• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

جنید جمشید ایک اور بڑے تنازعے میں پھنس گئے !

محمد علی جواد

سینئر رکن
شمولیت
جولائی 18، 2012
پیغامات
1,988
ری ایکشن اسکور
1,550
پوائنٹ
304
شوبز، موسیقی کی دنیا۔۔۔ اتنی رنگین اور نوٹ چھاپنے کی تیز ترین مشین ،اور شہرت و پذیرائی کی دلفریب دنیا ہے کہ کسی کو بھی ’’ پٹڑی سے اتار سکتی ہے ‘‘
متفق
 

مون لائیٹ آفریدی

مشہور رکن
شمولیت
جولائی 30، 2011
پیغامات
640
ری ایکشن اسکور
408
پوائنٹ
127
غیر محرم سے مصافحہ کرنا جائز نہیں اور نبی کریم ﷺ کی روشنی میں اسے حرام قرار دیا جاسکتا ہے۔ بخاری شریف میں حضرت عائشہ صدیقہؓ سے روایت ہے کہ بنی کریم ﷺ عورتوں سے زبانی بیعت لیا کرتے تھے اور حضورﷺ کے ہاتھ نےکبھی کسی اجنبی عورت کے ہاتھ کو نہیں چھوا تھا۔
اور ایک روایت میں ہے۔ مفہوم ۔
کہ کوئی غیر محرم سے ہاتھ ملایا جائے ، اس کے سر میں کیل ٹونکنے سے بھی زیادہ نقصان دہ ہے ۔
اور کوئی بھول یا خطاء سے کوئی ایسی حرکت کریں تو پھر یہ قاعدہ ہے کہ
رَبَّنَا لاَ تُؤَاخِذْنَا إِن نَّسِينَا أَوْ أَخْطَأْنَا.
(الْبَقَرَة ، 2 : 286)
’’اے ہمارے رب! اگر ہم بھول جائیں یا خطا کر بیٹھیں تو ہماری گرفت نہ فرما‘‘
واللہ اعلم ۔
 

عبداللہ حیدر

مشہور رکن
شمولیت
مارچ 11، 2011
پیغامات
316
ری ایکشن اسکور
1,016
پوائنٹ
120
السلام علیکم،
جس جماعت کے ساتھ جنید بھائی صاحب وابستہ ہیں اس کے منھج اور عقائد کی غلطیوں کو ایک طرف رکھیے، یہ ان کا اور تبلیغی جماعت کا مسئلہ ہے۔ ہمیں یہ دیکھنا چاہیے کہ ایسے میں اصلاح کا نبوی طریقہ کیا ہے، اس کی ایک مثال صحیح البخاری کی اس حدیث میں ملتی ہے:
عَنْ ابْنِ مَسْعُودٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ أَنَّ رَجُلًا أَصَابَ مِنْ امْرَأَةٍ قُبْلَةً فَأَتَی رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَذَکَرَ ذَلِکَ لَهُ فَأُنْزِلَتْ عَلَيْهِ وَأَقِمْ الصَّلَاةَ طَرَفَيْ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِنْ اللَّيْلِ إِنَّ الْحَسَنَاتِ يُذْهِبْنَ السَّيِّئَاتِ ذَلِکَ ذِکْرَی لِلذَّاکِرِينَ قَالَ الرَّجُلُ أَلِيَ هَذِهِ قَالَ لِمَنْ عَمِلَ بِهَا مِنْ أُمَّتِي (صحیح البخاری کتاب التفسیر ان ا لحسنات یذھبن السیئات)
"ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ ایک دفعہ ایک آدمی نے غیر عورت کا بوسہ لیا اور پھر (شرمندگی کے عالم میں) یہ بات رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے سامنے آکر بیان کی اس وقت یہ آیت نازل فرمائی گئی کہ:
وَاَقِمِ الصَّلٰوةَ طَرَفَيِ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِّنَ الَّيْلِ ۭ اِنَّ الْحَسَنٰتِ يُذْهِبْنَ السَيِّاٰتِ ۭ ذٰلِكَ ذِكْرٰي لِلذّٰكِرِيْنَ سورۃ ھودآیت 114
"اور نماز قائم کرو، اس وقت جب دن شروع ہونے کو ہو اور اس وقت جب ختم ہونے کو ہو، نیز اس وقت جب رات کا ابتدائی حصہ گزر رہا ہو۔ْ یاد رکھو نیکیاں برائیوں کو دور کردیتی ہیں، یہ نصیحت ہے ان لوگوں کے لیے جو نصیحت پذیر ہیں۔'
تو اس آدمی نے عرض کیا " یہ حکم صرف میرے لئے ہے یا سب کے لئے؟ " نبی صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے ارشاد فرمایا میری امت میں جو بھی غلطی کرے اس کے لئے یہ حکم ہے"
والسلام علیکم
 

محمد علی جواد

سینئر رکن
شمولیت
جولائی 18، 2012
پیغامات
1,988
ری ایکشن اسکور
1,550
پوائنٹ
304
السلام علیکم،
جس جماعت کے ساتھ جنید بھائی صاحب وابستہ ہیں اس کے منھج اور عقائد کی غلطیوں کو ایک طرف رکھیے، یہ ان کا اور تبلیغی جماعت کا مسئلہ ہے۔ ہمیں یہ دیکھنا چاہیے کہ ایسے میں اصلاح کا نبوی طریقہ کیا ہے، اس کی ایک مثال صحیح البخاری کی اس حدیث میں ملتی ہے:
عَنْ ابْنِ مَسْعُودٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ أَنَّ رَجُلًا أَصَابَ مِنْ امْرَأَةٍ قُبْلَةً فَأَتَی رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَذَکَرَ ذَلِکَ لَهُ فَأُنْزِلَتْ عَلَيْهِ وَأَقِمْ الصَّلَاةَ طَرَفَيْ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِنْ اللَّيْلِ إِنَّ الْحَسَنَاتِ يُذْهِبْنَ السَّيِّئَاتِ ذَلِکَ ذِکْرَی لِلذَّاکِرِينَ قَالَ الرَّجُلُ أَلِيَ هَذِهِ قَالَ لِمَنْ عَمِلَ بِهَا مِنْ أُمَّتِي (صحیح البخاری کتاب التفسیر ان ا لحسنات یذھبن السیئات)
"ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ ایک دفعہ ایک آدمی نے غیر عورت کا بوسہ لیا اور پھر (شرمندگی کے عالم میں) یہ بات رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے سامنے آکر بیان کی اس وقت یہ آیت نازل فرمائی گئی کہ:
وَاَقِمِ الصَّلٰوةَ طَرَفَيِ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِّنَ الَّيْلِ ۭ اِنَّ الْحَسَنٰتِ يُذْهِبْنَ السَيِّاٰتِ ۭ ذٰلِكَ ذِكْرٰي لِلذّٰكِرِيْنَ سورۃ ھودآیت 114
"اور نماز قائم کرو، اس وقت جب دن شروع ہونے کو ہو اور اس وقت جب ختم ہونے کو ہو، نیز اس وقت جب رات کا ابتدائی حصہ گزر رہا ہو۔ْ یاد رکھو نیکیاں برائیوں کو دور کردیتی ہیں، یہ نصیحت ہے ان لوگوں کے لیے جو نصیحت پذیر ہیں۔'
تو اس آدمی نے عرض کیا " یہ حکم صرف میرے لئے ہے یا سب کے لئے؟ " نبی صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے ارشاد فرمایا میری امت میں جو بھی غلطی کرے اس کے لئے یہ حکم ہے"
والسلام علیکم
وعلیکم سلام -

متفق -
لیکن عقیدے کا معامله زیادہ حساس ہے -
 
شمولیت
اگست 11، 2013
پیغامات
17,116
ری ایکشن اسکور
6,780
پوائنٹ
1,069
جنید جمشید کی متنازع تصاویر کی حقیقت سامنے آگئی۔۔۔
اہم ترین انکشافات دیکھیں۔۔۔ http://www.pkvoices.com/?p=10086

کیا واقعی یہ حقیقت ہے یا پھر جنید جمشید کا دفاع
 
Top