1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

انٹرویو محترم محمد عامر یونس صاحب

'انٹرویوز' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد نعیم یونس, ‏دسمبر 10، 2014۔

  1. ‏جنوری 16، 2015 #41
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    ایک اور نصیحت سب سے پہلے اپنے آپ کو اور پھر دین کے ہر طالب علم کو !
    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    حديث نمبر :238
    خلاصہء درس : شیخ ابوکلیم فیضی الغاط
    بتاریخ :18/ ربیع الآخر 1435 ھ، م 18،فروری 2014م


    میرا کرنٹ اکاونٹ؟
    عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه قال: قَالَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ " إِذَا مَاتَ الْإِنْسَانُ انْقَطَعَ عَنْهُ عَمَلُهُ إِلَّا مِنْ ثَلَاثَةٍ إِلَّا مِنْ صَدَقَةٍ جَارِيَةٍ أَوْ عِلْمٍ يُنْتَفَعُ بِهِ أَوْ وَلَدٍ صَالِحٍ يَدْعُو لَهُ

    (صحيح مسلم : 1631، الوصية – سنن أبوداؤد : 2880 ، الوصايا – سنن الترمذي: 1376 , الأحكام )
    ترجمہ : حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : جب انسان مرجاتا ہے تو اس کے عمل کا سلسلہ ختم ہوجاتا ہے ، سوا تین چیزوں کے ، صدقہ جاریہ ، یا وہ علم جس سے فائدہ اٹھایا جارہا ہو ، یا نیک اولاد جو اس کے لئے دعاء کرے ۔

    { صحیح مسلم ، سنن ابو داود ، سنن الترمذی }

    تشریح :
    یہ دنیا دار العمل ہے اس میں انسان و ہ نیک اور برا عمل کرتا ہے جس کا بدلہ اسے دار الجزاء یعنی آخرت میں ملنے والا ہے ، وہ وقت دور نہیں ہے کہ اس دنیا میں کوتاہی کرنے والے جنہوں نے اپنی آخرت کے لئے کوئی نیک عمل نہیں کیا ہے شرمندہ ہوں گے ، لیکن وہاں یہ شرمندگی کام نہ آئے گی ، وہاں بندہ نہ تو اپنی نیکیوں میں ایک ذرے کا اضافہ کرسکے گا اور نہ ہی اپنی بدیوں میں کوئی کمی کرسکے گا ، یعنی جب اسے موت آجائے گے تو اس کی نیکیوں اور بدیوں کا سلسلہ ٹوٹ جائے گا ، البتہ اللہ تعالی نے اپنے فضل و کرم سے تین ایسے عمل رکھے ہیں جن کا سلسلہ وفات کے بعد بھی چلتا رہتا ہے ، زیر بحث حدیث میں انہی تینوں کا ذکر ہے ۔

    [۱] صدقہ جاریہ :
    صدقہ جاریہ سے مراد اپنی زندگی میں نکالا گیاوہ صدقہ ہے جس سے وفات کے بعد بھی لوگ مستفید ہورہے ہیں ، جیسے ایسے مکان و زمین وغیرہ جس کی آمدنی سے فائدہ اٹھایا جارہا ہے ، یا ایسے برتن جن کے استعمال سے مستفید ہوا جارہا ہے ، یا ایسے جانور جن پر سواری یا ان کے دودھ وغیرہ سے فائدہ اٹھایا جارہا ہے ، یا دینی کتابیں اور قرآن مجید کے نسخے جنہیں پڑھ کر لوگ مستفید ہورہے ہیں ، یا مسجدیں اور مدرسے وغیرہ جن سے اللہ کے بندے فائدہ اٹھارہے ہیں ۔

    ان تمام چیزوں سے جب تک فائدہ اٹھایا جاتا رہے گا اس کا اجر بندے کو پہنچتا رہے گا ، اللہ تعالی کے راستے میں وقف کرنے کا یہ عظیم فائدہ ہے ، خصوصا وقف کردہ وہ چیزیں جن سے دینی امور جیسے علم ، جہاد اور عبادت میں مدد لی جاتی ہے ۔

    [۲] مفید علم :
    یعنی انسان ایسا علم چھوڑ کر جائے جس سے اس کے بعد بھی فائدہ اٹھایا جائے ، جیسے وہ علم جسے طالب علموں کو سکھایا ہے ، یا وہ علم جسے لوگوں میں دعوت وغیرہ کے ذریعہ عام کیا ہے یا دینی علوم میں کتابیں تالیف کی ہیں ، اس طرح جس علم کا فائدہ مسلسل جاری ہے تو اس کا اجر بھی جاری رہے گا ، چنانچہ آج کتنے عالم ہیں جو سینکڑوں سال پہلے وفات پاچکے ہیں لیکن ان کی کتابیں پڑھی جارہی ہیں اور ان کے طلبہ کا سلسلہ جاری و ساری ہے ، اس طرح ان کے نیک عمل کا سلسلہ بھی بفضلہ تعالی جاری ہے ۔

    [۳] نیک اولاد :
    خواہ بیٹا ہو ، یا پوتا ہو یا نواسا ، خواہ مرد ہو یا عورت ،اگر نیک ہیں تو ان کے والد کو ان کی نیکی اور دعا کا اجر ملتا رہتا ہے ، اولاد اگر نیک ہے تو وہ ہر وقت اپنے والدین کے لئے مغفرت ور حمت اور درجات کی بلندی کے لئے دعائیں کرتی رہتی ہے ۔

    زیر بحث حدیث میں جو کچھ مذکور ہے اس کا بیان اس فرمان الہی میں ہے :

    [إِنَّا نَحْنُ نُحْيِي المَوْتَى وَنَكْتُبُ مَا قَدَّمُوا وَآَثَارَهُمْ وَكُلَّ شَيْءٍ أحْصَيْنَاهُ فِي إِمَامٍ مُبِينٍ] {يس:12}

    بیشک ہم مردوں کو زندہ کریں گے اور ہم لکھتے جاتے ہیں وہ وہ اعمال بھی جن کو لوگ بھیجتے ہیں اور ان کے وہ اعمال بھی جن کو پیچھے چھوڑتے جاتے ہیں اور ہم نے ہر چیز کو ایک واضح کتاب میں ضبط کر رکھا ہے ۔

    آیت میں " ما قدموا " [ ہم لکھتے جاتے ہیں وہ اعمال بھی جن کو لوگ آگے بھیجتے ہیں ] سے مراد وہ نیک اور برے اعمال ہیں جو انسان خود اپنی زندگی میں کرتا ہے اور " و آثارھم " [ اور ان کے وہ اعمال جو پیچھے چھوڑ جاتے ہیں ] سے مراد وہ اعمال ہیں جن کے عملی نمونے وہ دنیا میں چھوڑ جاتا ہے اور اس کے مرنے کے بعد اس کی اقتدا میں یا اس کے سکھانے سے لوگ بجا لاتے ہیں ۔

    اس اعتبار سے مردوں کے لئے ایصال ثواب کا مسئلہ بالکل واضح ہوجاتا ہے کہ صدقہ ، یا میت کی طرف سے صدقہ جاریہ ، علم نافع اور دعا ایصال ثواب کے یہ مسنون طریقے ہیں ان کے علاوہ میت کے ذمہ اگر حج اور فرض روزے ہیں تو حدیثوں سے ان ک ادائیگی کا بھی ثبوت ہوتا ہے ، اسی طرح میت کے اوپر اگر قرض ہے تو اس کی ادائیگی کا بھی میت کو فائدہ پہنچتا ہے،ان کے علاوہ کسی بھی بدنی عبادت کا اجر میت کو نہیں پہنچتا اور نہ ہی ایصال ثواب کا کوئی اور طریقہ شریعت سے ثابت ہے ۔

    فوائد :

    1) ہر مسلمان کو اپنے اخروی اکاونٹ کی فکر کرنی چاہئے ۔

    2) کچھ ایسے بھی ذرائع آمدنی اختیار کریں کہ موت کے بعد بھی آمدنی جاری رہے ۔

    3) صدقہ جاریہ کیلئے علم کی ترویج و اشاعت میں حصہ لینا چاہئے ۔

    4) ایصال ثواب کیلئے وہی طریقہ اختیار کیا جائے جو مسنون ہے ۔


    الحمدللہ : انٹرویو اختتام ہوا -
    محدث فورم کو بہت بہت شکریہ جنھوں نے مجھے اس قابل سمجھا -

     
    Last edited: ‏جنوری 16، 2015
    • زبردست زبردست x 3
    • پسند پسند x 2
    • لسٹ
  2. ‏جنوری 16، 2015 #42
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,514
    موصول شکریہ جات:
    6,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    جزاک اللہ خیرا اخی عامر!
    اللہ تعالی آپ کے نیک اعمال قبول کرے اور آپ کے علم وعمل میں برکت دے۔ آمین یا رب العالمین!
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  3. ‏جنوری 17، 2015 #43
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا واحسن الجزاء
    عامر بھائی! بہت خوبصورت انٹرویو، ماشاءاللہ
    آپ کے انٹرویو میں ایک ہی جگہ بہت ساری علمی اور اصلاحی باتیں جمع ہو گئی ہیں، ماشاءاللہ

    ضرور ان شاءاللہ، آپ کی آمد ہمارے لئے خوشی کا باعث ہو گی۔ ان شاءاللہ
    ماشاءاللہ، جزاک اللہ خیرا، اللہ اس دین کی خاطر محبت کو اور بڑھائے آمین
     
    • پسند پسند x 3
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  4. ‏جنوری 17، 2015 #44
    عبدالقیوم

    عبدالقیوم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2013
    پیغامات:
    825
    موصول شکریہ جات:
    408
    تمغے کے پوائنٹ:
    142

    بہت اچھا انٹرویو تھا لگتااب یہ ختم ہوگیا ہے اللہ ہمارے اس بھائی حفاظت فرمائے اور دین ونیا بہت بہتر کرے آمین
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  5. ‏جنوری 17، 2015 #45
    محمد شاہد

    محمد شاہد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 18، 2011
    پیغامات:
    2,509
    موصول شکریہ جات:
    6,012
    تمغے کے پوائنٹ:
    447

    جزاک اللہ خیرا اخی عامر!
    بہت خوبصورت انٹرویو، ماشاءاللہ
    اللہ سبحانه و تعالی آپ کی حفاظت فرمائے اور دین ونیا بہت بہتر کرے آمین
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  6. ‏جنوری 17، 2015 #46
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    آمین یا رب العالمین
     
  7. ‏جنوری 17، 2015 #47
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    تین صفات ایک مومن میں ضرور ہو !!!

    امام بخاری او ر امام مسلم نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت نقل کی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

    ”ثلاث من کن فیہ وجد حلاوة الإیمان : أن یکون الله ورسولہ احبّ إلیہ مماسواھما، وأن یحبّ المرء لایحبّہ الا الله ، وأن یکرہ أن یعود فی الکفرکمایکرہ أن یقذف فی النار“

    ترجمہ :

    ”تین صفات ایسی ہیں جس شخص میں وہ پائی جائیں گی ،اس نے ایمان کا مزہ چکھ لیا ،

    ۱:․․․ ایک یہ کہ اللہ اور اس کے رسول اسے ہر چیز سے زیادہ محبوب ہوں۔

    ۲:․․․ اگر کسی سے محبت کرے تو صرف اللہ کے لئے کرے۔

    ۳:․․․کفر کی طرف لوٹنے کو اس طرح ناپسند کرے جیسے اپنے آپ کو آگ میں ڈالے جانے کو ناپسند کرتا ہے “۔
     
    • پسند پسند x 2
    • زبردست زبردست x 2
    • لسٹ
  8. ‏جنوری 17، 2015 #48
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
    Last edited: ‏جنوری 17، 2015
  9. ‏جنوری 18، 2015 #49
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,777
    موصول شکریہ جات:
    8,337
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    ماشاءاللہ ، محترم محمد عامر یونس صاحب ، دینی و دنیاوی اعتبار سے ہمیشہ خوش رہیں ۔
    آپ کا ’’ انٹرویو ‘‘ تو آپ کی اتنی ساری علمی ، معلوماتی ، دینی اور اصلاحی باتوں میں کہیں گم ہوکے رہ گیا ہے ۔ ابتسامہ
    گویا یہ بھی آپ کا ایک طرح کا تعارف ہے کہ کثرت سے اچھی اچھی باتیں شیئر کرتے رہتے ہیں ، حتی کہ اپنے انٹرویو مین خلل کی بھی پرواہ نہیں کی ۔
    اللہ آپ کے جذبہ دین میں اضافہ فرمائے ۔
     
  10. ‏جنوری 18، 2015 #50
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    جزاک اللہ خیرا

    خضر حیات بھائی حوصلہ افزائی کا بہت بہت شکریہ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں