1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کے حوالے سے جناب مودودی اور اسحاق جھالوی کی افتراپردازیاں

'عقیدہ اہل سنت والجماعت' میں موضوعات آغاز کردہ از اسحاق سلفی, ‏ستمبر 10، 2017۔

  1. ‏ستمبر 10، 2017 #1
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,402
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    Last edited: ‏ستمبر 10، 2017
    • زبردست زبردست x 4
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  2. ‏ستمبر 11، 2017 #2
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,777
    موصول شکریہ جات:
    8,337
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    ابو یحیی نورپوری صاحب نے بھی اس پر ایک تحریر لکھی ہے ۔
     
  3. ‏ستمبر 11، 2017 #3
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,777
    موصول شکریہ جات:
    8,337
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    حضرت عثمان رضى الله عنہ كے فضائل كے متعلق علماء كى خاص كتب ہيں جن ميں سے چند :
    فضائل عثمان بن عفان - محدث عبدالله بن امام احمد (وفات 290ھ ) دار ماجد عسيرى
    فوائد الحسان - امام احمد بن كامل بن شجرة (وفات 350ھ) مخطوط ہے
    قربة الدارين في مناقب ذي النورين عثمان - امام رضى الدين (وفات 590ھ) جمعية الآل والأصحاب
    معاصرين ميں سے عاطف بن عبدالوهاب حماد صاحب نے ان كے اسلام سے قتل تک تقريبا چھ سو آثار جمع كيے ہيں. جامع الآثار القولية والفعلية الصحيحة للخليفة الراشد عثمان بن عفان - دار الهدى و دار الفضيلة.
    ان كے قتل كى تفصيلات پر جامعہ اسلاميہ مدينہ سے ڈاكٹر محمد الغبان كا ضخيم رسالہ نشر ہوا ہے : فتنة مقتل عثمان بن عفان رضى الله عنه و أرضاه
    منقول
     
    • پسند پسند x 3
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏ستمبر 11، 2017 #4
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,777
    موصول شکریہ جات:
    8,337
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    شہادت ِ عثمان بزبانِ صاحب ِقرآن

    حافظ ابو یحیٰی نورپوری
    کچھ بد بخت لوگ ،جو بظاہر اسلام کے دعوے دار ہیں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دوہرے داماد، مسلمانوں کےتیسرے خلیفہ راشد،سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کو آپ رضی اللہ عنہ کے لیے سعادت تسلیم کرنے کے لیے تیار نہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ آپ کی مظلومانہ شہادت آپ کے اپنے جرائم کی پاداش میں ہوئی۔ نعوذ باللہ
    صد افسوس کہ اپنے آپ کو سنی باور کرانے والے بعضے جاہل سکالر بھی رافضیوں کی اسی رٹی رٹائی گردان کے اسیر ہو گئے۔
    حالانکہ!
    1۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے وحیِ الٰہی سے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کے اعزازِ شہادت سے سرفراز ہونے کی پیش گوئی فرمائی ۔
    عن أنس بن مالك رضي الله عنه، أن النبي صلى الله عليه وسلم صعد أحدا، وأبو بكر، وعمر، وعثمان فرجف بهم، فقال: «اثبت أحد فإنما عليك نبي، وصديق، وشهيدان»
    سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سیدنا ابو بکر وعمر اور عثمان رضی اللہ عنہم کے ساتھ احد پہاڑ پر چڑھے تو اس نے لرزنا شروع کر دیا۔نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : احد ٹھہر جاؤ، تمہارے اوپر ایک نبی، ایک صدیق اور دو شہید ہیں۔
    (صحیح البخاری : 3675)
    2۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کی پیش گوئی بطور ِ اعزاز فرمائی تھی اور زبانِ نبوت سے اس اعزاز کی خوش خبری پا کر سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے اللہ کا شکر بھی ادا کیا تھا۔
    عن أبي موسى رضي الله عنه، قال: كنت مع النبي صلى الله عليه وسلم في حائط من حيطان المدينة _ ثم استفتح رجل، فقال لي: «افتح له وبشره بالجنة، على بلوى تصيبه»، فإذا عثمان، فأخبرته بما قال رسول الله صلى الله عليه وسلم فحمد الله، ثم قال: الله المستعان
    سیدنا ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی معیت میں مدینہ منورہ کے ایک باغ میں موجود تھا کہ ایک شخص نے اندر آنے کی اجازت چاہی۔نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھےفرمایا : دروازہ کھولیے اور آنے والے کو انہیں پہنچنے والی مصیبت پر جنت کی بشارت دیجیے۔ (میں گیا تو) سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ کھڑے تھے۔ میں نے انہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی دی گئی خوش خبری سنائی۔ یہ سن کر سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے اللہ کی تعریف کی اور فرمایا : میں اس پر اللہ تعالیٰ سے مدد کا درخواست گزار ہوں۔
    (صحیح البخاری : 3490، صحیح مسلم : 2403)
    3۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے شہادت کی یہی خوش خبری سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کو خود اپنی زبانی بھی سنائی۔
    عن أبي سهلة، عن عائشة قالت: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: ادعوا لي بعض أصحابي، قلت: أبو بكر؟ قال: لا. قلت: عمر؟ قال: لا. قلت: ابن عمك علي؟ قال: لا. قالت: قلت: عثمان؟ قال: نعم، فلما جاء، قال: تنحي. فجعل يساره، ولون عثمان يتغير، فلما كان يوم الدار وحصر فيها، قلنا: يا أمير المؤمنين، ألا تقاتل؟ قال: لا، إن رسول الله صلى الله عليه وسلم عهد إلي عهدا، وإني صابر نفسي عليه
    ابو سہلہ رحمہ اللہ(سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کے غلام) سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت کرتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے (اپنی وفات کے وقت )فرمایا :میرے پاس میرے کسی صحابی کو بلاؤ۔ میں نے عرض کیا : ابو بکر کو بلائیں؟فرمایا : نہیں۔عرض کیا : عمر کو؟ فرمایا : نہیں۔ عرض کیا : آپ کے چچا زاد علی کو؟ فرمایا : نہیں۔ عرض کیا : عثمان کو؟ فرمایا : ہاں۔ جب سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ حاضر ہوئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے ایک طرف ہونے کا کہا اور رازدارانہ انداز میں کچھ فرمانے لگے، اس بات کو سنتے ہوئے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کا رنگ تبدیل ہو رہا تھا۔ ابو سہلہ کہتے ہیں : جب سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کا دن آیا اور آپ کا محاصرہ کر لیا گیا تو ہم نے عرض کیا : امیر المومنین! کیا آپ باغیوں سے قتال نہیں کریں گے؟ فرمانے لگے : نہیں، اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے (شہادت کا)وعدہ دیا تھا، میں اسی پر اپنے آپ کو پابند رکھوں گا۔
    (مسند الامام احمد : 24253، وسندہ صحیح)
    4۔ وفات کے قریب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کو سنائی گئی شہادت کی خوش خبری سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے بھی سنی تھی:
    عن النعمان بن بشير، عن عائشة، قالت: أرسل رسول الله صلى الله عليه وسلم إلى عثمان بن عفان، فأقبل عليه رسول الله صلى الله عليه وسلم، فلما رأينا رسول الله صلى الله عليه وسلم، أقبلت إحدانا على الأخرى، فكان من آخر كلام كلمه، أن ضرب منكبه، وقال: يا عثمان، إن الله عز وجل عسى أن يلبسك قميصا، فإن أرادك المنافقون على خلعه، فلا تخلعه حتى تلقاني، يا عثمان، إن الله عسى أن يلبسك قميصا، فإن أرادك المنافقون على خلعه، فلا تخلعه حتى تلقاني، ثلاثا
    سیدنا نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے نقل کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ کی طرف پیغام بھیجا۔(جب وہ حاضر ہوئے تو) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان کی طرف متوجہ ہوئے۔ ہم (ازواج)نے بھی یہ دیکھ کر ایک دوسرے کو دیکھا۔ یہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا آخری کلام تھا۔ سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کے دونوں کندھوں پر ہاتھ مار کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : عثمان! اللہ تعالٰی آپ کو خلافت کی قمیص پہنائیں گے، اگر منافق آپ سے وہ قمیصِ خلافت چھیننا چاہیں تو آپ نے اسے اتارنا نہیں، یہاں تک مجھے آ ملو(شہید ہو جاؤ)۔پھر فرمایا : عثمان! اللہ تعالیٰ آپ کو خلعت ِ خلافت پہنائیں گے، اگر منافق اسے اتارنے کی کوشش کریں تو آپ نے شہید ہونے تک اسے نہیں اتارنا۔یہ بات آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تین مرتبہ ارشاد فرمائی۔
    (مسند الامام احمد : 24566، وسندہ صحیح)
    ان صحیح احادیث سے واضح طور پر معلوم ہوتا ہے کہ سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کی پیش گوئی وحیِ الٰہی سے بزبانِ نبوت بیان کر دی گئی تھی اور یہ خوش خبری بطور ِ اعزاز تھی، لہٰذا سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کو متنازعہ بنانا ظالموں، جاہلوں اور منافقوں کا کام ہے۔
    اللہ تعالیٰ ہمیں محبت ِصحابہ واہل بیت پر زندہ رکھے اور اسی پر شہادت کی موت دے۔ آمین
     
  5. ‏اکتوبر 11، 2017 #5
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    جزاك الله خير شيخ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں