• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

پروفیسر ڈاکٹر محمد طاہر القادری : ایک تجزیاتی مطالعہ

ابوالحسن علوی

علمی نگران
رکن انتظامیہ
شمولیت
مارچ 08، 2011
پیغامات
2,524
ری ایکشن اسکور
11,550
پوائنٹ
641
خلاصہ کلام
پروفیسر صاحب کے بارے اس وقت دو انتہائیں ہمارے معاشرے میں موجود ہیں۔ ایک تو ان کے مداحین ہیں جو انہیں شیخ الاسلام، مجتہد مطلق اور قبلہ حضور سے کم درجہ دینے کو تیار نہیں ہیں اور دوسرے ان کے شدید ناقدین ہیں جو انہیں طاہر الپادری، مرتد اور صلیبیوں کا مفتی جیسے القابات سے نوازتے ہیں۔ ایسے میں اس بات کی بہت ضرورت محسوس ہوتی ہے کہ پروفیسر صاحب کے علمی، فکری، معاشرتی، اخلاقی اور روحانی بگاڑ و فساد پر معتدل نقد کی جائے کہ جس میں تکفیر پر مبنی فتوی کی زبان استعمال نہ ہوئی ہو۔ ایسی ہی ایک نقد ہم ذیل میں نقل کر رہے ہیں جو پروفیسر صاحب کے متجددانہ افکار پر مشتمل ایک کتاب 'متنازعہ ترین شخصیت' پر محمد خالد مصطفوی کا ایک عادلانہ تبصرہ ہے:

'' متنازعہ ترین شخصیت، دراصل پروفیسر طاہر القادری کے 'سائیکل سے لینڈ کروزر تک' کے ارتقائی سفر کا جائزہ ہے جس پر نہایت مثبت انداز میں تنقید کی گئی ہے۔ جناب طاہر القادری کا المیہ یہ ہے کہ وہ ہمیشہ قول وفعل کے تضاد کا شکار رہے ہیں۔ اس داخلی وخارجی دوہرے پن نے ان کی شخصیت کو بری طرح مسخ کر کے رکھ دیا ہے۔ ایک طرف وہ بے نظیر بھٹو کو اپنی بہن قرار دہتے ہیں تو دوسری طرف محترمہ کو کرپٹ بھی کہتے ہیں۔ ایک طرف وہ میاں نواز شریف کو سیکورٹی رسک قرار دیتے ہیں تو دوسری طرف انہیں ایٹمی دھماکہ کرنے پر مبارک باد بھی پیش کرتے ہیں۔ ایک طرف کہتے ہیں کہ احتجاج اور ریلیوں سے ملک میں بدامنی پھیلے گی ، دوسری طرف وہ خود بڑے اہتمام سے احتجاجی جلسے، جلوس اور ریلیاں منعقد کرواتے ہیں۔ ادھر کلچرل میلہ کا انعقاد کرواتے ہیں تو ادھر میلاد کانفرنس کا اہتمام بھی دھوم دھام سے کرتے ہیں۔

علامہ طاہر القادری نے گزشتہ کئی برسوں سے ماڈریٹ، پروگریسو اور سیکولر شخصیت کا گاؤن پہن رکھا ہے۔ وہ خواب، کہانیاں، بے وقت کی راگنیاں اور اوٹ پٹانگ باتوں سے قوم کو محظوظ کرتے رہتے ہیں۔ ان کی پریس کانفرنسیں رطب ویابس، لاحاصل اور مناقضات سے بھرپور ہوتی ہیں۔ بہترین درسگاہ 'ادارہ منہاج القرآن' جن عظیم الشان مقاصد کے حصول کے لیے قائم کیاگیا تھا، بدقسمتی سے وہ پروفیسر طاہر القادری کی منفی سیاست کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں۔ مہاتما بننے کی اندھی خواہش اور خود کو 'عقل کل' سمجھنے کے نفسیاتی عارضے کا شکار ہو کر ان کی شخصیت 'ایسٹریکٹ آرٹ' کا شہکار بن چکی ہے۔ یہا ں سے فارغ ہونے والے نوجوان جنہوں نے کار زمانہ کی باگ دوڑ سنبھالنا تھی، اپنی اوچھی حرکات کی بدولت معاشرے میں ہدف تضحیک بن کر رہ گئے ہیں۔ 'مصطفوی انقلاب' کے نعرہ سے دستبرداری کے بعد 'وزیر اعظم طاہر القادری' ان کا نصب العین ٹھہرا۔

نجانے انہیں کس کی نظر کھا گئی کہ ان کا معیار ایک مسخرے کی سطح سے بھی نیچے گر گیا۔ احسن تقویم کی بلندیوں کی طرف گامزن اسفل السافلین کی اتھاہ گہرائیوں میں گر گئے۔ قال اللہ و قال الرسول کی ایمان افروز آوازوں سے مہکنے والی کلاس روموں میں اب 'بن کے مست ملنگ رہیں گے، طاہر تیرے سنگ رہیں گے' کے ترانے، بھنگڑے ڈالتے ہوئے، فلمی طرز پر گانے گائے جاتے ہیں۔ انا للہ ونا لیہ راجعون۔ شاید انہیں بتایا گیا ہو کہ اس 'مجاہدہ' سے عرفان حاصل ہوتا ہے جبکہ وہ اس عاشقی میں عزت سادات بھی گنوا بیٹھے ہیں۔ اہل بصیرت اس صورتحال کو زوال اور عذاب سے تعبیر کرتے ہیں۔ واقعی جہاں لنگڑے بھنگڑے ڈالیں، اندھے بیچیں، سر کٹے دستاریں فروخت کریں، گنجے 'مقابلہ آرائش گیسو' کا انعقاد کروائیں اور ٹنڈے شمشیر زن ہونے کا دعوی کریں، وہاں سے کس خیر کی توقع کی جا سکتی ہے؟ ایسی پستی ہے اہل نظر، آشوب چشم اور اہل فکر ،ضیق النفس میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ ستم تو یہ ہے کہ انہیں اس ناقابل تلافی نقصان کا احساس بھی باقی نہیں رہتا۔

وائے ناکامی متاع کارواں جاتا رہا
کارواں کے دل سے احساس زیاں جاتا رہا

جناب طاہر القادری کا یہ جرم نہایت سنگین ہے کہ انہوں نے محض سستی شہرت ، دولت اور سیاسی اقتدار کی خاطر ایسے خوابوں کا سہارا لیا جن میں حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی صریحا توہین پائی جاتی ہے۔ ایسا سوچا بھی نہیں جا سکتا کہ کوئی 'نابغہ روزگار' اس حد تک ذہنی قلاش ہو سکتا ہے۔''
ایک تجویز
پروفیسر صاحب کے بارے ہماری تجویز یہ ہے کہ ان کی ہر ایک کتاب پر کتاب وسنت کی روشنی میں ایک جامع مانع تبصرہ ہونا چاہیے اور اگر ان کی ۴۰۰ کتب ہیں تو ان کتب کے بارے ۴۰۰ ناقدانہ مضامین مرتب کر کے انہیں ایک انسائیکلوپیڈیا کے طور پر شائع کر دیا جائے۔ اللہ سے دعا ہے کہ اللہ تعالی کسی بھائی سے یہ کام لے لیں۔ اور کچھ زیادہ نہ سہی اگر اتنا کام بھی ہو جائے کہ ان کی ہر کتاب میں جو روایات اور احادیث موجود ہیں ان کی تحقیق یعنی تصحیح و تضعیف ایک علیحدہ کتابچہ کی صورت میں شائع ہو جائے تو رطب و یابس پر مبنی اس فکر کی بنیادیں ہلانے کے اتنا کام بھی کافی ہے۔ اور جو ہمارے بھائی درر نامی ویب سائیٹ کو استعمال کرتے ہیں ان کے لیے تو یہ کام نسبتا اور بھی آسان ہے۔
 

ابوالحسن علوی

علمی نگران
رکن انتظامیہ
شمولیت
مارچ 08، 2011
پیغامات
2,524
ری ایکشن اسکور
11,550
پوائنٹ
641
مصادر ومراجع
۱۔ پروفیسر طاہر القادری ؛ علمی وتحقیقی جائزہ، مفتی غلام سرور قادری،مصباح القرآن، لاہور،١٩٨٨ء
۲۔ متنازعہ ترین شخصیت، محمد نواز کھرل، فاتح پبلشرز، لاہور، ٢٠٠٢ء
۳۔ 'ڈاکٹر طاہر القادری کی علمی خیانتیں' حکیم محمد عمران ثاقب،منہاج القرآن والسنة، گوجرانوالہ، ٢٠٠٨ء
۴۔ 'طاہر القادری ؛ خادم دین متین یا افاک اثیم' حکیم محمد عمران ثاقب، منہاج القرآن والسنة، گوجرانوالہ، ٢٠١١ء
۵۔ ڈاکٹر محمد طاہر القادری ؛ میدان کارزار میں، انکشاف پبلشرز، لاہور
Welcome to Minhaj-ul-Quran International
Magazines by Minhaj-ul-Quran International
Welcome to Islamic Library by Shaykh-ul-Islam Dr Muhammad Tahir-ul-Qadri - Urdu, English & Arabic Books on Islam
منہاج انسائیکلوپیڈیا پر خوش آمدید - منہاج انسائیکلوپیڈیا
Welcome to Minhaj Sisters by MQI Women League
Welcome to Pakistan Awami Tehreek
Web Sites of Minhaj ul Quran International - Minhaj-ul-Quran International
 

ناصر رانا

رکن مکتبہ محدث
شمولیت
مئی 09، 2011
پیغامات
1,171
ری ایکشن اسکور
5,451
پوائنٹ
306
مجھے پروفیسر صاحب کے بارے میں معلومات کا ہی انتظار تھا
جزاک اللہ خیرا
بہت ہی معلوماتی تھریڈ ،جزاک اللہ خیرا شیخ
اللہ تعالیٰ آپ کے علم و عمل میں اضافہ فرماے، آمین
 

باذوق

رکن
شمولیت
فروری 16، 2011
پیغامات
888
ری ایکشن اسکور
4,010
پوائنٹ
289
پروفیسر صاحب کے "فن و شخصیت" سے متعلق ایک اہم جائزہ شاید سہواً چھوٹ گیا ہے۔
یہ جائزہ جناب جاوید احمد غامدی کی المورد جماعت کی طرف سے شائع ہوا ہے۔ شاید اس کی پی۔ڈی۔ایف فائل بھی المورد ویب سائیٹ پر موجود ہے۔
 

عامر

رکن
شمولیت
مئی 31، 2011
پیغامات
151
ری ایکشن اسکور
826
پوائنٹ
86
السلام علیکم شیخ صاحب،

جزاک اللہ خیرا!

ایک ریکویسٹ یہ ہے کہ اگر ان تمام شواہد کا ویڈیو لیکچر بنا دیا جاے تو ایک مدلل ڈاکیو مینٹری محفوظ ہو جائیگی چاہے بعد میں یہ لوگ یو ٹیوب سے ان کلپس کو ہٹالیں۔

مثال جیسا کہ شیخ تو صیف الرحمان الراشدی حفظہ اللہ کے ویڈیو لیکچرس ہوتے ہیں۔
 

ابوالحسن علوی

علمی نگران
رکن انتظامیہ
شمولیت
مارچ 08، 2011
پیغامات
2,524
ری ایکشن اسکور
11,550
پوائنٹ
641
باذوق بھاءی نے توجہ دلائی بعض اور ساتھیوں نے بھی پروفیسر صاحب کے کچھ مزید شذوذات کی طرف توجہ دلائی ہے مثلا شرک سے متعلق بعض تحریروں کے حوالہ جات وغیرہ۔ ان شاء اللہ اسے اس مضمون میں شامل کر لیا جائے گا۔
جہاں تک اس کی ویڈیو بنانے کا تعلق ہے تو مجھے اس کا ذاتی طور کچھ بھی تجربہ نہیں ہے۔ کوئی بھائی ان لنکس سے ویڈیو داؤن لوڈ کر کے شاید کوئی ویڈیو بنا دیں۔ شاید ارسلان بھائی کوئی بہتر تجویز دے سکیں۔
 

جاسم منیر

مبتدی
شمولیت
مارچ 09، 2011
پیغامات
6
ری ایکشن اسکور
41
پوائنٹ
0
جزاک اللہ خیرا بھائی
ماشاءاللہ بہت ہی زبردست انداز سے آپ بات رکھی۔
باذوق بھاءی نے توجہ دلائی بعض اور ساتھیوں نے بھی پروفیسر صاحب کے کچھ مزید شذوذات کی طرف توجہ دلائی ہے مثلا شرک سے متعلق بعض تحریروں کے حوالہ جات وغیرہ۔ ان شاء اللہ اسے اس مضمون میں شامل کر لیا جائے گا۔
انتظار رہے گا ان شاءاللہ۔
 
Top