• الحمدللہ محدث فورم کو نئےسافٹ ویئر زین فورو 2.1.7 پر کامیابی سے منتقل کر لیا گیا ہے۔ شکایات و مسائل درج کروانے کے لئے یہاں کلک کریں۔
  • آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تفصیل درکار ہے

بہرام

مشہور رکن
شمولیت
اگست 09، 2011
پیغامات
1,173
ری ایکشن اسکور
439
پوائنٹ
132
آپ کو پہلے ہی کہا تھا کہ اس بات کو اچھی طرح پڑھیں!
امام مسلم نے امام بخاری کے اس معیار کو جو انہوں نے صحیح بخاری میں احادیث کو درج کرنے کے لئے رکھا تھا، اس پر قطعی کوئی رد نہیں کیا! ذرو غور سے دوبارہ مطالعہ فرمائیں!
یہ بات بھی ابھی تو دلیل ًمحتاج ہے کہ امام بخاری کا معیارلقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
دوسری بات یہ کہ محمود الطحان اپنی کتاب " تيسير مصطلح الحديث " میں المعنعِن کی بحث میں امام بخاری کا معنعِن کی حدیث کے بارے مطلقا نظریہ پیش کرتے ہیں کہ
ثبوت اللقاء: وهو قول البخاري
ایسا لگتا ہے کہ محمود الطحان صاحب بھی یہ بات نہیں جانتے تھے کہ امام بخاری کا نظریہ لقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا ورنہ یہاں ضرور اس کی وضاحت فرمادیتے ان سب باتوں سے نہیں لگتا کہ آپ کا یہ ""تخیل "" تخیل ہی ہے کہ امام بخاری کا یہ نظریہ صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
 

بہرام

مشہور رکن
شمولیت
اگست 09، 2011
پیغامات
1,173
ری ایکشن اسکور
439
پوائنٹ
132
علی بہرام پہلے اپنے گھر کی خبر تو لو تم لوگوں نے تو نعوذ باللہ حضرت علی رضی اللہ عنہ کا رب بنا دیا ہے

یہ ویڈیو دیکھ کر ایمان والے شائد رو پڑیں،

شیعہ ذاکر کا علی رضی اللہ کی شان میں غلو !

یہ ویڈیو پوری سنیں اور دیکھیں۔

اے عقلمند شیعوں اللہ سے ڈرو اور شرک سے بعض آ جاو۔

عیسائیوں نے اللہ عزوجل کا بیٹا ٹھہرایا اور جس پر اللہ عزوجل قرآن میں اپنے غصے کا اظھار کر رہا ہے اور تم لوگ علی رضی اللہ عنہ کو اللہ سے ملا رہے ہو۔
شیعہ چاہے نصیری ہو یا امامیہ جعفریہ سب کے عقائد میں شرک پایا جاتا ہے مثلا ائمہ کو رب کہنا، علم الغیب، ائمہ سے مدد طلب کرنا، مشکل کشاء سمجھنا وغیرہ

**************
القرآن -- سورة مريم

وَقَالُوا اتَّخَذَ الرَّحْمَٰنُ وَلَدًا - 19:88

ان کا قول تو یہ ہے کہ اللہ رحمٰن نے بھی اوﻻد اختیار کی ہے

لَّقَدْ جِئْتُمْ شَيْئًا إِدًّا - 19:90

یقیناً تم بہت بری اور بھاری چیز ﻻئے ہو

تَكَادُ السَّمَاوَاتُ يَتَفَطَّرْنَ مِنْهُ وَتَنشَقُّ الْأَرْضُ وَتَخِرُّ الْجِبَالُ هَدًّا - 19:91

قریب ہے کہ اس قول کی وجہ سے آسمان پھٹ جائیں اور زمین شق ہوجائے اور پہاڑ ریزے ریزے ہو جائیں

أَن دَعَوْا لِلرَّحْمَٰنِ وَلَدًا - 19:92

کہ وه رحمان کی اوﻻد ﺛابت کرنے بیٹھے

وَمَا يَنبَغِي لِلرَّحْمَٰنِ أَن يَتَّخِذَ وَلَدًا - 19:93

شان رحمٰن کے ﻻئق نہیں کہ وه اوﻻد رکھے

إِن كُلُّ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ إِلَّا آتِي الرَّحْمَٰنِ عَبْدًا - 19:94

آسمان وزمین میں جو بھی ہیں سب کے سب اللہ کے غلام بن کر ہی آنے والے ہیں

لَّقَدْ أَحْصَاهُمْ وَعَدَّهُمْ عَدًّا - 19:95

ان سب کو اس نے گھیر رکھا ہے اور سب کو پوری طرح گن بھی رکھا ہے

وَكُلُّهُمْ آتِيهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ فَرْدًا

یہ سارے کے سارے قیامت کے دن اکیلے اس کے پاس حاضر ہونے والے ہیں
جی آپ ہی کمی تھی یہاں ماسٹر آف کاپی پیسٹ ! پہلے یہ تو ملاحظہ فرمالیں کہ اس دھاگے میں کون سا موضوع زیر بحث ہے
 

بہرام

مشہور رکن
شمولیت
اگست 09، 2011
پیغامات
1,173
ری ایکشن اسکور
439
پوائنٹ
132
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!

آپ نے یہاں'' یعنی'' بالکل غلط بیان کئے ہیں، خیر یہ تو آپ کا دیرینہ مسئلہ ہے، دعا کیجئے داعمی نہ ہو!
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
لیکن اب تک آپ نے "یعنی "کو غلط ثابت بھی نہیں کر پائیں ہیں چلیں بغیر ثبوت کے ہی آپ کا کہا مان لیتے ہیں اگریہ بات آپ پہلے ہی ارشادفرما دیتے کہ " ثبوت کوئی نہیں لیکن ہم یہ ارشاد فرمارہے ہیں اس مان لو " تو ہمیں کیا مجال تھی کہ ہم آپ کے ارشاد عالیہ کے خلاف ایک لفظ بھی لکھتے !
 

ابن داود

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
نومبر 08، 2011
پیغامات
3,418
ری ایکشن اسکور
2,730
پوائنٹ
556
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
لیکن اب تک آپ نے "یعنی "کو غلط ثابت بھی نہیں کر پائیں ہیں چلیں بغیر ثبوت کے ہی آپ کا کہا مان لیتے ہیں اگریہ بات آپ پہلے ہی ارشادفرما دیتے کہ " ثبوت کوئی نہیں لیکن ہم یہ ارشاد فرمارہے ہیں اس مان لو " تو ہمیں کیا مجال تھی کہ ہم آپ کے ارشاد عالیہ کے خلاف ایک لفظ بھی لکھتے !
میری ہی تحریر سے غلط معنی بیان کرکے مجھ سے مطالبہ کہ آپ کے بیان کعدہ معنی کو غلط ثابت کروں!
میاں جی ! آپ کے بیان کردہ ''یعنی'' کے بطلان کا ثبوت اسی تحریر میں ہے، جیس کے معنی بیان کرنے کی آپ نے ٹھانی تھی! بہر حال کاوش میں لگے رہے! اور امید نہ چھوڑیئے گا، کبھی تو کامیابی ہو ہی جائے گی، کچھ تو صحیح سمجھ آ ہی جائے گا! ہم دعا گو ہیں!
 

ابن داود

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
نومبر 08، 2011
پیغامات
3,418
ری ایکشن اسکور
2,730
پوائنٹ
556
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
یہ بات بھی ابھی تو دلیل ًمحتاج ہے کہ امام بخاری کا معیارلقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
دوسری بات یہ کہ محمود الطحان اپنی کتاب " تيسير مصطلح الحديث " میں المعنعِن کی بحث میں امام بخاری کا معنعِن کی حدیث کے بارے مطلقا نظریہ پیش کرتے ہیں کہ
ثبوت اللقاء: وهو قول البخاري
ایسا لگتا ہے کہ محمود الطحان صاحب بھی یہ بات نہیں جانتے تھے کہ امام بخاری کا نظریہ لقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا ورنہ یہاں ضرور اس کی وضاحت فرمادیتے ان سب باتوں سے نہیں لگتا کہ آپ کا یہ ""تخیل "" تخیل ہی ہے کہ امام بخاری کا یہ نظریہ صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
یہ باتیں تب سمجھ آئیں گی، جب محدثیں کا اپنی کتب میں منہج کا کچھ معلوم ہو!
امام بکاری نے بالکل اسے اپنی صحیح میں لقاء کے ثبوت کو شرط قرار دیا ہے! اور اس کی تفصیل اوپر بیان کی ہے، وہ موم جامہ تیار کر لیا ہے؟ اس سے استفادہ حاصل کریں!
''تخيل'' کی کی نسبت ہم سے کر رہے ہو ، جب کہ آپ کی اپنی بات تخیل پر مبنی ہے، اپنے کلام پر غور کریں:
ایسا لگتا ہے کہ محمود الطحان صاحب بھی یہ بات نہیں جانتے تھے کہ امام بخاری کا نظریہ لقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا ورنہ یہاں ضرور اس کی وضاحت فرمادیتے ان سب باتوں سے نہیں لگتا کہ آپ کا یہ ""تخیل "" تخیل ہی ہے کہ امام بخاری کا یہ نظریہ صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
اشماریہ صاحب! آپ کو آج المانی میں شعر پیش کرتے ہیں:
Wer das Dichten will verstehen
Muss ins Land der Dichter gehen
Wer den Dichter will verstehen
Muss in Dichters Lande gehen


جو کوئی شاعری کو سمجھنا چاہے، اسے شاعر کے ملک جانا چاہئے
جو کوئی شاعر کو سمجھنا چاہے، اسے شاعر کے ملک میں جانا چاہئے

سمجھے میاں! محدثین کے کلام کو سمجھنے کے لئے، محدثین کا ان کتب میں منہج سمجھنا ضروری ہے!
 

ابن داود

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
نومبر 08، 2011
پیغامات
3,418
ری ایکشن اسکور
2,730
پوائنٹ
556
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
جی آپ ہی کمی تھی یہاں ماسٹر آف کاپی پیسٹ ! پہلے یہ تو ملاحظہ فرمالیں کہ اس دھاگے میں کون سا موضوع زیر بحث ہے
ان کا کاپی پیسٹ کرنا، کم سے کم قائل کی بات کے معنی کو تبدیل کر کے بیان کرنے سے پاک ہوتا ہے!
 
شمولیت
اگست 11، 2013
پیغامات
17,117
ری ایکشن اسکور
6,788
پوائنٹ
1,069
جی آپ ہی کمی تھی یہاں ماسٹر آف کاپی پیسٹ ! پہلے یہ تو ملاحظہ فرمالیں کہ اس دھاگے میں کون سا موضوع زیر بحث ہے

موضوع پر تو بھائی بات کر رہے ہیں -

اس ویڈیو کے بارے میں بھی کچھ رائے دے -
 

MD. Muqimkhan

رکن
شمولیت
اگست 04، 2015
پیغامات
248
ری ایکشن اسکور
46
پوائنٹ
70
اگر امام بخاری کا لقا والا معاملہ صحیح بخاری کے لیے خاص نہیں بھی تھا تو اس میں پریشانی کی کیا بات ہے. میری سمجھ سے باہر ہے.
 

بہرام

مشہور رکن
شمولیت
اگست 09، 2011
پیغامات
1,173
ری ایکشن اسکور
439
پوائنٹ
132
اگر امام بخاری کا لقا والا معاملہ صحیح بخاری کے لیے خاص نہیں بھی تھا تو اس میں پریشانی کی کیا بات ہے. میری سمجھ سے باہر ہے.
ساری رات قصہ یوسف و زلیخا سنتے رہے اور صبح کہانی ختم ہونے پر پوچھا کہ یہ زلیخا مرد تھا یا عورت!
 

اسحاق سلفی

فعال رکن
رکن انتظامیہ
شمولیت
اگست 25، 2014
پیغامات
6,372
ری ایکشن اسکور
2,569
پوائنٹ
791
یہ بات بھی ابھی تو دلیل ًمحتاج ہے کہ امام بخاری کا معیارلقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
دوسری بات یہ کہ محمود الطحان اپنی کتاب " تيسير مصطلح الحديث " میں المعنعِن کی بحث میں امام بخاری کا معنعِن کی حدیث کے بارے مطلقا نظریہ پیش کرتے ہیں کہ
ثبوت اللقاء: وهو قول البخاري
ایسا لگتا ہے کہ محمود الطحان صاحب بھی یہ بات نہیں جانتے تھے کہ امام بخاری کا نظریہ لقاء صرف صحیح بخاری کے لئے تھا ورنہ یہاں ضرور اس کی وضاحت فرمادیتے ان سب باتوں سے نہیں لگتا کہ آپ کا یہ ""تخیل "" تخیل ہی ہے کہ امام بخاری کا یہ نظریہ صرف صحیح بخاری کے لئے تھا
’’ محمود الطحان ‘‘ تو ہمارے دور کے عالم ہیں ؛(ولد في قضاء الباب من أعمال حلب ، وذلك في عام 1935 للميلاد-وانتسب إلى كلية الشريعة بجامعة دمشق وذلك في عام 1956 ، وتخرج فيها عام 1960 م)
ہم آپ کو علم حدیث کے مشہور و مستند عالم ،محدث علامہ ابن کثیر ؒ کا بیان پیش کرتے ہیں ،اگر سمجھ آجائے ،اور پسند بھی آجائے تو مسئلہ حل ہو جائے ؛
علامہ ابن کثیر ؒ ’’ الباعث الحثیث ‘‘ میں لکھتے ہیں :
’’ قال: وقد حاول بعضهم أن يطلق على الإسناد المعنعن اسم " الإرسال " أو " الإنقطاع ".
قال: والصحيح الذي عليه العمل: أنه متصل محمول على السماع، إذا تعاصروا، مع البراءة من وصمة التدليس.
وقد ادعى الشيخ أبو عمرو والداني المقريء إجماع أهل النقل على ذلك، وكاد ابن عبد البر أن يدعي ذلك أيضاً.
" قلت ": وهذا هو الذي اعتمده مسلم في صحيحه: وشنَّع في خطبته على من يشترط مع المعاصرة اللقيَّ، حتى قيل: إنه يريد البخاري، والظاهر أنه يريد علي بن المديني، فإنه يشترط ذلك في أصل صحة الحديث، وأما البخاري فإنه لا يشترطه في أصل الصحة، ولكن التزم ذلك في كتابه " الصحيح ".

(امام ابن الصلاح ) فرماتے ہیں :کچھ محدثین نے ’’ معنعن اسناد ‘‘ پر مرسل و منقطع کا اطلاق کیا ہے ،
ابن الصلاح رحمہ اللہ فرماتے ہیں : لیکن صحیح بات جس پر محدثین کا عمل ہے ، وہ یہ ہے کہ ’’ معنعن اسناد ‘‘ کے رواۃ میں اگر معاصرت ثابت ہو ،اور تدلیس کا عیب نہ پایا جائے،تو ایسی معنعن اسناد ،سماع پر محمول ہوگی ،
اور شیخ ابن عمرو الدانی نے اس پر اجماع کا دعوی کیا ہے ،اور ابن عبد البر ؒ بھی ایسے دعوے کے قریب ہیں ؛
علامہ ابن کثیر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :یہی وہ بات ہے جس پر امام مسلم نے اپنی صحیح میں اعتماد کیا ہے ،اور اپنی کتاب کے مقدمہ میں انہوں نے
اس شخص پر تنقید کی ہے جس نے معاصرت کے باوجود ’’ لقاء ‘‘ کی شرط رکھی ہے ،اور (جس پر امام مسلم نے تنقید کی ) کہا جاتا ہے ،وہ امام بخاری
ہیں ۔لیکن صحیح اور ظاہر بات یہ ہے کہ جس پر امام مسلم نے نقد فرمایا ،وہ علی بن مدینی رحمہ اللہ ہیں (نہ کہ بخاری ؒ)
کیونکہ امام علی بن مدینی ؒ نے معاصرت کے باوجود ’‘ لقاء ‘‘ کو صحت حدیث کی شرط قرار دیا ہے ،
جبکہ امام بخاری رحمہ اللہ نے لقاء کی شرط کا صرف اپنی ’’ صحیح ‘‘ میں التزام فرمایا ہے ،اور حدیث کی صحت کیلئے اسے شرط نہیں کہا ۔
(یعنی صحیح بخاری کے علاوہ ان کے ہاں یہ لقاء حدیث کے صحیح ہونے کیلئے شرط نہیں )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
علامہ ابن کثیر رحمہ اللہ کے اس بیان سے دو باتیں واضح ہو گئیں :
(۱)۔۔امام مسلم نے جناب امام بخاری پر تنقید نہیں کی بلکہ امام علی بن مدینی ؒ پر رد کیا ہے
(۲) ۔۔امام بخاری رحمہ اللہ نے لقاء کی شرط کا صرف اپنی ’’ صحیح ‘‘ میں التزام فرمایا ہے ،اور حدیث کی صحت کیلئے اسے شرط نہیں کہا ۔

اب جواب میں کسی ہم عصر کو پیش کرنے کی ضرورت نہیں، بلکہ کسی اقدم کو تلاش کرو
 
Last edited:
Top