ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے اس طرح بیان کیا ہے : قرآن حفظ کرنا ہمارے لئے مشکل ہے مگر اللہ نے اس پر عمل کرنا آسان بنا دیا ہے جب کہ ہمارے بعد کے لوگوں کے لئے حفظ قرآن آسان ہے اور اس پر عمل كرنا مشکل ہے. (الجامع لأحكام القرآن 1/39)

    4- حسن بصری رحمہ اللہ فرماتے ہیں : بے شک اس قرآن کو غلاموں اور بچوں نے پڑھا جنہیں قرآن کی نہ کوئی سمجھ ہے اور نہ تفسیر کا کوئی علم ،قرآن میں غور و فکر قرآن پر عمل کرنے سے حاصل ہوتا ہے نہ کہ صرف اس کے حروف کو یاد کرنے اور اس کے حدود و احکامات کو پامال کرنے سے، بعض لوگ تو یہاں تک کہتے ہیں کہ میں نے پورا قرآن پڑھ لیا ایک حرف بھی نہیں چهوڑا حالانکہ اللہ کی قسم اس نے پورا قرآن چهوڑ دیا کیونکہ قرآن پڑھنے کا کوئی اثر اس کے اخلاق و کردار میں نظر نهيں آتا، بعض لوگ فخریہ انداز میں یہ کہتے پھرتے ہیں : میں ایک سانس میں پوری سورت پڑھ لیتا ہوں، اللہ کی قسم ایسے لوگ نہ قاری ہیں نہ عالم، نہ حکیم و دانا اور نہ متقی و پرہیزگار. بھلا قرآن پڑھنے والوں کا کب یہ طرز و انداز تھا. اللہ تعالى ایسے لوگوں کی تعداد زیادہ نہ کرے. (الزهد 276)
    5- حسن بصری رحمہ اللہ مزید کہتے ہیں : قرآن اس لئے نازل کیا گیا تاکہ اسے سمجھ کر پڑھا جائے اور اس پر عمل کیا جائے لیکن لوگوں نے اس کی تلاوت ہی کو عمل بنا لیا (مدارج السالكين 1/485 )
    یعنی انهوں نے قرآن کو عمل کی کتاب بنانے کے بجائے صرف لفظی تلاوت کی کتاب بنا لیا چنانچہ بغیر سمجھے اور عمل کئے صرف تلاوت کرتے ہیں.
    6- شعبہ بن حجاج بن الورد حديث پڑھنے والوں سے کہا کرتے تھے : اے لوگو! حدیث میں تم جتنا آگے بڑھتے جاؤ گے اسی کے بقدر قرآن میں پیچھے ہوتے جاؤ گے (مدارج السالكين 1/485)
    یہ ان لوگوں کے لئے ایک تنبیہ اور پیغامِ ہے جو حدیث کی اسانید پر بحث کرنے اور فقہی مسائل کو پڑھنے اور پڑھانے میں حد درجہ مشغول ہوکر قرآن اور تدبر قرآن سے بے پروا ہوجاتے ہیں جس کے نتیجے میں قرآن و حدیث کے درمیان توازن و اعتدال کھو دیتے ہیں.
    7- محمد بن كعب القرظی فرماتے ہیں : میں رات سے لے کر صبح تک صرف دو سورتیں إذا زلزلت الأرض اور القارعة غور و فکر کے ساتھ پڑھتا رہوں یہ میرے لیے اس سے کہیں بہتر ہے کہ پورا قرآن بغیر غور و تدبر کے جلدی جلدی پڑهوں. (الزهد لابن المبارك 97)
    8- ابن قيم رحمہ اللہ فرماتے ہیں : ایک انسان کے لئے دنیا و آخرت ميں سب سے زيادہ سود مند چیز اور اس کی نجات کا سب سے آسان راستہ یہ ہے کہ وہ قرآن میں غور و فکر کرے اور اس کی آیات کے معانی و مفاہیم کو سمجھنے کے لیے اپنی پوری توجہ اور کوشش صرف کرے کیونکہ تدبر قرآن سے :
    بندے کو بھلائی اور برائی کی تمام شاہراہوں کے بارے میں واقفیت حاصل ہوتی ہے، خیر و شر کے اسباب و وسائل اور ثمرات و نتائج نیز اچھے اور برے لوگوں کے انجام کا علم ہوتا ہے.
    نفع بخش علوم اور سعادت و کامرانی کے خزانوں کی چابیاں اسے ملتی ہیں.
    دل میں ایمان کی بنیادیں مزید راسخ و مضبوط ہوتی ہیں.
    دنیا و آخرت اور جنت و جہنم کی حقیقت و ماہیت سے اس کا دل روشناس ہوتا ہے.
    گذشتہ قوموں کے حالات و واقعات اور ان پر اللہ کی طرف سے آنے والے عذاب اور ان سے ملنے والی عبرت و نصیحت سے آگاہی ہوتی ہے.
    اللہ تعالى کے عدل و انصاف اور انعام و اکرام کا نظارہ ہوتا ہے.
    اللہ تعالى کی ذات اس کے اسماء و صفات، اس کے افعال، اس کے نزدیک پسندیدہ و ناپسندیدہ اعمال، اس تک پہنچنے کے راستے اور اس کی رکاوٹیں ان ساری چیزوں کے بارے میں معرفت نصیب ہوتی ہے.
    انسانی نفس اس کی صفات اور اعمال کو صحیح کرنے والی چیزوں اور خراب کرنے والی آفتوں کا علم ہوتا ہے.
    اہل جنت و جہنم کے راستے، ان کے اعمال و احوال اور ان کے مقام و مرتبے سے واقفیت حاصل ہوتی ہے.
    آخرت کا ایسا نظارہ ہوتا ہے جیسے وه وہیں ہو اور دنیا سے انسان ایسے غائب ہوجاتا ہے جیسے وہ اس میں ہے ہی نہیں.
    اختلاف کے وقت حق و باطل کے درمیان تمییز کی صلاحیت پیدا ہوتی ہے اور اس سے ایک روشنی ملتی ہے جس سے وہ ہدایت و گمراہی کے درمیان تفریق کر پاتا ہے.
    دل کو طاقت و قوت ملتی ہے اور اسے ایک خوشحال اور پر سکون زندگی نصیب ہوتی ہے چنانچہ اس کی دنیا دوسروں کی دنیا سے مختلف ہوتی ہے ، قرآن کے معانی و مفاہیم خوبصورت وعدے کے سہارے بندے کو اپنے رب کی طرف چلنے اور بھاگنے پر آمادہ کرتے ہیں نیز وعیدوں کے ذریعے اسے دردناک عذاب سے ڈراتے اور خبردار کرتے رہتےہیں .
    مختلف آراء و مذاہب کی تاریکی میں اسے صحیح راستے کی رہنمائی ملتی ہے، بدعتوں اور گمراہیوں کی دلدل میں پھنسنے سے وه محفوظ رہتا ہے.
    حلال و حرام کے درمیان تمییز کرنے اور پرکھنے کی صلاحیت پیدا ہوتی ہے اور اس کی حد بندیوں سے واقفیت حاصل ہوتی ہے تاکہ انسان ان حدود کو تجاوز کر کے اپنے آپ کو پریشانی ميں نہ مبتلا کرے.
    جب بھی انسان سستی اور کاہلی کا شکار ہوتا ہے تو اسے ایک آواز پکارتی اور جگاتی ہے کہ اٹھ! قافلہ آگے نکل چکا ہے، ہادی و رہبر کا دامن تمہارے ہاته سے چهوٹ چکا ہے، اس لئے اٹھو چلتے رہو اور رواں دواں قافلے کو پا لینے کی کوشش کرو، اللہ کی پناہ طلب کرتے ہوئے اس سے مدد مانگو اور کہو: حسبي الله ونعم الوكيل.

    *تدبر قرآن کے اصول و آداب*

    1- تلاوت قرآن کے آداب کا پاس و لحاظ رکھے جیسے با وضو ہونا، مناسب وقت، جگہ اور کیفیت کا اختیار کرنا، استعاذہ و بسملہ کا اہتمام، اپنے آپ کو دوسری مصروفیات سے فارغ کرنا ، ذہنی یکسوئی اور خشوع و خضوع کے ساتھ پڑھنا اور آیات سے متاثر ہونا اور یہ تصور کرنا کہ قرآن ہم سے ہم کلام ہے.
    2- وقار و سنجیدگی، غور و فکر اور خشوع و خضوع کی کیفیات کے ساتھ تلاوت کرے سورت یا پاره ختم کرنے کو اپنا اصل مقصد نہ بنائے.
    3- جس آیت کو پڑھے اس پر ٹھہر کر بار بار خوب باریکی سے اس پر غور و فکر کرے.
    4- آیت کریمہ کے سیاق و سباق پر تفصیلی نگاه رکھے جیسے آیت کی ترکیب، اس کا مفہوم، سبب نزول، مشکل الفاظ، آیت سے حاصل ہونے والے دروس و احکامات.
    5- حالات حاضرہ کو سامنے رکھ کر آیت میں غور و فکر کرے تاکہ وه آیت اس کی زندگی نیز موجوده دور کے مسائل و مشکلات کے لئے ذریعہ علاج اور حل ثابت ہو سکے.
    6- آیت کو سمجھنے کے لئے سلف صالحین کے فہم کی طرف رجوع کرے اور دیکھے کہ کیسے انهوں نے اس آیت پر غور و فکر کیا اور کیسے اسے حقیقی زندگی میں برتا اور عمل کیا.
    7- آیت کے متعلق مفسرین کرام کے اقوال و آراء کو نظر میں رکھے.
    8- قرآن کا ہمہ جہتی مطالعہ کرے.
    9- قرآن کے بنیادی اہداف ومقاصد پر توجہ دے.
    10- نص قرآنی پر مکمل یقین و اعتماد کرے، اور اگر واقع اسکے خلاف ہو تو اسے نص قرآنی کے تابع بنایا جائے۔
    11- نص قرآنی میں پوشیدہ اسرار ورموز، اشارات، اور باریکیوں سے ھم آہنگی۔
    12- قرآن فہمی میں جدید علوم ومعارف کو بروئے کار لایا جائے ۔
    13- آیات پر ایک ہی بار غور وفکر پر اکتفا کرنے کے بجائے ان پر بار بار نئے نئے زاویہ فکر سے غور وخوض کیا جائے اس لئے کہ بار بار غور کرنے سے نئے نئے معانی نکلتے رہتے ہیں۔
    14- ہر سورت کے مرکزی موضوعات اور مقاصد کو نظر میں رکھے.
    15- تفسير کے بنیادی علوم و معارف پر دسترس ہو.
    16- خاص اسی موضوع پر لکھی گئی کتابوں کا مطالعہ کرے جیسے:
    القواعد الحسان لتفسير القرآن للسعدي
    مفاتيح للتعامل مع القرآن للخالدي
    قواعد التدبر الأمثل لكتاب الله لعبد الرحمن حبنكة الميداني
    دراسات قرآنية لمحمد قطب

    *آخری بات*

    ہمارے نزدیک تدبر قرآن کی کیا اہمیت اور اس کا کیا مقام و مرتبہ ہے؟ مسجدوں میں ہم تلاوت قرآن کے وقت عملی طور پر کس قدر تدبر پر توجہ دیتے ہیں؟ کیا ہم گهروں میں اپنے بچوں کی تعلیم اور قرآن کے حلقات میں اپنے طلبہ کی تربیت تدبر قرآن پر کر رہے ہیں؟ یا ہمارے نزدیک سب سے اہم اور اصل مقصد بلا سمجھے صرف حفظ کروانا ہے اور بس، کیونکہ کہا جاتا ہے کہ غور و تدبر کے ساتھ حفظ کرنے میں زیادہ وقت لگے گا؟
    مدارس میں شرعی علوم کے دروس و اسباق میں تدبر قرآن کی کیا مقدار اور کیا تناسب ہے بالخصوص تفسیر کے دروس میں؟ کیا مدرس اپنے طلبہ کو تدبر قرآن کی طرف رغبت دلاتا ہے اور اس کے مطابق ان کی تربیت دیتا ہے یا صرف الفاظ کے معانی یاد کروانے پر اکتفا کرتا ہے؟
    مسجدوں میں لگنے والے علمی حلقوں میں تفسیری دروس کا کیا مرتبہ ہے؟ کیا وه سر فہرست ہوتا ہے؟ یا اس کا درجہ سب سے آخری میں ہوتا ہے؟ ( واضح رہے یہ اس صورت میں ہے جب کہ اس قسم کے علمی حلقے موجود ہوں ).
    کیا ہم تفسیر کی کتابوں کو بھی اپنے مطالعے ميں رکھتے ہیں اور انهیں پڑھنے کا کتنا اہتمام کرتے ہیں؟
    تلاوت کے وقت کیوں ہمارا مقصد محض سورت یا پاره ختم کرنا ہی ہوتا ہے جب کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے منع فرمایا ہے؟
    کب ہمارے دل و دماغ میں یہ تصور قائم ہوگا کہ تدبر قرآن کے فوائد اور اس کا اجر و ثواب محض لفظی تلاوت سے زيادہ ہے؟
    یہ کچھ سوالات ہیں جو ہم سے جواب چاہتے ہیں تو کیا ہمارے پاس ان کا کوئی جواب ہے؟

    •┈┈┈┈┈┈••✦✿✦••┈┈┈┈┈┈•
    •┈┈┈┈┈┈••✦✿✦••┈┈┈┈┈┈•
     
    • زبردست زبردست x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • غیرمتعلق غیرمتعلق x 1
    • لسٹ
  2. ‏جون 11، 2017 #2
    ام حماد

    ام حماد رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 09، 2014
    پیغامات:
    96
    موصول شکریہ جات:
    65
    تمغے کے پوائنٹ:
    42

    جزاکم اللہ خیرا بھائی
     
  3. ‏جون 11، 2017 #3
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,351
    موصول شکریہ جات:
    1,078
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    وانت فجزاک اللہ خیرا
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں