1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

59879: كفار سے دوستى لگانے كا معنى كيا ہے ؟ اور كفار سے ميل جول كا حكم

'کفر اکبر' میں موضوعات آغاز کردہ از ابن قدامہ, ‏فروری 12، 2015۔

  1. ‏فروری 22، 2015 #11
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    میر ا ایک آپ سے سادہ سا مطا لبہ ہے ۔ہمت کرکے اس کتاب کا رد لک کردکھاؤ
    http://kitabosunnat.com/kutub-libra...horojjihad-or-nafaz-e-shariyat-ka-manhaj.html
     
  2. ‏فروری 23، 2015 #12
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    اس کتاب کا رد لکھنا کوئی اتنا مشکل کام نہیں- بس وقت اور مصروفیت آڑے آتی ہے-

    وہی پرانی باتیں ہیں کہ معین تکفیر عام عوام کے لئے جائز نہیں - فاسق حکمرانوں کے خلاف خروج سے بہتر ہے کہ پر امن احتجاج کیا جائے یا ان کو امر بلمعروف و نہی المنکر کی تبلیغ کی جائے- اسلامی ممالک میں مروجہ جمہوری نظام کو کیسے برداشت کیا جائے- وغیرہ وغیرہ -
     
  3. ‏فروری 23، 2015 #13
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    محترم عبدہ بھائی -

    آپ کا یہ کہنا کہ :
    "لیکن ہم یہ فرض کر لیتے ہیں کہ اس فورم کی انتظامیہ مکمل آپ کے ساتھ متفق ہے تو ایسی صورت میں بھی اگر وہ پوسٹ ڈیلیٹ کر دے تو وہ قابل اعتراض نہیں ہو گا چہ جائے کہ وہ آپ سے غیر متفق ہو اسکی دلیل نیچے لکھتا ہوں"-

    اگر فورم انتظامیہ مجھ سے متفق ہونے باوجود کسی پوسٹ کو ڈیلیٹ کرتی ہے - تو کم از کم انتظامیہ کے لئے مجھے اس کی وجہ بتانا ضروری امر ہونا چاہیے - ورنہ ظاہر اس فورم پر بلا وجہ پوسٹ ڈیلیٹ ہونے کی بنا پر اس فورم پر رہنا ممکن نہیں رہے گا- دوسرے یہ کہ میں نے محسوس کیا ہے کہ محدث انتظامیہ باوجود اپنی فراخ دلی کے- جہاد و خروج سے متعلق تھریڈز پر میری پوسٹ یا کچھ اور بھائیوں کی پوسٹ سے نالاں رہتی ہے - جس کی وجہ مجھے ابھی تک سمجھ نہیں آئی؟؟؟

    آپ فرماتے ہیں کہ :
    تو میرا سوال یہ ہے کہ کیا آپ ایسا کرتے ہیں کیا آپ اسکا یہاں اقرار کریں گے کہ پاکستان میں ہونے والے خؤد کش دھماکے کرنے والوں اور پاکستان کی افواج یا پولیس کو مارنے والوں کے آپ ساتھی ہیں اور ان سے تعاون کرتے ہیں یا ابھی تک نہیں کیا اور مستقبل میں کریں گے
    اگر آپ کہیں کہ اس طرح یہاں اقرار کرنا درست نہیں یا مصلحت نہیں تو محترم بھائی پھر یہ بھی سوچیں کہ ابھی تو ہم نے یہ فرض کیا ہے کہ انتظامیہ آپ کے ساتھ مکمل متفق ہے لیکن آپ کی مصلحت کی پولیسی کی وجہ سے بھی انکو ایسا نہیں کرنا چاہئے کہ کہیں یہ فورم ہی ختم نہ ہو جائے-


    تو محترم میں تو ہمیشہ یہ کہتا آیا ہوں - کہ پاکستان میں ہونے والے تمام خود کش دھماکے خود حکومت وقت اوران کے حواری (جنھیں آپ اچھی طرح جانتے ہیں) کی اپنی کارستانی کی بنا پرہوتے ہیں - اس وقت مسلم ممالک میں یہود و نصاریٰ کی یہی اسٹریٹجی بڑی کامیابی سے جاری ہے کہ - "کرے کوئی اور بھرے کوئی"- بس ہم میڈیا کے پھیلاۓ ہوے جال میں پھنسے ہوے ہیں اور ان کی ہر بات کو حدیث سمجھ کرقبول کررہے ہیں- کہ ان دھماکوں میں جہادی تنظیمیں ملوث ہیں وغیرہ - میرے ایک دوست جو آئی ایس آ ئی میں رہ چکے ہیں - کہتے ہیں کہ کچھ حکومتی نمائندے پشاور میں ہونے والے معصوم بچوں کے قتل کی پلاننگ کے بارے میں اچھی طرح جانتے تھے (یہ بات ان کو اگست کے اواخر میں معلوم ہی چکی تھی کہ آرمی پبلک اسکول پر حملہ ہونے والا ہے) - لیکن صرف اپنے (آقاؤں) کے حکم پر چپ رہے- تا کہ اصلی قاتل منظر عام پر نہ آئیں- لیکن کیا کہیں میڈیا کی کرشمہ سازی کو کہ ہر واقعہ کے بعد بدنام صرف جہادی تنظیمیں ہی ہوئیں-
     
  4. ‏فروری 23، 2015 #14
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    اس کتاب کت مصنف بھی فورم پر موجود ہیں ۔اگر آپ مصنف کو لاجواب کردیں۔اور
    مضبوط دلیلیں پیش کریں گے تو مین بھی آپ کی بات ماننے کے لیے تیار ہوں۔کسی کو ہدایت پر
    پر لانے کے لیے بھی وقت نہیں نکال سکتے
    تکفیر مرتوسکتاہے۔لیکن اس کتاب کا رد کرنے کی ہمت نہیں کرسکتا
     
  5. ‏فروری 23، 2015 #15
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    محترم -

    یہ ایک مضمون نہیں بلکہ ایک پوری کتاب ہے اور اس کتاب کے اقتسابات کو رد کرنے کے لئے پہلے ایک ایک کرکے انھیں یہاں لکھنا پڑے گا- دوسری بات یہ ہے کہ کسی بات کے صحیح یا غلط ہونے کا مطلب یہ نہیں کہ چیلنج کردیا جائے کہ اس "کتاب کو رد کرکے دکھاؤ تب مانوں گا" - ظاہر ہے اس کتاب کے مصنف انسان ہیں - اگر اس کتاب میں کچھ صحیح باتیں ہونگی تو چند غلط باتیں بھی ہونگی - ان کا اپنا نقطۂ نظر ہے میرا اپنا نقطۂ نظر ہے -

    جن جہادی تنظیموں کو آج "خارجی" گردانہ جا رہا ہے- صحیح احادیث نبوی کو غور سے پڑھنے سے معلوم ہوتا ہے- کہ ان میں سے ایک بھی علامت آج کل کے ان جہادیوں میں نہیں پائی جاتی - آگروقت ملا تو اس پر ایک مضمون ضرور لکھوں گا - بشرط ہے کہ محدث انتظامیہ بغیر کسی ہچکچاہٹ کے اسے شایع کردے -
     
  6. ‏فروری 23، 2015 #16
    عبدہ

    عبدہ سینئر رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏نومبر 01، 2013
    پیغامات:
    2,038
    موصول شکریہ جات:
    1,160
    تمغے کے پوائنٹ:
    425

    محترم بھائی پوسٹ ڈیلیٹ کرنے کی وجہ تو میرا خیال ہے بار بار لوگوں کو وارننگ دے کر بتائی گئی ہے کہ موجودہ حالات میں جہاد اور تکفیر اور خروج وغیرہ پر پوسٹ کرنا حالات کی نزاکت کی وجہ سے ممنوع ہے اور اس میں یہ بات بھی آپکو معلوم ہے کہ خالی تکفیر کے حق میں لکھنے والوں کی پوسٹ ختم نہیں کی گئی بلکہ مخالفین پر بھی اس کا اسی طرح اطلاق کیا گیا ہے اور اس میں میرا خیال ہے مٹرم خضر حیات بھائی آپ کو مثال بھی دے سکتے ہیں جو انہوں نے آپ کے مخالفین کی پوسٹ کو ڈیلیٹ کیا ہے پس انتظامیہ کسی کی سائیڈ نہیں لے رہی کہ ایک سائیڈ والوں کو بات ہی نہ کرنے دی جائے اور دوسری سائیڈ والوں کو بات کرنے کی کھلی چھٹی ہوتی
    اگر ایسی بات ہوتی تو پھر واقعی یہ اس فورم کے سلوگن کے منافی ہوتا کہ یہ ایک آزادانہ بحث کا فورم ہے البتہ ایک خاص قسم کی پوسٹوں پر پابندی اسکے اس نعرے کو داغدار نہیں کرتی کیونکہ اس میں بھی انصاف کیا جا رہا ہے
    پس پوسٹ بلا وجہ ڈیلیٹ نہیں کی جاتی بلکہ وجہ اس فورم کے قانین میں بتا دی گئی ہے جو خلاف ورزی کرے تو پھر ڈیلیٹ ہوتی ہے

    یہ بات میں نے اوپر بتا دی ہے کہ وہ حالات کی وجہ سے دونوں گروہوں کی طرف سے کی جانے والی پوسٹ سے ناراض رہتی ہے تو یہ فطری بات ہے کہ وہ اپنے قوانین کے خلاف کرنے والوں سے ناراض رہے کیونکہ قوانین کا مقصد فورم کی بہتری ہی ہے
    ہاں البتہ اگر قوانین پر اعتراض ہے تو وہ میں نے اوپر وضاحت کی تھی اس کا جواب دے کر انتظامیہ سے بات کر لیں محترم خضر حیات بھائی اس کو دیکھ لیں گے کہ آپ کے دلائل ٹھوس ہیں تو وہ قانون کو تبدیل کرنے کا سوچ لیں

    محترم بھائی میں نے کہا تھا کہ آپ اس حکومت کے خلاف لڑنے کو جہاد سمجھتے ہیں یا فساد
    اگر فساد سمجھتے ہیں تو پھر آپ کو اعتراض نہیں ہونا چاہئے کہ جب آپ کی اس حکومت کے خلاف پوسٹ کو ڈیلیٹ کیا جاتا ہے
    اور اگر آپ جہاد سمجھتے ہیں تو پھر آپ کو ان خود کش حملہ کرنے والوں کا ساتھ دینا چاہئے اور یہاں علی الاعلان اقرار کرنا چاہئے جو میں نے اوپر آپ سے پوچھا تھا
     
  7. ‏فروری 24، 2015 #17
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    آپ مضمون ان باکس میں مھجے دیں دیں۔چند دلیلں ا ور بھی ہیں ۔وہ بھی پیش کر دوں گا۔میں
    وعدہ کرتا ہوں کہ آپ کی بات مان لوگاباشرط دلیلں مضبوط ہو اور آپ بھی وعدہ کریں کہ
    میردلیلں مضبوط ہوں تو آپ رجوّع کرلیں گے۔مجھے اہل حدیث ہوے ایک سال بھی
    پورا نہیں ہوہے۔سب کچھ دلیل کی بنیاد پر کیا ہے۔
     
  8. ‏فروری 25، 2015 #18
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    شکریہ محترم -

    اگر کتاب کو "یونی کوڈ" میں بھیج دیں تو بہتر ہو گا- تا کہ کتاب کے اہم یا ضروری اقتسابات کا جواب با مطابق دیا جا سکے -
     
  9. ‏فروری 25، 2015 #19
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    میرے پاس نہیں ہے یونی کوڈ میں
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں