• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کفر دون کفر کے متعلق ڈاکٹر طالب الرحمٰن حفطہ اللہ کا موقف

شمولیت
اگست 16، 2011
پیغامات
58
ری ایکشن اسکور
317
پوائنٹ
0
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
یقیناً ڈاکٹر صاحب نے جو یہ فرمایا ہے کہ :
دیکھیں یہ ایک اصول ہے کفر دون کفر کا، یعنی ایسا کفر کہ جس سے انسان۔ ۔ ۔ ۔۔۔
ایک تو کفر وہ ہے کہ جس سے انسان ملت اسلامیہ سے خارج ہو جاتا ہے، کافر بن جاتا ہے
اور ایک ایسا کفر ہے جس سے انسان ملت اسلامیہ سے خارج نہیں ہوتا، صرف گناہ گار ہوتا ہے
اور ایک کو کفر اکبر بھی کہتے ہیں
اور دوسرے کو کفر اصغر بھی کہتے ہیں
اسی طرح شرک اکبر بھی ہے جو انسان کو ملت سے خارج کردیتا ہے
اور شرک اصغر بھی ہے جو انسان کو ملت سے خارج نہیں کرتا، جیسا کہ ریا کاری ہے یہ شرک اصغر ہے اس سے انسان گناہ گار ضرور ہوتا ہے اور اس سے انسان کافر نہیں بنتا
بالکل صحیح اور حق فرمایا ہے ۔کہ کفر اصغر انسان کو ملت اسلامیہ سے خارج نہیں کرتا بلکہ ایک انسان کفر اصغر کے نتیجے میں گناہ گار ہوتا ہے۔لیکن ڈاکٹر صاحب کے قول پر غور کریں انہوں نے جس دوسری بات کی وضاحت فرمائی ہے کہ :
ایک تو کفر وہ ہے کہ جس سے انسان ملت اسلامیہ سے خارج ہو جاتا ہے، کافر بن جاتا ہے
تو یقیناً یہ بات بھی ڈاکٹر صاحب کی بالکل صحیح ہے ۔اور ڈاکٹر صاحب کا موقف بھی واضح ہے ۔ کہ کفر اکبر سے انسان ملت اسلامیہ سے خارج ہوجاتا ہے ۔ اور کفر اصغر سے نہیں ہوتا ہے ۔
لیکن ہم طالب علم بھائی سے یہ پوچھنا چاہتے ہیں کہ ان عبارتوں سے آپ کیا ثابت کرنا چاہ رہے ہیں؟کیونکہ یہ تفسیر تو حق ہے لیکن اس تفسیر سے آپ کا مطلوب ومقصود کیا ہے ؟؟برائے مہربانی ناچیز کی تشنگی دور فرمادیجیئے ۔ جزاک اللہ خیرا
 

غرباء

مبتدی
شمولیت
جولائی 11، 2019
پیغامات
72
ری ایکشن اسکور
0
پوائنٹ
27


کفر دون کفر والی روایت ضعیف ہے

مشہور محدث سلیمان العلوان کہتے ہیں ابن عباس رضی اللہ عنہما کی طرف منسوب روایت جس میں ہے کہ "کفر دون کفر"یعنی کفر کے درجات ہیں (کچھ کفر کم ہیں کچھ کفر زیادہ) یہ روایت ابن عباس رضی اللہ عنہما سے ثابت نہیں ہے اسے مروزی نے "تعظیم قدر الصلاۃ" میں روایت کیا ہے اور مستدرک میں حاکم نے بھی ھشام بن حجیر عن طاؤس عن ابن عباس سے روایت کیا ہے ۔ ہشام کو امام احمد ، یحیی بن معین،عقیلی اور محدثین رحمہم اللہ کی ایک جماعت نے ضعیف کہا ہے ۔ علی بن مدینی رحمہ اللہ کہتے ہیں : میں نے یحیی بن سعید رحمہ اللہ کے سامنے روایت بیان کی حدثنا جریج عن ھشام عن ابن حجیر تویحیی بن سعید رحمہ اللہ نے کہا کہ اس کی روایت کو چھوڑنا میں زیادہ مناسب سمجھتا ہوں ۔میں نے کہا میں اس کی حدیث بیان کروں؟ اس نے کہا ہاں۔ابن عیینہ رحمہ اللہ کہتے ہیں کہ ہم ہشام بن حجیر کی روایت نہیں لیتے تھے جو کسی اور کے پاس نہ ہوتی تھی (جس میں وہ متفرد ہوتا تھا) جبکہ مذکورہ الصدر حدیث میں وہ متفرد ہے مزید یہ کہ ثقہ نے اس کی مخالفت کی ہے جیسا کہ عبداللہ بن طاؤس رحمہمااللہ اپنے باپ سے روایت کرتے ہیں کہ کسی نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے (وَمَن لَم یَحکُم بِمَا اَنزَلَ اللہُ فَاؤُلٰئِکَ ھُمُ الکَافِرُونَ) (المائدۃ) کے بارے میں سوال کیا تو آپ نے فرمایا"ھی کفر"یہی کفر ہے ۔دوسری جگہ الفاظ ہیں "ھی بہ کفر"یہی تو اللہ کے حکم کا کفر وانکار ہے ایک اور جگہ ان کے الفاظ ہیں "کفی بہ کفر"یہی عمل اس کے کفر کے لئے کافی ہے (عبدالرزاق نے اسے اپنی تفسیر میں روایت کیا ہے)اور ابن جریر نے بھی اور وکیع (نےاخبار القضاۃ میں اسے ذکرکیا ہے)سند صحیح سے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے یہی قول ثابت ہے کہ انہوں نے اسے کفر مطلق کہا ہے (دون کفر نہیں)
ھشام بن حجیر کی روایت دو وجہ سے منکر ہے :

اس میں وہ متفرد ہے
اپنے سے اوثق کی مخالفت کررہا ہے

ابن عباس رضی اللہ عنہما کے الفاظ "ھی کفر" "ھی بہ کفر"اس بات پردلالت کرتے ہیں کہ ان کے نزدیک آیت مطلق ہے اور اس سے کفر ہی مراد ہے شیخ الاسلام رحمہ اللہ نے فرمایا ہے کہ جب کفر پر الف لام آگیا (الکافرون) تو یہ کفر اکبر بن گیا جب تک کوئی قرینہ اس کو تبدیل کرنے والا نہ ہو۔
شیخ سلیمان العلون مزید فرماتے ہیں: ابن کثیر رحمہ اللہ نے البدایہ والنہایہ میں فرمایاہے۔ جس نے محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل ہونے والی محکم شریعت چھوڑدی اور دوسری منسوخ شریعت کو اختیار کیا اس کی طرف چلا گیا تو اس نے کفر کرلیا (جب منسوخ شدہ آسمانی شریعت کو اختیار کرنے والا ایسا ہے )تو پھر الیاسا کی طرف جانے والے کو کیا کہیں گے جو اسے شریعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم پر مقدم رکھے جس نے بھی ایسا کیا وہ باجماع مسلمین کافر ہے ۔ یہ صحیح اور حق بات ہے اس میں کوئی اختلاف نہیں ہے ۔ اس سے بھی زیادہ اس شخص کے کفر پر اجماع نقل ہونا چاہیے جو اللہ کی شریعت سے روکتا ہے دین کے احکام کو تبدیل کرتا ہے اور اپنی قوم پر ایسے قوانین نافذ کرتا ہے کہ لوگ اس کی طرف اپنے مالی دیوانی اور فوجداری مقدمات لے کر جاتے ہیں اس طرح عملی طور پر وہ ان قوانین کی حمایت کرتے ہیں اور شریعت کے انکار کے مرتکب ہوتے ہیں ان قوانین کو سیکھنے اور ان کے دفاع میں اپنی توانائیاں صرف کرتے ہیں ۔ ابن کثیر رحمہ اللہ کے اجماع کے بارے میں بعض ہم عصروں نے کہا ہے کہ یہ صرف تاتاریوں کے لئے ہے یا ان کے نقش قدم پر چلنے والوں کے لئے جنہوں نے نواقض اسلام کو خلط کیا جس کی وجہ سے شریعت کا انکار لازم آتا ہے اور اللہ کی نازل کردہ شریعت کے علاوہ دوسرے قوانین کا جواز ثابت ہوتا ہے (جس نے بھی ابن کثیر رحمہ اللہ کے اجماع کے بارے میں یہ کہا ہے) یہ اس کا ذاتی خیال ہے جوکسی قسم کی علمی حقائق اوردلائل پر مبنی نہیں ہے ۔ اس قول میں واضح طور پر توحید اور اصلاح کی دعوت دینے والوں پر حملہ نظر آرہا ہے اورالفاظ ومطالب میں بھی صرف تخمینے سے کام لیا گیا ہے ائمہ کے اقوال سے ناواقفیت بھی اس میں واضح ہے اس لیے کہ اس اجماع کو نقل کرنے والے صرف ابن کثیر رحمہ اللہ نہیں ہیں بلکہ متقدمین ومتاخرین میں بہت سے ائمہ نے اس بات پر اجماع نقل کیا ہے ۔ اس شخص کو کیونکر کافرنہ کہا جائے جو شریعت کومعطل کردے اورخود کو منصب تحلیل وتحریم پر فائز کردے خود ہی کسی چیز کے اچھی یا بری ہونے کے فیصلے کرے ایسی عدالتیں بنائے جہاں مقدمات وتنازعات لے جائے جاتے ہوں اور (وہ عدالتیں اتنی بااختیار ہوں) کہ ان سے کسی قسم کا سوال یا ان کے فیصلوں پر اعتراض وتعاقب تک ممنوع ہو(ورنہ توہین عدالت کا کیس بن جاتا ہو)
جس مصنف نے تاتاریوں کی کفر کی وجہ سے شریعت سے انکار اور شریعت کے حرام کردہ کو حلال قرار دینا لکھا ہے وہ شاید مرجئہ میں سے جو صرف حرام وحلال میں تبدیلی کو کفر خیال کرتےہیں یا شریعت کے واضح انکار کو کفر کہتے ہیں حالانکہ یہ نظریہ عقل ونقل دونوں کے لحاظ سے باطل ہے ۔ حرام کو حلال قرار دینا کفر ہے اگرچہ اس کے ساتھ غیر اللہ کے حکم پر تحکیم نہ بھی ہو جبکہ آیت میں واضح طور پر اللہ کے نازل کردہ شریعت پر فیصلہ نہ کرنے کو کہا گیا ہے ۔ متاخرین میں سے بہت سے لوگ مرجئہ کے نظریات سے متاثر ہیں جو کہتے ہیں کہ جس نے بھی کفریہ قول یا عمل کیا وہ کافر ہے مگر وہ عملی کافرنہیں بلکہ اس کا عمل کفر کو متضمن ہے کفر پر مشتمل ہے اور اس عمل سے اس کے دلی تصدیق کی نفی ہورہی ہے اور ا س کے دعوی ایمان کی تکذیب ہے جبکہ کچھ مرجئہ ایسے بھی ہیں جو کہتے ہیں کہ کسی عمل سے انسان کافرنہیں ہوتا جب تک کہ وہ (شریعت کا) انکار نہ کردے یا شریعت کے حرام کردہ کو حلال نہ سمجھے ۔ مرجئہ کا یہ نظریہ کتاب اللہ سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور اجماع کے خلاف ہے ۔ اس لیے کہ اہل علم کا اس بات پر اتفاق ہے کہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو گالی دینا کفر ہے اسمیں کسی نے بھی یہ شرط نہیں لگائی کہ گالی دینے والا اس کو حلال بھی سمجھتا ہوتب وہ کافر ہے نہ اعتقاد کی شرط کسی نے لگائی ہے اس کے کفر کے لئے یہی کافی ہے کہ اس نے واضح طور پر اللہ یا ا سکے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو گالی دی اسی طرح دین کا مذاق مزاحًا اڑایا ہو یا لاپرواہی سے ایسا کیا گیا ہو ۔اسی طرح کسی مردے کا تقرب حاصل کرنے کے لئے (اس کی قبر ومزار پر)سجدہ کرنے والا اس کا طواف کرنے والا بالاتفاق کافرہے ۔قرآن مجید کو گندی جگہ پھینکنے والے کے کفر پر اتفاق ہوچکا ہے یہ ان لوگوں کی رائے ہے جو قول عمل اور اعتقاد کو ایمان کہتے ہیں اور اطاعت سے ایمان میں اضافے ، معصیت سے کمی کے قائل ہیں اہلسنت کا اجماع ہے کہ دین کا واضح طور پر مذاق اڑانا کفر ہے جیسا کہ بتوں کے آگے یا چاند اور سورج کو سجدہ کرنا غیر اللہ کے لئے ذبح کرنا حالانکہ یہ سب افعال ہیں۔ کتاب وسنت میں بے شمار دلائل اس بات پرموجود ہیں کہ جو شخص بھی کفریہ قول یا عمل کرتا ہے وہ کافر ہے ضروری نہیں کہ وہ اس قول یا عمل کو حلال بھی سمجھتا ہو یہ فضول شرط ہے جو نہ صحابہ رضی اللہ عنہم نے لگائی نہ تابعین نے نہ ائمہ محدثین نے ۔
 

غرباء

مبتدی
شمولیت
جولائی 11، 2019
پیغامات
72
ری ایکشن اسکور
0
پوائنٹ
27


کفر دون کفر والی مذکورہ حدیث کی
صحت میں اختلاف؟
ابومحمد عاصم المقدسی حفظہ اللہ

درایتًا: اگر ابن عباس رضی اللہ عنہما کا یہ قول صحیح مان لیا جائے تو اور لوگوں سے اس کے ہم معنی صحیح سند سے ثابت ہوچکا ہے لہٰذا اس کا مطلب یہ ہوگا یہ صرف خوارج پر ردّ ہے جنہوں نے جناب علی رضی اللہ عنہ ، معاویہ رضی اللہ عنہ اور ان کے دونوں ساتھیوں کو کافر قرار دینے کا ارادہ کیا تھا جب ان دونوں حضرات میں خلافت کے معاملے میں اختلاف ہوا اور دو صحابہ عمروبن عاص اور ابوموسٰی اشعری رضی اللہ عنہما کو فیصلہ کرنے کے لئے حکم مقرر کیا گیا تو خوارج نے اعتراض کیا کہ حکمتم الرجال تم نے انسانوں کو فیصلے کا اختیار دیا ہے جبکہ اللہ نے فرمایا ہے۔

وَمَن لَم یَحکُم بِمَا اَنزَلَ اللہُ فَاؤُلٰئِکَ ھُمُ الکَافِرُونَ۔ (المائدۃ)
جس نے اللہ کے نازل کردہ کے مطابق فیصلہ نہیں کیا وہ کافر ہے ۔

حالانکہ ہر شخص اچھی طرح جانتا ہے کہ خوارج کی یہ رائے غلط تھی اس لیے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا اختلاف اگرچہ ایک دوسرے پر ظلم کا سبب بھی بنا ہو مگر کفر نہیں تھا کہ انہیں ملت سے خارج کردیتا ۔ جناب علی رضی اللہ عنہ نے ابن عباس رضی اللہ عنہما کو خوارج کے پاس بھیجا کہ ان سے اس بارے میں مذاکرات کریں انہیں سمجھائیں قائل کریں ۔ ابن عباس رضی اللہ عنہما ان کے پاس گئے تو انہوں نے بات کرنے پر رضامندی ظاہر کردی ابن عباس رضی اللہ عنہما نے ان سے کہا تم لوگوں نے دونوں فیصلہ کرنے والوں پر اعتراض کیا ہے حالانکہ اللہ تعالٰی کا فرمان ہے کہ :

فَابعَثُوا حَکَمًا مِن اَھلِہِ وَ حَکَمًا مِّن اَھلِھَا ۔ (النساء)
(اگر میاں بیوی میں اختلاف ہوجائے تو) ایک فیصلہ کرنے والا شوہر کے رشتہ داروں میں سے ہو اور ایک بیوی کے گھرانے سے مقرر کردو۔

اب امت محمدیہ صلی اللہ علیہ وسلم (کے اختلاف دور کرنے کے لیے) کیا کیا جائے؟ انہوں نے جواب دیا کہ اللہ نے لوگوں کو فیصلہ کرنے کا اپنا اختیار نہیں دیا ہے لوگ اپنے معاملات میں غور وفکر کرنے کے مجاز ہیں مگر اللہ نے جو فیصلہ کردیا اس میں انسانوں کو غور کرنے (یا تبدیلی) کرنے کی اجازت نہیں ہے ابن عباس رضی اللہ عنہما نے کہا کہ اللہ فرماتا ہے :

یَحکُمُ بِہِ ذَوَا عَدلٍ مِّنکُم ۔ (المائدۃ)
فیصلہ کریں تم سے دوعادل اشخاص۔

انہوں نے کہا (یہ آیت شکار اور کھیتی باڑی سے متعلق ہے) کیا آپ شکار ، کھیتی اور میاں بیوی کے فیصلوں کی طرح مسلمانوں کے خون کا فیصلہ کریں گے ؟ کیا آپ کے خیال میں عمروبن عاص عادل حکم ہے جبکہ وہ کل تک ہم سے جنگ کرتا رہا اگر وہ عادل ہے تو پھر ہم عادل نہیں؟ تم لوگوں نے اللہ کے حکم میں انسانوں کو فیصلہ کرنے کا اختیار دے دیا؟ اس مناظرہ ومذاکرہ کے بعد ان میں سے بہت سے لوگوں نے حق کی طرف رجوع کرلیا اور کچھ اپنی گمراہی پر ڈٹے رہے اور جناب علی رضی اللہ عنہ کی فوج سے الگ ہوگئے (جب مذکورۃ الصدر فیصلہ دونوں حکمین نے کیا تھا) ان لوگوں کو ہی خوارج کہا جاتا ہے ۔ موجودہ زمانے کے مرجئہ نے ابن عباس رضی اللہ عنہما اور دیگر تابعین جیسے طاؤس رحمہ اللہ اور ابومجلز کے اقوال کو جو کہ خوارج کے بارے میں لے لیا اور انہیں کہاں سے کہاں پہنچا دیا تاکہ اسے بے محل وبے موقع استعمال کرتے رہیں اور اسے دلیل بنادیا کہ ابن عباس رضی اللہ عنہما نے کفر دون کفر کہا ہے حالانکہ ابن عباس رضی اللہ عنہما کے الفاظ ہیں :

"انہ لیس الکفر الذی تذھبون الیہ"
جو تم مراد لے رہے ہو وہ کفر نہیں ہے ۔

اس میں "تذھبون الیہ" کا جملہ خوارج کی غلطی کی نشان دہی اور اصلاح کے لئے ہے ۔ جبکہ آیت میں ان لوگوں کو کافر کہا گیا ہے جو اللہ کی شریعت کو تبدیل کرتے ہیں چاہے وہ یہود ہوں یا نصاریٰ ہوں یا کوئی اور (مزید تفصیل آگے آئے گی) کیا ابن عباس رضی اللہ عنہما یا اور کوئی مسلمان اللہ کے حکم یا حدود اللہ کو تبدیل کرنے والے کے اس عمل کو کفر دون کفر کہہ سکتا ہے؟ ہرگز نہیں۔ ابن عباس رضی اللہ عنہما کا مذکورہ قول اگر صحیح بھی ثابت ہوجائے تو یہ آیت کی تفسیر نہیں بلکہ خوارج کے غلط خیال کے ردّ میں ہے مسلمانوں کو چاہئے کہ وہ گمراہ لوگوں کے دہوکہ میں نہ آئیں علامہ احمد محمد شاکر السلفی رحمہ اللہ عمدۃ التفاسیر کے تعلیق میں فرماتے ہیں کہ یہ آثار جو ابن عباس رضی اللہ عنہما وغیرہ کی طرف منسوب ہیں ۔ ہمارے زمانے کے گمراہ لوگ جو عالم کہلاتے ہیں ان کے لئے یہ آثار کھلونا بنے ہوئے ہیں وہ ان آثار سے وضعی قوانین کے جواز کی دلیل لیتے ہیں جو آج کل اسلامی ممالک میں وضع کیے جارہے ہیں ۔ دوسری جگہ اپنے بھائی احمد شاکر رحمہ اللہ کا قول نقل کرتے ہیں جو انہوں نے ان جیسے آثار کے بارے میں کہا ہے جو ابومجلز وغیرہ سے تفسیر طبری میں منقول ہیں کہتے ہیں اے اللہ میں گمراہی سے براءت کا اعلان کرتا ہوں ۔
شکوک وشبہات پھیلانے والوں نے ہمارے اس دور میں ایسی گفتگو کا آغاز کردیا ہے جس کی وجہ سے حکمرانوں کو جواز مل رہا ہے کہ وہ اللہ کی نازل کردہ شریعت کے مطابق فیصلے کرنے کے بجائے اور قوانین کو اپنائیں لوگوں کے مال ،جان ، عزت میں اللہ کی شریعت کے بجائے اہل کفر کے قوانین اختیار کریں اور یہ سب کچھ اسلامی ممالک میں ہے ۔ جب یہ حکمران (ابن عباس رضی اللہ عنہما و طاؤس رحمہ اللہ) کے ان اقوال سے باخبر ہوجاتے ہیں تو وہ انہیں اس بات کی دلیل بنالیتے ہیں کہ مال ،جان ، عزتوں کے فیصلے اللہ کی شریعت کے علاوہ انسانوں کے وضع کردہ قوانین کے مطابق کئے جاسکتے ہیں اور عوام کے لیے کئے جانے والے فیصلوں میں اللہ کی شریعت کی مخالفت سے آدمی کافر نہیں ہوتا ۔ شیخ فرماتے ہیں کہ یہ آثار واقوال خوارج کے ساتھ مناظرے کے دوران کے ہیں جو اپنے زمانے کے حکمرانوں (علی و معاویہ رضی اللہ عنہما) کو کافر قرار دینا چاہتے تھے حالانکہ ان کا ایسا کوئی جرم نہیں تھا جسے دلیل بنالیا ہے کہ مال ، جان وغیرہ کے فیصلے خلاف شریعت قانون کے مطابق بھی ہوسکتے ہیں تو یہ دلیل غلط ہے نہ ہی ایسا قانون بنایا جاسکتا ہے نہ ہی مسلمانوں پر لاگو کیا جاسکتا ہے جس کو اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی شریعت کو چھوڑ کر اپنانا پڑے ۔ اس طرح کرنا اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی شریعت سے اعراض وروگردانی ہے اور کافروں کے قوانین کو اللہ اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے احکام پر ترجیح دینا یہ ایسا کفر ہے کہ جس میں کسی اہل قبلہ کو شک نہیں ہے ۔
کوئی بھی انصاف پسند شخص جو حق کا متلاشی ہو یہ سب کچھ جان لیتا اور ان اقوال و آثار کے ورود کا محل اور وجہ بھی سمجھ جاتا ہے اور جن لوگوں کو ابن عباس رضی اللہ عنہما نے یہ کہا تھا ان کے بارے میں معلوم کرلیتا اور پھر اپنی عقل اور بصیرت سے کام لے تو جو بات ہم کررہے ہیں کہ اللہ کے دین اور شریعت کے ہوتے ہوئے قانون بنانا یا اللہ کے احکام کو چھوڑ کر انسانوں کے بنائے ہوئے معمولی اور کمتر قوانین کو اپنانا انسانوں کی آراء و خواہشات کے پیچھے چلنا اور اللہ کے احکام ، شریعت اور حدود کو چھوڑنا ، ان سب پر غور کرتا ہے تو وہ جان لیتا ہے کہ ان آثار و اقوال کو لے کر موجودہ زمانے کے مرجئہ بہت بڑی واضح گمراہی پھیلارہے ہیں تلبیس سے کام لے رہے ہیں کہ ان آثار کو اس جگہ اور اس مقصد کے لئے پیش کررہے ہیں کہ جس کے لئے یہ نہیں تھے ۔ یہ ان موجودہ مرجئہ کا بہت بڑا جرم ہے۔
کیا علی ومعاویہ رضی اللہ عنہما اور ان کے ساتھ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم (جن کے بارے میں خوارج نے فتوے لگائے ہیں) کیا وہ خود کو اس بات کا مجاز سمجھتے تھے کہ وہ اللہ کی شریعت کے ہوتے ہوئے اپنی طرف سے قوانین بنائیں یا کفریہ دستور و آئین مرتب کریں جیسا کہ آج کل اسلامی ممالک کہلانے والوں میں عام رواج ہے؟ حاشا وکلا ایسا صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں سوچا بھی نہیں جاسکتا۔ کیا صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے (نعوذ باللہ) قوم کی خواہشات اور اکثریت کی رائے کی مدنظر قوانین وضع کئے تھے ؟ اور انہیں اللہ کے نازل کردہ پاکیزہ حدود کے بدلے میں رائج کیا تھا؟ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اس الزام سے پاک ہیں وہ ایسا کبھی نہیں کرسکتے صحابہ تو کیا اس زمانے کے عام ان پڑھ لوگ بھی اس طرح کے صریح کفر کے بارے میں نہیں سوچ سکتے بلکہ اس زمانے کے بے وقوف اور پاگل بھی اس طرح کے کفر کے مرتکب نہیں ہوسکتے تو صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین جیسی برگزیدہ ہستیوں کے بارے میں تو سوچا بھی نہیں جاسکتا ۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجعین تو وہ لوگ تھے جنہوں نے دین اسلام کی بلندی کے لئے صحراء کے ریت کو اپنے خون سے رنگین کیا ۔ اگر اس زمانے میں کوئی شخص واقعی ایسی کوئی حرکت کرتا تو خوارج کبھی بھی غیر صریح دلائل سے انکار نہ کرتے اور وَمَن لَم یَحکُم بِمَا اَنزَلَ اللہُ فَاؤُلٰئِکَ ھُمُ الکَافِرُونَ۔ (المائدۃ) کے بجائے واضح اور ان صریح آیات سے دلیل لے کر اس کا ردّ کرتے جن میں قانون سازی کرنے والوں کو طاغوت اور ربّ کہا گیا ہے مثلاً

وَاِن اَطَعتُمُوھُم اِنَّکُم لَمُشرِکُونَ ۔ (الانعام)
اگر تم نے ان کی اطاعت کی تو تم مشرک ہوگے۔
اَم لَھُم شُرَکٰؤُا شَرَعُوا لَھُم مِنَ الدِّینِ مَا لَم یَاذَن بِہِ اللہُ ۔ (شوریٰ)
کیا ان کے ایسے شریک ہیں جو ان کے لئے دین میں سے ایسی شریعت بناتے ہیں جن کی اجازت اللہ نے نہیں دی؟۔
وَلَا یُشرِک فِی حُکمِہِ اَحَدًا ۔ (کہف)
وہ اپنے حکم میں کسی کو شریک نہیں کرتا۔

ایسے دلائل خوارج کو پیش کرنے چاہئے تھے جن میں کوئی ابہام نہیں تھا یہ آیت پیش کرتے :

وَلَا یَتَّخِذَ بَعضُنَا بَعضًا مِن اَربَابًا مِن دُونِ اللہِ ۔ (آل عمران)
ہم ایک دوسرے کو اللہ کے علاوہ ربّ نہیں بنائیں گے ۔

یہ آیت بھی پیش کرسکتے تھے ۔

اِتَّخِذُوآ اَحبَارَھُم وَرُھبَانَھُم اَربَابًا مِن دُونِ اللہِ ۔ (التوبۃ)
اور انہوں نے اپنے علماء و درویشوں کو اللہ کے علاوہ رب بنالیا ہے۔

ان کے علاوہ بھی دلائل ہیں جو ایسے موقع پر پیش کیے جاسکتے تھے مگر یہ دلائل جس چیز پر دلالت کرتے ہیں وہ چیز سرے سے تھی ہی نہیں (یعنی کفر) اس لیے خوارج نے یہ آیات پیش ہی نہیں کیں ۔ اور اگر خوارج وَمَن لَم یَحکُم۔۔۔۔۔۔سے مراد واقعی علی ومعاویہ رضی اللہ عنہما کا کفر لے رہے ہوتے تو ابن عباس رضی اللہ عنہما سمجھ جاتے اس لیے کہ وہ حبر الامۃ ہیں امت کے بہت بڑے عالم قرآن کے مفسر آیتوں کے شان نزول کو اچھی طرح سمجھنے والے اور آیت (وَاِن اَطَعتُمُوھُم اِنَّکُم لَمُشرِکُونَ ۔ (الانعام)) شانِ نزول کے راوی ہیں آیت کا معنی ہے ۔ اگر تم نے ان کی اطاعت کی تو تم مشرک ہوجاؤگے ۔ حاکم نے ابن عباس رضی اللہ عنہ سے بسند صحیح روایت کیا ہے کہ کچھ مشرک لوگ مسلمانوں سے اس بارے میں بحث کررہے تھے کہ جو جانور جو تم خود ذبح کرلیتے ہو اسے حلال کہتے ہو اور جسے اللہ مار دے (یعنی مرا ہوا جانور) اسے حرام کہتے ہو؟ تو اللہ تعالٰی نے آیت نازل کی اگر تم مسلمانوں نے ان مشرکوں کا کہا مانا تو تم مشرک ہوگے ۔ اس آیت سے ثابت ہوتا ہے کہ اللہ کے علاوہ جو شخص قانون بناتا ہے یا ایسے قانون کی پیروی کرتا ہے وہ مشرک اور کافر ہے اس کے برعکس ظالم حکمران یا قاضی جو ہے تو ظالم مگر اللہ کے دین کے علاوہ کوئی دین یا شریعت اور قانون نہیں اپناتا اور نہ یہ حق خود کو یا کسی اور کو دیتا ہے ایسا شخص اگر کسی قانون کے مطابق فیصلہ کرلے ظلم کے طور پر یا اپنی خواہش سے مغلوب ہوکر اس قانون کو اللہ کے قانون کا متبادل نہ سمجھتا ہو تو اس حاکم یا قاضی کو ظالم حکمران یا قاضی تو کہیں گے مگر کافر نہیں اس عمل یعنی غیر اللہ کے قانون کو اور اس پر عمل کرنے کو جائز سمجھتا ہو اگر علی ومعاویہ رضی اللہ عنہما ودیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کا فیصلہ کفریہ ہوتا تو ابن عباس رضی اللہ عنہما اور دوسرے صحابہ رضی اللہ عنہم ان پر کفر کا فتویٰ لگانے میں ایک لمحہ بھی دیر نہ کرتے اس لیے کہ یہ لوگ اس بات کو اچھی طرح سمجھتے تھے کہ کوئی ایسا قانون وشریعت جو اللہ کے علاوہ کسی اور کے لیے بنانا جائز ہے یہ کفر ہی کفر ظلم ہی ظلم اور فسق ہی فسق ہے بلکہ صرف یہ دعویٰ کرنا کہ شریعت بنانے اور قانون بنانے کا اختیار مخلوق میں سے کسی کو حاصل ہے کسی حکمران کو ، سردار کو، یا بادشاہ یا قوم یا کسی کمیٹی یا اسمبلی کو تو یہ دعویٰ بھی شرک اور بہت بڑا کفر ہے اگرچہ صرف دعویٰ ہو حقیقت میں جس کے بارے میں دعویٰ کیا گیا ہے اس نے شریعت و قانون کبھی نہ بنایا ہو۔ یہ دعویٰ کرنے والا بھلے اس قانون کی اتباع کرتا ہو یا نہیں صرف دعویٰ کرنے سے ہی کافر ومشرک بن جاتا ہے اس سے معلوم ہوا کہ خوارج اور ابن عباس رضی اللہ عنہما کے مابین جو واقعہ ہے وہ ہمارے اس موضوع سے متعلق نہیں ہے ، دونوں میں فرق ہے لہٰذا ان دونوں علیحدہ علیحدہ موضوعات کو باہم خلط نہیں کرنا چاہئے اس طرح کرنے سے طاغوت اورابلیس کی خوشنودی ہی حاصل کی جاسکتی ہے ۔ ان سب تفصیلات کے بعد بھی یہ یاد رکھنا چاہئے کہ عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما بھی آخر انسان تھے معصوم عن الخطاء نہیں تھے اس سے بھی غلطی ہوسکتی تھی اول تو ہم یہ ثابت کرچکے ہیں کہ ابن عباس رضی اللہ عنہما کی بات کا ہمارے موضوع سے کوئی تعلق نہیں ہے اور اگر بالفرض ہو بھی تو کیا ہم ایک انسان کی بات کو اللہ کے کلام پر ترجیح دیں گے ؟ اور وہ بھی اہم ترین مسئلے یعنی توحید کے بارے میں جو تمام انبیاء کی بعثت کا مقصد رہا ، توحید کفر بالطاغوت کا ہی نام ہے کلمہ توحید کا نصف ہے ۔ ہمیں امید ہے کہ ہمارا یہ تفصیلی جواب چھوٹے طلبہ کو بھی سمجھ میں آگیا ہوگا چہ جائیکہ علماء کہلانے والوں کی سمجھ میں نہ آئے ؟ ہمارے دین میں حجت صرف اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے فرامین واحکام ہیں۔
یہی سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما تھے جب حج تمتع پر پابندی کے لئے ان کے سامنے کسی نے سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ اور عمر رضی اللہ عنہ کا قول پیش کیا تو انہوں نے کہا تھا کہ تم لوگوں پر آسمان سے پتھروں کی بارش ہوجائے (بطور عذاب کے) کہ میں تمہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا حکم سنا رہا ہوں اور تم کہتے ہو کہ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ نے یوں کہا ہے سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے یوں کہا ہے ۔ ہم ایک بار پھر کہتے ہیں کہ سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کا دامن اس الزام سے پاک ہے کہ وہ دین کے اصولوں میں کسی قسم کی ملاوٹ یا بے پرواہی یا مخالفت کا ارتکاب کریں گے وہ تو ترجمان القرآن ہیں مگر یہ بات یاد رکھنی چاہیے کہ کسی صحابی کا قول دین نہیں ہے دین میں نزاع کے وقت حجت نہیں ہے خاص کر جب یہ فرض کرلیا جائے کہ صحابی کا قول اللہ کے حکم سے معارض ہے یا رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کے معارض ہے ۔ ہم نے بدیہی دلائل موجودہ زمانے کے مرجئہ کو سمجھانے اور نصیحت کے لئے پیش کردئے ہیں جو طواغیت کی حمایت میں مصروف ہیں ۔ اور مخلوق شریعت سازی میں اللہ کا شریک قرار دینے کے لئے ان کو ربّ بنانے کے لئے بطور دلیل ابن عباس رضی اللہ عنہما کی طرف منسوب قول (کفر دون کفر ) پیش کرتے ہیں
 
Top