1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

رمضان المبارک کچھ اہم سبق دیتے ہوئےہم سےرخصت ہوگیا

'روزہ' میں موضوعات آغاز کردہ از مقبول احمد سلفی, ‏مئی 27، 2020۔

  1. ‏مئی 27، 2020 #1
    مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی سینئر رکن
    جگہ:
    اسلامی سنٹر،طائف، سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏نومبر 30، 2013
    پیغامات:
    1,303
    موصول شکریہ جات:
    363
    تمغے کے پوائنٹ:
    209

    رمضان المبارک کچھ اہم سبق دیتے ہوئےہم سےرخصت ہوگیا

    تحریر: مقبول احمد سلفی
    اسلامک دعوۃ سنٹر(مسرہ) طائف، سعودی عرب

    جن حالات سے آج دنیا گزر رہی ہےان کی تاریخ رقم ہوتی جارہی ہے ، آنے والی نسلیں ہماری تاریخ پڑھیں گی اور جانیں گی کہ اس میں ان کے لئے بہت کچھ اسباق پائے جاتے ہیں،ممکن ہے مستقبل بہتربنانے کے لئے اپنی اصلاح بھی کرے۔ان نسلوں کو آنے میں ابھی وقت ہے ،پہلے ہمیں یہاں سے گزرنا ہوگا لیکن سوال ہمارے لئے بھی بہت اہم ہے کہ ہم نے رقم ہوتی ہوئی آج کی تاریخ سے کیا کچھ سیکھااور سبق لیا؟
    رمضان آیا اور جیسے لگا لمحوں میں ہم سےرخصت ہوگیامگر اس کی برکتیں سال بھر ختم نہیں ہوتیں بشرطیکہ حاصل کرنے والوں نےماہ خیر وفلاح سے واقعی سعادت وبرکت حاصل کی ہو۔ اللہ کا فرمان ہے : قَدْ أَفْلَحَ مَن تَزَكَّىٰ وَذَكَرَ اسْمَ رَبِّهِ فَصَلَّىٰ (الأعلى:14-15)
    ترجمہ: بے شک اس نے فلاح پائی جو پاک ہوگیا اور جس نے اپنے رب کا نام یاد رکھا اور نماز پڑھتا رہا۔
    اس آیت کی تفسیر میں علامہ ابن کثیر رحمہ اللہ نے لکھا ہے کہ جس نے اپنے نفس کو برے اخلاق سے پاک کیا۔ جوکچھ اللہ نے رسول اللہ ﷺ پر نازل کیا اس کی تابعداری کی۔ اللہ کی رضا اوراس کے احکام وشریعت کی پاسداری کرتے ہوئے نماز کو اپنے وقتوں پر قائم کیا وہ کامیاب ہوگیا۔انتہی۔
    اس آیت کو آیت صیام کے لفظ" لعلکم تتقون " (تاکہ تم پرہیزگار بن سکو)سے جوڑ کر دیکھتے ہیں تو ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ ماہ صیام اور اس کی عبادتیں مومنوں(اس میں نام کے مسلمان داخل نہیں ہیں) کو گناہوں سے پاک اور نفس کو پرہیزگاربنادیتی ہیں ۔ ہمیں اللہ کی بے پایاں رحمتوں سے امیدہے کہ اس ماہ مبارک میں مومنوں کی مغفرت ہوگئی ہوگی اور ہم کامیاب ہونے والوں میں سے ہوجائیں گے ۔ ان شاء اللہ
    ابھی ہماری مٖغفرت ہوگئی اور ہم گناہوں سے پاک ہوگئے لیکن یاد رکھیئے معصیت کا ارتکاب کرنے سے پھر ہم گنہگار اور اللہ کے مجرم ہوجائیں گے اس لئے اپنے نفس کو پاک رکھنااور اسی طہارت وپاگیزگی پر خود کوباقی رہنا بہت ہی اہم مسئلہ ہے جو اکثر کی نظروں سے اوجھل ہوتا ہے ۔ ذرا غورفرمائیں کہ اللہ نے کامیابی کے لئے کیا کہاہے ؟ اللہ فرماتا ہے کہ "بے شک اس نے فلاح پائی جو پاک ہوگیا اور جس نے اپنے رب کا نام یاد رکھا اور نماز پڑھتا رہا"۔یہاں نمازمراد سے پنچ وقتہ نمازوں کو اپنے وقتوں پر قائم کرنا اور اس کی محفاظت کرتے رہناہےجیساکہ مختلف مفسرین نے اس آیت کی تفسیر میں ذکر ہے ۔ مطلب یہ ہوا کہ اصل کامیابی اس کی ہے جو اللہ کے احکام وشریعت کی پاسداری کرتااوراس کی رضا کے واسطے ہمیشہ نمازوں کی پابندی کرتے رہتا ہے ۔ کسی خاص موقع سےعبادت کرلینا کمال نہیں ہے بلکہ سداعبادت پر قائم رہنا کمال ہے اور یہی مطلوب مومن بھی ہے جیساکہ اللہ کا فرمان ہے :
    فَاسْتَقِمْ كَمَا أُمِرْتَ (هود: 112)
    ترجمہ: پس اے محمد!تم اور تمہارے وہ ساتھی جو (کفر و بغاوت سے ایمان و طاعت کی طرف) پلٹ آئے ہیں، ٹھیک ٹھیک راہ راست پر ثابت قدم رہو۔
    یہی بات نبی ﷺ نے ایک موقع سے سوال کرنے والے صحابی سفیان بن عبداللہ رضی اللہ عنہ کو بتائی جب انہوں نے آپ سے سوال کیا کہ مجھے اسلام کی ایک ایسی بات بتلائیں کہ پھرآپ کے بعد کسی سے اس کے متعلق سوال نہ کروں۔تو آپ ﷺ نے فرمایا: "قل آمنت بالله ، ثم استقم "(صحیح مسلم :38)کہو میرا رب اللہ ہے اور اسی پر قائم رہو۔
    اس لئے گزرتے ہوئے رمضان سے ایک اہم سبق یہ ملتا ہے کہ بلاشبہ رمضان گزرگیا ہے مگر اللہ کا ذکر باقی ، اس کا دین اور اس کی عبادت باقی ہے ، ہم اس کی حمدوثنا کرتےرہیں گے ، اس کے دین پر چلتے رہیں گے اور اس کی عبادت مرتے دم تک کرتے رہیں گے جیساکہ فرمان الہی ہے :
    وَاعْبُدْ رَبَّكَ حَتَّىٰ يَأْتِيَكَ الْيَقِينُ (الحجر:99)
    ترجمہ:اور اپنے رب کی عبادت کرتے رہیں یہاں تک کہ آپ کو موت آجائے ۔
    کورونا حالات کی وجہ سے رمضان المبارک میں مساجد بندہوجانےسے ہم سب کبیدہ خاطر تھے،آج بھی اس وجہ سے ہم میں مایوسی ہے مگر اللہ کے دین میں بڑی کشادگی اور تسلی کا سامان ہے ، یہی گزشتہ آیت دیکھیں جو نبی ﷺ کی تسلی کے لئےاس وقت نازل ہوئی جب مشرکین مکہ آپ کو طرح طرح سے ستاتے، آپ کا استہزا کرتے اور دیوانہ پاگل کر تکلیف پہنچاتے تھے ، اس سے آپ کو رنجیدہ اور کبیدہ خاطرہوجاتے ۔ اللہ نے آپ کو تسلی دیتے ہوئے تسبیح بیان کرنے اور سجدہ کرنے کا حکم دیا ۔ آپ کو کہا اپنے رب کے لئے نماز پڑھتے رہیں اور اس کے لئے سجدہ وتسبیح میں لگے رہیں اسی میں آپ کو قلبی سکون ملے گا اوریوں آپ کو اللہ کی مددبھی ملتی رہے گی ۔
    جس طرح اللہ تعالی نے حزن وملال کے موقع پراپنے نبی ﷺ کوعبادت وذکر کے ذریعہ ڈھارس بندھائی ہے اسی طرح اس میں ہمار ی تسلی کا بھی سامان ہے ۔ ہم سے رب کی عبادت مطلوب ہے لہذا ہم جہاں بھی رہیں اور جس حال میں رہیں اپنے پروردگار کی حمدوثنا بیان کرتے رہیں اور پنچ وقتہ نمازوں کی محافظت کرتے رہیں اس سے دل کو سکون ملے گا اور اللہ کی مدد حاصل رہے گی ۔
    آج کے حالات اور رمضان المبارک سے عام مسلمانوں کو یہ سبق ملا کہ ہم نے دین کے وہ ضروری احکام بھی نہیں سیکھے تھے جن سے واسطہ روزمرہ کاہے ، یہی وجہ ہے کہ رمضان جیسےعبادت کے موسم میں کتنے گھر نماز،تلاوت اور قیام اللیل سے سونے ہوں گے کیونکہ ان کے گھر کوئی نماز پڑھانے والا نہیں اورکوئی قرآن جاننے والے نہیں تھا ۔کیا یہ کورونا ہمیں سبق نہیں دیتا ہے کہ دین کو اتنا ہم میں سے ہرکوئی سیکھے جو کم ازکم عبادت کے لئے کافی ہو؟
    مساجد بند ہوجانے میں ان لوگوں کے لئے لمحہ فکریہ ہے جو صرف جمعہ کی عبادت کرتے تھے ، ان سے مسلسل جمعہ چھوٹ رہا ہے حتی کہ رمضان المبارک کے جمعہ بھی چھوٹ گئے ۔ ایسے لوگوں کے لئے نصیحت ہے کہ نماز صرف ہفتہ میں فرض نہیں ہے بلکہ دن ورات میں پانچ دفعہ فرض ہے ، یہ بات دین میں لکھی ہوئی پہلے سےموجود ہے اور آج کورونا کی وجہ سےاسقاط جمعہ وجماعت نے احساس بھی دلادیا ۔اے کاش کہ ہم نصیحت حاصل کریں۔
    اس طرح کے بے شمار اسباق مل جائیں گے لیکن میری نظر میں تین اہم تھے جن کا میں نے ذکر کیا ہے ۔ اس کا خلاصہ یہ ہے کہ کورونا کے اس دور میں رمضان سے ایک سبق تو یہ ملاجوکہ ہررمضان کا سبق ہے کہ ہماری کامیابی دراصل اس میں ہے کہ پنچ وقتہ نمازوں کی محافظت کرتے رہیں گے خواہ قید رہیں یا آزاد رہیں ۔دوسرا سبق یہ ہے کہ دنیاوی علوم کے ساتھ ساتھ دین کی بنیادی تعلیم بھی حاصل کریں تاکہ خود سے بھی رب کی بندگی ، اس کی حمد وثنا اور قرآن کی تلاوت کرسکیں ۔ کتنی عجیب ہے کہ دنیا کی بڑی سے بڑی ڈگری حاصل کرلینے کے باوجود ہمیں نماز پڑھنا اور قرآن کی تلاوت کرنا نہ آئے ۔ تیسری بات یہ ہے کہ جو لوگ دین پر اپنی مرضی سے عمل کرتے تھے وہ سنبھل جائیں ، رب کی اس طور بندگی کریں جس طرح کرنے کا حکم ہوا ہے ۔
    اللہ سے دعا ہے کہ وہ رمضان میں انجام دئے گئے ہمارے اعمال کو قبول فرماکراسے ہماری نجات ذریعہ بنائے ، ہم سے کورونا کی وبا دورکردے اور ہمیں مرتے دم تک اپنی بندگی کی توفیق سے نوازے۔ آمین
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں