1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی عمر پر اعتراضات کیوں ؟؟؟

'انکار حدیث' میں موضوعات آغاز کردہ از رفیق طاھر, ‏ستمبر 04، 2011۔

  1. ‏ستمبر 04، 2011 #1
    رفیق طاھر

    رفیق طاھر رکن مجلس شوریٰ رکن انتظامیہ
    جگہ:
    ارض اللہ
    شمولیت:
    ‏مارچ 04، 2011
    پیغامات:
    790
    موصول شکریہ جات:
    3,974
    تمغے کے پوائنٹ:
    323

    سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی عمر پر اعتراضات کیوں ؟؟؟

    http://www.deenekhalis.net/play.php?catsmktba=1272

    الحمد للہ رب العالمین والصلاۃ والسلام على سید الأنبیاء والمرسلین , أما بعد ! ام المؤمنین, صدیقہ بنت صدیق , محبوبہء رسول کریم صلى اللہ علیہ وسلم , سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا اپنے بارہ میں خود فرماتی ہیں :
    تَزَوَّجَنِي النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا بِنْتُ سِتِّ سِنِينَ فَقَدِمْنَا الْمَدِينَةَ فَنَزَلْنَا فِي بَنِي الْحَارِثِ بْنِ خَزْرَجٍ فَوُعِكْتُ فَتَمَرَّقَ شَعَرِي فَوَفَى جُمَيْمَةً فَأَتَتْنِي أُمِّي أُمُّ رُومَانَ وَإِنِّي لَفِي أُرْجُوحَةٍ وَمَعِي صَوَاحِبُ لِي فَصَرَخَتْ بِي فَأَتَيْتُهَا لَا أَدْرِي مَا تُرِيدُ بِي فَأَخَذَتْ بِيَدِي حَتَّى أَوْقَفَتْنِي عَلَى بَابِ الدَّارِ وَإِنِّي لَأُنْهِجُ حَتَّى سَكَنَ بَعْضُ نَفَسِي ثُمَّ أَخَذَتْ شَيْئًا مِنْ مَاءٍ فَمَسَحَتْ بِهِ وَجْهِي وَرَأْسِي ثُمَّ أَدْخَلَتْنِي الدَّارَ فَإِذَا نِسْوَةٌ مِنْ الْأَنْصَارِ فِي الْبَيْتِ فَقُلْنَ عَلَى الْخَيْرِ وَالْبَرَكَةِ وَعَلَى خَيْرِ طَائِرٍ فَأَسْلَمَتْنِي إِلَيْهِنَّ فَأَصْلَحْنَ مِنْ شَأْنِي فَلَمْ يَرُعْنِي إِلَّا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ضُحًى فَأَسْلَمَتْنِي إِلَيْهِ وَأَنَا يَوْمَئِذٍ بِنْتُ تِسْعِ سِنِينَ [صحیح بخاری کتاب المناقب باب تزویج النبی صلى اللہ علیہ وسلم عائشۃ ح ۳۸۹۴]

    جب میں چھ سال کی تھی تو نبی کریم صلى اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے شادی کی , پھر ہم مدینہ میں آئے اور بنی حارث بن خزرج میں ہم نے قیام کیا , یہاں آکر مجھے بخار چڑھا اور اسکی وجہ سے میرے بال گرنے لگے , پھر اسکے بعد کندھوں تک میرے بال خوب بڑھ گئے , ایک دن میری والدہ ام رومان رضی اللہ عنہا تشریف لائیں جبکہ میں اپنی سہیلیوں کے ساتھ جھولا جھول رہی تھی , انہوں نے مجھے بلایا تو میں انکے پاس گئی , مجھے معلوم نہیں تھا کہ وہ میرے ساتھ کیا کرنا چاہتی ہیں , انہوں نے میرا ہاتھ پکڑ کر گھر کے دروازہ کے پاس کھڑا کر دیا اور میرا سانس پھولا جار ہا تھا , کچھ دیر بعد جب میرا سانس ٹھہرا تو انہوں نے تھوڑا سا پانی لے کر میرے منہ اور سر پر پھیرا ۔ پھر گھر کے اندر مجھے لے گئیں ۔ وہاں انصار کی چند عورتیں موجود تھیں , جنہوں نے مجھے دیکھ کر خیر وبرکت کی دعاء دی , میری والدہ نے مجھے انکے حوالے کر دیا اور انہوں نے میری آرائش وزیبائش کی , اسکے بعد اچانک دن چڑھے رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم تشریف لائے تو انہوں نے مجھے آپ صلى اللہ علیہ وسلم کے سپرد کر دیا , ان دنوں میں نو سال کی تھی۔

    منکرین حدیث کا ایک بہت بڑا طبقہ اپنی علمی کم مائیگی کی بناء پر ان احادیث صحیحہ پر زبان طعن دراز کرتا ہے جن میں سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی عمر بوقت رخصتی نو (۹) سال بیان کی گئی ہے ۔ اور انکا یہ اعتراض کسی اصول کی بناء پر نہیں اور نہ ہی اسکی بنیاد کوئی "علم " ہے ۔ بلکہ صرف اور صرف اپنی عقل کوتاہ پر بنیاد رکھ کر انہوں نے ان احادیث صحیحہ کو طعن کا نشانہ بنایا ہے , کہ اتنی کم عمر میں نکاح اور پھر رخصتی کیسے ممکن ہے ؟عقل اس بات کی اجازت نہیں دیتی کہ نو سالہ بچی کے ساتھ مباشرت کی جائے , اور نہ ہی انکے بقول شرع میں اس بات کی رخصت ہے , اسکے ساتھ ساتھ وہ بزعم خود یہ بھی سمجھے بیٹھے ہیں کہ نو (۹) سال کی عمر میں بچی جوان نہیں ہوسکتی , اور قبل از بلوغت عورت کے ساتھ نکاح , و مباشرت عقل وشرع بالخصوص قرآن حکیم کے خلاف ہے ۔


    اس بات کے دلائل بھی ہماری نظر میں ہیں کہ سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی جب رخصتی ہوئی تو وہ سن بلوغت کو پہنچ چکی تھیں , اسکے علاوہ ایسی مثالیں بھی زیر نظر ہیں کہ کچھ خواتین کا نکاح نو سال کی عمر میں ہوا اور اسکے سال بعد اللہ نے انہیں اولاد جیسی نعمت سے بھی نواز دیا ۔ لیکن صرف نظر اس بات سے کہ اس عمر میں عورت کا بالغ ہونا ممکن ہے یا نہیں , اور سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نو سال کی عمر بالغ ہو چکی تھیں یا نہیں , ہم بحث کو ایک کلی قاعدہ اور اصول پر مرتکز کرتے ہیں کہ آیا قبل از بلوغت نکاح و رخصتی و مباشرت کی اجازت اللہ رب العالمین نے دی ہے یا نہیں ! جب یہ بات ثابت ہو جائے کہ قبل از بلوغت بھی عورت سے نکاح کیا جاسکتا ہے اور ہمبستری بھی کی جاسکتی ہے تو اس بات کی تحقیق کی ضرورت ہی نہیں کہ نو سال میں کوئی بالغہ ہوئی یا نہیں !

    اللہ رب العالمین نے قرآن مجید فرقان حمید میں طلاق یافتہ عورتوں کی عدت مختلف اعتبارات سے مختلف بیان فرمائی ہے ۔اگر تو کسی عورت کو نکاح کے بعد طلاق دے دی گئی ہے اور رخصتی نہیں ہوئی یا رخصتی بھی ہوئی ہے لیکن ابھی تک انکے خاوندوں نے انکے ساتھ ہمبستری نہیں کی اور پہلے ہی طلاق دے دی ہے تو ایسی عورتوں پر کوئی عدت نہیں ہے وہ طلاق کے فورا بعد چاہیں تو اسی دن ہی کسی بھی دوسرے مرد سے نکاح کر سکتی ہیں :

    يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا نَكَحْتُمُ الْمُؤْمِنَاتِ ثُمَّ طَلَّقْتُمُوهُنَّ مِن قَبْلِ أَن تَمَسُّوهُنَّ فَمَا لَكُمْ عَلَيْهِنَّ مِنْ عِدَّةٍ تَعْتَدُّونَهَا [الأحزاب : 49]

    " اے اہل ایمان جب تم مؤمنہ عورتوں سے نکاح کرو اور انہیں چھونے (ہمبستری کرنے ) سے پہلے ہی طلاق دے دو تو تمہاری خاطر ان کے ذمہ کوئی عدت نہیں ہے ۔ "

    اور وہ عورتیں جنہیں حیض آتا ہے ان کی عدت تین حیض متعین کی گئی ہے :

    وَالْمُطَلَّقَاتُ يَتَرَبَّصْنَ بِأَنفُسِهِنَّ ثَلاَثَةَ قُرُوَءٍ [البقرة : 228]
    " اور طلاق یافتہ عورتیں تین حیض تک انتظار کریں (یعنی عدت گزاریں ) "


    اور وہ خواتین جنہیں حیض نہیں آتا:
    اگر تو حمل کی وجہ سے حیض کی بندش ہے تو انکی عدت وضع حمل ہے
    اور اگر وہ بانجھ ہو چکی ہیں یا ابھی انہیں حیض آنا شروع ہی نہیں ہوا یعنی نابالغ ہیں اور انہیں طلاق دے دی گئی ہے تو انکی عدت تین ماہ ہے:


    وَاللَّائِي يَئِسْنَ مِنَ الْمَحِيضِ مِن نِّسَائِكُمْ إِنِ ارْتَبْتُمْ فَعِدَّتُهُنَّ ثَلَاثَةُ أَشْهُرٍ وَاللَّائِي لَمْ يَحِضْنَ وَأُوْلَاتُ الْأَحْمَالِ أَجَلُهُنَّ أَن يَضَعْنَ حَمْلَهُنَّ [الطلاق : 4]
    " اور وہ عورتیں جو حیض سے مایوس ہو چکی ہیں تو انکی عدت تین ماہ ہے اور ان عورتوں کی بھی جنہیں ابھی حیض شروع نہیں ہوا , اور حمل والی خواتین کی عدت وضع حمل ہے ۔"

    اللہ رب العالمین کے اس فرمان کی روشنی میں یہ بات نہایت ہی آسانی سے سمجھی جاسکتی ہے کہ عورت اگر نابالغ ہو تو بھی اس سے نکاح کیا جاسکتا ہے , رخصتی ہوسکتی ہے , خاوند اس سے ازدواجی تعلقات قائم کرسکتا ہے ۔ کیونکہ ازوداجی تعلقات قائم کرنے سے پہلے ہی اگر کوئی شخص اپنی منکوحہ کو طلاق دے دے تو اس پر عدت نہیں ہے جیسا کہ اللہ تعالى کے فرمان سے یہ بات واضح کی جاچکی ہے ۔اور اس آخری آیت میں اللہ تعالى نے ان عورتوں کی عدت بیان کی ہے جنہیں حیض نہیں آیا اور طلاق دے دی گئی , اور یہ بات تو ہر کہہ ومہ کو علم ہے کہ طلاق صرف اسے ہی دی جاسکتی ہے جس سے نکاح کیا گیا ہو , غیر منکوحہ عورت کو طلاق دینے کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔

    اور وہ عورت جسے طلاق دے دی گئی جبکہ اسے ابھی حیض آیا ہی نہیں ہے یعنی وہ بالغ ہوئی ہی نہیں ہے تو اسے تین ماہ تک عدت گزارنے کا حکم دیا جا رہا ہے , جبکہ غیر مدخول بہا عورت کے لیے عدت ہے ہی نہیں , تو اس سے یہ بات واضح طور پر سمجھ آتی ہے کہ یہ ایسی نابالغ عورت کی عدت ہے جس سے بلوغت سے قبل ہی نکاح کیا گیا اور ازدواجی تعلقات بھی قائم کیے گئے اور قبل ازبلوغت ہی اسے طلاق بھی دے دی گئی ۔اگر قبل از بلوغت عورت سے نکاح کرنا اور ازدواجی تعلقات قائم کرنا ناجائز ہوتا تو اللہ سبحانہ وتعالى کبھی اس قسم کی عورت کے لیے طلاق کی عدت مقرر نہ فرماتے ۔جب اللہ تعالى کے فرمان , قرآن مجید فرقان حمید سے یہ بات ثابت ہوچکی کہ نابالغہ عورت سے نکاح کیا جاسکتا ہے , اس سے ازدواجی تعلقات قائم کیے جاسکتے ہیں , اور اگر اسے طلاق ہو جائے تو اسے عدت گزارنے کا بھی حکم ہے ۔ تو کسی بھی ایسے شخص کے لیے جو اللہ اور اسکے رسول صلى اللہ علیہ وسلم پر ایمان لاتا ہو , قرآن کو سچی کتاب مانتا ہو , یہ جائز نہیں ہے کہ وہ کہتا پھرے کہ بلوغت سے قبل نکاح ورخصتی عقل کے خلاف ہے !!!

    اور جب قبل ازبلوغت نکاح و رخصتی کا جواز قرآن مجید فرقان حمید میں موجود ہے تو سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کی کمسنی میں شادی اور رخصتی پر اعتراض کرنا کیونکر روا ہوگا ۔جبکہ نو سال کی عمر عورتوں کے بالغ ہونے کے بہت سے دلائل موجو د ہیں اور صرف عورتوں کے ہی نہیں بلکہ مردوں کا بھی اس عمر میں بالغ ہو جانا بعید نہیں ہے بلکہ ایسا ہوا , اور اصحاب رسول صلى اللہ علیہ وسلم میں اسکی مثالیں موجود ہیں ۔

    اللہ تعالى حق کوسمجھنے اور اپنانے کی توفیق عطاء فرمائے۔
    اللهم أرنا الحق حقا وارزقنا إتباعه وأرنا الباطل باطلا وارزقنا اجتنابه آمين
     
    • شکریہ شکریہ x 16
    • زبردست زبردست x 2
    • لسٹ
  2. ‏ستمبر 04، 2011 #2
    شاکر

    شاکر تکنیکی ناظم رکن انتظامیہ
    جگہ:
    جدہ
    شمولیت:
    ‏جنوری 08، 2011
    پیغامات:
    6,595
    موصول شکریہ جات:
    21,360
    تمغے کے پوائنٹ:
    891

    جزاکم اللہ خیرا کثیرا وبارک فیکم
     
  3. ‏ستمبر 05، 2011 #3
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
  4. ‏ستمبر 10، 2011 #4
    طارق بن زیاد

    طارق بن زیاد مشہور رکن
    جگہ:
    saudi arabia
    شمولیت:
    ‏اگست 04، 2011
    پیغامات:
    324
    موصول شکریہ جات:
    1,718
    تمغے کے پوائنٹ:
    139

    jazakAllah khair mohtaram
     
  5. ‏اکتوبر 04، 2011 #5
    ہابیل

    ہابیل سینئر رکن
    جگہ:
    lahore
    شمولیت:
    ‏ستمبر 17، 2011
    پیغامات:
    961
    موصول شکریہ جات:
    2,890
    تمغے کے پوائنٹ:
    225

    جزاک اللہ رفیق بھائی بہت ہی مفید پوسٹ ہے
    یہ ایک ایسا مسلہ تھا جس پر ہم نے بہت ہی کم لوگوں کو انصاف کے ساتھ بات کرتے ہوئے پایا ہمارے اپنے علما بھی اس بات پر بہت کم سمجھانے میں کامیاب ہوئے اللہ آپ کے علم و عمل میں برکت دے امین
     
  6. ‏اکتوبر 04، 2011 #6
    کلیم حیدر

    کلیم حیدر رکن
    جگہ:
    لیہ
    شمولیت:
    ‏فروری 14، 2011
    پیغامات:
    9,403
    موصول شکریہ جات:
    25,973
    تمغے کے پوائنٹ:
    995

    جزاک اللہ واحسن الجزاء فی الدنیا والآخرۃ رفیق بھائی جان
     
  7. ‏اگست 26، 2012 #7
    عمران علی

    عمران علی مبتدی
    جگہ:
    لانڈھی ۔ کراچی
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2012
    پیغامات:
    71
    موصول شکریہ جات:
    38
    تمغے کے پوائنٹ:
    21

    آپ قرآنی آیات سے غلط استدلال اخذ کررہے ہیں۔
    کیونکہ ان آیات میں ان خواتین کا ذکر ہے جنہیں کسی بیماری یا ضیف العمری کی وجہ سے حیض نہیں ہورہا۔
    آپ نے وہ اپنے مؤقف کے حق میں یہ تو بے تکی دلیل فراہم کردی کہ چونکہ جن خواتین کو حیض نہیں آتا اس لیے وہ نابالغ ہیں لیکن یہ دلیل قرآن کریم سے نہ فراہم کرسکے کہ نابالغ کا نکاح قرآن کریم سے ثابت ہے، آئیے ہم آپ کو قرآن کریم ہی سے دلیل دیتے ہیں کہ قرآن کریم کے مطابق نکاح کے لیے بلوغت لازمی شرط ہے۔
    وَابْتَلُوا الْيَتَامَىٰ حَتَّىٰ إِذَا بَلَغُوا النِّكَاحَ فَإِنْ آنَسْتُم مِّنْهُمْ رُشْدًا فَادْفَعُوا إِلَيْهِمْ أَمْوَالَهُمْ ۖ وَلَا تَأْكُلُوهَا إِسْرَافًا وَبِدَارًا أَن يَكْبَرُوا ۚ وَمَن كَانَ غَنِيًّا فَلْيَسْتَعْفِفْ ۖ وَمَن كَانَ فَقِيرًا فَلْيَأْكُلْ بِالْمَعْرُوفِ ۚ فَإِذَا دَفَعْتُمْ إِلَيْهِمْ أَمْوَالَهُمْ فَأَشْهِدُوا عَلَيْهِمْ ۚ وَكَفَىٰ بِاللَّهِ حَسِيبً (سورۃ النساء آیت نمبر چھ)

    اور یتمیوں کو پرکھتے رہو یہاں تک کہ وہ بالغ ہو کر نکاح کی عمر کو پہنچ جائیں پھر (بالغ ہونے پر) اگر ان میں عقل کی پختگی دیکھو تو ان کا مال ان کے حوالے کردو اور اس خوف سے کہ وہ بڑے ہوجائیں گے (یعنی بڑے ہو کر تم سے اپنا مال واپس لے لیں گے) اس کو فضول خرچی اور جلدی میں نہ اڑا دینا۔ جو شخص آسودہ حال ہو اس کو (ایسے مال سے قطعی طور پر) پرہیز رکھنا چاہیئے اور جو بے مقدور ہو وہ مناسب طور پر (یعنی بقدر خدمت) کچھ لے لے اور جب ان کا مال ان کے حوالے کرنے لگو تو گواہ کرلیا کرو۔ اور حقیقت میں تو خدا ہی (گواہ اور) حساب لینے والا کافی ہے

    اب آپ کا یہ اشکال کہ مختلف آب و ہوا والے علاقوں میں لڑکیوں کی سن بلوغت تک پہنچنے کی عمر مختلف ہوتی ہے ، محض غلط نگہی پر مبنی اور کٹ حجتی ہے۔ اور عملی زندگی میں اس کی کوئی اہمیت نہیں، اور نہ ہی اسکی مثال ملتی ہے۔کیا جیکب آباد اور نواب شاہ میں "نو سال" کی بچی کی رخصتی کردی جاتی ہے؟ عرب کی آب و ہوا اب بھی ویسی ہے ، بلکہ اس کی حدت میں تو اور اضافہ ہوا ہے، کیا آج بھی عرب ابھی "نو سال"کی بیٹیوں کی رخصتی کرتے ہیں؟؟؟ مزید برآں اس معاملے کا صرف یہی ایک پہلو نہیں ، اس کا ایک دوسرا خطرناک پہلو جناب محمد مصطفے (صلی اللہ علیہ وسلم) کی ذات اقدس پر لگنے والا داغ بھی ہے۔ کیونکہ اگر حضرت عائشہ کی عمر "نو سال" تھی تو نکاح کے وقت نبی آخرالزمان کی عمر تریپن برس کی تھی۔ فرض کیجیے اگر آج کے اس دور میں اتنی عمر کا کوئی شخض "نو سال " کی بچی سے نکاح کرکے اس سے خلوت کرتا ہے، کیا وہ "اچھے کردار" کا حامل قرار پا سکتا ہے؟؟؟ بات تو واضح ہے، لیکن یہ ہماری بدقسمتی اور کند ذہنی ہے کہ ہم بجائے قرآن کا استدلال درست تسلیم کرنے کے ہم محض اپنے مروجہ عقائد کو درست ثابت کرنے کے لیے جتے ہوئے ہیں، اور کچھ نہیں۔
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  8. ‏اگست 26، 2012 #8
    محمد شاہد

    محمد شاہد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 18، 2011
    پیغامات:
    2,504
    موصول شکریہ جات:
    6,012
    تمغے کے پوائنٹ:
    447

    جزاک اللہ خیرا شیخ محترم رفیق طاہر صاحب
     
  9. ‏اگست 26، 2012 #9
    رفیق طاھر

    رفیق طاھر رکن مجلس شوریٰ رکن انتظامیہ
    جگہ:
    ارض اللہ
    شمولیت:
    ‏مارچ 04، 2011
    پیغامات:
    790
    موصول شکریہ جات:
    3,974
    تمغے کے پوائنٹ:
    323

    آپ نے قرآن مجید میں معنوی تحریف کی ہے !!!
    کیونکہ آنجناب کی پیش کردہ آیت میں "بالغ ہوکر" کے الفاظ موجود نہیں ہیں !
    ترجمہ کرتے ہوئے آپ نے یہ الفاظ اپنی طرف سے داخل کیے ہیں ۔ اللہ سے ڈریں اور قرآن میں تحریف سے باز آجائیں !!!

    رہی بات جن کو حیض نہیں آتا کسی بیماری یا ضعیف العمری کیوجہ سے ا نکے لیے ہماری پیش کردہ آیت میں "یئسن من المحیض" کے الفاظ ہیں اور لفظ "لم یحضن" کا معنى ہے کہ جنہیں حیض آیا ہی نہیں ۔ اور یہ صرف اور صرف نابالغ ہی ہوسکتی ہے ۔ کیونکہ حیض کا آنا ہی بلوغت کی نشانی ہے ۔

    ع
    الزام ہمکو دیتے تھے ‘ قصور اپنا نکل آیا ​
     
  10. ‏اگست 26، 2012 #10
    عمران علی

    عمران علی مبتدی
    جگہ:
    لانڈھی ۔ کراچی
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2012
    پیغامات:
    71
    موصول شکریہ جات:
    38
    تمغے کے پوائنٹ:
    21

    اگر ہم نے غلط ترجمہ کیا ہے تو آنجناب کا بھی فرض بنتا تھا کہ وہ ہمارے سہو کی تصیح فرما دیتے۔اور درست ترجمہ کردیتے تا کہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجاتا۔جہاں تک ماہواری کا سوال ہے تو بہت سے خواتین کو ماہواری کا خون نہیں آتا اور یاد رکھیے کہ ماہواری کی آیات میں بنت سے مخاطب نہیں، بلکہ امراۃ یا نساء سے مخاطب ہے، اور نابابغ بچی سولہ یا سترہ سال تک کی عرب میں "بنت" کہلاتی ہے، "امراۃ" نہیں۔لوگوں کو دھوکہ دینا چھوڑ دیں اور اللہ کے سچے دین کا احیاء کریں۔یاد رکھیں ایک دن آپ کو اسکے حضور حاضری دینی ہے۔ وہاں یہ لفاظی آپکے کچھ کام نہ آئے گی۔
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں