1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

معذور شخص کا جماعت کروانا

'امامت' میں موضوعات آغاز کردہ از طلحہ غازی, ‏اکتوبر 14، 2015۔

  1. ‏اکتوبر 14، 2015 #1
    طلحہ غازی

    طلحہ غازی مبتدی
    جگہ:
    متحدہ عرب امارات
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 05، 2015
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    السلام علیکم !

    عرصہ سے ایک اشکال ذھن میں تھا کہ کیا کسی ایسے شخص کا جماعت کروانا ٹھیک ہے جو کہ قدرے معذور ہو یعنی جسمانی طور (ایک پاؤں نہ ہو یا پاؤں تو ہو لیکن کمزور ہو جیسے پولیو وغیرہ سے ہو جاتا ہے)۔
     
  2. ‏اکتوبر 23، 2015 #2
    طلحہ غازی

    طلحہ غازی مبتدی
    جگہ:
    متحدہ عرب امارات
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 05، 2015
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

  3. ‏اکتوبر 23، 2015 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,233
    موصول شکریہ جات:
    2,369
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ ؛
    الشیخ عبد العزیز بن باز ؒ نے اس مسئلہ میں درج ذیل فتوی دیا ::

    ما حكم إمامة المعذور للصحيح، مع العلم أن الصحيح لا يجيد قراءة القرآن؟
    هذا فيه تفصيل: إذا كان المعذور عذره لا يمنع شيئاً من واجبات الصلاة ولا من أركانها فلا بأس أن يؤم، مثل إنسان مقطوع اليد، أو مقطوع بعض الأصابع، أو نحو ذلك، لا بأس أن يؤم الناس، أما كون عذره يمنعه من القيام يجلس هذا يؤمهم وهو جالس، فيقدم من يؤمهم غيره، إلا إذا كان هو إمام الحي، هو الإمام الراتب هو إمام المسجد فلا بأس أن يؤمهم وهو جالس، كما أَمَّ النبي صلى الله عليه وسلم أصحابه وهو جالس لما مرض عليه الصلاة والسلام، أمهم وهو جالس، وقال: (إنما جعل الإمام ليؤتم به، فإذا صلى قاعداً فصلوا قعوداً)، فإذا كان إمامهم الراتب صلى قاعداً صلوا خلفه قعوداً، وإن صلوا قياماً فلا حرج أجزأهم كما فعله النبي في آخر حياته، فإنه صلى بهم قاعداً وصلوا خلفه قياماً ولم يأمرهم بالجلوس فدل على الجواز، أما إذا كان ليس إمام الحي فإنه لا يؤمهم وهو جالس، بل يلتمس من يؤمهم من غير المعذورين الذين يستطيعون أن يؤموا وهم قيام ))
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسند پسند x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏اکتوبر 24، 2015 #4
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,726
    موصول شکریہ جات:
    8,322
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    محدث فتوی سے :
    بیٹھ کر نماز پڑھنے والے معذور امام کے پیچھے نماز ہوجاتی ہے جیسا کہ رسول اللہﷺ نے اپنی عمر کے آخری حصہ میں حضرت ابوبکر صدیق ؓ کے پہلو میں بیٹھ کر نماز پڑھائی اور آپ کے پیچھے باقی حضرات کھڑے ہوکر نماز ادا کررہے تھے۔(صحیح بخاری،الاذان:۶۸۳)
    لیکن اس صورت حال پر استمرار اور دوام اچھا نہیں ہے ۔
    مزید تفصیل کے لیے :
    معذور امام کا کرسی پر بیٹھ کر امامت کروانا
    معذور آدمی کی امامت
     
  5. ‏اکتوبر 24، 2015 #5
    طلحہ غازی

    طلحہ غازی مبتدی
    جگہ:
    متحدہ عرب امارات
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 05، 2015
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    جزاک اللہ خیر بھائی
    یعنی اگر وہ شخص کھڑے ہو کر جماعت کرواتا ہے تو ایسے میں کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ جائز ہے اس کے لیے
     
  6. ‏اکتوبر 24، 2015 #6
    طلحہ غازی

    طلحہ غازی مبتدی
    جگہ:
    متحدہ عرب امارات
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 05، 2015
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    بھائی ترجمہ کر دیں
     
  7. ‏اکتوبر 24، 2015 #7
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,726
    موصول شکریہ جات:
    8,322
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    جی بظاہر تو یہی لگتا ہے ۔
     
  8. ‏اکتوبر 25، 2015 #8
    طلحہ غازی

    طلحہ غازی مبتدی
    جگہ:
    متحدہ عرب امارات
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 05، 2015
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    اللہ رب العزت آپ کے علم و عمل میں برکت دیں ۔ میری تسلی ہو گئی ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں