1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

(فاسئلو اھل الذکر ان کنتم لاتعلمون ) آیت کی حقیقت اور تقلید کا رد

'حنفی' میں موضوعات آغاز کردہ از عدیل سلفی, ‏نومبر 02، 2014۔

  1. ‏نومبر 02، 2014 #1
    عدیل سلفی

    عدیل سلفی مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اپریل 21، 2014
    پیغامات:
    1,564
    موصول شکریہ جات:
    412
    تمغے کے پوائنٹ:
    197

    بسم اللہ الرحمٰن الرحٰیم


    االسلام علیکم ورحمہ اللہ وبرکاتہ


    صاحب مسلم الثبوت کتاب کے صفحہ نمبر ٥ پر واضع الفاظ میں یہ بات لکھدی گئی ہے کہ۔۔۔ اما المقلد فمستندہ قول مجتھدہ مقلد کی دلیل صرف امام کا قول ہے نہ تو وہ خود تحقیق کرسکتا ہے اور نہ ہی اپنے امام کی تحقیق پر نظر ڈال سکتا ہے۔۔۔ مصباح الثوت اُٹھائیے۔۔۔ جو دیوبند کے فارغ اور حنفی مذہب پیرو ہیں نے اس بات کو واضع طور پر لکھا ہے کہ۔۔۔ ‘‘ نصرانیوں کی سینہ بسنہ باتوں تقلید کہا جاتا ہے‘‘ (مصباح اللغات صفحہ ٧٠١)

    یعنی مقلد نصوص سے عاری اور سینہ گزٹ فتووں کا متبع ہوتا ہے جیسا کے عیسائیوں کے پاس سوائے صدری باتوں کے اور کچھ نہیں اسی طرح مقلدین کے پاس دلائل سے ہٹ کر صرف قیاس اور رائے ہوتی ہے۔۔۔ ادب اور لغت کے مسلمہ امام علامہ زمخشری کا فرمان بھی سُن لیں۔۔۔ فاھرب عن التقلید فھو ضلالہ ان المقلد فی سبیل الھالک۔۔۔ تقلید سے دور بھاگو کیونکہ یہ گمراہی ہے اور بلاشبہ گمراہی ہلاکت کے رستے پر گامزن ہے۔۔۔ اور یہ عام اُصول ہے کے اسلام میں جو چیز بغیر دلیل کے ہے وہ یقینا گمراہی ہے۔۔۔

    ااہل علم ميں سے علم وہ امانت ميں معروف كى تقليد كرنے پر ـ جبكہ وہ حديث كے مخالف نہ ہو ـ اس کے جواب میں امام شوکانی رحمہ اللہ تعالٰی کا قول نقل کروں گا کے۔۔۔ ھو العمل بقول الغیر من غیر حجہ فیخرج العمل بقول رسول اللہ والعمل بالاجماع ورجوع العامی الی المفتی ورجوع القاضی الی شھادہ العدول فانھا قد قامت الحجہ فی ذلک۔۔۔ حدیث اور اجماع پر عمل کرنا تقلید نہیں اسی طرح عامی کا مفتی کی طرف رجوع کرنا اور قاضی کا عادل گواہ کی طرف رجوع کرنا یہ بھی تقلید نہیں کیونکہ اس پر دلیل قائم ہو چکی ہے (ارشاد الفحول صفحہ ٢٤٢)۔۔۔

    اب سوال یہ ہے کہ کیا ہم کسی امام کے بارے میں یہ دعوٰی کرنے کی جرات کرسکتے ہیں کے وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرح معصوم ہے؟؟؟۔۔۔ ظاہر ہے کسی اُمتی کی طرف یہ دعوٰٰی قطعی طور پر نہیں کیا جاسکتا کے اس کی عصمت کا ذمہ اللہ وحدہ لاشریک نے لیا ہو۔۔۔ بلکہ آئمہ میں خطاء کا احتمال صواب سے زیادہ ہے جس کا اعتراف خود علامہ سبلی نعمانی رحمہ اللہ علیہ نے ان الفاظوں میں کیا۔۔۔ ملاحظہ ہوں۔۔۔ یہ نہ سمجھا جائے کے ہم امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ علیہ کی نسبت عام دعوے کرتے ہیں کہ ان کے مسائل صحیح اور یقینی ہیں امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ علیہ مجتہد تھے پیغمبر نہ تھے اس لئے ان کے مسائل میں غلطی کا ہونا ممکن ہے نہ صرف امکان بلکہ وقوع کا دعوٰٰی کرسکتے ہیں (سیرت نعمان صحفہ ٤٣)۔۔۔


    اسی طرح مشہور حنفی محدث امام طحاوی اور علی بن حسین جو مصر میں ٢٩٣ھ میں قاضی مقرر ہوئے گھے نے ایک دفعہ یہ فرمایا کہ۔۔۔ تقلید وہی کرتا ہے جو متعصب ہو یا بےوقوف (فقہ الاسلام صفحب ٥١٠)۔۔۔ یہ الفاظ اس قدر لوگوں کے ورد زبان ہوگئے تھے کہ وہ مصر میں ضرب المثل بن گئے۔۔۔


    مقلدین حضرات اپنے مؤقف میں مندرجہ ذیل دلائل پیش کرتے ہیں جن کی تفصیل اور حقیقت یہ آیت ہے۔۔۔ {اگر تمہيں علم نہيں تو اہل علم سے دريافت كرليا كرو} النحل ٤٣).

    ہمارے دوست احباب (مقلدیں) بڑے شدومد سے اس آیت کو تقلید کے جواز میں پیش کرتے ہیں حالانکہ اس آیت میں تقلید کا ارشاد تک موجود نہیں جس سے آئمہ کی تقلید ثابت ہوسکے۔۔۔ بلکہاس آیت میں تو یہ بتانا مقصود تھا کے تم جس رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی تکذیب کر رہے ہو محض اس لئے کے وہ بشر ہے اور تم اس کے مقام سے ناآشنا ہوتو اہل کتاب سے پوچھ لو کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم پہلے جتنے رسول آئے وہ سبھی بشر تھے تو تم کو معلوم ہوجائے گا کہ مجھ صلی اللہ علیہ وسلم انہی سچے رسولوں میں سے ایک ہیں اب اس آیت کے مکمل الفاظ ملاحظہ کیجئے۔۔۔ وَمَا أَرْسَلْنَا مِن قَبْلِكَ إِلاَّ رِجَالاً نُّوحِي إِلَيْهِمْ فَاسْأَلُواْ أَهْلَ الذِّكْرِ إِن كُنتُمْ لاَ تَعْلَمُونَ اور ہم نے تم سے پہلے مردوں ہی کو پیغمبر بنا کر بھیجا تھا جن کی طرف ہم وحی بھیجا کرتے تھے اگر تم لوگ نہیں جانتے تو اہل کتاب سے پوچھ لو (النحل ٤٣)۔۔۔


    اس آیت کے سیاق وسباق سے ثابت ہوتا ہے کہ اس آیت کے مخاطب مشرکین ہیں اور اہل ذکر سے مراد اہل کتاب ہیں اس آیت میں ایک خاص اعتراض کے رفع کرنے میں اہل کتاب کی طرف رجوع کرنے کا حکم دیا جارہا ہے کیونکہ وہ صحائف انبیاء اور آسمانی کتابوں سے واقف تھے حالانکہ خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت کے قائل نہ تھے تو پھر ان سے سوال کا مطلب یہ ہوا کہ وہ اپنے علم کی بناء پر تمہیں بتادیں گے کہ رسول بشر ہی ہوتا ہے اور رسول کا بشر ہونا اس قدر واضح ہے کہ اہل کتاب سے بھی اس کی تصدیق کی جاسکتی ہے اور پھر اس کی اگلی آیت میں تبلیغ کا حکم ہے۔۔۔ بِالْبَيِّنَاتِ وَالزُّبُرِ وَأَنزَلْنَا إِلَيْكَ الذِّكْرَ لِتُبَيِّنَ لِلنَّاسِ مَا نُزِّلَ إِلَيْهِمْ وَلَعَلَّهُمْ يَتَفَكَّرُونَ (اور ان پیغمبروں کو) دلیلیں اور کتابیں دے کر (بھیجا تھا) اور ہم نے تم پر بھی یہ کتاب نازل کی ہے تاکہ جو (ارشادات) لوگوں پر نازل ہوئے ہیں وہ ان پر ظاہر کردو اور تاکہ وہ غور کریں (النحل ٤٤)۔۔۔

    اس آیت کے کے ابتدائی الفاظ کس قدر واضح ہیں کے اے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ کے ذمے اس کتاب کی تبلیغ ہے اور تبلیغ کن لوگوں کو کرنی ہے؟؟؟۔۔۔ تو فرمایا مَا نُزِّلَ إِلَيْهِمْ کہ جن کی طرف یہ قرآن نازل کیا گیا ہہے تاکہ وہ غور فکر کریں اب دیکھئے پہلے ذکر کی نسبت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف ہے اور پھر مخاطبین کی طرف ہے۔۔۔ لیکن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت اور مخاطبین کی نسبت میں واضح فرق کیا ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم پر تبلیغ فرض ہے اور مخاطبین پر غوروفکر تو بھائی (مقلد) یہاں کسی ایک کی تخصیص کیسے ہوسکتی ہے جب کہ آپ خاص لوگوں کی طرف رسول بن کر نہیں آئے بلکہ تمام لوگوں کی طرف رسول بنا کر بھیجئے گئے ہیں اور تمام کو ہی غور وفکر کی دعوت دی گئی ہے پھر یہ بات بھی مدنظر رکھیئے کے قرآنی اصطلاح میں ذکر وہ ہوگا جو اللہ تعالٰی کی طرف سے نازل ہوا ہو جو اللہ تعالٰی کی طرف سے نازل نہیں ہوا وہ قطعی ذکر نہیں ہوسکتا اور وہ عالم بھی عالم نہیں کہلائے گا جو ذکر سے واقف نہیں تو کیسے ہوسکتا ہے کہ کسی آدمی کے قیاس کو دین بنا لیا جائے یہ بات اس آیت کے صریح خلاف ہوگی کے اللہ تعالٰی اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو چھوڑ کر کسی اور پر اعتماد اور بھروسہ کیا جائے کیونکہ علم وہ ہے جو اللہ رب عزت کی طرف سے ہو اور علماء وہ ہیں جو قیاسات کو چھوڑ کر کتاب وسنت کو اپناتے ہیں مقلد جاہل ہوتا ہے اور جاہل کو غور فکر کی حاجت ہی کیا لیکن اس آیت میں اللہ تعالٰی نے ذکر کے ساتھ غوروفکر کو لازم قرار دیا ہے جو بھی مسلمان ہوگا اس کو کتاب کے مطابق غور خوض کرنا ہوگا لیکن مقلد تو صرف اپنے امام کی رائے کو ہی کافی سمجھتا ہے تو ایک مسئلہ یہ بھی پیدا ہوا کے تقلید کے دعوے دار اس آیت سے عامی (جاہل) کے لئے علماء کی طرف رجوع کرنا لازمی قرار دیتے ہیں تو اس بات میں کوئی شک بھی کیا ہوسکتا ہے کہ جاہل نے تو آخر علماء کی طرف رجوع کرنا ہوتا ہے البتہ اس کے لئے غوروفکر کو لازمی قرار دیا ہے تاکہ وہ صرف کسی عالم کی بات کو اس لئے قبول نہ کرے کہ یہ بات فلاں عالم ک ہے بلکہ وہ اس میں دیکھے کے عالم نے جو فتوٰی دا ہے کیا وہ کتاب وسنت کے موافق ہے یا نہیں۔۔۔۔ اس بات سے یہ شبہ پیدا نہ ہوکے جو کسی مسئلہ میں خود تحقیق کرسکتا ہے کہ وہ مسئلہ کتاب وسنت کے موافق ہے یا نہیں اس کو کسی سے فتوٰی لینے کی ضرورت ہی کیا ہے تو اس شبہ کے رفع کرنے میں عرض یہ ہے ک عامی مفتی سے دلیل تو طلب کر سکتا ہے کہ بتائیے آپ نے جو فتوی دیا ہے اس کی کتاب وسنت میں کیا اصل ہے جب مفتی دلیل بیان کرے تو وہ تقلید نہ رہے گی کیونکہ تقلید میں دلیل کا وجود نہیں ہوتا۔۔۔ عزیز دوستوں!۔۔۔ یہاں پر میں سوال آپ سے کرتا ہوں کے کیا آپ مقلد بننا چاہتے ہیں (جس کو دلیل کی ضرورت نہیں) یا قرآن کی آیت کی وجہ سے تحقیق کر کے متبع بننا چاہتے ہیں۔۔۔

    اب ہم مقلدین سے یہ سوال کرنے میں حق بجانب ہیں ہیں کہ آخر اس آیت میں اللہ تعالٰی نے تقلید شخصی کو کہاں واجب قرار دیا ہے؟؟؟۔۔۔ اگر اس آیت سے تقلید شخصی کو کوئی پہلو نکلتا بھی ہے تو آج تک ان الفاظ کو بیان کیوں نہیں کیا گیا تھا؟؟؟۔۔۔ بلکہ اس آیت سے یہی معلوم ہوا ہے کے اگر تم علم سے واقفیت نہیں رکھتے تو کسی اہل علم سے پوچھ لو تو اس میں کسی ایک کی تخصیص کا اشارہ تک نہیں ملتا کہ تم فلاں شخص سے مسئلہ پوچھو اور اس کے فتوٰی پر عمل کرو اگر مقلدین کی اس بات کو تسلیم بھی کر لیا جائے تو یہاں پر ایک دلچسپ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کے کیا اسلام میں اہل علم چار ہی ہوئے ہیں اور ان کے بعد علم کا دروازہ بند کردیا گیا؟؟؟۔۔۔ یا ان چاروں نے بعد میں آنے والوں کو قیامت تک کے لئے علمی ضرورت سے مستثٰنی کردیا؟؟؟۔۔۔ ظاہر کے کہ کوئی بھی مقلد اس کا جواب نہیں دے سکتا چنانچہ مسئلہ صاف ہوگیا کے اہل ذکر سے مراد ہر دور کے وہ علماء ہیں جو ذکر (کتاب وسنت) پر عمل پیرا ہوں۔۔۔ پھر اس آیت کریمہ میں وہ کونسا لفظ ہے جس کا معنی تقلید ہے؟؟؟۔۔۔ اگر کہیں کے اس میں سوال کا ذکر ہے تو ہم کہتے ہیں کے بھائی (مقلد) دنیا کی کسی لغات میں سوال کا معنی مقلد نہیں اگر ہے تو پیش کیا جائے؟؟؟۔۔۔ اگر سوال کے معنی تقلید ہیں تو قرآن میں کئی بار رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو بھی حکم ہوا ہے کہ آپ فلاں سوال کریں تو کیا اس کا معنی ہوگا کے اے رسول تم بھی فلاں کی تقلید کرو (معاذ باللہ)۔۔۔

    اگر آج کے مقلد مفتی فتوٰی دیتے وقت فقہ کی کتابوں سے متقدمین کی عبارت کو نقل کرنے میں فخر محسوس کرتے ہیں تو کون سی چیز مانع ہے کہ وہ قرآن اور کُتب احادیث (جو وحی کے مبارک الفاظ ہیں) سے نقل کر کے اللہ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رضامندی بھی حاصل کریں اور ثواب بھی پائیں۔۔۔

    المختصر یہ آیت کسی طریقہ سے بھی تقلید کو ثابت نہیں کرتی بلکہ یہ تو تقلید کے خلاف ایسی واضح آیت ہے جس کا انکار طالب حق سے ہو ہی نہیں سکتا۔۔۔ بلکہ اس آیت نے تو تقلیدی ذہن رکھنے والے مقلدین کی بخیں اُدھیڑ دیں۔۔۔۔
     
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  2. ‏دسمبر 27، 2015 #2
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    جزاک اللہ خیرا عدیل بھائی!
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں