1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مکبر سمع اللہ لمن حمدہ کہے گا یا ربنا لک الحمد ؟

'نماز باجماعت' میں موضوعات آغاز کردہ از Muhammad Waqas, ‏جنوری 05، 2013۔

  1. ‏جنوری 05، 2013 #1
    Muhammad Waqas

    Muhammad Waqas مشہور رکن
    جگہ:
    فیصل آباد
    شمولیت:
    ‏مارچ 12، 2011
    پیغامات:
    356
    موصول شکریہ جات:
    1,595
    تمغے کے پوائنٹ:
    139

    السلام علیکم !

    با جماعت نماز کی صورت میں اگر مکبر مقرر کیا گیا ہو تو وہ رکوع سے اٹھتے وقت امام کی پیروی میں سمع اللہ لمن حمدہ کہے گا یا ربنا لک الحمد کہے گا ؟
     
  2. ‏جنوری 05، 2013 #2
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    مقتدی دونوں کہے گا اورامام صرف ایک یعنی سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ
    كَانَ مُحَمَّدٌ، يَقُولُ: إِذَا قَالَ سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ، قَالَ مَنْ خَلْفَهُ سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ، اللَّهُمَّ رَبَّنَا لَكَ الْحَمْدُ
    (مصنف ابن أبي شيبۃ 1/ 227رقم٢٦٠٠)
     
  3. ‏جنوری 06، 2013 #3
    عکرمہ

    عکرمہ مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 27، 2012
    پیغامات:
    658
    موصول شکریہ جات:
    1,835
    تمغے کے پوائنٹ:
    157

    لیکن کیا ایسی روایات موجود نہیں ہیں۔۔۔۔جس میں امام اور مقتدی (دونوں)کے لیے ’’سمع اللہ لمن حمدہ اور ربنا لک الحمد‘‘کہنا منقول ہے؟؟؟مسئلہ وضاحت طلب ہے؟؟اہل علم سے التماس ہےکہ اس میں ہم جیسے لوگوں کی رہنمائی کی جائے۔۔۔۔
     
  4. ‏جنوری 06، 2013 #4
    Muhammad Waqas

    Muhammad Waqas مشہور رکن
    جگہ:
    فیصل آباد
    شمولیت:
    ‏مارچ 12، 2011
    پیغامات:
    356
    موصول شکریہ جات:
    1,595
    تمغے کے پوائنٹ:
    139

    شیوخ محترم !
    شاید میں مسئلہ صحیح طریقے سے سمجھا نہیں پایا۔
    میرا سوال یہ نہیں ہے کہ مقتدی کیا کہے گا۔۔۔۔میرا سوال مقتدی کی ایک خاص حالت سے متعلق ہے ،یعنی جب لاوڈ سپیکر نہ ہونے کی سورت میں کوئی مقتدی مکبر کے فرائض سر انجام دے رہا ہو تو کیا با آواز بلند سمع اللہ لمن حمدہ کہے گا یا ربنا لک الحمد؟
     
  5. ‏جنوری 06، 2013 #5
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    معذرت قبول کیجئے۔۔۔
    مسئلے کے فرائض کو سمجھنے کے لئے ضروری ہے کہ پہلے یہ بات واضح ہو جس مسجد میں آپ نماز پڑھتے ہیں وہاں پر لاوڈاسپیکر ہے یا نہیں۔۔۔
    اگر نہ نہیں تو ظاہر ہے وہاں پر اس فرض کے انجام دہی کا کیا طریقہ وضع کیا گیا ہے؟؟؟۔۔۔ یا وہاں پر کس طرح سے اس عمل کو انجام دیتے ہیں۔۔۔
    کیونکہ اگر واقعی میں ایسا مسئلہ ہے تو بات قابل غور طلب ہے اور اگر نہیں تو فرضی مسئلے بیان کرنے کہ وجہ لازمی معلوم کرنی چاہئے
    شکریہ۔۔۔
     
  6. ‏جنوری 06، 2013 #6
    Muhammad Waqas

    Muhammad Waqas مشہور رکن
    جگہ:
    فیصل آباد
    شمولیت:
    ‏مارچ 12، 2011
    پیغامات:
    356
    موصول شکریہ جات:
    1,595
    تمغے کے پوائنٹ:
    139

    عرض ہے کہ یہ مسئلہ قطعا فرضی مسئلہ نہیں ہے۔
    اکثر اوقات پیش آنے والا مسئلہ ہے خاص طور پر پاکستان میں آج کل بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے جو حالات پیدا ہو چکے ہیں،ان حالات میں تو عیدین اور جمعہ کی نماز میں یہ مسئلہ اکثر پیش آ جاتا ہے۔
    مًیرے ساتھ نماز جمعہ میں دو مرتبہ یہ مسئلہ پیش آیا ہے،مکبر اپنے اجتہاد کے مطابق ہی ربنا لک الحمد جہرا پڑھتا ہے۔
    لیکن چونکہ ہر جمعہ کو یہ مسئلہ پیش نہیں آتا اس لیے اس بارے میں لوگوں کو علم نہیں ہے اور مسجد میں بھی کوئی مستقل طریقہ کار وضع نہیں کیا گیا اسی لیے یہ سوال پوچھا گیا ہے تاکہ اپنا اپنا ذاتی اجتہاد کرنے کی بجائے قرآن و حدیث اور فہم سلف کی روشنی میں مسئلے کا حل ڈھونڈا جائے۔
    امید ہے اب آپ کا شک رفع ہو گیا ہو گا کہ یہ مسئلہ احناف کی طرح فرضی نہیں بلکہ واقعی ہے۔

    ویسے بھی آج کل کے اس مصروف ترین دور میں نام نہاد فقہاء کے علاوہ کس کے پاس اتنا وقت ہے کہ فرضی مسئلے گھڑتا پھرے۔
     
  7. ‏جنوری 06، 2013 #7
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    ہاں غلطی میری ہی ہے میں نے سوال کو پوری طرح نہیں پڑھا صرف مقتدی والی بات ذہن میں رہی اس لیے جواب کی شکل اب یہ بنے گی’’ مکبر‘‘کی حیثیت دو ہوگئیں ایک تو وہ مقتدی ہے ہی اب اس کی دوسری حیثیت نیابت کی ہوئی گویا یہ قائم مقام امام کے ہوا اس لیے یہ صرف ربنا ولک الحمد ہی کہے گا اس وجہ سے کہ اگر وہ دونوں کلمات کہے گا توباقی مقتدیوں میں انتشار والی کیفیت پیداہو جائے گی کیونکہ اس وقت تک امام سجدے میں جا چکا ہوگا جو مقتدی امام کے قریب ہونگے وہ امام کی تکبیرات پر عمل کریں گے اور جو دور ہوں گے وہ ’’ مکبر ‘‘کی تکبیرات پر عمل کریں گے اس لیے ایک بد امنی سی پیدا ہوجائے گی اس نزاکت کی وجہ سے مکبر صرف ربنا ولک الحمد ہی کہے گا ۔ میں چونکہ حنفی ہوں اسی حساب سے میں نے اپنی بات رکھی ہے اس بارے آپ حضرات کے علماء حضرات ہی زیادہ بہتر بتا سکتے ہیں ۔فقط واللہ اعلم بالصواب
     
  8. ‏جنوری 07، 2013 #8
    عبدالعلام

    عبدالعلام رکن
    جگہ:
    Aurangabad
    شمولیت:
    ‏مارچ 15، 2012
    پیغامات:
    153
    موصول شکریہ جات:
    478
    تمغے کے پوائنٹ:
    95

    یہاں کون سے محمد مراد ہیں؟
     
  9. ‏جنوری 07، 2013 #9
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    بھائی معلوم نہیں سوال اور جواب کی طرف توجہ فرمائیں غلط ہے یا صحیح اور بس اگر غلط ہے تو صحیح فرمادیں نکتہ چینی مفید نہ ہو گی نہ آپ کے لیے اور نہ میرے لیے
     
  10. ‏جنوری 09، 2013 #10
    عبدالعلام

    عبدالعلام رکن
    جگہ:
    Aurangabad
    شمولیت:
    ‏مارچ 15، 2012
    پیغامات:
    153
    موصول شکریہ جات:
    478
    تمغے کے پوائنٹ:
    95

    میرا مقصد نکتہ چینی نہیں تھا بہر حال معذرت قبول فرماییں-
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں