1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کاروان اہلحدیث کی برصغیر میں آمد

'اسلامی تحریکیں' میں موضوعات آغاز کردہ از راجا, ‏دسمبر 10، 2011۔

  1. ‏جنوری 21، 2014 #21
    محمد یوسف

    محمد یوسف رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 14، 2013
    پیغامات:
    177
    موصول شکریہ جات:
    46
    تمغے کے پوائنٹ:
    43

    مقلدین صحابہ کے دور میں تھے یہ ایک الگ عنوان ہے اس پر ضرور بہ ضرور بات کریں گے
    پہلے اس بات کومکمل تو کرلیں
     
  2. ‏جنوری 21، 2014 #22
    راجا

    راجا سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 19، 2011
    پیغامات:
    734
    موصول شکریہ جات:
    2,555
    تمغے کے پوائنٹ:
    211

    اور آپ نے جتنی بھی باتیں کی ہیں، کہیں یہ نہیں بتایا کہ آپ کو اعتراض کس بات پر ہے؟
    اگر دور اول کے علماء کے حوالے دینے پر اعتراض ہے تو کیا آپ ائمہ اربعہ سے قبل ان کے مقلدین کا وجود ثابت کر سکتے ہیں؟ آپ کی اپنی ناک کٹی ہوئی ہے، اور دوسروں پر الزام کہ وہ نکٹو ہے؟
    اگر شاہ ولی اللہ اور بعد کے علماء کے حوالہ جات دینے پر اعتراض ہے تو کیا آپ دیوبندی علماء دکھا سکتے ہیں اکبر بادشاہ اور اورنگ زیب کے زمانے میں؟

    باقی پوری پوری کتابیں دینے سے آپ فقط ایک جملہ میں جان چھڑا لیتے ہیں۔ اب نوٹ کیجئے کہ فرقہ دیوبندیہ اور فرقہ بریلویہ دونوں کی پیدائش سے بہت پہلے شیخ محمد فاخر بن محمد یحیٰ بن محمد امین العباسی السلفی الٰہ آبادی رحمہ اللہ تقلید نہیں کرتے تھے۔ بلکہ کتاب وسنت کے دلائل پر عمل کرتے اور خود اجتہاد کرتے تھے۔(دیکھیئے نزہۃ الخواطر ج6 ص351 )
    اور فرمائیے کہ اس پر آپ کو کیا اعتراض ہے؟

    درج بالا حوالے پر اعتراض فرمائیں، کیونکہ یہ شاہ اسحاق صاحب سے پہلے کے بزرگ غیر مقلد کا حوالہ ہے۔
    مزید پیش خدمت ہے:

    2۔ شیخ محمد حیات بن ابراہیم السندھی المدنی رحمہ اللہ تقلید نہیں کرتے تھے اور عمل بالحدیث کے قائل تھے۔
    ماسٹر امین اوکاڑوی نے محمد حیات، محمد فاخر الٰہ آبادی اور مبارکپوری تینوں کے بارے میں لکھا ہے :
    '' ان تین غیر مقلدوں کے علاوہ کسی حنفی، شافعی، مالکی اور حنبلی نے اس کو سہو کاتب بھی نہیں کہا ۔'' (تجلیات صفدر ج2، ص243)
    3
    ۔ ابو الحسن محمد بن عبدالہادی السندھی الکبیر رحمہ اللہ کے بارے میں امین اوکاڑوی نے لکھا ہے :
    '' حالانکہ یہ ابوالحسن سندھی غیر مقلد تھا...'' (تجلیات صفدر ج6 ص44)

    یہ شخصیات بھی شاہ اسحاق صاحب سے پہلے کی ہیں۔
    فی الحال اتنا مان جائیے کہ شاہ اسحاق صاحب سے قبل بھی تقلید نہ کرنے والے علماء موجود تھے،
    ورنہ یہ مان لیجئے کہ آپ کے ماسٹر امین اوکاڑوی صاحب جھوٹے ہیں۔
    فیصلہ آپ کا۔
    پھر آگےآپ کو مزید آئینہ بھی دکھاتے ہیں۔ ساتھ ساتھ آپ سے پوچھے جانے والے سوالات کا بھی جواب دیتے جاتے تو بہتر تھا۔
     
    • زبردست زبردست x 3
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں