• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مرض وفات النبی صلی الله علیہ وسلم کا واقعہ / یعنی واقعہ قرطاس

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
یہ اس روایت کا ترجمہ خود بھی کر سکتے ہیں لیکن اگر ہم یہاں پیش کریں تو اس میں کیڑے نکال کر خلط مبحث کرتے ہیں
اسی لئے اس بار کیڑوں سے بچنے کیلئے مطلوبہ لفظ کا ترجمہ ہی نہیں کیا ؟ ( فَإِنْ لَمْ تَفْعَلُوا وَلَنْ تَفْعَلُوا فَاتَّقُوا۔۔۔۔۔)
اور الحمد اللہ ہم اس کا ترجمہ کرسکتے ہیں ؛اور یہ محض اللہ کریم کا احسان ،اور سلف سے محبت کی وجہ ہے ،لہ الحمد ،حمداً کثیرا ً

حدثنا سفيان، عن سليمان بن أبي مسلم، خال ابن أبي نجيح، سمع سعيد بن جبير، يقول : قال ابن عباس: يوم الخميس، وما يوم الخميس؟، ثم بكى حتى بل دمعه - وقال مرة: دموعه - الحصى، قلنا: يا أبا العباس: وما يوم الخميس؟ قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه، فقال: «ائتوني أكتب لكم كتابا لا تضلوا بعده أبدا، فتنازعوا ولا ينبغي عند نبي تنازع» فقالوا: ما شأنه أهجر - قال سفيان: يعني هذى - استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه» ، وأمر بثلاث - وقال سفيان مرة: أوصى بثلاث - قال: «أخرجوا المشركين من جزيرة العرب، وأجيزوا الوفد بنحو ما كنت أجيزهم» وسكت سعيد عن الثالثة، فلا أدري أسكت عنها عمدا - وقال مرة: أو نسيها -( مسند الإمام أحمد بن حنبل ،مسند عبد الله بن العباس بن عبد المطلب )
ترجمہ :
(جناب رسول اللہ ﷺ کی مرض وفات کا تذکرہ کرتے ہوئے )سیدنا عبد اللہ بن عباس ؓ نے فرمایا : جمعرات کا دن ،کیا تھا جمعرات کا دن ؟
پھر عبد اللہ یہ کہہ کر رو دئیے ،اور اتنا روئے کہ اپنے آنسووں سے زمین پر کنکریاں بھی بھگو دیں ،،
سعید کہتے ہیں ہم نے پوچھا :کیا (ہوا ) تھا جمعرات کے دن ؟
کہنے لگے :(اس دن ) رسول اللہ ﷺ کی تکلیف بڑھ گئی ،تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے ،،( یہ حکم سن کر )موجود لوگ اختلاف کرنے لگے ،(کوئی لکھوانے کی بات کرتا ،تو کوئی نہ لکھوانے کی )
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،
تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )
استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،
فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے ،
تو آپ نے فرمایا :مجھے چھوڑ دو ،تم جس طرف مجھے لانا چاہتے ہو،میں اس سے بہتر میں (مشغول ) ہوں،
اور (پھر ) آپ نے تین کاموں کا حکم دیا ،یا ،تین کاموں کی وصیت فرمائی ،ایک تو یہ کہ جزیرۃ العرب سے مشرکین کو نکال دو ،دوسری یہ کہ باہر سے آنے والے
وفود کو اسی طرح آنے دو جیسے میں نے انہیں آنے دیا ،یا اسی طرح اکرام کرو جیسا کہ میں کرتا تھا ،،
(وفي النهاية :أي أعطوهم الجيزة والجائزة: العطية. يقال أجازه يجيزه إذا أعطاه )

اور تیسری بات راوی سعید بھول گیا یا عمدا نہیں بتائی ‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ہے صحیح ترجمہ ،،،جس میں استفہام انکاری سے نبی پاک ﷺ سے ،،ہذیان گوئی کی نفی کی گئی ہے۔اور آپ نقل کردہ تشریحی عبارت ’’ جسکا مطلب آپ خود بھی نہیں سمجھتے ‘‘
ويحتمل أن يكون من قائله على وجه الإنكار، كأنه قال: أتظنونه هجر؟
کہ کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،
اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )
اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
یعنی جو آدمی بہکی بہکی باتیں کر رہا ہو ،اس سے کسی بات کی وضاحت اور استفہام چہ معنی ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور بنیادی بات تو ۔۔الکتاب ۔۔میں موجود ہے ’’ مَا أَنْتَ بِنِعْمَةِ رَبِّكَ بِمَجْنُونٍ ‘‘ اور ( مَا ضَلَّ صَاحِبُكُمْ وَمَا غَوَى )

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب فتوی تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بنتا ہے ،کہ نہیں ؟
 
Last edited:

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
اسی لئے اس بار کیڑوں سے بچنے کیلئے مطلوبہ لفظ کا ترجمہ ہی نہیں کیا ؟ ( فَإِنْ لَمْ تَفْعَلُوا وَلَنْ تَفْعَلُوا فَاتَّقُوا۔۔۔۔۔)
اور الحمد اللہ ہم اس کا ترجمہ کرسکتے ہیں ؛اور یہ محض اللہ کریم کا احسان ،اور سلف سے محبت کی وجہ ہے ،لہ الحمد ،حمداً کثیرا ً

حدثنا سفيان، عن سليمان بن أبي مسلم، خال ابن أبي نجيح، سمع سعيد بن جبير، يقول : قال ابن عباس: يوم الخميس، وما يوم الخميس؟، ثم بكى حتى بل دمعه - وقال مرة: دموعه - الحصى، قلنا: يا أبا العباس: وما يوم الخميس؟ قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه، فقال: «ائتوني أكتب لكم كتابا لا تضلوا بعده أبدا، فتنازعوا ولا ينبغي عند نبي تنازع» فقالوا: ما شأنه أهجر - قال سفيان: يعني هذى - استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه» ، وأمر بثلاث - وقال سفيان مرة: أوصى بثلاث - قال: «أخرجوا المشركين من جزيرة العرب، وأجيزوا الوفد بنحو ما كنت أجيزهم» وسكت سعيد عن الثالثة، فلا أدري أسكت عنها عمدا - وقال مرة: أو نسيها -( مسند الإمام أحمد بن حنبل ،مسند عبد الله بن العباس بن عبد المطلب )
ترجمہ :
(جناب رسول اللہ ﷺ کی مرض وفات کا تذکرہ کرتے ہوئے )سیدنا عبد اللہ بن عباس ؓ نے فرمایا : جمعرات کا دن ،کیا تھا جمعرات کا دن ؟
پھر عبد اللہ یہ کہہ کر رو دئیے ،اور اتنا روئے کہ اپنے آنسووں سے زمین پر کنکریاں بھی بھگو دیں ،،
سعید کہتے ہیں ہم نے پوچھا :کیا (ہوا ) تھا جمعرات کے دن ؟
کہنے لگے :(اس دن ) رسول اللہ ﷺ کی تکلیف بڑھ گئی ،تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے ،،( یہ حکم سن کر )موجود لوگ اختلاف کرنے لگے ،(کوئی لکھوانے کی بات کرتا ،تو کوئی نہ لکھوانے کی )
(ابن عباس کہتے ہیں ) مناسب نہ تھا کہ نبی کریمﷺ ۔کے پاس اختلاف کیا جاتا ،
تو (کچھ لوگوں ) نے ( مانعین کتابت سے ) کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟ (نہیں ،تکلیف کی بناء پر ایسا نہیں فرمارہے ،بلکہ پوری سمجھ داری سے فرمایا ہے )
استفهموه، فذهبوا يعيدون عليه جائو انہی سے پوچھ لو کہ انکی منشا ،مراد کیا ہے ،
فذهبوا يعيدون عليه، فقال: «دعوني فالذي أنا فيه خير مما تدعوني إليه»تو لوگ آپ کے پاس (پوچھنے ) کیلئے گئے ،
تو آپ نے فرمایا :مجھے چھوڑ دو ،تم جس طرف مجھے لانا چاہتے ہو،میں اس سے بہتر میں (مشغول ) ہوں،
اور (پھر ) آپ نے تین کاموں کا حکم دیا ،یا ،تین کاموں کی وصیت فرمائی ،ایک تو یہ کہ جزیرۃ العرب سے مشرکین کو نکال دو ،دوسری یہ کہ باہر سے آنے والے
وفود کو اسی طرح آنے دو جیسے میں نے انہیں آنے دیا ،یا اسی طرح اکرام کرو جیسا کہ میں کرتا تھا ،،
(وفي النهاية :أي أعطوهم الجيزة والجائزة: العطية. يقال أجازه يجيزه إذا أعطاه )

اور تیسری بات راوی سعید بھول گیا یا عمدا نہیں بتائی ‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ہے صحیح ترجمہ ،،،جس میں استفہام انکاری سے نبی پاک ﷺ سے ،،ہذیان گوئی کی نفی کی گئی ہے۔اور آپ نقل کردہ تشریحی عبارت ’’ جسکا مطلب آپ خود بھی نہیں سمجھتے ‘‘

کہ کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،
اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )
اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
یعنی جو آدمی بہکی بہکی باتیں کر رہا ہو ،اس سے کسی بات کی وضاحت اور استفہام چہ معنی ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور بنیادی بات تو ۔۔الکتاب ۔۔میں موجود ہے ’’ مَا أَنْتَ بِنِعْمَةِ رَبِّكَ بِمَجْنُونٍ ‘‘ اور ( مَا ضَلَّ صَاحِبُكُمْ وَمَا غَوَى )

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب فتوی تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بنتا ہے ،کہ نہیں ؟

تلبیس سے بھرے اس ترجمہ میں کیا ستم ڈھایا گیا ہے آپ دیکھ سکتے ہیں سادہ سے جملوں میں براکٹ ڈال ڈال کر اس کے مفھوم کو تبدیل کیا گیا ہے

مترجم لکھتا ہے کہ

تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے


حالانکہ ترجمہ ہے کہ لاو کہ میں تمہیں کچھ لکھ دوں


مترجم لکھتا ہے

کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟


لیکن اس میں أهجر کا ترجمہ نہیں کیا گیا اور ساتھ ہی سگ=سفیان بن عیینہ کے الفاظ بھی روایت میں سے حذف کر دئے ہیں

اس مقام پر مرض کی شدت کے الفاظ ہیں ہی نہیں


کہا گیا ہے

کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،

اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )

اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟

تم جیسا سمجھ رہے ہو ایسا نہیں پہلے کہا گیا کہ صحابہ تو سب ٹھیک سمجھ رہے تھے اب کہا جا رہا ہے کہ غلط سمجھ رہے تھے

کہا گیا ہے

اور بنیادی بات تو ۔۔الکتاب ۔۔میں موجود ہے ’’ مَا أَنْتَ بِنِعْمَةِ رَبِّكَ بِمَجْنُونٍ ‘‘ اور ( مَا ضَلَّ صَاحِبُكُمْ وَمَا غَوَى )

یہی انداز منکرین حدیث سے مستعار لیا گیا ہے وہ بھی یہ نہیں مانتے کہ نبی پر سحر ہو سکتا ہے قرآن کہتا ہے

وقال الظالمون إن تتبعون إلا رجلا مسحورا
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
اوپر ایک لائن میں ٹائپنگ کی غلطی ہوئی ہے -

-------------
لیکن اس میں أهجر کا ترجمہ نہیں کیا گیا اور ساتھ ہی سگ=سفیان بن عیینہ کے الفاظ بھی روایت میں سے حذف کر دئے ہیں
-------------
عبارت یہ ہے -

لیکن اس میں أهجر کا ترجمہ نہیں کیا گیا اور ساتھ ہی سفیان بن عیینہ کے الفاظ بھی روایت میں سے حذف کر دئے ہیں


اڈمن صاحب سے گزارش ہے کہ اوپر اس لائن کو درست کر دیا جا ے - شکریہ
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
@اسحاق سلفی

نبی صلی الله علیہ وسلم پر مسحور ہونے مجنوں ہونے کا الزام مشرکین مکہ کی جانب لگایا جاتا تھا لیکن کیا آپ صلی الله علیہ وسلم پر جادو کا وقتی اثر نہیں ہوا کیا بیماری کی حالت غشی میں منہ سے کچھ نکل جائے تو اس شخص کو مجنوں کہتے ہیں ؟ بعض اوقات نیند میں انسان بڑبڑا بھی دیتا ہے کیا اس کو اس کے بعد مجنوں کہا جانے لگتا ہے ؟
ایسا تو عام انسانوں بھی نہیں کہتے تو انبیاء تو ان سب سے بلند ہیں

اس کے علاوہ آپ غور کریں نبی صلی الله علیہ وسلم تو کچھ ایسا لکھوانا چاہ رہے ہیں جس سے امت گمراہ نہ ہو لیکن روایت میں ہے کہ نبی صلی الله علیہ وسلم نے لکھوایا

ایک تو یہ کہ جزیرۃ العرب سے مشرکین کو نکال دو ،دوسری یہ کہ باہر سے آنے والے
وفود کو اسی طرح آنے دو جیسے میں نے انہیں آنے دیا ،یا اسی طرح اکرام کرو جیسا کہ میں کرتا تھا
اور تیسری بات راوی سعید بھول گیا یا عمدا نہیں بتائی

اس کا امت کی گمراہی سے کیا تعلق ہے؟

اب دو صورتیں ہیں اول نبی صلی الله علیہ وسلم واقعی کچھ خود اپنے باتھ سے لکھنا چاہ رہے تھے لیکن ایسا ان کو نہیں کرنے دیا گیا اور وہ پورے ہوش میں تھے

دوسری صورت ہے کہ ان پر بیماری کا غلبہ تھا اور آپ کی زبان مبارک سے وہ کلمات ادا ہوئے جو حقیقت حال کے خلاف تھے یعنی ان کا خود کچھ تحریر لکھنا کیونکہ نبی امی تھے نہ لکھنا جانتے تھے نہ پڑھنا

اسی دوسری صورت کی وجہ سے اختلاف رائے پیدا ہوا

یہ تین وصیتیں تو آپ نے اس موقعہ پر کی بھی نہیں بلکہ بخاری کی حدیث کے مطابق سب کو اٹھ جانے کا حکم دیا لیکن دوسرے وقت یہ تین حکم دیے لیکن ان کا امت کی گمراہی سے تعلق ہے ہی نہیں لہذا یہ وہ وصیت نہیں جو آپ خود اپنے ہاتھ سے لکھنا چاہ رہے تھے

الله ہدایت دے
 

lovelyalltime

سینئر رکن
شمولیت
مارچ 28، 2012
پیغامات
3,735
ری ایکشن اسکور
2,895
پوائنٹ
436
@اسحاق سلفی

معنى هذيان في معاجم اللغة العربية – قاموس عربي عربي

http://www.maajim.com/dictionary/هذيان/6/معجم-اللغة-العربية-المعاصرة

صحیح مسلم کی روایت کے الفاظ ہیں

ان رسول الله صلی الله علیہ وسلم یھجر


جس میں اس کو سوالیہ نہیں بلکہ خبر کے طور پر بیان کیا گیا ہے

ابن مقلں کی استفہام انکاری والی رائے مسلم کی اس حدیث سے رد ہو جاتی ہے

سفیان بن عیینہ بھی اس لفظ کو ہذیان کہہ رہے ہیں

آخر اس کی وجہ کیا ہے ؟
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
تلبیس سے بھرے اس ترجمہ میں کیا ستم ڈھایا گیا ہے آپ دیکھ سکتے ہیں سادہ سے جملوں میں براکٹ ڈال ڈال کر اس کے مفھوم کو تبدیل کیا گیا ہے

مترجم لکھتا ہے کہ
تو (گھر میں موجود ) لوگوں سے فرمایا : لائو میں تمھیں ایک تحریر لکھوا دیتا ہوں ،جس کے بعد تم کبھی گمراہ نہ ہوگے
اگر کسی جاہل کو سمجھ نہ آئے تو اس میں مترجم کا کیا قصور ؟
توضیحی الفاظ بریکٹ میں دینا تو دیانتداری پر شاہد ہیں ۔۔۔۔
اگر پیارے نبی ﷺ گھر میں موجود لوگوں سے مخاطب نہ تھے تو کس سے خطاب تھا ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
مترجم لکھتا ہے

کہا ۔۔ أهجر۔۔کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟


لیکن اس میں أهجر کا ترجمہ نہیں کیا گیا
’’ أهجر ‘‘ کا ترجمہ تو کردیا ہے ،اگر زبان و بیان کی حسب حال نزاکتوں سے جاہل کو نظر نہ آئے تو کیا کہا سکتا ہے ؟
اہل نظر غور سے دیکھیں :: حدیث میں بیان کردہ حال یہ ہے کہ ’’عن ابن عباس، قال: اشتد برسول الله صلى الله عليه وسلم وجعه‘‘جب آپکی تکلیف بڑھ گئی ‘‘
اس حال میں آپ نے ایک حکم دیا ۔جس عمل نہ کرنے والوں کو کہا گیا :: ’’ أهجر ‘‘ کیا (تم سمجھتے ہو ) رسول اللہ ﷺ مرض کی شدت سےایسا فرمارہے ہیں ؟؟؟
اور پھر ہم نے واضح لفظوں میں لکھا کہ ’’ أهجر ‘‘
کہنے والے نے ۔۔ہذیان ۔۔کی نفی کیلئے ایسا کہا۔۔گویا اس نے کہا کیا تم سمجھتے ہو کہ آپ بیماری کی تکلیف کے سبب ایسا فرما رہے ہیں ؟
اسی کو ۔۔استفہام انکاری ۔۔کہا جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
ہم اپنا سوال دہرائے دیتے ہیں :

کہنے والے کا یقینی مقصد ہے کہ :: نہیں ،تم جیسا سمجھ رہے ہو ،ہرگز ایسا نہیں ،

اسی لئے وہ کہتا ہے: جا کر انہی سے ان کا مقصد پوچھ لو ،(استفهموه )

اگر کہنے کا مطلب معاذ اللہ ۔۔ہذیان ۔۔کا اثبات ہوتا ،تو ۔۔استفہام ۔۔کا مطلب ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہماری تحریر کردہ یہ مختصر سی تین سطریں ناظر کی سمجھ میں نہ آسکیں ۔۔۔۔اور چلے ہیں مسند کی احادیث پر ہاتھ صاف کرنے !
اگر ہذیان کی نفی مراد نہیں تو
’‘ ھجر ‘‘ کے ساتھ ھمزہ کا کیا مطلب ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اگر ’’ ہذیان ‘‘ کی نفی مراد نہیں ،تو ’’استفھموہ ‘‘ کا کیا معنی ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر ان دونوں سوالوں کا جواب آجائے ،تو تلبیس کا محرک متعین ہوجائے گا
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
اس کے علاوہ آپ غور کریں نبی صلی الله علیہ وسلم تو کچھ ایسا لکھوانا چاہ رہے ہیں جس سے امت گمراہ نہ ہو لیکن روایت میں ہے کہ نبی صلی الله علیہ وسلم نے لکھوایا

ایک تو یہ کہ جزیرۃ العرب سے مشرکین کو نکال دو ،دوسری یہ کہ باہر سے آنے والے
وفود کو اسی طرح آنے دو جیسے میں نے انہیں آنے دیا ،یا اسی طرح اکرام کرو جیسا کہ میں کرتا تھا
اور تیسری بات راوی سعید بھول گیا یا عمدا نہیں بتائی

اس کا امت کی گمراہی سے کیا تعلق ہے؟

اب دو صورتیں ہیں اول نبی صلی الله علیہ وسلم واقعی کچھ خود اپنے باتھ سے لکھنا چاہ رہے تھے لیکن ایسا ان کو نہیں کرنے دیا گیا اور وہ پورے ہوش میں تھے
اگر مشرکین کی حسب سابق وہاں موجودگی سے اہل اسلام کی گمراہی کا تعلق بھی سمجھ میں نہ آئے تو ثابت ہوگا کہ لکھنوء کا لٹریچر اپنے زہریلے اثرات سے
چھوٹے سے ذہن کو جکڑ چکا
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,535
پوائنٹ
791
دوسری صورت ہے کہ ان پر بیماری کا غلبہ تھا اور آپ کی زبان مبارک سے وہ کلمات ادا ہوئے جو حقیقت حال کے خلاف تھے
پیارے نبی ﷺ کی شان میں یہ نہایت گستاخانہ کلمات ہیں ،جو زوال ایمان کا سبب ہیں۔۔
 
Top