1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بلا عذر جماعت چھوڑنے پر کوڑے مارنے کا حکم

'فقہ عام' میں موضوعات آغاز کردہ از تلمیذ, ‏اپریل 08، 2014۔

  1. ‏اپریل 09، 2014 #11
    تلمیذ

    تلمیذ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 12، 2011
    پیغامات:
    765
    موصول شکریہ جات:
    1,503
    تمغے کے پوائنٹ:
    191

    وعلیکم السلام
    مذکورہ عربی فورم پر بات تارک جماعت کی ہو رہی ہے نا کہ تارک الصلاہ کی
    میری پوسٹ دوبارہ پڑہ لیں
    وضاحت : میں خود اس بات کا قائل ہوں کہ حاکم وقت تعزیرا تارک الجماعہ کو سزا دے سکتا ہے لیکن مصری ممبر اس عربی فورم پر یہ تقاضہ کر رہا ہے کہ اس طرح کی تعزیر (یعنی تارک جماعت کو تعزیرا سزا دینا ) کی کوئی مثال نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے یا صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین سے بتاو
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  2. ‏اپریل 09، 2014 #12
    عبداللہ حیدر

    عبداللہ حیدر مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    314
    موصول شکریہ جات:
    989
    تمغے کے پوائنٹ:
    120

    السلام علیکم،
    امید کی جانی چاہیے کوڑے مارنے سے پہلے دعوت اور نرمی کے ذریعےاس شخص کی اصلاح کرنے کی کوشش کی گئی ہو گی (اگر چہ اس کا امکان کم ہے)۔ صاحبان اختیار کو اس طرح کی سزا دیتے وقت دیکھنا چاہیے کہ وہ اس شخص کی دین سے دوری کا سبب نہ بن جائیں۔ مجھے یاد ہے کچھ سال پہلے میں تبوک میں تھا، وہاں کچھ لوگ نماز مغرب کے وقت جماعت سے لیٹ ہو گئے۔ ان کا تعلق بھی مصر سے تھا۔ وہ حکومتی اہلکاروں کی پکڑ میں آ گئے جو ان کے ساتھ بڑی درشتی اور بد تمیزی سے پیش آئے اور جاتے ہوئے نہ صرف ان کے اقامے لے گئے بلکہ وہاں کام کرنے والے ایک کرسچن کا اقامہ بھی ضبط کر لیا۔ یہ وہی لوگ تھے جنہیں میں عمومًا جماعت کی پہلی صف میں دیکھا کرتا تھا لیکن اس دن وہ ردعمل کا شکار ہو کر مسجد ہی نہیں گئے۔
    امام ابن کثیر ؒ نے اپنی تفسیر میں بیان کیا ہے کہ اہل شام میں سے ایک شخص تھے جو جہاد و قتال میں بڑی بہادری دکھایا کرتے تھے۔ امیر المومنین عمر رضی اللہ عنہ نے انہیں کچھ عرصہ نہیں دیکھا تو ان کے بارے دریافت کیا۔ لوگوں نے بتایا کہ وہ تو شراب کے عادی ہو چکے ہیں۔ دو جمع دو چار کرنے والا کوئی ہوتا تو اسی وقت کوڑے مارنے کا حکم جاری کر دیتا لیکن وہ امیر المومنین تھے، وہ جانتے تھے کہ ہر شخص پر سختی کارگر نہیں ہوتی۔ اسی وقت کاتب کو بلایا اور خط لکھنے کا حکم دیا:
    ’’ عمر بن الخطاب کی جانب سے فلاں بن فلاں کی طرف!
    تم پر سلامتی ہو۔ اما بعد، میں تمہارے سامنے اس اللہ کی حمد بیان کرتا ہوں جس کے سوا کوئی الٰہ نہیں ہے، وہ گناہ معاف کرنے والا اور توبہ قبول کرنے والا ہے، سخت سزا دینے والا اور بڑا صاحب فضل ہے۔ کوئی معبود اس کے سوا نہیں، اُسی کی طرف سب کو پلٹنا ہے‘‘
    پھر اپنے ساتھیوں کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا ’’اپنے بھائی کے لیے اللہ سے دعا کرو۔ ۔ ۔‘‘
    جب ان صاحب کو یہ خط ملا تو ان پر اس کا شدید اثر ہوا۔ شراب نوشی سے توبہ کر لی۔ عمر رضی اللہ عنہ کو اس بات کی خبر ہوئی تو فرمایا’’ جب تم اپنے کسی بھائی کو غلطی میں مبتلا ہوتے دیکھو تو اسے (اچھے طریقے سے) روکو اور اللہ سے دعا کرو کہ اسے توبہ کی توفیق دے اور اس کی توبہ قبول فرمائے، خبردار، اس کے مقابلے میں شیطان کے مددگار نہ بننا‘‘۔
    جہاں نرمی سے کام چلتا ہو وہاں سختی کرنے سے الٹا نقصان ہوتا ہے۔
    والسلام علیکم
     
    • پسند پسند x 3
    • زبردست زبردست x 2
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  3. ‏اپریل 10، 2014 #13
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,977
    موصول شکریہ جات:
    1,494
    تمغے کے پوائنٹ:
    304


    السلام و علیکم محترم -

    جب ہم تارک جماعت کی بات کرتے ہیں تو اس سے مراد تارک الصلاة ہی ہوتا ہے -اگر ہم قرآن اور احادیث نبوی پر غور کریں تو نماز کی قبولیت جماعت کے ساتھ نماز پڑھنے سے ہی مشروط ہے -صرف چند ایک استثنائی صورتیں ہیں جن میں جماعت کے بغیر انفردی نماز کی اجازت دی گئی ہے -
    ویسے بھی حاکم وقت کی طرف سے تارک جماعت پر سزا کا اطلاق اس وقت ممکن ہے جب اس کو یقین ہو کہ جس کو سزا دی جا رہی ہے وہ واقعی میں تارک جماعت ہے - اور ظاہر ہے اس چیز کا پتا جب ہی چلے گا جب مسجد میں لوگوں کی آمد و رفت پر نظر رکھی جائے گی - گھر میں انفردی نماز پڑھنے والے کے بارے میں یہ وثوق سے نہیں کہا جا سکتا کہ وہ گھر میں پوری پانچ وقت کی نمازیں ادا کرتا ہے - اس لئے نماز با جماعت ہی انسان کی اصل نماز تصور کی جاتی ہے-

    جہاں تک اس بات کا تعلق ہے کہ نبی کریم صل الله علیہ و آ لہ وسلم یا صحابہ کرام رضوان الله اجمعین نے تارک جماعت کو کیا سزا دی تو ان کا دور خیرالقرون کا دور تھا اور اس دور میں نبی کریم صل الله علیہ و آ لہ وسلم اور آپ کے خلفاء نے نماز قائم کرنے کا ایک ایسا نظام مرتب کیا تھا کہ شاز و نادر ہی کوئی جماعت کی نماز چھوڑتا تھا - حتیٰ کہ منافقین کو بھی جماعت کی نماز قضا کرنے کی جرّت نہیں ہوتی تھی -اور یہ بھی ایک امر ہے کہ وہ پاک ہستیاں لوگوں کی ٹوہ میں بھی نہیں رہتی تھیں - کہ کون غلطی کرے اور کس پر سزا نافذ کی جائے- البتہ وہ زیادہ سے زیادہ ایک دوسرے کو تنبیہ کردیتے تھے -

    حضرت عمر رضی الله عنہ اپنی خلافت کے دور میں لوگوں کی نماز کے بارے میں نگرانی رکھتے تھے اور کوتاہی کی صورت میں صرف تنبیہ کردیتے تھے-ایک مرتبہ ایک تابعی سے رمضان کے مہینے میں فجر کی نماز چھوٹ گئی - جب وہ ظہر کی نماز کے لئے آے تو نماز کا بعد حضرت عمر رضی الله عنہ نے ان سے پوچھا کہ تم فجر کی نماز میں کہاں غائب تھے ؟؟ تو ان صاحب نے کہا کہ امیر المومنین یہ چوں کہ رمضان کا مہینہ ہے تو ساری رات عبادت میں گزاری اور فجر سے پہلے تھوڑی دیر کے لئے لیٹ گیا اورآ نکھ لگ گئی اس لیے با جماعت نماز چھوٹ گئی - اس پر حضرت عمر رضی الله عنہ نے فرمایا کہ "تمھارے لئے یہ بہتر تھا کہ تم ساری رات سوتے رہتے اور فجر کی نماز ہمارے ساتھ پڑھتے (یعنی جماعت کا ثواب ساری رات کی عبادت سے افضل ہے جو تم نے گنوا دیا ) (مستدرک حاکم- )

    غرض یہ حاکم وقت کی ثواب دید پر ہے کہ وہ تارک جماعت پر کیا تعزیری حکم لگاتا ہے - یہ بات بھی ذہن میں رہے کہ ایک آدھ نماز چھوڑنے والا تارک الصلاة نہیں ہو گا - بلکہ تارک الصلاة تو وہ انسان ہے جو کبھی کبھار ہی نماز پڑھتا ہے جیسے ہمارے ملک میں لوگ صرف جمعہ کی نماز پر ہی اکتفہ کرلیتے ہیں اور پھر بڑے زور شور سے اپنے آپ کو مسلمان گردانتے ہیں -میرے خیال میں ایسے لوگوں کو کوڑے مارنا حاکم وقت کے لئے باعث ثواب ہونا چاہیے - (واللہ اعلم )
     
    • پسند پسند x 3
    • علمی علمی x 2
    • لسٹ
  4. ‏اپریل 11، 2014 #14
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    محمد علی جواد بھائی! کیا حال ہیں؟
    برادر محترم! آپ کا نقطہ نظر کہ نماز باجماعت کے علاوہ اکیلے پڑھی گئی نماز کی کوئی وقعت نہیں، اور وہ ناقابلِ قبول ہے، یہ نقطہ نظر میری تحقیق کے مطابق درست نہیں، ایک حدیث کا مفہوم ہے کہ نماز باجماعت کا ثواب 27 گنا زیادہ ہے، تو اس کا مطلب ہے کہ اکیلے پڑھی گئی نماز کا بھی کچھ نہ کچھ ثواب ہو گا تو پھر بتائیے کہ کیا اگر نماز نہ ہو تو کچھ نہ کچھ ثواب کیسے ہو گا؟
    آپ کی اس بارے میں کیا علمی رائے کا منتظر ہوں۔ اور آپ کا دوسرا نقطہ نظر کہ بے نمازی کفر اکبر کا مرتکب ہے، اس پر بات ہو چکی ہے۔ اور الحمدللہ میں نے مضبوط دلائل دئیے تھے جس سے آپ نے بھی اتفاق کیا تھا۔
     
  5. ‏اپریل 11، 2014 #15
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,977
    موصول شکریہ جات:
    1,494
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    وعلیکم سلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ ارسلان بھائی -

    جی میں ٹھیک ہوں اور امید کرتا ہوں کہ آپ بھی بخیریت ہونگے -

    آپ نے جو مسلہ اٹھایا ہے اس میں علماء کرام میں اختلاف ہے - کچھ کے نزدیک انفردی نماز بھی الله کی بارگاہ میں مقبول ہوتی ہے لیکن ثواب کی کمی کے ساتھ - اور کچھ کے نزدیک نماز ادا تو ہو جاتی ہے لیکن ثواب کے بغیر ادا ہوتی ہے - جیسے قرآن میں اکثر مقامات پر ہے کہ قیامت کے دن لوگ نیک اعمال لے کر الله کے حضور حاضر ہونگے لیکن ان کے وہ نیک اعمال الله کی بارگاہ میں مقبول نہیں ہونگے - جن علماء کے نزدیک انفرادی نماز مقبول نہ ہونے کا فتویٰ ہے وہ کہتے ہیں کہ ٢٧ درجے والی حدیث کا حکم اس وقت کا تھا جب نماز نئی نئی مسلمانوں پر فرض ہوئی تھی - اور نبی کریم کا فرمان کہ "جماعت کی نماز انفردی نماز سے ٢٧ درجہ افضل ہے" یہ جماعت کی نماز کی ترغیب کے لئے تھا - کیوں کہ بعد میں جماعت کی نماز جان بوجھ کر چھوڑنے پر نبی کریم صل الله علیہ وآ لہ وسلم کی جتنی بھی احادیث وعید کے طور پر بیان ہوئی ہیں وہ متواترکے درجے پر ہیں- یہاں تک کے اللہ کے نبی نے ایک نابینا شخص کو بھی اذان کی آواز سننے پر جماعت کی نماز پڑھنے کی تاکید کی- جب کہ نابیناپن ایسا عذر ہے کہ اگر انسان اپنے گھر پر بھی نماز پڑھ لے تو کوئی مضائقہ نہیں- اس طرح مرد حضرات کے لئے بغیر کسی عذر کے عشاء کی نماز کے لئے مسجد میں نا آنے پر رسول الله صل الله علیہ و آ لہ وسلم کی طرف سے ان کے گھروں کو جلانے کی وعید بھی اس پر دلالت کرتی ہے کہ جماعت نماز جان بوجھ کر چھوڑنا بہت بڑا گناہ ہے - البتہ جو عذر احادیث میں انفردی نماز کے جائز ہونے کے لئے بیان ہوے ہیں ان کو مد نظر رکھ کر مرد حضرات گھروں میں اکیلے نماز پڑھ لیں تو کوئی مضائقہ نہیں (واللہ اعلم)-

    اگر میں اپنے تجزیے میں غلط ہوں تو کوئی بھی ممبر میری تصیح کردے تو نوازش ہو گی -
     
    • پسند پسند x 3
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  6. ‏اپریل 12، 2014 #16
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    الحمدللہ
    جزاک اللہ خیرا۔۔۔ آپ کی بات میں وزن ہے بھائی۔۔۔۔ یہ باتیں مجھے آپ کے تفصیل سے بیان کرنے پر آج معلوم ہوئی ہیں۔
    اچھا مجھے یہاں مزید معلومات بتائیں کہ:
    نابینا صحابی والی حدیث کے متعلق میرے ذہن میں چند باتیں ہیں، ان میں سے یہ کہ اس دور میں اسپیکرز نہیں ہوتے تھے، اور ایسے اذان دی جاتی تھی، تو نابینا صحابی کو اذان کی آواز پہنچ جاتی تھی، تو اس کا مطلب ہے کہ نابینا صحابی کا گھر مسجد سے قریب ہو گا، اور اس دور میں ہماری طرح بڑی بڑی گلیاں اور بلڈنگز بھی نہیں تھی اور ہو سکتا ہے کہ راستہ بھی صا ف اور سیدھا ہو، شاید اسی لئے صحابی کے لئے مسجد میں نماز پڑھنے کا حکم ہو۔

    لیکن ہمارے ہاں اسپیکرز ہیں، میں جہاں رہتا ہوں وہاں سے اہلحدیث مسجد تقریبا آدھا کلو میٹر کے فاصلے پر ہو گی، اگر اسپیکرز میں اذان نہ دی جائے تو ہمیں بالکل پتہ نہ چلے، اور اسپیکرز میں بھی اذان اس وقت صاف سنائی دیتی ہے جب خاموشی ہو، ورنہ تو اکثر پتہ نہیں چلتا بلکہ تھوڑا تھوڑا سا پتہ چلتا ہے ،اور وہ بھی نماز کا وقت یاد ہونے کی وجہ سے؟

    محمد علی جواد بھائی! اس بارے میں بتائیں کہ اگر اس طرح استدلال کیا جائے تو کیا درست ہو گا؟ یہ میں معلومات حاصل کرنے کے لئے پوچھ رہا ہوں، ناکہ ابھی میرا یہ پختہ موقف ہے۔
     
  7. ‏اپریل 14، 2014 #17
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,977
    موصول شکریہ جات:
    1,494
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    جزاک الله -

    بہت شکریہ -آپ کی عزت افزائی کا - ویسے یہ میرا اپنا تجزیہ ہے جس سے اختلاف بھی کیا جا سکتا ہے کیوں کہ کچھ علماء انفرادی نماز کی قبولیت کے قائل بھی ہیں - لیکن میرا موقف ہے کہ انفرادی نماز پڑھنے والے کی نماز الله کی بارگاہ میں مقبول نہیں ہوتی - اس کی وجہ یہ ہے کہ -اگر انفرادی نماز الله کی بارگاہ میں قبول ہوتی تو مرد حضرات کے لئے اس کے پڑھنے پر الله کے رسول کی وعید نہ ہوتی -کیوں کہ جس عمل پر ثواب مرتب ہو- چاہے ثواب کم ہی کیوں نہ ہو اس پر وعید کا جواز کیسا ؟؟ (واللہ ا اعلم)-

    باقی آپ نے اسپیکرز کے متعلق پوچھا ہے تو یہ آج کل کی ایک سہولت ہے جس سے فائدہ اٹھایا جاتا ہے - اگر اسپپکر پر اذان نہ بھی سنائی دے (مسجد دور ہونے کی صورت میں یا لوڈشیڈنگ کی صورت میں) تو بھی گھڑیاں موجود ہیں اور ہم جانتے ہیں کہ ہماری تقریبا تمام مسجدوں میں ٹائم کی پابندی کے ساتھ نماز پڑھائی جاتی ہے - تو جماعت میں کوتاہی صحیح نہیں - ہاں اگر نہ اذان سنای دے اور نہ آپ کے پاس گھڑی ہو اس صورت میں اگر کوشش کے باوجود جماعت نکل جاتی ہے تو الله مہربانی کرنے والا ہے-

    یہ بات ذہن میں رہے کہ نماز رہ جانے اور نماز چھوڑ دینے میں فرق ہے - نماز باجماعت رہ جانے پر الله کی طرف سے قوی امید ہے کہ وہ ہماری کوتاہیوں سے در گزر کرے گا اور معاف کردے گا - لیکن نماز باجماعت چھوڑ دینے پر عذاب کا اندیشہ ہے (واللہ ا اعلم)-

    خوش رہیں-
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  8. ‏اپریل 14، 2014 #18
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  9. ‏اپریل 14، 2014 #19
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,955
    موصول شکریہ جات:
    6,502
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    ڈيوٹى كى بنا پر نماز باجماعت ترك كرنا

    ميرے والد صاحب بعض اوقات كام كى زيادتى كى بنا پر تراويح اور نماز فجر كے ليے نہيں جاتے، كيا ايسا كرنا جائز ہے يا نہيں ؟

    يہ علم ميں رہے كہ ميرے والد صاحب كى عادت ہے كہ رمضان ميں وہ تراويح كى نماز نہيں چھوڑتے الا يہ كہ مريض ہوں، اور الحمد للہ وہ دين پر عمل پيرا ہيں، ليكن اب بعض اوقات كام كى زيادتى كى بنا پر نماز كے ليے نہيں جاتے ؟

    الحمد للہ:

    نماز پنجگانہ سب اوقات ميں باجماعت ادا كرنى واجب ہے،

    اس آيت ميں جب اللہ تعالى نے حالت جنگ ميں نماز باجماعت واجب كى ہے تو پھر امن و سلامتى كى حالت ميں كيسے نہيں ؟

    اس ليے مسلمان شخص كو ہميشہ نماز بنچگانہ باجماعت ادا كرنے كى كوشش كرنى چاہيے، اور دنياوى شغل و معاملات اسے نماز باجماعت ادا كرنے سے مشغول كرتے ہوئے پيچھے نہ ركھيں.

    اس ليے آپ اپنے والد كو نصيحت كريں، اور ان صحيح دلائل كو حكمت كے سامنے ان كے سامنے ركھيں اور وعظ كريں.

    نماز پنجگانہ باجماعت ادا كرنے ميں حكم يہى ہے، ليكن تراويح كا معاملہ آسان ہے، كيونكہ مسلمان شخص كے ليے نماز تراويح گھر ميں ادا كرنا جائز ہيں، اگرچہ مسجد ميں باجماعت تراويح ادا كرنا افضل ہيں.

    مسلمان اپنے آپ كو دنياوى كاموں ميں اتنا نہ كھپا دے كہ وہ اس كى عبادت اور نماز پر ہى غالب آجائيں اور اسے اس سے غافل كرديں، اللہ سبحانہ وتعالى نے مومنوں كا وصف بيان كيا ہے كہ تجارت اور خريدوفروخت انہيں اللہ تعالى كے ذكر اور نماز كى ادائيگى سے غافل نہيں كرتى.

    ان آيات كے اختتام ميں اللہ تعالى نے فرمايا:

    ﴿اور اللہ تعالى جسے چاہے بے شمار روزياں ديتا ہے﴾.

    جو كہ ايك ايسے امر كى طرف اشارہ ہے جسے اپنے رب كى اطاعت و فرمانبردارى سے غافل ہو كر اپنا وہ وقت بھى تجارت اور كام كاج ميں صرف كرنے والے ليے سمجھنا بے حد ضرورى ہے كہ رزق اللہ تعالى كے ہاتھ ميں ہے، وہ جسے چاہے بغير حساب رزق عطا فرماتا ہے.

    لہذا حصول رزق كے ليے اسباب صرف كرنے ميں كوئى مانع نہيں، ليكن مسلمان شخص كو چاہيے كہ وہ كام كاج ميں مبالغہ نہ كرے كہ اس كى عبادت كا وقت بھى اسى كام كاج ميں صرف ہو جائے، اور اس كى صحت اور بچوں كى تربيت كا وقت بھى كام كاج ميں صرف ہوتا رہے، اسے صحيح اور قرب اختيار كرنا چاہيے.

    ہميں اميد ہے كہ ہم نے جو كچھ كہا ہے اس پر وقف كرينگے اور حقيقتا اس پر غور و فكر كرينگے.

    اللہ تعالى سے ہمارى دعا ہے كہ وہ انہيں اچھے اور بہترين اقوال و اعمال اور اخلاق اپنانے كى توفيق نوازے، اور انہيں بہترين پاكيزہ اور بابركت رزق عطا فرمائے.

    واللہ اعلم .
    الاسلام سوال وجواب
     
    • پسند پسند x 3
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں