1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حلالہ اور ہمارا معاشرہ

'طلاق' میں موضوعات آغاز کردہ از یوسف ثانی, ‏اکتوبر 31، 2012۔

  1. ‏اکتوبر 31، 2012 #1
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,760
    موصول شکریہ جات:
    5,267
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    [​IMG]
     
  2. ‏نومبر 01، 2012 #2
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,760
    موصول شکریہ جات:
    5,267
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    [​IMG]
     
  3. ‏نومبر 01، 2012 #3
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,760
    موصول شکریہ جات:
    5,267
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    انا للہ وانا الیہ راجعون
     
  4. ‏نومبر 01، 2012 #4
    شاہد نذیر

    شاہد نذیر سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏فروری 17، 2011
    پیغامات:
    1,935
    موصول شکریہ جات:
    6,201
    تمغے کے پوائنٹ:
    412

    حنفی مذہب میں حلالہ ایک حقیقت ہے لیکن موجودہ دیوبندیوں اور بریلویوں سے جب حلالہ پر بات کی جاتی ہے تو یہ لوگ فوراً تقیہ کرلیتے ہیں اور جھٹ کہہ دیتے ہیں کہ ہمارے ہاں حلالہ نہیں ہوتا۔ اگر آپ نے اپنی آنکھوں سے ایسا دیکھا ہے تو بتاؤ۔ اگر تمہارے جاننے والوں میں ایسا ہوا ہے تو بتاؤ۔
     
  5. ‏نومبر 01، 2012 #5
    جمشید

    جمشید مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 09، 2011
    پیغامات:
    873
    موصول شکریہ جات:
    2,325
    تمغے کے پوائنٹ:
    180

    ایک ہے کسی چیز کا علمی اورمعتدلانہ موقف اورایک ہے بزعم خود کچھ فرض کرلینا۔
    دونوں میں بڑافرق ہے؟
    یاد پڑتاہے کہ شمشاد نامی ایک صاحب نے ایک تحریر لکھی تھی جس مین اس بات پر زور دیاتھاکہ اگر حلالہ اورطلاق ثلاثہ پر لڑنے والے علماء اس کے بجائے لوگوں کو طلاق دینے کا شرعی طریقہ بتانے میں وقت صرف کریں تو امت اورعوام کو بہت فائدہ ہوگا اوریہ جھگرے شاذ ونادر کیسوں کی صورت اختیار کرلیں گے۔
    حلالہ کی نوبت کیوں آتی ہے؟
    طلاق کے غلط استعمال سے !
    ایک شخص جانتاہے کہ اگرمیں نے زہر کھایاتومیری موت ہوجائے گی
    اگرمیں نے خود پر گولی چلائی تومیری موت ہوجائے گی
    اسی طرح شریعت نے طلاق مغلظہ کے استعمال سے بچانے کیلئے بتادیاہے کہ
    اگرکسی نے اپنی بیوی کو طلاق ثلاثہ دیاتو پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ایک شخص تمام باتوں کو جانتے ہوئے بھی طلاق ثلاثہ جیسے مبغٍوض فعل کاارتکاب کرتاہے تواس کو صرف اس لئے انجام سے نہیں بچایاجاسکتا کہ اس کا انجام نہایت خراب ہے۔
    ہربرے عمل کا براہی انجام ہوتاہے۔ اچھاانجام نہیں ہوتا
    کچھ لوگوں کا کہناہے کہ انتہائی غصہ کی شدت میں دی جاتی ہے اس وقت عقل مائوف ہوجاتی ہے اس لئے ایسی سزا نہ ہونی چاہئے جو جیتے جی زندگی کا روگ بن جائے۔
    جوابآعرض ہے کہ ہرطلاق غصے اورنج کی صورت میں ہی دیاجاتاہے خوش دلی سے کوئی بھی نہیں دیتا۔
    بہتر صورت تو یہ ہے کہ شریعت کے احکامات کو انسان جانے اوراس کے مطابق عمل پیراہو تواس میں نہ کوئی رسوائی ہے اورنہ کوئی ذلت
    لیکن اگرایک انسان طلاق ملغلطہ کا ارتکاب کرتاہے اوراس طرح شریعت سے کھلواڑ کرتاہے اورپھر چاہتاہے کہ اس کے انجام اورعواقب سے بھی بچارہے تویہ ممکن نہیں ہے۔
     
  6. ‏نومبر 01، 2012 #6
    راجا

    راجا سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 19، 2011
    پیغامات:
    734
    موصول شکریہ جات:
    2,555
    تمغے کے پوائنٹ:
    211


    گویا آپ تسلیم کر رہے ہیں کہ ایک شخص اگر اپنی بیوی کو کسی بھی وجہ سے اکٹھی تین طلاق دیتا ہے تو ۔۔۔ حلالہ کر کے دوبارہ اپنی بیوی کا حصول شرعی طور پر درست ہے۔ اگرچہ دنیاوی لحاظ سے یہ طلاق دینے والے شخص کے لئے سزا ہے؟
     
  7. ‏نومبر 01، 2012 #7
    ماں کی دعا

    ماں کی دعا رکن
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 08، 2012
    پیغامات:
    74
    موصول شکریہ جات:
    131
    تمغے کے پوائنٹ:
    32

    میرے خیال کے مطابق ایک فرقہ لفظ "حلالہ " کو بڑی شدت کے ساتھ اسلامی معاشرے میں ایک بدنماشکل کے طور پر متعارف کرارہا ہے۔
    حلالہ کا سنت طریقہ قرآن سے ثابت ہے ۔
    اگر اختلاف ہے تو اس کے غلط استعمال سے ہے۔
    ضرورت اس بات کی ہے کہ لفظ " حلالہ" پر کاری ٖضرب لگانے کے، اس کے غلط استعمال پر دعوت فکر کو عام کیا جائے۔ لوگوں میں شعور اجاگر کیا جائے،کوئی بھی صاحب بصیرت ایسے غیر شرعی حلالہ کی دعوت نہیں دے سکتا جس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے لعنت فرمائے ہے۔
    بنیادی سوال یہ ہے کہ حلالہ کے غلط استعمال پر دعوت فکر کے بجائے لفظ " حلالہ" کو خوفناک اور بھیانک شکل میں کیوں پیش کیا جارہا ہے؟
     
  8. ‏نومبر 01، 2012 #8
    ماں کی دعا

    ماں کی دعا رکن
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 08، 2012
    پیغامات:
    74
    موصول شکریہ جات:
    131
    تمغے کے پوائنٹ:
    32

    محترم شاہد نذیر صاحب:
    ہمارے معاشرے میں جہاں حلالہ کا غلط استعمال شروع ہوا ہے ، وہاں بڑی تیزی سے " فتوی خاص" سے حرامہ کا رواج بھی پروان چڑھ رہا ہے۔ جو ایک "فرقہ خاص" کے مذہب کا حصہ ہے۔
    ہمیں اس پر بھی توجہ دینی چاہئے۔
     
  9. ‏نومبر 01، 2012 #9
    جمشید

    جمشید مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 09، 2011
    پیغامات:
    873
    موصول شکریہ جات:
    2,325
    تمغے کے پوائنٹ:
    180

    کمال ہے کہ شاہد نذیر صاحب شبہ ہونے پر کتاب کا اسکین مانگیں لیکن دوسرااگرپوچھے کہ کس نے حلالہ کیاہے بتائو توپھر اس پر اعتراض کیاجارہاہے ان کو تومذکورہ شخص یعنی حلالہ کرنے والے کو اسکین کرکے سائل تک بھیج دیناچاہئے۔
     
  10. ‏نومبر 01، 2012 #10
    راجا

    راجا سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 19، 2011
    پیغامات:
    734
    موصول شکریہ جات:
    2,555
    تمغے کے پوائنٹ:
    211

    حلالہ کرنے والے کو بھی اسکین کر کے ، بطور ویڈیو، سائل تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ آپ دلیل کی پیروی کرنے والے تو بنیں۔
    ویسے بھی ثبوت کی ضرورت تب تھی جب آپ کو حلالہ پر کوئی اعتراض ہوتا۔ آپ کے سابقہ مراسلہ کو دیکھ کر تو معلوم ہوتا ہے کہ شاید آپ اسے طلاق دینے والے مرد کیلئے دنیاوی سزا مگر شرعی طور پر جائز سمجھتے ہیں۔

    گویا آپ تسلیم کر رہے ہیں کہ ایک شخص اگر اپنی بیوی کو کسی بھی وجہ سے اکٹھی تین طلاق دیتا ہے تو ۔۔۔ حلالہ کر کے دوبارہ اپنی بیوی کا حصول شرعی طور پر درست ہے۔ اگرچہ دنیاوی لحاظ سے یہ طلاق دینے والے شخص کے لئے سزا ہے؟
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں