1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اتخابی سیاست

'انتخابی سیاست' میں موضوعات آغاز کردہ از کیلانی, ‏مارچ 30، 2013۔

  1. ‏مارچ 30، 2013 #1
    کیلانی

    کیلانی مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 24، 2013
    پیغامات:
    347
    موصول شکریہ جات:
    1,101
    تمغے کے پوائنٹ:
    127

    موجودہ جمہوری نظام کو ہم تسلیم کریں یا نہ کریں لیکن ووٹ ہرحال میں ہمیں کاسٹ کرناچاہیے
     
  2. ‏مارچ 30، 2013 #2
    عمران اسلم

    عمران اسلم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 02، 2011
    پیغامات:
    318
    موصول شکریہ جات:
    1,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    150

    ہمارے ہاں ایک بہت بڑا حلقہ اس پورے سسٹم سے کنارہ کرنے کا قائل ہے اور وہ لوگ اس نظام سے براءت ہی کو ایمان کا تقاضا قرار دیتے ہیں۔
    ایسے میں اگر آپ اپنی رائےکو قدرے وضاحت کے ساتھ پیش کر دیں تو اس معاملہ کوئی نتیجہ خیز بات سامنے آ سکتی ہے۔
     
  3. ‏مارچ 30، 2013 #3
    کیلانی

    کیلانی مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 24، 2013
    پیغامات:
    347
    موصول شکریہ جات:
    1,101
    تمغے کے پوائنٹ:
    127

    جو لوگ اس نظام کے قائل ہیں وہ تو ظاہر بات ہے ووٹ کاسٹ ضرور کریں گے لیکن جو قائل نہیں ان کے حوالے سے ہم درج ذیل معروضات پیش کرنا چاہتےہیں
    بات یہ ہےکہ اگریہ ٹھیک نہیں بھی تو پھر بھی اخف الضررین(ہلکی برائی یاکم نقصان دےچیز)سمجھ کردے دیں یعنی اگروہ ووٹ کاسٹ نہیں کریں گے تو ظاہر بات ہے پھر بھی شریر عناصرکو تقویت ملے گی لحاظا اس سے بہتر ہے کہ جس پارٹی کو وہ کم نقصان دہ سمجھتےہیں اسے دےدیں۔جسے امام ابن تیمہ نے ایک دفعہ تاتاریوں کو شراب نوشی کرتے ہوے دیکھاتو انہیں اس سے روکانہیں۔ حالنکہ اس وقت امام صاحب اپنے معمول کےمطابق تلامذہ کےہمراہ عصرکے بعد فریضہءامربالمعرف اور نہی عن المنکر کی ادئگی کے لئیے نکلے ہوے تھےاو ردوسری طرف تاتاری بھی خود کو مسلمان کہتےتھے چناچہ تلامذہ کا ایک حلقہ آگے بڑھ کرانہیں روکنے لگاتو امام صاحب نے منع کردیا او رفرمایا کہ انہیں چھوڑ دو یہ ایسے ہی مصروف رہیں اگر انہیں اس سے روکاگیاتو یہ مسلمانوں کاقتل ونہب کریں گے۔چناچہ یہاں امام صاحب نے ہلکی برائی یاکم نقصان دےعمل کو لےلیا۔ایسے ہی اگر آپ جمہوری نظام کو درست نہیں بھی سمجھتے تو پھر بھی ووٹ ڈال کرکم ضرررساں پارٹی کی حمایت کردیں
     
  4. ‏مارچ 30، 2013 #4
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,913
    موصول شکریہ جات:
    1,483
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    اسلام و علیکم
    ووٹ کاسٹ کرنے کا مطلب یہی ہے کہ آپ اس غیر اسلامی جمہوری نظام کو تسلیم کر رہے ہیں-
     
  5. ‏مارچ 30، 2013 #5
    کیلانی

    کیلانی مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 24، 2013
    پیغامات:
    347
    موصول شکریہ جات:
    1,101
    تمغے کے پوائنٹ:
    127

    اور ووٹ کاسٹ نہ کرنے کا مطلب یہی ہے کہ آپ تمام ڈاکووں اورلٹیروں کےساتھ چاہتےہیں ۔
     
  6. ‏مارچ 30، 2013 #6
    شاکر

    شاکر تکنیکی ناظم رکن انتظامیہ
    جگہ:
    جدہ
    شمولیت:
    ‏جنوری 08، 2011
    پیغامات:
    6,595
    موصول شکریہ جات:
    21,360
    تمغے کے پوائنٹ:
    891

    ایسا ضروری نہیں۔
    اکثر بینکس سودی سسٹم کے تحت کام کر رہے ہیں۔ اور کسی بھی ادارے میں کام کرنے والے رکن کے لئے ضروری ہے کہ وہ کسی نہ کسی بینک میں اپنا اکاؤنٹ کھلوائے تاکہ اس کی تنخواہ اسے ٹرانسفر کی جا سکے۔ آپ گاڑی لینے جائیں، پراپرٹی خریدیں یا آن لائن ٹرانزیکشن کے لئے کریڈٹ کارڈ بنوائیں، حتیٰ کہ گھر آنے والے بجلی، گیس کے بلز میں بھی تاخیر سے ادائیگی پر سود کا چانس رہتا ہے۔ جب ہم اپنے ذاتی نفع کے لئے ایک سودی سسٹم میں بکراہت شامل ہو جاتے ہیں تو اجتماعی نفع کے لئے ووٹ ڈالنے میں شامل ہونے میں بھی کچھ حرج نہیں ہونا چاہئے۔ اور یا پھر گاڑی، گھر، بجلی، گیس استعمال کرنا بھی سودی نظام کو "تسلیم" کرنا قرار پائے گا؟
    ہاں، موجودہ سسٹم کی معطلی اور نظام خلافت کے قیام کے لئے عملی و نظری جدوجہد میں شامل رہنا چاہئے لیکن جب تک یہ نظام ہم پر مسلط ہے، کم سے کم اتنا تو کیا جا سکتا ہے کہ دو برے لوگوں میں سے کم برے شخص کو منتخب کرنے میں اپنا کردار ادا کریں۔ اگر ہمارے ووٹ نہ ڈالنے سے اس نظام کی معطلی کا ذرا بھی چانس ہو تو بھی بات ہے، جبکہ دوسری طرف سودی سسٹم میں شامل نہ ہونا اسے کمزور کرنے کا باعث بنتا ہے، لیکن جب وہ کراہت کے ساتھ قبول ہے تو کراہت کے ساتھ ہی ووٹ ڈالنے میں کیا حرج؟
     
  7. ‏مارچ 30، 2013 #7
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,913
    موصول شکریہ جات:
    1,483
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    آپ کی بات سے تو میں یہی مطلب اخذ کر سکتا ہوں کہ ایک حکمران صریح کفر کا مرتکب ہوتا ہے اور دوسرا ہے تو کافر لیکن صریح کفر نہیں کرتا -پہلے والے سے تو آپ برأت کا اعلان کرتے ہیں لیکن دوسرے سے برأت کا اظھار نہیں کرتے اور کہتے ہیں کہ کوئی بات نہیں ہے تو کافر لیکن اس سے دوستی یا موافقت کرنے میں کوئی حرج نہیں -میرے بھائی کیا آپ گندگی کے ڈھیر میں پڑا ہوا گلاب کا پھول اٹھا کر اپنے گھر میں سجانا پسند کریں گے ؟؟

    دوسری بات یہ کہ لوگوں کے ظلم ستم سے ڈرنے سے بہتر ہے الله کے عذاب سے ڈرا جائے - امام ابن تیمہ کا اجتہاد کے بارے میں میں یہی کہوں گا یا تو غلط تھا یا وقتی تھا (واللہ عالم ) -جب کہ ہم نے اس کفریہ نظام جمہوریت کو سپورٹ کر کر کے اپنا اوڑھنا بچھونا بنا لیا ہے- اور حیلے بہانے یہ بناتے ہیں کہ بڑے ڈاکو سے چھوٹا ڈاکو بہتر ہے- الله ہی ہمارے حال پر رحم کرے اور اس ملک کے مسلمانوں کو ہدایت سے نوازے (آ مین )
     
  8. ‏مارچ 30، 2013 #8
    کیلانی

    کیلانی مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 24، 2013
    پیغامات:
    347
    موصول شکریہ جات:
    1,101
    تمغے کے پوائنٹ:
    127

    آپ جو مطلب چاہیں اخذ کریں اس میں آپ آزاد ہیں لیکن میری مراد اس سےصرف یہ ہےکہ حالات ایسے پیداہوگئےہیں کہ قیادت کہ کئی مسلمان امیدوارہیں ان میں سے آپ اسے منتخب کریں جو شرعی احکام کے زیادہ موافق ہو یاپھر آپ کی تسکین کی خاطر کہہ دیتاہوں کہ جس سے شریعت کوکم نقصان پہنچنے کاخدشہ ہو اسے منتخب کرلیں یا جسے کافر اسلام کےخلاف کم استعمال کرسکیں اسے منتخب کرلیں۔اور ابن تیمیہ کاوہ اجتہادتووقتی ہوسکتاہے لیکن اس سے اخذہونے والااصول اسلامی فقہ کامسلمہ قاعدہ ہے جناب ۔اللہ کرے جومحنت ہم مسلمانوں کو اسلام کےدئرےسے نکال کر کافربنانے خرچ کرتے ہیں وہ محنت ہم لوگوں کو کفرکے دائرے سے نکال کر اسلام میں لانےکیلے صرف کریں۔تو کیاہی اچھاہوگا۔ہم کیسےلوگ ہیں اپنے مزاجوں کی شدت کو اسلام کی شدت بنادیتےہیں۔اللہ ہمیں ہدایت نصیب فرمائے۔
     
  9. ‏مارچ 30، 2013 #9
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,913
    موصول شکریہ جات:
    1,483
    تمغے کے پوائنٹ:
    304



    میرے بھائی جب نظام ہی کفریہ اور الله سے بغاوت پر مبنی ہو گا تو اس میں شامل ہونے والے اچھے لوگ بھی اس کے زیر اثر آ جایں گے - اور پھر عوام کے پاس اس بات کا کیا پیمانہ ہے کہ کون زیادہ برا ہے اور کون کم برا ہے اور کس میوں کتنی اہلیت ہے کہ وہ شرعی احکام کو صحیح طو ر پر نافذ کر پا ے گا یا نہیں ؟؟ ہمارے ملک میں جو کچھ ہو رہا اور جو کچھ ہو چکا ہے وہ اس کفریہ نظام حکومت کے ہی مرہون منّت ہے اس بات کا مشاہدہ آپ بھی کر چکے ہونگے اور باقی عوام بھی -باقی اچھے برے لوگ تو ہر جگہ ہوتے ہیں -اس لئے میرے خیال میں نظام بدلنا ضروری ہے نہ کہ لوگ-

    واسلام
     
  10. ‏مارچ 30، 2013 #10
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,913
    موصول شکریہ جات:
    1,483
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    شاکر بھائی -

    الله قرآن میں فرماتا ہے "انسان کے لئے وہی کچھ ہے جس کی اس نے کوشش کی " اب اگر کوشش مثبت ہو گی تو نتائج بھی مثبت ہونگے اور اگر کوشش منفی ہو گی تو نتائج بھی منفی ہونگے باقی لَا يُكَلِّفُ اللَّهُ نَفْسًا إِلَّا وُسْعَهَا ۚ الله کسی شخص کو اس کی طاقت سے زیادہ تکلیف نہیں دیتا۔ بینکس کے سودی سسٹم جتنا ممکن ہو سکے بچنا ضروری ہے لیکن جہاں بچنا ممکن نہیں وہاں الله مہربان ہے اور معا ف کرنے والا ہے

    دوسری بات -حکومتی نظام بدلنا ہمارے ہاتھ میں ہے اگر ہم صحیح طو ر پر کوشش کریں - جب نظام ہی کفریہ اور الله سے بغاوت پر مبنی ہو گا تو اس میں شامل ہونے والے اچھے لوگ بھی اس کے زیر اثر آ جایں گے - اور پھر عوام کے پاس اس بات کا کیا پیمانہ ہے کہ کون زیادہ برا ہے اور کون کم برا ہے اور کس میوں کتنی اہلیت ہے کہ وہ شرعی احکام کو صحیح طو ر پر نافذ کر پا ے گا یا نہیں ؟؟ ہمارے ملک میں جو کچھ ہو رہا اور جو کچھ ہو چکا ہے وہ اس کفریہ نظام حکومت کے ہی مرہون منّت ہے اس بات کا مشاہدہ آپ بھی کر چکے ہونگے اور باقی عوام بھی -باقی اچھے برے لوگ تو ہر جگہ ہوتے ہیں -اس لئے میرے خیال میں نظام بدلنا ضروری ہے نہ کہ لوگ

    واسلام
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں