1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کیا فضائل اعمال میں ضعیف روایات پر عمل کیا جاسکتا ہے؟؟؟

'تبلیغی جماعت' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏اگست 20، 2013۔

  1. ‏اگست 20، 2013 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    17,061
    موصول شکریہ جات:
    6,523
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا فضائل اعمال میں ضعیف روایات پر عمل کیا جاسکتا ہے؟؟؟

    موضوع روایت 1.jpg من گھڑت اور غیر منصوص فضائل اعمال کے قائلین کا دعویٰ ہے کہ :
    ترغیب و ترہیب کے باب میں ضعیف حدیثوں پر عمل کرنا جائز ہے ۔
    مگر ان کے اس دعویٰ کی کوئی شرعی بنیاد نہیں ہے ۔
    کیونکہ ترغیب و ترہیب یا دوسرے الفاظ میں فضائل اعمال بھی اُسی طرح کے دینی امور ہیں جس طرح فرائض و واجبات اور تاکیدی سنن ۔
    ہر دینی اور شرعی معاملہ ، چاہے وہ فرض ہو یا سنت یا مستحب یا حرام ہو یا مکروہ ۔۔۔ اپنے ثبوت کے لیے اللہ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کے صریح بیان اور ارشاد کا محتاج ہے ۔
    جبکہ ضعیف حدیث کی نسبت رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) سے یا تو صحیح نہیں ہے یا مشکوک ہے یا پھر محض ظن و گمان ۔۔۔ اس لیے کہ ضعیف ایک مبہم لفظ ہے ۔ اس کی متعدد قسمیں ہیں ۔
    ضعیف حدیث کے نام پر بعض لوگ جن اعمال کو دینی اعمال کہہ کر رواج دے رہے ہیں وہ درحقیقت اُن کے اپنے اعمال ہیں جن میں سے بیشتر ، دین میں اضافہ ، یعنی بدعت میں شمار ہوتے ہیں ۔ اس لیے اس مبہم اور غیر واضح دعویٰ کہ :
    فضائل اعمال میں ضعیف حدیث پر عمل کرنا جائز ہے
    سے دھوکا نہیں کھانا چاہئے ۔
    1)۔ کبار محدثین و اصولین (رحمہم اللہ عنہم) ، ضعیف حدیث پر عمل کرنے کو نہ تو احکام میں جائز سمجھتے ہیں اور نہ ہی فضائل اعمال میں ۔
    ان محدثین کے گروہ میں :
    امام یحییٰ بن معین ، امام بخاری ، امام مسلم ، امام ابن حبان ، امام ابن حزم ، امام ابن العربی المالکی ، امام ابو شامہ المقدسی ، امام ابن تیمیہ ، امام شاطبی ، امام خطیب بغدادی اور علامہ شوکانی ۔۔۔
    جیسی عظیم الشان ہستیاں شامل ہیں ۔
    بحوالہ : علامہ محمد جمال الدین قاسمی کی قواعد التحدیث من فنون مصطلح الحدیث ۔ صفحہ : 113
    2)۔ امام یحییٰ بن معین کے متعلق ابن سید الناس کہتے ہیں کہ امام صاحب ضعیف حدیث پر عمل کو مطلقاََ جائز نہیں سمجھتے تھے ، نہ تو احکام میں اور نہ ہی فضائل میں ۔
    بحوالہ : ابن سید الناس کی عیون الاٴثر
    3)۔ امام ابوبکر ابن العربی کے متعلق علامہ سخاوی کہتے ہیں کہ امام صاحب ضعیف حدیث پر عمل کو مطلقاََ جائز نہیں سمجھتے تھے ، نہ تو احکام میں اور نہ ہی فضائل میں ۔
    بحوالہ : علامہ سخاوی کی فتح المغیث
    4)۔ امام بخاری کا اپنی صحیح میں شرط اور امام مسلم کا ضعیف راویوں پر تشنیع کرنا اور صحیحین میں ان سے کسی روایت کی تخریج نہ کرنا بھی اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ ان دونوں ائمہ کے نزدیک ضعیف روایت پر عمل مطلق طور پر جائز نہیں ۔
    5)۔ امام ابن حزم اپنی کتاب الملل و النحل میں فرماتے ہیں :
    وہ روایت جس کو اہلِ مشرق و مغرب نے یا گروہ نے گروہ سے یا ثقہ نے ثقہ سے نقل کیا ، یہاں تک کہ سند رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) تک پہنچ گئی ۔۔۔ لیکن اگر کسی طریق میں کوئی ایسا راوی ہے جو کذب یا غفلت یا مجہول الحال ہونے کے ساتھ ساتھ مجروح ہے ۔۔۔ تو اُس روایت کا بیان کرنا یا اُس کی تصدیق کرنا یا اس سے کچھ اخذ کرنا حلال نہیں ہے ۔
    6)۔ ضعیف روایت کو مطلق طور پر نہ لینے کا ذکر درج ذیل ائمہ و محدثین بھی اپنی کتب میں رقم کرتے ہیں :
    (1)۔ مشہور حنفی عالم محمد زاہد کوثری ۔( مقالاتِ کوثری ، ص : 45 ، 46 )
    (2)۔ علامہ احمد شاکر ۔( الباعث الحثیت شرح اختصار علوم الحدیث ، ص : 86 ، 87 )
    (3)۔ علامہ شوکانی ۔( الفوائد المجموعۃ فی الاحادیث الموضوعۃ ، ص : 283 )
    (4)۔ امام ابن تیمیہ ۔( قاعدہ جلیلۃ فی التوسل و الوسیلۃ ، ص : 112 ، 113 )
    (5)۔ علامہ ناصر الدین البانی ۔( صحیح جامع الصغیر ، ص : 51 )
    دین کو صحیح طریقے سے ہم مسلمانوں تک پہنچانے والے متذکرہ بالا ائمہ و محدثین کی کاوشوں کے خلاف اگر آج کے چند علمائے دین فتوے دے کر ضعیف احادیث پر عمل کو جائز قرار دیتے ہیں تو ان کا معاملہ اللہ کے سپرد ہے ۔
    اور جو لوگ اس قسم کے فتووں کو معاشرے میں رائج کرنے پر زور دیتے ہیں ۔۔۔ ان کا معاملہ بھی اللہ ہی کے سپرد کیا جانا چاہئے ۔
     
    • پسند پسند x 2
    • متفق متفق x 2
    • زبردست زبردست x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  2. ‏اگست 20، 2013 #2
    محمد وقاص گل

    محمد وقاص گل سینئر رکن
    جگہ:
    راولپنڈی
    شمولیت:
    ‏اپریل 23، 2013
    پیغامات:
    1,033
    موصول شکریہ جات:
    1,678
    تمغے کے پوائنٹ:
    310

    جزاک اللہ خیر بھائی بہت خوب۔۔۔
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں