• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بنت حوا کے مسائل اور ان کا شرعی حل

مقبول احمد سلفی

سینئر رکن
شمولیت
نومبر 30، 2013
پیغامات
1,331
ری ایکشن اسکور
414
پوائنٹ
209
بنت حوا کے مسائل اور ان کا شرعی حل (قسط- ۲۳)

جواب از مقبول احمد سلفی
اسلامک دعوۃ سنٹر، مسرہ طائف-سعودی عرب

سوال(1):عورتوں میں یہ خیال عام ہے کہ بیوہ چار ماہ دس دن کسی اجنبی مرد کے سامنے نہیں آسکتی ہے اور نہ اس سے کوئی بات کرسکتی ہے کیا یہ صحیح ہے؟
جواب: عورتوں کا یہ خیال غلط ہے بلکہ افسوس کی بات یہ ہے کہ پڑھے لکھے مردوں میں بھی یہ بات عام ہے ، اس سے بھی زیادہ افسوسناک بات تو یہ ہے کہ اگر بیوہ نصف عدت پہ کسی اجنبی کو دیکھ لے تو پھر نئے سرےسے عدت گزارنی ہوگی۔ مجھ سے کتنی عورتوں نے سوال کیا ہے کہ کیا میرا شوہر فون پر بیوہ عورت کی تعزیت کرسکتا ہے؟ اس مسئلے کی حقیقت یہ ہے کہ بغیرپردہ کے عورت کبھی بھی اجنبی مرد کے سامنے نہیں آسکتی ہے اور نہ بلا ضرورت اس سے بات کرسکتی ہے لیکن اگر ضرورت پڑے تو پردے کے ساتھ مرد کے سامنے بھی آسکتی ہے اور اس سے ضرورت کے مطابق بات بھی کرسکتی ہےیعنی پردہ اور گفتگو کا وفات سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

سوال(2):گود بھرائی کی شرعی حیثیت کیا ہے ؟
جواب: بے بی شاور (حاملہ عورت کی گودبھرائی)دراصل مغربی تہذیب ہےجو ہندی فلموں اور ٹی وی سیریلوں کے ذریعہ مسلم معاشرے میں رواج پاگیا ہے۔حمل کے ساتویں یا آٹھویں ماہ میں گودبھرائی کی تقریب منعقد کی جاتی ہے جس میں عورت ومرد کے اختلاط کے ساتھ ناچ وگانے انجام دئے جاتے ہیں ، تحائف اور پھلوں سے حاملہ کی گود بھری جاتی ہےاور زچہ بچہ کے نام پر خوشی منائی جاتی ہے۔ غرض یہ کہ مختلف علاقوں میں مختلف طرح سے بچے کی آمد پر اس کا خیرمقدم اور حاملہ کی خدمت میں مبارکبادی پیش کی جاتی ہے۔
قرآن نے حمل کے مرحلے کو تکلیف درتکلیف کا نام دیا ہے یعنی عورت حالت حمل میں بہت تکلیف سے گزر رہی ہوتی ہےخصوصا حمل کے آخری مرحلے میں، اس تکلیف کے باعث اسلام نے عورت کا درجہ اونچا کیا ہے بلکہ زچگی شدید تکلیف کا مرحلہ ہے اس میں عورت کی جان بھی جاسکتی ہے ، اس موت کو شہادت کا مقام ملا ہے۔ ان باتوں کو مدنظر رکھنے سے ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ حمل کے واسطے سادگی والی خوشی کی تقریب بھی صحیح نہیں اورفحش ومنکرات والی تقریب تو سرے سے جائزہی نہیں ہے، ساتھ ہی اس میں غیراقوام کی مشابہت بھی ہے ۔ آپ خوشی منائیں اور مناسب صورت میں دعوتی تقریب بھی منعقد کریں مگر بچے کی پیدائش کے بعد اس کے ساتویں دن جسے اسلام نے عقیقہ کا نام دیا ہے۔

سوال(3): جب بیوہ کی دوسری شادی ہوگی اس وقت سابقہ شوہر کی وراثت سے حصہ نہیں لےسکتی ہے؟
جواب: شوہر کی وفات کے بعد بلاشبہ بیوہ کا اس کے شوہر کی جائداد میں حصہ ہے ، اولاد ہو تو آٹھواں اور اولاد نہ ہو چوتھا۔لہذا میت کی وراثت تقسیم کرنے والوں کو بیوہ کا بھی حصہ نکالنا چاہئے ۔ یہاں یہ واضح رہے کہ بیوہ کی وراثت کا دوسرے نکاح سے کوئی تعلق نہیں ہےیعنی بیوہ دوسرا نکاح کرے تو وراثت نہیں ملے گی اور نکاح نہ کرے تو وراثت ملے گی ،شرعا اس بات کی کوئی حقیقت نہیں ہے۔

سوال(4): کیا بعض عورتوں کو نبوت ملی تھی جیسے مریم علیہا السلام ؟
جواب: بعض علماء (ابوالحسن اشعری، قرطبی اور ابن حزم وغیرہم) نے کہا ہے کہ بعض عورتوں کو نبوت ملی ہے ، ان میں حوا، سارہ، ہاجرہ، ام موسیٰ، آسیہ زوجہ فرعون اور مریم علیہن الصلوٰۃ و السلام کا نام آتا ہے۔یہ علماء ان نصوص سے استدلال کرتے ہیں جن میں ان عورتوں کی بابت وحی، اصطفاء(چن لینا) اور فضیلت کا ذکر ہے جیساکہ ام موسی کے متعلق آیا ہے ۔ وَأَوْحَيْنَآ إِلَىَ أُمّ مُوسَىَ(القصص:7) ترجمہ: ہم نے موسی علیہ السلام کی ماں کو وحی کی ۔
مریم علیہا السلام کے متعلق آیا ہے ۔يَا مَرْيَمُ إِنَّ اللَّهَ اصْطَفَاكِ[آل عمران:42)
ترجمہ: اے مریم! اللہ تعالی نے تجھے چن لیا۔
نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:كَمَلَ مِنَ الرِّجالِ كَثِيرٌ، ولَمْ يَكْمُلْ مِنَ النِّساءِ إلَّا مَرْيَمُ بنْتُ عِمْرانَ، وآسِيَةُ امْرَأَةُ فِرْعَوْنَ(صحيح البخاري:3769)
ترجمہ: مردوں میں سے تو بہت سے کامل ہو گزرے ہیں لیکن عورتوں میں مریم بنت عمران اور فرعون کی بیوی آسیہ کے سوا اور کوئی کامل پیدا نہیں ہوئی۔
یہ اور ان جیسے دیگر نصوص میں کہیں عورتوں کے متعلق نبوت کی صراحت نہیں ، اس وجہ سے ہم ان کی فضیلت دنیا کی خواتین پر تسلیم کرسکتے ہیں مگر نبوت نہیں تسلیم کرسکتے ہیں بلکہ ایک آیت میں صراحت کے ساتھ مذکور ہے کہ نبوت مردوں کو ہی ملی ہے۔ اللہ کا فرمان ہے:
وَمَآ اَرْسَلْنَا مِنْ قَبْلِكَ اِلَّا رِجَالًا نُّوْحِيْٓ اِلَيْهِمْ مِّنْ اَهْلِ الْقُرٰى(یوسف: 109)
ترجمہ: ہم نے آپ سے پہلے صرف مردوں کو ہی پیغمبر بنا کر بھیجا تھا جنکی طرف ہم وحی بھیجا کرتے تھے۔

سوال(5): عورتوں کے لئے اپنے گھنگھرالے بالوں کو سیدھا کرنا یا سیدھے بالوں کو گھنگھرالا بنانا کیسا ہے ؟
جواب : بسا اوقات بعض عورتوں کے بال طبعی طور پر گھونگھرالے ہوتے ہیں ایسے میں بالوں کو سیدھا کرنا ایک ضرورت ہے اس میں کوئی حرج ہی نہیں ہے البتہ بلاضرورت زینت کے مقصد سے سیدھے بال کو گھونگھرالےبنوانا شوہر کے واسطے ہو تو کوئی حرج نہیں ہے لیکن لوگوں کو مائل کرنےاور غیروں کی مشابہت اختیار کرنے کی وجہ سے ہو تو جائزنہیں ہے ۔(ماخوذ از مسلم خواتین کے سر کے بال کے احکام-مقبول احمد سلفی)

سوال(6): کیا اندھے مرد سے بھی پردہ کیا جائے گا؟
جواب: اندھے سے پردہ نہیں ہے کیونکہ پردہ کرنے کا مقصداجنبی مردوں کی نظر سے بچنا ہے جیساکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:
إنَّما جُعِلَ الِاسْتِئْذَانُ مِن أجْلِ البَصَرِ(صحيح البخاري:6241)
ترجمہ: اجازت مانگنا تو ہے ہی اس لیے کہ (اندر کی کوئی ذاتی چیز)نہ دیکھی جائے۔
اوراس بات پر صریح دلیل بھی موجودہے کہ اندھے سے پردہ نہیں ہے ، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فاطمہ بنت قیس سے جب اس کے شوہر نے اسے طلاق دی تو فرمایا:اعْتَدِّي عِنْدَ ابْنِ أُمِّ مَكْتُومٍ، فإنَّه رَجُلٌ أَعْمَى تَضَعِينَ ثِيَابَكِ(صحيح مسلم:1480)
ترجمہ؛ تم ابن ام مکتوم کے گھر عدت پوری کرو اس لیےکہ وہ ایک اندھے آدمی ہیں وہاں تم اپنے کپڑے اتار سکتی ہو۔
ابو داود(4112)، ترمذي(2778)، اور مسند احمد (26579) وغیرہ کی حدیث جس میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم ام سلمہ اور میمونہ رضی اللہ عنہما سے فرماتے ہیں کہ تم دونوں ابن ام مکتوم سے پردہ کرو۔ یہ حدیث ضعیف ہے۔ دیکھیں :ضعيف أبي داود : 4112

سوال(7): تاخیر سے مہر کی ادائیگی کے وقت ، موجودہ زمانے کے حساب سے مہر دینا ہوگا یا پہلے والا ہی دینا ہے؟
جواب :پہلی بات تو یہ ہے کہ کسی کے لئے مناسب نہیں ہے کہ وہ مہر کی ادائیگی میں بلاوجہ تاخیر کرے تاہم مجبوری ہو تو وسعت ملتے ہی ادا کردے اور مہر کی ادائیگی تاخیر کی صورت میں بھی اتنا ہی ادا کیاجائے گا جتنا نکاح کے وقت طے کیا گیا تھا۔

سوال(8): عورت کا ٹخنے سے اوپر شلوار پہننے کا کیا حکم ہے؟
جواب: عہد رسول میں خواتین ایسے کپڑے پہنتی تھیں جو زمین سے گھسٹتے مگر آج کل کی خواتین فیشن کے چکر میں عریاں لباس لگارہی ہیں ، ٹخنے سے اوپر شلوار کا پہننا بھی ننگے پن میں شامل ہوگا کیونکہ یہ شرعی لباس کی مخالف اور فتنے کا سبب ہے۔ عبدالرحمٰن بن عوف رضی الله عنہ کی ایک ام ولد سے روایت ہے کہ میں نے ام المؤمنین ام سلمہ رضی الله عنہا سے کہا:
إنِّي امرأةٌ أطيلُ ذَيلي وأمشي في المكانِ القذرِ ؟ فقالت : قالَ رسولُ اللَّهِ صلَّى اللَّهُ عليهِ وسلَّمَ يطَهرُه ما بعدَه(صحيح الترمذي:143)
ترجمہ: میں لمبا دامن رکھنے والی عورت ہوں اور میرا گندی جگہوں پر بھی چلنا ہوتا ہے، (تو میں کیا کروں؟) انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا ہے:اس کے بعد کی (پاک) زمین اسے پاک کر دیتی ہے۔
اسی طرح عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں:
رخَّصَ رسولُ اللَّهِ صلَّى اللَّهُ علَيهِ وسلَّمَ لأمَّهاتِ المؤمنينَ في الذَّيلِ شبرًا ، ثمَّ استَزدنَهُ ، فزادَهُنَّ شبرًا ، فَكُنَّ يُرسلنَ إلينا فنذرعُ لَهُنَّ ذراعًا(صحيح أبي داود:4119)
ترجمہ: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے امہات المؤمنین (رضی اللہ عنہن) کو ایک بالشت دامن لٹکانے کی رخصت دی، تو انہوں نے اس سے زیادہ کی خواہش ظاہر کی تو آپ نے انہیں مزید ایک بالشت کی رخصت دے دی چنانچہ امہات المؤمنین ہمارے پاس کپڑے بھیجتیں تو ہم انہیں ایک ہاتھ ناپ دیا کرتے تھے۔
آج کی مسلمان عورتیں ذرا ان احادیث پہ غور کریں کہ عہد رسول کی خواتین کا لباس کیسا تھا اور پردہ سے کس قدر محبت تھی ؟ جب رسول اللہ نے ایک بالشت دامن لٹکانے کی اجازت دی تو عورتوں نے اس سے زیادہ کی خواہش ظاہرکیں اور آج کل کی خواتین کی خواہش فاحشہ عورتوں کی نقالی کرنا ہے ۔

سوال(9): ایک عورت کی حالت حمل میں طلاق ہوئی ، اس عورت سے بچہ ساقط کروالیا، اب اس کی عدت کیا ہوگی؟
جواب: اس میں دیکھنا یہ ہے کہ بچے کے اعضا ء مثلا ناک ،کان، آنکھ ، سرظاہر ہوئے یا نہیں ؟ عموما چار ماہ بعد اعضاء ظاہر ہوجاتے ہیں ، اگر اعضاء ظاہر ہوگئے تو جاری ہونے والا خون نفاس کے حکم میں ہےاور بچے کے لئے غسل، تکفین ،جنازہ اور تدفین ہے اور طلاق کی عدت ختم ہوچکی ہے لیکن اگر اعضاء ظاہر نہیں ہوئے تو پھر طلاق کی عدت تین حیض گزارنی ہے ۔

سوال(10): کیا دلہن شادی کے روز دو تین وقت کی نماز ایک ساتھ ادا کرسکتی ہے کیونکہ وقت پر پڑھنا مشکل ہے؟
جواب: اللہ کا فرمان ہے:اِنَّ الصَّلَاةَ کَانَتْ عَلَی الْمُوٴمِنِیْنَ کِتَاباً مَّوْقُوْتاً (النساء: ۱۰۳)بے شک نماز اہلِ ایمان پرمقررہ وقتوں میں فرض ہے۔اس فرمان کی روشنی میں ہرنماز کو اپنے اپنے وقت پہ ادا کرنا ضروری ہے اورشریعت میں ایسی کوئی دلیل نہیں ہے کہ نکاح کی وجہ سے کئی نمازوں کو ایک ساتھ جمع کرکے پڑھی جائے۔ جنگ سے زیادہ مشکل کا وقت کون سا ہوسکتا ہے ، حالت جنگ میں بھی امکانی حد تک وقت پر ہی نماز ادا کرنی ہے۔اس لئے دلہن کو چاہئے کہ وقت پر ہر نماز پڑھے اور ایسا کوئی تکلف والا کام نہ کرے جس سے نماز چھوڑنی پڑے ۔

سوال(11): کیا مسلم لڑکی بھاگ کر غیرمسلم سے شادی کرنے سے مرتد ہوجاتی ہے؟
جواب: غیروں کے ساتھ بھاگنے اور شادی کرنے کے مختلف اسباب ہوسکتے ہیں مثلا بہکاوا، عشق ومحبت اور جبر واکراہ وغیرہ۔جہالت وجبر کی حالت میں کفر کرنے پر مرتد کا حکم نہیں لگے گا لیکن برضا ورغبت کفریہ دین قبول کرنے یا پسند کرنے کا علم ہوجائے تو یقینا وہ اسلام سے خارج اور مرتد مانی جائے گی۔ایسی کسی لڑکی سے بات ہوسکے تو ہم حکمت سے اسلام کی حقانیت بتائیں اور توبہ کراکر اسلام میں داخل کرانے کی کوشش کریں۔

سوال(12): اجنبی مرد سے عورت کا رقیہ کروانا کیسا ہے ؟
جواب: اس میں کوئی حرج نہیں ہے تاہم شرعی حدود کا خیال رکھنا ضروری ہے، معالج کے ساتھ خلوت نہ ہویعنی مریضہ کے ساتھ کوئی اور بھی ہو اور معالج عورت کا بدن چھو کر علاج نہ کرے بلکہ پڑھ کر بغیر چھوئے جسم پردم کرے یا کھانے وپینے والی چیز میں دم کرکے دے۔اسی طرح ایسے مردوں کے پاس بھی نہ جائے جو شرکیہ وبدعیہ دم کرتے ہوں۔

سوال(13): والد ووالدہ کے چچا اور ماموسے پردہ کیا جائے کہ نہیں ؟
جواب: والد ووالدہ کے چچا اور مامو عورت کے محارم ہیں لہذا ان سے پردہ نہیں کیا جائے گا۔

سوال(14): سونے کا ہار قسط پر ملتاہے، ہم نے جو قیمت ایک بار متعین کرلی اب وہی جمع کرنی ہے خواہ سونے کی قیمت گرتی اور بڑھتی ہی کیوں نہ رہے۔کیا اس طرح کا ہار خریدا جاسکتا ہے؟
جواب: سونے کی خرید وفروخت میں اسلام کا ایک ضابطہ یہ بھی ہے کہ سونا ادھار نہیں خریدا جائے گا بلکہ مکمل قیمت دے کر فورا سونے پر قبضہ حاصل کیا جائے گااس لئے قسطوں پہ بکنے والے ہار خریدنا جائز نہیں ہے کیونکہ یہاں یکبارگی مکمل قیمت ادا نہیں کی جارہی ہے۔

سوال(15): شادی کے وقت ولی راضی نہیں تھامگر چند دنوں بعد وہ راضی ہوگیا ،کیا نکاح دوبارہ کرنا پڑے گا؟
جواب: نہیں ، وہی نکاح کافی ہے۔

سوال(16): جوائنٹ فیملی میں شوہر کے انتقال کے بعد بہو کو کچھ بھی نہیں ملتا ایسا کیوں ہے ؟
جواب: اولا جوائنٹ فیملی اسلام کا حصہ نہیں ہے بلکہ ہمارا بنایا ہوا نظام ہے ، اس نظام میں جہاں متعدد خرابیاں ہیں وہی وراثت کے معاملے میں بیحد خرابی ہے۔ جہاں تک شوہر کے انتقال پر بہو کو کچھ نہ ملنے کا معاملہ ہے وہ جوائنٹ فیملی کی خرابی کی وجہ سے ہے ۔ یہ بات صحیح ہے کہ اگر بیٹا باپ کی زندگی میں وفات پاجائے تو وہ بات کی وراثت میں حقدار نہیں ہوگا لیکن اگر بیٹا جوائنت فیملی سے الگ ہوتا تو ضرور اس کے پاس کچھ نہ کچھ جائیداد ہوتی جو بیوی اور بچوں کو بھی ملتی مگر جوائنٹ فیملی میں ایک بیٹے کی کمائی پر سارے بیٹوں کا حق ہوتا ہے، یہ شرعا غلط ہے، اس لئے جوائنٹ فیملی کی مروجہ شکل کو ختم کرنا چاہئے۔

سوال(17): مشترکہ خاندانی نظام میں پردے کا اہتمام ناممکن ہوتا ہے ایسی صورت میں شوہراگر استطاعت رکھتا ہو تو الگ گھر کا مطالبہ کرنا شریعت کے خلاف ہے؟
جواب: عورت کو اگر مشترکہ فیملی کے تحت دین پر عمل کرنے میں دشواری ہو تو الگ جگہ یا الگ گھر کے مطالبے میں کوئی حرج نہیں ہےبلکہ شوہر پربیوی رہائش اور نان ونفقہ کا انتظام کرنا واجب ہے ۔جوائنٹ فیملی والا گھر باپ کی زندگی میں کسی بیٹے کا نہیں ہے اس لئے عورت اگرالگ گھر کامطالبہ کرتی ہے اس حال میں کہ شوہر الگ گھر لے بھی سکتا ہے توشوہر کوحسب استطاعت بیوی کا مطالبہ پورا کرنا چاہئے۔

سوال(18): کیا وضو میں کان کا مسح ضروری ہے جبکہ عورتوں کے کان میں بالی لگی ہوتی ہے؟
جواب: وضو میں کان کا مسح بعض کے نزدیک مستحب ہے مگر صحیح بات یہ ہے کہ واجب ہے کیونکہ یہ سر کا حصہ ہے، شیخ ابن باز اسی کے قائل ہیں۔
سنن نسائی میں رسول اللہ کی بابت منقول ہے:ثمَّ مسحَ برأسِه وأذنيهِ باطنِهما بالسَّبَّاحتينِ وظاهرِهما بإبهاميهِ(صحيح النسائي:102)
ترجمہ: پھر آپ نے اپنے سر اور اپنے دونوں کانوں کے اندرونی حصہ کا شہادت کی انگلی سے اور ان دونوں کے بیرونی حصہ کا انگوٹھے سے مسح کیا۔
کان کا مسح کرتے وقت کان کی بالی اتارنے کی ضرورت نہیں ہے ، شہادت کی دونوں اگلیوں سے اندرون کان اور انگوٹھے سے کان کے باہری حصے پر مسح کرلیں۔

سوال(19): ایک عورت نے اپنے شوہر سے متعدد دنوں تک فون پر خلع کا مطالبہ کیا ، شوہر نے چند دن بعد مطالبہ قبول کرتے ہوئے واٹس ایپ پہ خلع کی رضامندی کا پیغام بھیج دیا کیا یہ خلع ہوگیا، واضح رہے کہ جس وقت شوہرنے خلع کی رضامند ی کا پیغام بھیجا عین اس وقت عورت نے مطالبہ نہیں کیا تھا نہ ہی شوہر نے اس وقت مطالبہ کی جانکاری لی تھی گویا مطالبہ اور شوہر کی رضامندی میں کئی گھنٹے کا فرق ہے؟
جواب : یہ خلع واقع نہیں ہوا کیونکہ عین خلع کی رضامندی کے وقت بیوی کی طرف سے خلع کا مطالبہ یا رضامندی موجود نہیں ہے ۔ خلع صحیح ہونے کے لئے بیک وقت میاں بیوی دونوں کی طرف سے رضامندی کا پایا جانا ضروری ہے جوکہ یہاں مفقود ہے۔

سوال(20): کپڑے کو دھوتے ہوئے اسے پاک کرنے کا کیا طریقہ ہے؟
جواب:اسلام میں نظافت کی بڑی اہمیت ہے ، اس لئے بدن ، کپڑا اور جگہ صاف ستھرا رکھنے کا حکم دیا ہے ۔ کپڑا اصلا پاک ہوتا ہے ، اکثر و بیشتر آدمی کپڑا میلا ہونے کی وجہ سے دھلتا ہے نہ کہ ناپاک ہونے کی وجہ سے ۔
اگر کوئی محض میل کچیل کی وجہ سے دھو رہا ہے تو صابن وغیرہ سے اسے صاف کرکے اور پانی سے صابن کے اثرات زائل کرلے،کافی ہے ۔
اوراگر کپڑا ناپاک ہونے کی وجہ سے دھل رہا ہے تو جس جگہ گندگی لگی ہے اسے پہلے صاف کرلے۔ گندگی والی جگہ جتنے پانی سے صاف ہو صاف کرے تاآنکہ بدبو اور اثرات زائل ہوجائیں۔ اس میں ایک بار دو بار کی کوئی تعیین نہیں ہے ، یہ صفائی پہ منحصر ہے ۔ پھر بقیہ کپڑا دھلے ۔
 

مقبول احمد سلفی

سینئر رکن
شمولیت
نومبر 30، 2013
پیغامات
1,331
ری ایکشن اسکور
414
پوائنٹ
209
بنت حوا کے مسائل اور ان کا شرعی حل (قسط -24)
جواب ازشیخ مقبول احمد سلفی / اسلامک دعوۃ سنٹر-طائف

(1)سوال: کیاوضو کے بعد شرمگاہ پر چھینٹے مارنا مردوں کے ساتھ مخصوص ہے یا اس حکم میں عورتیں بھی شامل ہیں ؟
جواب: یہ بات ذہن نشیں رہے کہ دین کے جملہ احکام میں عورتیں بھی مردوں کی طرح ہیں یعنی جوحکم مردوں کے لئے یا مردوں کو مخاطب کرکے دیا گیا ہے وہی حکم عورتوں کے لئے بھی ہوگا ۔ ہاں اگر الگ سےمردوں کو یاالگ سے عورتوں کو مخصوص حکم دیا گیا ہو تو مردوں کے ساتھ مخصوص حکم مردوں کے لئے اور عورتوں کے ساتھ مخصوص حکم عورتوں کے لئے ہوگا۔ وضو کے بعد شرمگاہ پر چھینٹے مارنا رسول اللہ کی سنت ہے ،اس میں خصوصیت کا کوئی ذکر نہیں ہے اس لئے یہ مردوں کی طرح عورتوں کے لئے بھی ہے۔

(2)سوال: کیا بچہ کو چمچہ سے دودھ پلانے پر رضاعت ثابت ہوجائے گی؟
جواب: رضاعت کے لئے دو شرطیں ہیں ۔ پہلی شرط یہ ہے کہ بچے کو دوسال کے اندر دودھ پلایا گیا ہو اور دوسری شرط یہ ہے کہ پانچ مرتبہ دودھ پلایا گیا ہو۔ جس بچے کو دوسال کے اندر پانچ مرتبہ یا اس سے زیادہ مرتبہ دودھ پلادیا جائے تو رضاعت ثابت ہوجائے گی چاہے دودھ پستان سے لگاکر بچے کو پلایا جائے یا پھر کسی برتن /چمچہ /بوبل میں نکال کر پانچ مرتبہ پلایا جائے ۔اصل یہ ہے کہ بچے کے پیٹ میں دودھ چلا جائے ۔

(3)سوال: میک اپ والی دلہن تیمم کرسکتی ہے یا وضو کرنا پڑے گا جبکہ وضو کرنے میں سارامیک اپ چلا جائے گاجس پر محنت اور پیسہ دونوں لگے ہیں؟
جواب: میک اپ کوئی ایسا عذر نہیں ہے جس کی وجہ سے دلہن تیمم کرے گی بلکہ اس پر لازم ہے کہ نماز کے لئے پانی سے وضو کرکے نماز پڑھے چاہے وضو سے میک اپ ہی کیوں نہ چلاجائے ۔ یہ بھی یاد رہے کہ شوہر کے لئے میک اپ کرنا جائز ہے مگر ایسا میک اپ جس کی وجہ سے نماز چھوڑنا پڑے جائز نہیں ہے۔اس لئے دلہن ہو یا کوئی اور خاتون میک اپ نماز کے بعد کرے اور اتنی دیر کے لئے کرے جس سے نماز نہ ضائع ہویا ایسا ہلکا میک اپ کرے کہ وضو کرنے اور نماز پڑھنے میں حرج محسوس نہ ہو۔

(4)سوال: ایام بیض کے دو روزےرکھنے کے بعد تیسرے دن حیض آگیا ، لہذا تیسرے روزہ کا کیا حکم ہے؟
جواب: ایام بیض کا روزہ ہرماہ قمری تاریخ کے اعتبارسے تیرہ ،چودہ اور پندرہ کو رکھاجائے گا ۔اگر کسی عورت کو ان ایام میں حیض آجائے تو ماہ کے آخر میں ایام بیض کا روزہ رکھ لے یعنی ۲۷،۲۸،۲۹ کو۔ جیساکہ سوال میں مذکور ہے کہ دوروزہ رکھنے کے بعد حیض آگیا تو تیسرے کا کیا حکم ہے اس کا حواب یہ ہے کہ جیسے ہی حیض سے پاک ہو اس وقت سے لیکرآخر ماہ تک کسی بھی دن ایام بیض کی نیت سےایک روزہ رکھ سکتی ہے۔

(5)سوال: عورتوں کے لئے پراندہ استعمال کرنے کا کیا حکم ہے؟
جواب: اگر پراندہ بالوں کی حفاظت یا ضرورت مثلا چھوٹے بال کواس کی مدد سےلمبا کرنے کی غرض سے ہوتو پراندہ استعمال کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے لیکن اگر وہی مقصد ہو جو نقلی بالوں کو اصلی بال میں جوڑنے کا ہوتا ہے تو جائز نہیں ہے اس سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا ہے ۔

(6)سوال: میں نے سنا ہے کہ کالے عبایا پر رنگین دوپٹہ لگانا جائز نہیں ہے کیا یہ صحیح ہے ؟
جواب: عبایا اور دوپٹے کا مقصد جسم عورت کو اچھی طرح ڈھانپنا اور حجاب کرنا ہے چاہے کسی بھی رنگ کا عبایا اور کسی رنگ کا دوپٹہ ہو ۔ اس میں کوئی حرج نہیں ہےلیکن جس عبایا اور دوپٹہ سے مکمل پردہ نہ ہوتاہو بلکہ اس سے جسم کی ساخت نمایاں ہویالوگوں کی نظروں کو مائل کرنے والا ہوتو ایسا عبایا یا دوپٹہ استعمال نہیں کیا جائے گا۔اس لئے عورتوں کو چاہئے کہ عبایا/نقاب اور دوپٹہ سادہ والا اورکشادہ والا خریدے اور نقش ونگار،جاذب نظر اور تنگ کپڑوں سے پرہیز کرے ۔

(7)سوال: اگر عورت دستانے پر گھڑی لگائے تو یہ زینت میں شمار ہوگی؟
جواب: گھڑی ضرورت کی چیز ہے اس لئے عورتیں بھی اپنی کلائی پرگھڑی باندھ سکتی ہے تاہم یہ خیال رہے کہ گھڑی ضرورت کے ساتھ زینت بھی شمار کی جاتی ہےلہذا عورتیں جب گھڑی پہنیں تو کپڑے اور دستانے کے نیچے پہنیں تاکہ اس پرغیرمحرم کی نظر نہ پڑے ۔محرموں کے درمیان جس طرح پہنے کوئی حرج نہیں ہے۔

(8)سوال: کیا شادی کے موقع پر عورتیں فلمی گانے بناموسیقی کے پڑ ھ سکتی ہیں؟
جواب: عورتیں شادی کے موقع پر ایسے نغمات پڑھ سکتی ہیں جن میں فحش اور غلط سلط باتیں نہ ہوں ۔ اس قسم کے فلمی نغمات بھی پڑھے جاسکتے ہیں مگر بہتر یہ ہے کہ فلمی نغمات کی بجائے ہزاروں نغمات غیرفلمی ہیں انہیں پڑھاجائے اس کی وجہ یہ ہے کہ فلمی نغمات کا چلن بڑھنے سے عورتوں کی توجہ فلم دیکھنےاور فلمی نغمے سیکھنے کی طرف ہوگی اوراس طرح فلم میں موجود فحش باتوں کا اثر خواتین پر پڑے گابلکہ پورے مسلم گھرانے اور سماج پر پڑے گا۔

(9)سوال: اگر حوا نہ ہوتی تو کوئی عورت اپنے شوہر کی خیانت نہ کرتی، اس میں خیانت سے کیا مراد ہے؟
جواب: صحیح مسلم میں 3647 نمبر کی حدیث ہے، ‏‏‏‏سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
لولا حواء لم تخن انثى زوجها الدهر.ترجمہ:اگر حوا نہ ہوتیں تو کوئی عورت اپنے شوہر کی خیانت نہ کرتی۔
چونکہ حوا علیہ السلام تمام عورتوں کی ماں ہیں اور حوا علیہ السلام نے ابلیس کے بہکاوے میں آکر آدم علیہ السلام کو اس درخت کا پھل کھانے پر آمادہ کیا جس سے اللہ نے انہیں منع کیا تھا۔ نہ آدم وحوا اس درخت کا پھل کھاتے نہ دنیا میں اتارے جاتے اور نہ دنیا میں خیانت ظاہر ہوتی۔ یہاں شوہر کی خیانت سے بستر کی خیانت یا فحش کاموں کا ارتکاب مراد نہیں ہے بلکہ مذکورہ بالا واقعہ کی طرف اشارہ ہے۔

(10)سوال: عورت کو غسل دے کر کفن دینے کے بعد خون نکل آیا ایسی صورت میں کیا کیا جائے ؟
جواب: ایک مرتبہ میت کو غسل دینے اور کفن دینے کے بعد پھر سے نہ غسل دیا جائے گا اور نہ ہی کفن بدلا جائے گا لیکن اگر نجاست ظاہر ہورہی ہو تو فقط نجاست کا زائل کرنا کافی ہوگا۔ خون کا دھبہ نظر آرہا ہے تو تر کپڑے سے اس کو پوچھ دیا جائے کافی ہے ۔

(11)سوال: ٹھنڈا پانی کی وجہ سےرات میں پیشاب کرنے پر ٹیشوپیپر سے استنجا کرلیتی ہوں پھر فجر کے وقت وضو سے پہلے پانی سے شرمگاہ کی صفائی کرتی ہوں کیا ایسا کرنا صحیح ہے ؟
جواب: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے گوبر اور ہڈی سے استنجا کرنے سے منع کیا اور تین پتھروں سے استنجاکرنے کی اجازت دی ہے ۔اس اعتبارسے ٹیشو پیپر پتھر کے قائم مقام ہے لہذا آپ کا ٹیشوپیپر سے استنجاکرنا کافی ہے چاہے پانی کیوں نہ موجود ہولیکن ٹیشو پیپر سے کم ازکم تین بار صفائی کریں اور پھر فجر کے وقت پانی سے صفائی کرنا ضروری نہیں ہےلیکن صفائی کرلیتی ہیں تو بہتر ہی ہے۔

(12)سوال: بازار جانے کی وجہ سے کیا ظہر کے وقت ظہروعصر کی یا عصر کے وقت عصرومغرب کی نماز جمع کرکے پڑھ سکتی ہوں کیونکہ بازار میں نماز پڑھنے کی جگہ نہیں ہے؟
جواب: بازار جانے کی وجہ سے کوئی عورت کسی دوسری نماز کو وقت سے پہلے نہیں ادا کرسکتی ہے ۔ اللہ تعالی نے نمازوں کو اپنے اپنے اوقات میں پڑھنے کا حکم دیا ہے ۔ اگر کوئی عورت ظہر کے وقت ظہر کی نماز پڑھ کربازار جاتی ہے تو اس کے لئے عصر کا وقت جہاں ہوگا وہیں عصر کی نماز ادا کرےگی اور عصر کے وقت عصر کی نماز پڑھ کر بازار جارہی ہے تو مغرب کی نماز وہاں پڑھنی ہے جہاں مغرب کا وقت ہورہا ہے ۔اور نمازکے لئے مسجد کا ہونا بھی لازم نہیں ہے ساری زمین مسجد کے حکم میں ہے کہیں بھی نماز پڑھی جاسکتی ہے ۔کوشش کی جائے کہ ضرورت کی اشیاء جلدخریدکرگھر لوٹ آیاجائے لیکن اگر خریداری کی وجہ سے تاخیرہوجائے اور بازار میں نماز پڑھنے کا موقع نہ ملے تو گھر آکر پہلے نماز ادا کی جائے ۔

(13)سوال: اگر باپ بیمار ہوتو کیا بیٹی اپنے باپ کے ہاتھ ، پیر اور منہ وغیرہ دھل سکتی ہے؟
جواب: بیٹی اپنے باپ کے ہاتھ پیراورچہرہ دھل سکتی ہے۔کوئی بات نہیں ہے ۔

(14)سوال: دیکھنے میں آرہا ہے کہ عورتیں حالت حمل میں ایسی دوائی استعمال کرتی ہیں جن سے گمان کیا جاتا ہے کہ لڑکا پیدا ہوگا اس کی کیا حقیقت ہے؟
جواب: اگر کہیں پر عورتیں لڑکا پیدا کرنے کے لئے کوئی مخصوص دوا استعمال کررہی ہیں تو یہ ان کے ایمان کی کمزوری اور اللہ پر توکل کی کمی ہے ۔ اولاد دینا، لڑکا اورلڑکی دینا اللہ کی صفت ہے اوریہ اسی کے اختیار میں ہے جیساکہ اللہ کا فرمان ہے:
لِلَّهِ مُلْكُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ يَخْلُقُ مَا يَشَاءُ يَهَبُ لِمَنْ يَشَاءُ إِنَاثًا وَيَهَبُ لِمَنْ يَشَاءُ الذُّكُورَ * أَوْ يُزَوِّجُهُمْ ذُكْرَانًا وَإِنَاثًا وَيَجْعَلُ مَنْ يَشَاءُ عَقِيمًا إِنَّهُ عَلِيمٌ قَدِيرٌ (الشورى: 49-50)
ترجم: آسمان و زمین کی سلطنت اللہ ہی کے لئے ہے ، وہ جو چاہتا ہے پیدا کرتا ہے ،جس کو چاہتا ہے بیٹیاں دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے بیٹے دیتا ہے یا انہیں جمع کردیتا ہے بیٹے بھی اور بیٹیاں بھی اور جسے چاہے بانجھ کردے ، وہ بڑے علم والا اور کامل قدرت والا ہے۔
اس لئے عورتوں کو چاہئے کہ اپنے اندر سے ایمان و توکل کی کمزوری دور کرے اور اولاد کے لئے اللہ سے دعا کرے ۔

(15)سوال : اخوات مومنات سے کون مراد ہیں؟
جواب: چار مومن بہنوں کا ذکر اس حدیث میں ہے جو صحیح الجامع میں ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے ، نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:
الأخواتُ الأربعُ ، ميمونةُ ، و أمُّ الفضلِ ، و سَلمى ، و أسماءُ بنتُ عُمَيسٍ أختُهنَّ لأُمِّهنَّ مؤمناتٌ(صحيح الجامع:2763)
ترجمہ: یہ چار بہنیں مومنہ ہیں: میمونہ، ام الفضل، سلمیٰ اور اسما بنت عمیس۔ مؤخر الذکر، اول الذکر تینوں کی اخیافی (‏‏‏‏یعنی ماں کی طرف سے) بہن ہے۔
سنن کبری ، درالسحابہ، شرح مشكل الآثار اور طبرانی وغیرہ میں بایں الفاظ مروی ہے :
الأخواتُ المؤمناتُ ميمونةُ زوجُ النَّبيِّ صلَّى اللَّهُ عليهِ وسلَّمَ وأمُّ الفضلِ امرأةُ العبَّاسِ وأسماءُ بنتُ عُمَيسٍ امرأةُ جعفرٍ وامرأةُ حمزةَ۔
ترجمہ: یہ چار بہنیں مومنہ ہیں: میمونہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زوجہ، ام الفضل عباس کی زوجہ، اسما بنت عمیس جعفر کی زوجہ اور حمزہ کی زوجہ۔

(16)سوال: ایک حدیث بیان کی جاتی ہے کہ اللہ تعالی قیامت میں سب سے پہلے حکم دے گا کہ مرد کا اس کی بیوی کے ساتھ کیسا سلوک تھا وہ تولو ۔ کیا یہ حدیث صحیح ہے؟
جواب: میرے علم کی روشنی میں ایسی کوئی صحیح حدیث نہیں ہے ، صحیح حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ حقوق اللہ کے معاملے میں سب سے پہلے نماز کا فیصلہ ہوگا اور حقوق العباد کے معاملے میں ناحق خون کا فیصلہ ہوگا۔ کچھ حقوق شوہر پر بیوی کے واسطے اور کچھ حقوق بیوی پر شوہر کے واسطے ہیں ، جو اپنے حقوق کی ادائیگی میں کوتاہی کرے گا قیامت میں اس کا محاسبہ ہوگا مگر سب سے پہلے مردوں کا بیوی کے ساتھ سلوک تولا جائے گا صحیح بات نہیں ہے۔

(17)سوال: ایک بہن نے پوچھاہے کہ وہ زکوۃ کی نیت سے سال بھر تھوڑا تھوڑا پیسہ فقراء ومساکین میں تقسیم کرتی رہتی ہیں کیا اس طرح زکوۃ ادا ہوجائے گی جبکہ یکبارگی زکوۃ دینا مشکل ہے؟
جواب: زکوۃ دینے کی یہ شکل جائز نہیں ہے کیونکہ زکوۃ یکبارگی ادا کی جاتی ہے ۔ سوال سے معلوم ہوتا ہے کہ شاید آپ زیورات کی زکوۃ نکالتی ہوں تو گزارش ہے کہ آپ جو تھوڑا تھوڑا زکوہ کی نیت سے رقم نکالتی ہیں وہ کسی تھیلی میں جمع کرتے رہیں اور سال پورا ہونے پر زیوارات کی جو زکوۃ بنتی ہے ادا کردیں ۔ اور سائل وغیرہ کو تھوڑا بہت صدقہ وخیرات کی نیت سے دیتی رہیں۔
 

مقبول احمد سلفی

سینئر رکن
شمولیت
نومبر 30، 2013
پیغامات
1,331
ری ایکشن اسکور
414
پوائنٹ
209
بنت حوا کے مسائل اور ان کا شرعی حل – قسط: ۲۵
جواب از شیخ مقبول احمد سلفی /اسلامک دعوۃ سنٹر-مسرہ(طائف)​


(1)سوال: شوہر نماز نہیں پڑھتا ، کیا اس سے طلاق لے لینا چاہئے یا اسی کے ساتھ زندگی بسر کرنی چاہئے ؟
جواب: مجھے امید ہے کہ آپ کا شوہر جمعہ کی نماز کے علاوہ کبھی کبھار دیگر نمازیں بھی ادا کرلیا کرتا ہوگااور وہ نماز کا منکر نہیں ہوگا بلکہ سستی کی وجہ سے پنج وقتہ نمازیں نہیں پڑھتا ہوگاایسی صورت میں وہ مسلمان مانا جائے گا ۔آپ اس سے طلاق کا مطالبہ نہ کریں بلکہ مسلسل نماز کی تلقین کرتے رہیں ، اس کا ماحول بہتر بنائیں اور دین سے جوڑنے کے لئے جتنی کوشش کرسکتی ہیں کریں ، مفیدکتاب دے کر، ناصحانہ تقریر سناکر، علماء کی صحبت یا دینی مجلس میں شریک کرواکر۔میاں بیوی کو ایک دوسرے کا کس قدر خیرخواہ ہونا چاہئے خصوصا نماز کے تئیں مندرجہ ذیل حدیث سے اندازہ لگانا چاہئے ۔
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
رحِمَ اللَّهُ رجلًا قامَ منَ اللَّيلِ فصلَّى وأيقظَ امرأتَهُ فصلَّت فإن أبَت نضحَ في وجهِها الماءَ رحِمَ اللَّهُ امرأةً قامَت منَ اللَّيلِ فَصلَّت وأيقَظَت زَوجَها فإن أبَى نضَحَت في وجهِهِ الماءَ(صحيح أبي داود:1450)
ترجمہ: اللہ تعالیٰ اس شخص پر رحم فرمائے جو رات کو اٹھے اور نماز پڑھے اور اپنی بیوی کو بھی بیدار
کرے، اگر وہ نہ اٹھے تو اس کے چہرے پر پانی کے چھینٹے مارے، اللہ تعالیٰ اس عورت پر رحم فرمائے جو رات کو اٹھ کر نماز پڑھے اور اپنے شوہر کو بھی جگائے، اگر وہ نہ اٹھے تو اس کے چہرے پر پانی کے چھینٹے مارے۔
اسی طرح ابوداود کی دوسری حدیث میں ہے کہ ایک صحابیہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنے شوہر(صفوان بن معطل) کے بارے میں کچھ شکایات کرتی ہیں ان میں ایک شکایت کرتے ہوئے کہتی ہیں :ولا يصلي صلاةَ الفجرِ حتى تطلعَ الشمسُ (صحيح أبي داود:2459) یعنی وہ فجر کی نماز سورج نکلنے کے بعد پڑھتے ہیں۔ رسول اللہ سے صفوان نے اس کی وجہ یہ بتائی کہ ہم اس گھرانے سے تعلق رکھتے ہیں جس کے بارے میں سب جانتے ہیں کہ سورج نکلنے سے پہلے ہم اٹھ ہی نہیں پاتے، اس بات پرآپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا: جب بھی جاگو نماز پڑھ لیا کرو ۔
ان دونوں احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ میاں بیوی میں سے ہرایک کو چاہئے کہ دوسرے کی نماز کی فکر کرے بلکہ شوہر میں اگر غفلت و سستی ہو تو بیوی اس کی غفلت دور کرنے کی کوشش کرے اور بیوی میں کوتاہی ہو تو شوہر اس کی کوتاہی دور کرے۔

(2)سوال: آٹھ سال کا لڑکا اپنی ماں کو لپٹ کر سوتا ہے ، منع کرنے کے باوجود نہیں مانتا، ذرا بتائیں کہ لڑکا کب تک اپنی ماں کے ساتھ سو سکتا ہے؟
جواب: ابوداود میں ایک حدیث ہے جسے شیخ البانی حسن صحیح کہا ہے ، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:
مُروا أولادَكم بالصلاةِ وهم أبناءُ سبعِ سنينَ واضربوهُم عليها وهمْ أبناءُ عشرٍ وفرِّقوا بينهُم في المضاجعِ(صحيح أبي داود:495)
ترجمہ: جب تمہاری اولاد سات سال کی ہو جائے تو تم ان کو نماز پڑھنے کا حکم دو، اور جب وہ دس سال کے ہو جائیں تو انہیں اس پر (یعنی نماز نہ پڑھنے پر) مارو، اور ان کے سونے کے بستر الگ کر دو۔
اس حدیث کی رو سے معلوم ہوتا ہے کہ دس سال کی عمر والا بچہ ماں باپ سے الگ ہوکر علاحدہ بستر پر سوئے گا بلکہ شیخ البانی نے صحیح الجامع میں سات سال والی حدیث ذکر کی ہے ۔نبی کا فرمان ہے:
إذا بلغ أولادُكم سبعَ سنينَ ففرِّقوا بين فُرُشِهم(صحيح الجامع:418)کہ جب بچے سات سال کے ہوجائیں تو ان کے بستر الگ کردو۔
آج ہم دیکھتے ہیں کہ اس دور کے بچےماحول اور انٹرنیٹ کی وجہ سے بہت جلد باشعور ہوجاتے ہیں اس لئے آپ اپنے بچوں کو چھ سات سال کے بعد جب سے ان میں شعور ، تمیز اور سمجھداری آنے لگتی ہے اس وقت سے الگ بستر پر سلائیں۔
الگ بستر کا مطلب یا تو ہر بچے کا الگ الگ مستقل بستر ہو یا ایک لمبے بستر پر کئی بچے ہوں مگر ان سب کا مخصوص لحاف/چادر ہو تاکہ آپس میں فصل وجدائی رہے ۔ رہا مسئلہ آٹھ سالہ لڑکے کا اپنی ماں سے لپٹ کر سونا تو اب اس لڑکے کو ماں سے الگ کرکے سلایا جائے گا۔

(3)سوال: کیاسورہ واقعہ کی تلاوت سے فقر وفاقہ دور ہوتا ہے ،کیا یہ سورت عورتوں کو سیکھنا چاہئے ؟
جواب: سورہ کی فضیلت میں یہ روایت آتی ہے : مَن قرأ سورةَ الواقعةِ كلَّ ليلةٍ لم تُصِبْهُ فاقةٌ أبدًا(السلسلة الضعيفة:289)
ترجمہ: جو آدمی ہر رات سورہ واقعہ پڑھے گا اسے کبھی فاقہ نہ پہنچے گا۔
یہ حدیث ضعیف ہے ، اسی طرح جس میں یہ مذکور ہے کہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ اپنی بیٹیوں کو یہ سورت سکھاتے وہ حدیث بھی ضعیف ہے۔ عورتوں کو اس کی تعلیم دینے سے متعلق یہ حدیث بھی ضعیف ہے۔
علموا نساءَكم سورةَ الوَاقِعَةِ ؛ فإنَّها سورةُ الغنى(السلسلة الضعيفة:5668)
ترجمہ: تم اپنی عورتوں کو سورہ واقعہ کی تعلیم دو کیونکہ مالداری والی سورت ہے۔

(4)سوال: کسی عورت کو بچہ پیدا نہ ہو تو وہ کسی قریبی رشتہ دار سے یا یتیم خانے سے بچہ خرید سکتی ہے؟
جواب: کسی عورت کو بچہ پیدا نہ ہو تو وہ کسی دوسری عورت کا بچہ گود لے سکتی ہے اسلام ہمیں اس کی اجازت دیتا ہے لیکن کوئی بچہ کسی سے خریدنا جائز نہیں ہے ، نہ یتیم خانے اور نہ ہی کسی رشتے دار سے ۔ حتی کہ انسانی اعضاء میں سے کوئی بھی عضو بیچنا جائز نہیں ہے کیونکہ پورا جسم اللہ کی ملکیت ہے اور انسان صرف اسی چیز کو بیچ سکتا ہے جو اس کی ملکیت میں ہے ۔

(5)سوال: جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم اپنی بیٹی فاطمہ رضی اللہ عنہا کی تعظیم میں کھڑےہوتے تھے تو دوسروں کی تعظیم میں کیوں نہیں کھڑا ہونا چاہیے ؟
جواب: یہ بات صحیح ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فاطمہ رضی اللہ عنہا کی آمد پر استقبال کے لئے کھڑے ہوکر آگے بڑھتے جیساکہ ابوداود اور مسند احمد وغیرکی روایت میں ہے : ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں:
كانت إذا دخَلَتْ عليه قام إليها ، فأخَذَ بيدِها وقبَّلَها وأَجْلَسَها في مجلسِه ، وكان إذا دخَلَ عليها قامت إليه ، فأَخَذَتْ بيدِه فقَبَّلَتْه وأَجَلَسَتْه في مجلسِها(صحيح أبي داود:5217)
ترجمہ:وہ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آتیں تو آپ کھڑے ہو کر ان کی طرف لپکتے اور ان کا ہاتھ پکڑ لیتے، ان کو بوسہ دیتے اور اپنے بیٹھنے کی جگہ پر بٹھاتے، اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب ان کے پاس تشریف لے جاتے تو وہ آپ کے پاس لپک کر پہنچتیں، آپ کا ہاتھ تھام لیتیں، آپ کو بوسہ دیتیں، اور اپنی جگہ پر بٹھاتیں۔
اس طرح کسی آنے والے کے استقبال میں کھڑا ہونا ، سلام ومصافحہ کرنا اور جگہ پر بٹھانا مشروع وجائز ہے لیکن کسی بیٹھے شخص کی تعظیم میں کھڑا ہونا یا کسی آنے /جانے والےوالے کی تعظیم محض میں اپنی جگہ کھڑا ہونا جائز نہیں ہے۔

(6)سوال: کیا انگڑائی لینے میں گناہ ہے ؟
جواب: انگڑائی لینے میں کوئی گناہ نہیں ہے ، ابوداود کی ایک حدیث ملاحظہ فرمائیں جسے شیخ البانی نے حسن قرار دیا ہے ۔ قبیلہ بنی نجار کی ایک عورت کہتی ہے:
كان بيتي منْ أطولِ بيتٍ حولَ المسجدِ وكان بلالُ يؤذنُ عليهِ الفجرَ فيأتي بسَحَرٍ فيجلسُ على البيتِ ينظرُ إلى الفجرِ فإذا رآهُ تمطَّى، ثم قال : اللهمَّ إني أحمدُكَ وأستعينُكَ على قريشٍ أن يُقيموا دِينَكَ .قالتْ : ثم يُؤذِّنُ .قالتْ : واللهِ ما علمتُهُ كان تركها ليلةً واحدةً تعني هذهِ الكلماتِ(صحيح أبي داود:519)
ترجمہ: مسجد کے اردگرد گھروں میں سب سے اونچا میرا گھر تھا، بلال رضی اللہ عنہ اسی پر فجر کی اذان دیا کرتے تھے، چنانچہ وہ صبح سے کچھ پہلے ہی آتے اور گھر پر بیٹھ جاتے اور صبح صادق کو دیکھتے رہتے، جب اسے دیکھ لیتے تو انگڑائی لیتے، پھر کہتے:اے اللہ! میں تیرا شکر ادا کرتا ہوں اور تجھ ہی سے قریش پر مدد چاہتا ہوں کہ وہ تیرے دین کو قائم کریں، وہ کہتی ہے: پھر وہ اذان دیتے، قسم اللہ کی، میں نہیں جانتی کہ انہوں نے کسی ایک رات بھی ان کلمات کو ترک کیا ہو۔
ایک خیال یہ رہے کہ انگڑائی لینے میں جسم کی کیفیت عجیب سی ہوجاتی ہے لہذا عورت کوانگڑائی لیتے وقت اجنبی نظروں سے بچنا چاہئے۔

(7)سوال:بہت ساری عورتیں آن لائن قرآن کی تعلیم دیتی ہیں ،کیا انہیں مجلس کا اجر وثواب ملے گا؟
جواب: آن لائن قرآن کی تعلیم بھی ایک طرح کی مجلس ہی ہے اور اس کام پر پڑھنے اور پڑھانے والیوں کو وہ تمام فضیلت ملے گی جن کا ذکر قرآن وحدیث میں مذکور ہے تاہم وہ مجلس ذکر جسے فرشتے ڈھانپ لیتے ہیں اور اس پر رحمت و سکینت نازل ہوتی ہے وہ مجلس ایک مقام پہ جسمانی طور پر دینی تعلیم اور ذکر کے لئے جمع ہونا ہے جیساکہ مندرجہ ذیل حدیث سے واضح طور پر معلوم ہوتا ہے۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
لَا يَقْعُدُ قَوْمٌ يَذْكُرُونَ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ إِلَّا حَفَّتْهُمُ المَلَائِكَةُ، وَغَشِيَتْهُمُ الرَّحْمَةُ، وَنَزَلَتْ عليهمِ السَّكِينَةُ، وَذَكَرَهُمُ اللَّهُ فِيمَن عِنْدَهُ.(صحيح مسلم:2700)
ترجمہ:جو لوگ بیٹھ کر یاد کریں اللہ تعالیٰ کی تو ان کو فرشتے گھیر لیتے ہیں اور رحمت ڈھانپ لیتی ہے اور سکینہ (اطمینان اور دل کی خوشی) ان پر اترتی ہے اور اللہ تعالیٰ فرشتوں میں ان کا ذکر کرتا ہے۔

(8)سوال: کیا کوئی دلہن اپنی تصویر کسی سہیلی کو موبائل پر بھیج سکتی ہے ؟
جواب: اسلام میں جاندار کی تصویر حرام ہے اس لحاظ سے دلہا یا دلہن کو چاہئے کہ شادی کے موقع پر تصویر کشی سے پرہیز کرے ۔ اگر کسی دلہن کے موبائل میں اس کی شادی کی تصاویر ہوں تو سہیلیوں کو بھیجنے کی بجائے دلہن کو چاہئے کہ ان تصاویر کو ڈیلیٹ کردے تاکہ جاندار کی تصویر رکھنے کے گناہ سے بچ جائے ۔ گوکہ ایک عورت دوسری عورت کی تصویر دیکھ سکتی ہے مگر چونکہ جاندار کی تصویر حرام ہے اس لئےبلاضرورت موبائل میں رکھنا یا کسی کو بھیجنا جائز نہیں ہے ۔ ڈیجیٹل تصویرکو بعض علماء نے جائز کہا ہے مگر ان کا موقف دلائل کی رو سے کمزور ہے ، صحیح اور قوی موقف یہ ہے کہ ڈیجیٹل تصویر بھی حرمت والی تصویر میں داخل ہے ۔

(9)سوال: میں پاکستان کی لیڈی ڈاکٹر ہوں ، میرے پاس شادی شدہ اورغیرشادی شدہ دونوں قسم کی عورتیں اسقاط حمل کے لئے آتی ہیں ،اسلامی تعلیمات کی روشنی میں مجھےکیا کرنا چاہئے ؟
جواب: صحیح مسلم میں غامدیہ کی ایک عورت کا واقعہ مذکور ہے جس نے زنا کرلی تھی اور حمل ٹھہر گیا تھا ، گناہ کے خوف سے رسول اللہ سے پاک کرنے کی گزارش کرتی ہیں، رسول نے فرمایا،بچہ جننے کے بعد آنا، جب بچہ جن کر لائی تو آپ نے کہا جا دودھ پلاجب اس کا دودھ چھٹے تب آنا، دودھ چھٹنے کے بعد واپس آئی اس حال میں کہ بچے کے ہاتھ میں روٹی کا ایک ٹکڑا تھا۔ آپ نے سنگسار کرنے کا حکم دیا۔اس واقعہ میں یہ بھی مذکور ہےکہ سر پہ ایک پتھر مارنے سے خالد رضی اللہ عنہ کے منہ پرخون گرا تو برابھلا کہنے لگے ، جب رسول نے یہ بات سنی تو فرمایا:
مَهْلًا يا خَالِدُ، فَوَالَّذِي نَفْسِي بيَدِهِ لقَدْ تَابَتْ تَوْبَةً لو تَابَهَا صَاحِبُ مَكْسٍ لَغُفِرَ له(صحيح مسلم:1695)
ترجمہ:خبردار اے خالد (ایسا مت کہو) اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں میری جان ہے اس نےاتنی (خلوص کے ساتھ ) توبہ کی ہے اگر حرام ٹیکس کھانے والا بھی ایسی توبہ کرلے تو بخش دیا جائے ۔
ایک دوسری روایت میں ہے :لقد تابت توبةً لو قُسِّمَتْ بين سبعين من أهلِ المدينةِ لوسعَتْهم ( صحيح الجامع :۵۱۲۸)
اس نے اتنی (خلوص سے توبہ کی ہے) کہ اگر ستر اہل مدینہ میں تقسیم کردی جائے تو ان کے لیےکافی ہوجائے۔
اس واقعہ کو یہاں ذکر کرنے کا مقصد زنا کی سنگینی ، ایمان والی خاتون سے زنا سرزدہونے پر غذاب الہی کا خوف ، بھیانک سزا اور غامدیہ کی خالص توبہ کوذکرکرنا ہےتاکہ آج کی مسلم خواتین اس واقعہ سے عبرت حاصل کرے ۔
اس واقعہ سے یہ بھی معلوم ہوگیا کہ اگرزنا کرنے سے حمل ٹھہر جائے تو اس کو ساقط نہیں کیا جائے گا چاہے عورت شادی شدہ ہو یا غیرشادی شدہ حتی کہ کوئی بھی حمل ضائع کرنابڑا گناہ ہے۔ حمل ایک جان اور ایک نفس ہے اس کا اسقاط ایک نفس کا قتل ہے لہذا آپ کو نصیحت کرتا ہوں کہ اللہ کا خوف کھاتے ہوئے کسی بھی عورت کا حمل ساقط نہ کریں الا یہ کہ حمل سے عورت کی جان کو خطرہ ہو تو ضائع کیا جاسکتا ہے۔اس بارے میں میرے بلاگ پر "اسقاط حمل پہ دیت وکفارہ کا حکم" پڑھنا مفید رہے گا۔

(10)سوال:کیاماہواری سے پاک ہونے کے بعد غسل کرنے سے پہلے مباشرت کرنا جائز ہے اور اگر کسی نے غسل سے پہلے مباشرت کرلیا تو کیا حکم ہے؟
جواب: اس بات پر علماء کا اتفاق ہے کہ حیض سے پاک ہونے کے بعد اس وقت تک جماع کرنا جائز نہیں ہے جب تک عورت غسل نہ کرلے ۔ اگر کوئی غسل حیض سے قبل جماع کرلیتا ہے اسے توبہ واستغفار کے ساتھ ایک یا آدھا دینار صدقہ کرنا چاہئے ۔ شیخ ابن باز رحمہ اللہ سے غسل حیض سے قبل جماع کرنے پرکفارہ کے بارے میں سوال کیا گیا تو آپ نے کہا کہ غسل سے قبل جماع کرے تو کفارہ دینا پڑے گا۔ (بن بازڈاٹ آرگ ڈاٹ ایس اے)

(11)سوال:میں نے سناہے کہ ماں کوطلاق ملنے پر اس کی اولاد کو باپ کی وراثت سے حصہ ملے گا مگر خلع ہونے کی صورت میں حصہ نہیں ملے گا کیا یہ بات صحیح ہے؟
جواب: آپ نے جو سنا ہے وہ صحیح نہیں ہے بلکہ صحیح یہ ہے کہ حقیقی اولاد اپنے باپ کی جائیداد سے حصہ پائے گی چاہے ماں کو طلاق ملے یا خلع ملے ۔

(12)سوال:کسی کسی عورت کا ابرو ہلکا ہوتا ہے تو کیا وہ بلیک قلم سے اس جگہ کو ڈارک کرسکتی ہے جبکہ ہم دیکھتے ہیں کہ آنکھوں کی پلکوں کو بھی کالا سرمہ لگایا جاتا ہے ؟
جواب: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بالوں کو کالے رنگ سے رنگنے سے منع فرمایا ہے ، یہ حکم عورت ومرد دونوں کے لئے ہے اس لئے کوئی عورت بالوں کو رنگنے کے لئے کالے رنگ کا استعمال نہیں کرسکتی ہے ۔ابرو کا ہلکا ہونا کوئی عیب نہیں ہے جس کے علاج کی ضرورت ہو، اس کو ویسے ہی رہنے دینا چاہئے ۔رہا سرمہ کا مسئلہ تو وہ پلکوں پر نہیں لگایا جاتا بلکہ آنکھوں میں ان کی حفاظت کے لئے استعمال کیا جاتا ہے ۔ اور پھر سرمہ کی اجازت ہے تو یہ اجازت صرف آنکھوں کے لئے ہے نہ کہ ابرو کے لئے ۔

(13)سوال:عورت اگر انگشت زنی کرے تو کیا غسل واجب ہوجاتا ہے جبکہ مذی نکلے مگر منی کا خروج نہ ہو؟
جواب: اولا میں مسلم بہنوں کو اس بات کی نصیحت کرتا ہوں کہ غیرفطری طریقے سے شہوت پوری کرنا جائز نہیں ہے اس عمل سے باز رہیں ، اللہ کا خوف کھائیں اوراپنے اندر اعمال صالحہ کی طرف رغبت پیدا کریں ۔ دوسری بات یہ ہے کہ شہوت کے ساتھ منی کا خروج ہونے سے غسل واجب ہوجاتا ہے چاہے انگشت زنی سےہو یا کسی اور طریقے سے۔ عورت کی منی باہرنکلنے کی بجائے رحم کی طرف جاتی ہے اس لئے اگر عورت کو شہوت کے ساتھ منی نکلنے کا احساس ہو تو غسل واجب ہوجاتا ہے تاہم فقط لیس دار مادہ جسے مذی کہتے ہیں اس کے نکلنے سے غسل واجب نہیں ہوتا۔

(14)سوال:ہمارے یہاں دلہن کو اسٹیج پر لایا جاتا ہے کیا عورتیں پردے میں رہتےہوئے دلہا ودلہن کے رسم ورواج کو دیکھ سکتی ہیں؟
جواب: اصل میں دلہن کو اسٹیج پہ لانا اور وہاں پہ مردوعورت کا ایک ساتھ اکٹھا ہونا شریعت کے مخالف ہے ۔ مردوں کی محفل میں دلہن کو نہیں لانا چاہئے اور اسی طرح عورتوں کو بھی مردوں کی محفل میں جمع نہیں ہونا چاہئے ۔ یہ الگ بات ہے کہ عورتیں مردوں کو دیکھ سکتی ہیں ، دلہا کو بھی دیکھ سکتی ہیں مگر کسی محفل میں مردوعورت کا اختلاط نہیں ہونا چاہئے ۔

(15)سوال:کیا عورت فوت شدہ فرض روزےشوہرکی اجازت کے بغیر قضا کرسکتی ہے ؟
جواب: عورت فوت شد ہ فرض روزے شوہر کی اجازت کے بغیر قضا کر سکتی ہے ، کوئی حرج نہیں ہے ،صرف نفلی روزوں میں شوہر کی اجازت چاہئے ۔
 
Top